فعل مضارع ایسا فعل جس میں موجودہ (حال) اور آنے والا (مستقبل) دونوں زمانے پائے جائیں جیسے نجمہ کتاب پڑھے، اسلم کھانا کھائے، بشرہ سوئے، احمد اسکول جائے، اختر پھول لائے، اِن جملوں میں پڑھے، کھائے، سوئے، جائے، لائے فعل مضارع ہیں۔

فعل مضارعترميم

فعل مضارع کا مفہومترميم

ایسا فعل جس میں موجودہ (حال) اور آنے والا (مستقبل) دونوں زمانے پائے جائیں فعل مضارع کہلاتا ہے۔

یا

وہ فعل جس میں زمانہ حال اور زمانہ مستقبل دونوں زمانوں کا مفہوم پایا جائے اسے فعل مضارع کہتے ہیں۔

یا

فعل مضارع اُس فعل کو کہتے ہیں جس میں کسی کام کا کرنا یا ہونا فعل حال یا فعل مستقبل دونوں زمانوں میں پایا جاتا ہے۔

فعل مضارع کی مثالیںترميم

نجمہ کتاب پڑھے، اسلم کھانا کھائے، بشرہ سوئے، احمد اسکول جائے، اختر پھول لائے، اِن جملوں میں پڑھے، کھائے، سوئے، جائے، لائے فعل مضارع ہیں۔

فعل مضارع بنانے کا قاعدہترميم

  1. فعل مضارع بنانے کا قاعدہ یہ ہے کہ مصدر کا ”نا“ دور کر کے ”ے“ لگانے سے فعل مضارع بن جاتا ہے جیسے دیکھنا مصدر سے دیکھے، کھانا مصدر سے کھائے وغیرہ
  2. مصدر کی علامت ”نا“ دور کرنے سے اگر ”آ“ یا ”وائو“ باقی رہ جائے تو آخر میں ”ئے“ لگانے سے فعل مضارع بن جاتا ہے جیسے آنا مصدر سے آئے۔

فعل مضارع کی گردانترميم

آنا اور دیکھنا مصدر سے فعل مضارع کی گردان
واحد غائب جمع غائب واحد حاضر جمع حاضر واحد متکلم جمع متکلم
وہ آئے وہ آئیں توآئے تم /آپ آئیں میں آئوں ہم آئیں
وہ دیکھے وہ دیکھیں تودیکھے تم/آپ دیکھیں میں دیکھوں ہم دیکھیں

حوالہ جاتترميم

[1][2]

  1. آئینہ اردو قواعد و انشاء پرزادی
  2. آئینہ اردو