ڈراؤنا خواب یا کابوس ایک ایسا خواب ہوتا ہے جو اپنی جملہ نوعیت کے حساب سے ناگفتہ بہ ہے۔ اس خواب کی وجہ سے دماغ میں سخت جذباتی رد عمل رونما ہو سکتا ہے، جس میں خوف اور ناامیدی، تجسس اور گہرا صدمہ شامل ہو سکتا ہے۔ خواب میں کئی پریشان کن صورت حال، نفسیاتی یا جسمانی خوف یا کوئی اور چونکانے والی بات ممکن ہے۔ ڈراؤنے خوابوں کے متاثرین بے چینی کی حالت میں اٹھتے ہیں اور کم از کم ایک مختصر وقت تک وہ دوبارہ سو نہیں پاتے۔

ڈراؤنے خوابوں کے جسمانی وجوہ بھی ممکن ہیں جیسے کہ غیر آرام دہ یا عجیب و غریب حالت میں سونا، بخار کا ہونا یا پھر نفسیاتی وجوہ ممکن ہیں جیسے کہ تناؤ، تجس اور کئی ڈرگوں کے غیر متوقع رد عمل بھی ممکن ہیں جیسے کہ پی سیلوسائبین کھمبی (Psilocybin mushroom) کے لینے کے بعد کا اثر۔ یہ کھمبی اگر سونے سے پہلے لی جائے تو یہ جسم کے میٹابولزم اور دماغ کی فعالیت کو بڑھا دیتی ہے۔ اس سے ڈراؤنے خواب آتے ہیں۔

متواتر ڈراؤنے خوابوں کے لیے طبی مدد درکار ہو سکتی ہے، کیوں کہ یہ نیند کے لینے پر اثر انداز ہوتے ہیں اور بے خوابی کی کیفیت پیدا کر سکتے ہیں۔[1]

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

مزید مطالعاتترميم

  • Anch، A. M.؛ Browman، C. P.؛ Mitler، M. M.؛ Walsh، J. K. (1988). Sleep: A Scientific Perspective. New Jersey: Prentice-Hall. 
  • Harris، J. C. (2004). "The Nightmare". Archives of General Psychiatry 61 (5): 439–40. doi:10.1001/archpsyc.61.5.439. PMID 15123487. 
  • Husser، J.-M.؛ Mouton، A.، ویکی نویس (2010). Le Cauchemar dans les sociétés antiques. Actes des journées d'étude de l'UMR 7044 (15–16 Novembre 2007, Strasbourg). Paris: De Boccard.  (فرانسیسی میں)
  • Jones، Ernest (1951). On the Nightmare. ISBN 0-87140-912-7. 
  • Forbes، D. (2001). "Brief Report: Treatment of Combat-Related Nightmares Using Imagery Rehearsal: A Pilot Study". Journal of Traumatic Stress 14 (2): 433–442. doi:10.1023/A:1011133422340. 
  • Siegel، A. (2003). "A mini-course for clinicians and trauma workers on posttraumatic nightmares". 
  • Burns، Sarah (2004). Painting the Dark Side : Art and the Gothic Imagination in Nineteenth-Century America. Ahmanson-Murphy Fine Are Imprint. University of California Press. ISBN 0-520-23821-4. 
  • Davenport-Hines، Richard (1999). Gothic: Four Hundred Years of Excess, Horror, Evil and Ruin. North Point Press. صفحات 160–61. 
  • Hill، Anne (2009). What To Do When Dreams Go Bad: A Practical Guide to Nightmares. Serpentine Media. ISBN 1-887590-04-8. 
  • Simons، Ronald C.؛ Hughes، Charles C.، ویکی نویس (1985). Culture-Bound Syndromes. Springer. 
  • Sagan، Carl (1997). The Demon-Haunted World: Science as a Candle in the Dark. 
  • Coalson، Bob (1995). "Nightmare help: Treatment of trauma survivors with PTSD". Psychotherapy: Theory, Research, Practice, Training 32 (3): 381–388. doi:10.1037/0033-3204.32.3.381. 
  • "Nightmares? Bad Dreams, or Recurring Dreams? Lucky You!". 19 مارچ 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 08 دسمبر 2015. 
  • Halliday، G. (1987). "Direct psychological therapies for nightmares: A review". Clinical Psychology Review 7: 501–523. doi:10.1016/0272-7358(87)90041-9. 
  • Doctor، Ronald M.؛ Shiromoto، Frank N.، ویکی نویس (2010). "Imagery Rehearsal Therapy (IRT)". The Encyclopedia of Trauma and Traumatic Stress Disorders. New York: Facts on File. صفحہ 148. 
  • Mayer، Mercer (1976). There's a Nightmare in My Closet. [New York]: Puffin Pied Piper. 
  • Moore، Bret A.; Kraków، Barry (2010). "Imagery rehearsal therapy: An emerging treatment for posttraumatic nightmares in veterans". Psychological Trauma: Theory, Research, Practice, and Policy 2 (3): 232–238. doi:10.1037/a0019895. 

  ویکیمیڈیا العام پر Nightmares سے متعلقہ وسیط