ہندوستانی اشتقاقیات

ہندوستانی، جسے ہندی-اردو بھی کہا جاتا ہے ، بھارت اور پاکستان میں سرکاری زبانوں کے طور پر استعمال ہونے والے دو معیاری رجسٹروں کی مقامی شکل ہے، یعنی ہندی اور اردو۔ یہ برصغیر پاک و ہند کے شمالی، وسطی اور شمال مغربی حصوں میں کئی قریبی متعلقہ لہجوں پر مشتمل ہے لیکن بنیادی طور پر دہلی خطے کی کھری بولی پر مبنی ہے۔ ہند آریائی زبان کے طور پر جو کہ ہندوستانی کا مرکزی حصہ اسے سنسکرت سے جوڑنے کا سبب بنتا ہے لیکن وسیع پیمانے پر بولی جانے والی زبانِ عامیانہ کے طور پر، اس میں دخیل الفاظ کی ایک بڑی تعداد موجود ہے،[1][2] جو صدیوں کی غیر ملکی حکمرانی اور نسلی تنوع کے ذریعے حاصل کی گئی ہے۔

ہندی نے اپنا رسمی اور تکنیکی ذخیرہ الفاظ سنسکرت سے حاصل کریا ہے جب‌کہ معیاری اردو نے اپنا رسمی اور تکنیکی ذخیرۂ الفاظ فارسی اور عربی سے حاصل کیا ہے۔ معیاری ہندی اور اردو بنیادی طور پر عوامی تقاریر اور ریڈیو یا ٹی وی خبروں میں استعمال ہوتی ہیں، جب‌کہ روزمرہ بولی جانے والی زبان، ہندوستانی کی کئی اقسام میں سے ایک ہے، جس کے الفاظ میں فارسی ، عربی اور سنسکرت کے الفاظ شامل ہیں۔ اس کے علاوہ ، بولی جانے والی ہندوستانی میں انگریزی اور دراوڑی زبانوں کے الفاظ کے ساتھ ساتھ کئی دیگر زبانیوں کے الفاظ شامل ہیں۔

ہندوستانی نے کئی صدیوں میں شمالی برصغیر کے بیشتر حصوں میں ترقی کی ہے جن میں جدید بھارت، پاکستان اور نیپال شامل ہیں۔ اسی طرح کہ جس طرح انگریزی کا مرکزی ذخیرۂ الفاظ پرانی انگریزی (اینگلو سیکسن) سے نکلا ہے لیکن فرانسیسی اور دیگر زبانوں سے مستعار بہت سے الفاظ کو اکٹھا کیا گیا (جن کے تلفظ اکثر قدرتی طور پر تبدیل ہوتے رہتے ہیں تاکہ انگریزی بولنے والوں کے لیے تلفظ آسان ہو جائے)، ہندوستانی کیا ہے، کہا جاسکتا ہے یہ سنسکرت سے بنی ہے جبکہ کئی سالوں سے فارسی اور عربی کے کئی الفاظ اس میں جذب ہو گئے ہیں، اور ان الفاظ کے تلفظ (اور اکثر معنی بھی) تبدیل کردیے گئے ہیں تاکہ ہندوستانی بولنے والوں کے لیے اس کا تلفظ کرنا آسان ہو جائے۔ بہت سے فارسی الفاظ شمالی ہندوستان کے ترک-منگول مغل حکمرانوں کے اثر و رسوخ کی وجہ سے ہندوستانی لغت میں داخل ہوئے ، جنھوں نے ایک بہت ہی فارسی شدہ ثقافت کو اپنایا اور فارسی بھی بولتے تھے۔ بہت سے عربی الفاظ فارسی کے ذریعے ہندوستانی زبان میں داخل ہوئے جو کہ اس علاقے میں عربوں کے اثر و رسوخ کی وجہ سے پہلے فارسی زبان میں ضم ہو چکے تھے۔ فارسی کا لہجہ جو مغل حکمران اشرافیہ بولتا تھا اسے دری کے نام سے جانا جاتا ہے، جو جدید دور کے افغانستان میں بولی جانے والی فارسی کا لہجہ ہے۔ لہذا، ہندوستانی قدرتی طور پر ترقی یافتہ شمالی ہندوستان کی عام زبان ہے۔ یہ مضمون ہندوستانی الفاظ کے الگ الگ زمروں اور ہندوستانی زبان میں پائے جانے والے کچھ عام الفاظ سے آگاہ کرے گا۔

درجہ بندیترميم

حوالہ جاتترميم

  1. "A Guide to Hindi". BBC - Languages - Hindi. BBC. اخذ شدہ بتاریخ 11 دسمبر 2015. 
  2. Kumar، Nitin (28 June 2011). "Hindi & Its Origin". Hindi Language Blog. اخذ شدہ بتاریخ 11 دسمبر 2015.