الپائی ایک لسانی منطقہ اور تجویز کردہ لسانی خاندان ہے جس میں ترک، منگولیائی، تونگوزی لسانی خاندان اور ممکنا دور پر کوریائی اور جاپانی بھی شامل ہیں۔[2]:73ان زبانوں کے متکلمین تاحال جنوبی ایشیا کے35 دربے شمالی اور مشرقی یورپ کے کچھ حصوں میں بکھرے ہیں، جو طول‌البلد میں ترکی سے جاپان تک پھیلا ہے۔[3]اس گروہ کو نام ایشیا کے وسط میں واقع التائی پہاڑی سلسلے کی وجہ سے دیا گیا ہے۔ زیادہ تر تقابلی ماہر لسانیات نے اس مفروضے کو رد کردیا ہے اور باقی اس کے بہت تھوڑے حمایتی ہیں۔[2]

التائی
(متنازع، بڑی حد تک مسترد شدہ)
جغرافیائی
تقسیم:
ایشیا، ماسوائےاس کے جنوبی حصے اور مشرقی یورپ
لسانی درجہ بندی:کچھ لوگ اسے ایک بڑا لسانی خاندان تصور کرتے ہیں، لیکن عام طور یہ ایک لسانی‌منطقہ ہی مانا جاتا ہے۔
ذیلی تقسیمات:
آیزو 639-2 / 5:tut
گلوٹولاگ:نہیں کوئی نہیں[1]
{{{mapalt}}}

التائی خاندان سب سے پہلے 18وی صدی میں پیش کیا گیا۔1960s تک اسے وسیع پیمانے پر قبول کیا گیا تھا اور اب بھی بہت سے مخازن‌العلوم اور دستی‌کتابوں میں درج ہے۔[2]1950ء سے،توقع قرابتدار نہ ملنے کی بعد، کئی تقابلی ماہر لسانیات نے اس تجویز کو رد کردیا ہے، فرض شدہ صوتی تغیر بھی نہیں ملتی ہیں،ترک اور منگولیائی صدیوں تک مائل ہونے کی بجائے منتشر ہوتی رہی ہیں۔اس نظریے کے مخالفین تجویز کرتے ہیں کہ یہ مماثلتیں زیرغور گروہیں میں باہمی لسانی اثرات کی وجہ سے ہیں۔[4][5][6][7]

اصل مفروضہ صرف ترک، منگولیائی اور تونگوزی گروہوں کو متحدہ کرتا ہے۔بعد کی تجاویز میں کوریائی اور جاپانی کو "کبیرالتائی" میں شامل کرنا ہمیشہ سے متنازع رہا ہے۔(اصل تجویز کو پس نام کے ذریعے بعض اوقات " صغیرالتائی" کہتے ہیں۔)التائی کے بعض حامی کوریائی کی شمولیت کی حمایت کرتے ہیں۔[8]ایک مشترکہ آبائی قبلِ‌التائی‌زبان سرگی استاروستین اور دوسروں نے "کبیر" خاندان کے لیے عارضی طور پر تعمیرِنو کی گئی۔[9]

صغیر-التائی میں قریباً 66 زبانیں شاملیں ہیں[10]، جس تک کبیر-التائی کوریائی، جیجو، جاپانی اور ریوکیوئی زبانیں شامل کرسکتی ہیں، جس کل 75 (مشتمل ہے کہ کون سی زبان ہے اور کون سا لہجہ ہے)۔ ان نمبروں میں زبانوں کی ابتدائی حالتیں جیسا کہ وسطی منگولیائی، قدیم کوریائی اور قدیم جاپانی شامل نہیں کیں گئی ہیں۔

مزید دیکھیےترميم

بیرونی روابطترميم

حوالہ جاتترميم

  1. ہیمر اسٹورم، ہرالڈ؛ فورکل، رابرٹ؛ ہاسپلمتھ، مارٹن، ویکی نویس (2017ء). نہیں "التائی" تحقق من قيمة |chapterurl= (معاونت). گلوٹولاگ 3.0. یئنا، جرمنی: میکس پلانک انسٹی ٹیوٹ فار دی سائنس آف ہیومین ہسٹری. 
  2. ^ ا ب پ Georg، Stefan; Michalove، Peter A.; Ramer، Alexis Manaster; Sidwell، Paul J. (1999). "Telling general linguists about Altaic". Journal of Linguistics 35 (1): 65–98. doi:10.1017/S0022226798007312. 
  3. "Interactive Maps The Altaic Family from The Tower of Babel". Starling.rinet.ru. اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2013. 
  4. Lyle Campbell and Mauricio J. Mixco (2007): A Glossary of Historical Linguistics; University of Utah Press. Page 7: "While 'Altaic' is repeated in encyclopedias and handbooks most specialists in these languages no longer believe that the three traditional supposed Altaic groups, Turkic, Mongolian and Tungusic, are related."
  5. Johanna Nichols (1992) Linguistic Diversity in Space and Time. Chicago University Press. Page 4: "When cognates proved not to be valid, Altaic was abandoned and the received view now is that Turkic, Mongolian and Tungusic are unrelated."
  6. R. M. W. Dixon (1997): The Rise and Fall of Languages. Cambridge University Press. Page 32: "Careful examination indicates that the established families, Turkic, Mongolian and Tungusic, form a linguistic area (called Altaic)...Sufficient criteria have not been given that would justify talking of a genetic relationship here."
  7. Asya Pereltsvaig (2012) Languages of the World, An Introduction. Cambridge University Press. Pages 211–216: "[...T]his selection of features does not provide good evidence for common descent" [...] "we can observe convergence rather than divergence between Turkic and Mongolic languages—a pattern than is easily explainable by borrowing and diffusion rather than common descent"
  8. Roger Blench and Mallam Dendo (2008): "Stratification in the peopling of China: how far does the linguistic evidence match genetics and archaeology?" In Alicia Sanchez-Mazas et al., eds. Human migrations in continental East Asia and Taiwan: genetic, linguistic and archaeological evidence, chapter 4. Taylor & Francis.
  9. "Browse by Language Family". Ethnologue. اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2013.