کیمیاء میں، ایسی شے، جو دو یا دو سے زائد مختلف مواد کے ملنے سے (بغیر کسی کیمیائی تعامل کے ) بنتے ہوں، انہیں آمیزہ کہتے ہیں۔ جب دو یا دو سے زیادہ اشیاء (عناصر یا مرکبات ) آپس میں طبیعی طور پر ملیں تو آمیزہ بنتا ہے۔ آمیزہ کے اجزاء کے درمیان کوئی مستقل نسبت نہیں ہوتی۔ آمیزہ کے اجزاء کو طبیعی طریقوں سے علاحدہ کیا جا سکتا ہے۔ ایک آمیزہ میں مادہ کی قسمیں اپنی ذاتی شناخت کو برقرار رکھتیں ہیں۔ محلول (solutions) یا سیال گھول، معطلات (suspensions) اور کولائیڈ (colloids) آمیزہ کی ہی قسمیں ہیں۔

خشک پھلوں کا آمیزہ

ہر جزو یا مادہ اپنے کیمیائی خصوصیات کو برقرار رکھتا ہے تاکہ کیمیائی تعلقات یا دیگر کیمیائی تبدیلی کے بغیر، ایک ملاوٹ یا عناصر اور مرکبات کے اختلاط سے ایک غیر کیمیائی مرکب تیار ہو۔[1]

آمیزہ اور مرکب میں بہت اہم فرق ہوتا ہے۔ آمیزہ میں چیزیں مرکب کی طرح کیمیائی بند میں بندھی نہیں ہوتیں اور اُنہیں عموماً ایک دوسرے سے علاحدہ کیا جاسکتا ہے۔

آمیزوں کی دو اقسام ہیں :

ہم جنس آمیزہترميم

ٹھوس، مائع یا گیس پر مشتمل ایسا آمیزہ جو کسی دیے گئے نمونے میں اپنے اجزاء کا یکساں تناسب رکھتا ہو، ہم جنس آمیزہ (homogeneous mixture) کہلاتا ہے۔

کیمیا میں ایک آمیزہ ہم جنس آمیزہ کہلائے گا اگر اس کے حجم کو دو برابر حصوں میں تقسیم کر دیا جائے تو دونوں حصوں میں کیمیائی اشیاء کے مواد کی مقدار یکساں ہو گی۔ ہم جنس آمیزے کی ایک مثال [[[ہوا]] ہے۔

غیر ہم جنس آمیزہترميم

ٹھوس، مائع یا گیس پر مشتمل ایسا آمیزہ جو کسی دیے گئے نمونے میں اپنے اجزاء کا یکساں تناسب نہ رکھتا ہو، غیر ہم جنس آمیزہ (heterogeneous mixture) کہلاتا ہے۔

کیمیا میں ایک آمیزہ غیر ہم جنس آمیزہ کہلائے گا اگر اس کے حجم کو دو برابر حصوں میں تقسیم کر دیا جائے تو دونوں حصوں میں کیمیائی اشیاء کے مواد کی مقدار یکساں نہ ہو گی۔ غیر ہم جنس آمیزے کی ایک مثال پانی اور مٹی کا آمیزہ ہے۔

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