انم زکریا کینیڈا میں مقیم پاکستانی مصنف ، زبانی تاریخ دان اور ماہر تعلیم ہیں۔ وہ انعام یافتہ کتاب دی فوٹ پرنٹ آف پارٹیشن: بیانیہ آف فور جنریشن آفپاکستانی اینڈ انڈینز (2015) کی مصنف ہیں۔[1][2][3][4]

انم زکریا
معلومات شخصیت
عملی زندگی
پیشہ مصنفہ،  تاریخ دان،  اکیڈمک  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

تعلیمترميم

انم نے میک گل یونیورسٹی سے بین الاقوامی ترقی میں ڈگری حاصل کی۔[5][6][7][8][9]

کیریئرترميم

انم کو ترقیاتی شعبے میں آٹھ سالہ کیریئر کا تجربہ ہے۔ 2010 سے ، وہ پاکستان میں ترقیاتی اور تحقیقی کاموں میں شامل ہیں۔[10][11][12]

وہ شہریوں کے محفوظ شدہ دستاویزات پاکستان میں ایک پروجیکٹ میں زبانی مؤرخ کی حیثیت سے کام کر چکی ہیں۔[13][14] اس نے تقسیمِ پاکستان سے انٹرویو لیے اور دنیا کے سب سے بڑے طلبہ کے تبادلے کے پروگرام کی رہنمائی کی ، جس کا تبادلہ تبادلہ تھا۔ اس پروگرام کا مقصد پاکستان اور ہندوستان کے طلبہ میں امن کا قیام تھا۔ انعم نے پاکستان کی ترقی کے لیے انجمن میں توانائی اور ترقیاتی شعبے میں بھی کام کیا ہے۔ وہ ہیڈ اسٹارٹ اسکول میں بھی ٹیچر رہی ہیں۔[15][16][17]

وہ ایک آزاد صحافی ہیں اور انہوں نے دی سکرول ، الجزیرہ ، دی نیویارک ٹائمز ، ڈان ، ہل ہل ٹائمز اور وائر کے لیے مضامین لکھی ہیں۔[18][19]

انعم نے جنوب ایشیائی تاریخ اور تنازعات پر کتابیں تصنیف کیں۔ تقسیم کے نقش: پاکستانیوں اور ہندوستانیوں کی چار نسلوں کے بیانیہ (2015) ان کی پہلی کتاب تھی۔ اس کے بعد سے ، اس نے بیٹنٹ دی گریٹ ڈیویڈ: پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں سفر (2018 اور 1971: بنگلہ دیش ، پاکستان اور ہندوستان سے ایک عوام کی تاریخ (2019) شائع کیا ہے۔انھوں نے اپنی تحقیق کا استعمال کیا ، جس میں انٹرویو اور میوزیم کے دورے بھی شامل تھے) کتاب.[20][21][22]

وہ کوڈ فار پاکستان میں کے پی گورنمنٹ انوویشن فیلوشپ پروگرام کی سربراہی کے فرائض ہیں۔ یہ پروگرام کے پی حکومت ، ورلڈ بینک اور کوڈ فار پاکستان کے مابین شراکت ہے۔[23][24][25][26]

ایوارڈترميم

انعم نے اپنی کتاب دی فوٹ پرنٹ آف پارٹیشن کے لیے 2017 کے ایل ایف جرمن پیس ایوارڈ جیتا۔[27][28][29]

کتبترميم

تقسیم کے نقش: پاکستانیوں اور ہندوستانیوں کی چار نسلوں کی روایات۔2015[30][31][32]

عظیم تقسیم کے مابین: پاکستان کے زیر انتظام کشمیر -2018 میں سفر[33][34][35]

1971: بنگلہ دیش ، پاکستان اور ہندوستان کی عوام کی تاریخ - 2019[36][37][38]

