نور محل (Noor Mahal) بہاولپور، پاکستان میں ایک محل ہے۔ یہ نو کلاسیکی طرز پر ایک اطالوی شاطو کی طرح 1872 میں بنایا گیا تھا۔ یہ نواب بہاولپور برطانوی راج کی نوابی ریاست کی ملکیت ہے۔[1]

نور محل
Noor Mahal
Bahawalpur Nur Mahal.jpeg
نور محل، بہاولپور
نور محل is located in پاکستان
نور محل
محل وقوع پاکستان میں
عمومی معلومات
معماری طرزاطالوی شاطو
شہر یا قصبہبہاولپور
ملکپاکستان
آغاز تعمیر1872
تکمیل1875
مؤکلنواب صادق محمد خان چہارم
تکنیکی تفصیلات
سائز44,600 مربع فٹ (4,140 میٹر2)
ڈیزائن اور تعمیر
معمارمسٹر ہیننان


نور محل نواب صادق محمد خان عباسی چہارم نے سنہ 1872 میں تعمیر کرنے کا حکم دیا۔ انھوں نے یہ محل اپنی بیگم کے لیے بنوایا تھا جو تین سال کے عرصے میں مکمل ہوا۔ یہی وجہ ہے کہ یہ ان ہی کے نام سے منسوب ہے۔

تاہم ان کی بیگم نے اس محل میں صرف ایک رات قیام کیا کیونکہ انھیں یہ بات پسند نہیں آئی کہ محل کے قرب میں ہی ایک قبرستان موجود تھا


1956 میں ریاست بہاولپور کے انضمام کے بعد نور محل کو محکمہ اوقاف نے اپنی تحویل میں لے لیا۔ 1971 میں اسے لیز پر پاک آرمی کے حوالے کر دیا گیا۔

12 اکتوبر 1997 کو پاک آرمی نے نور محل 11 کروڑ 90 لاکھ میں خرید لیا۔ اور اسے آفیسر کلب کے طور پر استعمال کیا۔

بعدازاں مرکزی ہال کو بحال کر کے عوام کے لئے کھول دیا گیا۔ جبکہ مشرقی ہال آفیسر میس کے طور پر استعمال ہو رہا ہے۔ ستمبر 2001 میں محکمہ آثار قدیمہ نے اسے تاریخی آثار میں شامل کر لیا۔

تصاویرترميم

حوالہ جاتترميم

مزید دیکھیےترميم

بیرونی روابطترميم

متناسقات: 29°23′44″N 71°41′01″E / 29.39556°N 71.68361°E / 29.39556; 71.68361