حوالہ جاتترميم

  1. "Book review: A journey of self-exploration". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 2015-08-02. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  2. Zakaria، Anam. "The story of a Kashmiri who crossed the Line of Control and returned to India 11 years later". Scroll.in (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  3. "Anam Zakaria | Al Jazeera News". www.aljazeera.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  4. "With her new book on 1971 Indo-Pak war, Anam Zakaria attempts to understand one of the most defining years in South Asian history - Living News , Firstpost". Firstpost. 2020-01-20. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  5. "History repeating itself? Overcoming the legacy of partition in Pakistan". Peace Insight (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  6. "Where Kashmir Stands: Edited excerpt from Anam Zakaria's new book 'Between the Great Divide'". www.dailyo.in. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  7. Sheikh، Saba. "A commendable national service". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  8. Shamsie، Muneeza (2019-12-01). "Pakistan". The Journal of Commonwealth Literature (بزبان انگریزی). 54 (4): 661–676. ISSN 0021-9894. doi:10.1177/0021989419877066. 
  9. "Expressions, passions about pushing the boundaries". The Nation (بزبان انگریزی). 2015-11-29. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. [مردہ ربط]
  10. Communications، South Asia Fast Track Sustainability (2018-06-28). "Q&A with Ms. Anam Zakaria, author of 'The Footprints of Partition' & development professional from Pakistan, on the criticality of oral-history narratives". South Asia Fast Track Sustainability Communications (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  11. Aslam، Irfan (2018-09-15). "Anam Zakaria's new book uncovers the human dimension of the Kashmir conflict". The Hindu (بزبان انگریزی). ISSN 0971-751X. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  12. "FIF 2017: Pran Nevile's 'sentimental journey' - Pakistan". Dunya News. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  13. "Headstart School - Overview, Competitors, and Employees". Apollo.io. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  14. "Of and about LLF - Views-&-Opinions - The Financial Daily Epaper 01-03-2019". The Financial Daily Epaper. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  15. "News stories for Anam Zakaria - DAWN.COM". www.dawn.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  16. Zakaria، Anam؛ Mughal، Jalaluddin؛ Abi-Habib، Maria (2020-05-15). "Women Face Dilemma in a War Zone: Risk the Blasts or Sexual Assault". The New York Times (بزبان انگریزی). ISSN 0362-4331. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  17. Zakaria، Anam. "Remembering the war of 1971 in East Pakistan". www.aljazeera.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  18. "1971 A People's History from Bangladesh, Pakistan and India by Anam Zakaria | Waterstones". www.waterstones.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  19. Zakaria، Anam. "What a West Pakistani in the former East Pakistan during the Liberation War of 1971 remembers". Scroll.in (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  20. "Anam Zakaria". www.goodreads.com. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  21. "Anam Zakaria". HarperCollins (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  22. "Who Are the Real Victims of India-Pakistan Tensions? It's Kashmiris". Asia Society (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  23. Caravan، The. "1971: A People's History from Bangladesh, Pakistan and India". The Caravan (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  24. Aslam، Irfan (2020-01-05). "NON-FICTION: SILENCED HISTORIES". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  25. "Anam Zakaria". Code for All Global Summit (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  26. "Two-day Khayaal Festival featuring prominent figures ends in Lahore". ARY NEWS (بزبان انگریزی). 2015-11-29. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  27. Malhotra، Aanchal. "Seventy-one years on, the Partition is inflicting fresh trauma – on those who document its horrors". Scroll.in (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  28. "The Footprints of Partition". SBS Your Language (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  29. "Book Excerpt: After 67 years, tracing The Footprints of Partition". Hindustan Times (بزبان انگریزی). 2015-06-27. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  30. Mirza، Farhad (2015-08-09). "REVIEW: The Footprints of Partition by Anam Zakaria". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  31. "Footprints of Partition: 'History has been linear'". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 2015-11-18. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  32. "The Footprints of Partition: Narratives of Four Generations of Pakistanis and Indians". HarperCollins (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  33. "Review: Between the Great Divide: A Journey into Pakistan-Administered Kashmir byAman Zakaria". Hindustan Times (بزبان انگریزی). 2018-10-26. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  34. "Book Review: Between The Great Divide: A Journey into Pakistan-administered Kashmir". South Asia Journal (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  35. Mirza، Farhad (2018-09-09). "NON-FICTION: OUR SLICE OF HEAVEN". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  36. "Anam Zakaria Publishes Third Book, "1971: A People's History from Bangladesh, Pakistan and India"". Asia Society (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  37. "1971: A People's History from Bangladesh, Pakistan and India | Literati | thenews.com.pk". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  38. "Narrating a People's History of 1971". Jamhoor (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020.