شہزادہ ایشر سنگھ بہادر (پیدائش: 31 جنوری 1804ء— وفات: 1805ء) مہاراجا رنجیت سنگھ کا بڑا بیٹا اور مہاراجا شیر سنگھ کا بڑا بھائی تھا۔مختلف تاریخی اختلافات کے باعث مشہور ہے کہ ایشر سنگھ مہاراجہ رنجیت سنگھ کی اولاد نہیں تھا مگر پھر بھی مہاراجہ رنجیت سنگھ کے کنبے میں اُس کو شہزادے کا درجہ دیا گیا تھا۔

ایشر سنگھ
معلومات شخصیت
پیدائش 31 جنوری 1804  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بٹالا  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 1805 (0–1 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قلعۂ لاہور،  لاہور  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد مہاراجہ رنجیت سنگھ  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والدہ مہتاب کور  ویکی ڈیٹا پر (P25) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

سوانحترميم

پیدائشترميم

ایشر سنگھ 31 جنوری 1804ء کو پیدا ہوا۔ایشر سنگھ کی ماں مہتاب کور تھی۔

وفاتترميم

1805ء میں ایشر سنگھ لاہور میں فوت ہو گیا۔

تاریخی تضاداتترميم

ایشر سنگھ سے متعلق سکھ تواریخ میں متعدد تضادات پائے جاتے ہیں کیونکہ مہاراجہ رنجیت سنگھ کی اکثر بیویوں سے اُن کی اولاد نہیں ہوئی جس کے باعث بہت سی مہارانیوں نے بچے گود لیے۔ ایشر سنگھ سے بھی یہی بیان منسوب کیا جاتا ہے کہ اُسے کسی سے حاصل کیا گیا تھا۔ اِس ضمن میں سر لیپل ہنری گریفن نے اپنی کتاب The Punjab Chiefs یعنی ’’رئیسانِ پنجاب‘‘ میں تفصیلی لکھا ہے کہ: مہارانی مہتاب کور نے 1807ء میں یہ بات ہوشیاری کی کی تھی کہ مہاراجہ سے اپنے شکم سے توام (جڑواں) بیٹوں کا پیدا ہونے کا اِظہار کیا تھا کیونکہ پہلے اُس نے ایک ہی بیٹا پیدا ہونا ظاہر کیا تھالیکن اُسے مطلب براری نہیں ہوئی یعنی قریب 1804ء کے اُس نے ایک لڑکا مہاراجہ کے روبرو پیش کیا جس کا نام ایشر سنگھ رکھا گیا۔ مگر پیدائش کے ڈیڑھ سال کے بعد یہ لڑکا مرگیا تھا۔یہ بات معلوم نہیں ہے کہ یہ لڑکا کس سے لیا گیا تھا، لیکن یہ بات تحقیق ہے کہ نہ اُس کی ماں مہتاب کور تھی اور نہ اُس کا باپ رنجیت سنگھ تھا۔[1]

کتابیاتترميم

  • لیپل ہنری گریفن: رئیسان پنجاب (The Punjab Chiefs)، ترجمہ از پنڈت موتی لعل کاٹھجو، مطبوعہ وکٹوریہ پریس، لاہور، برطانوی پنجاب، 1882ء۔

حوالہ جاتترميم

  1. لیپل ہنری گریفن: رئیسان پنجاب، ترجمہ از پنڈت موتی لعل کاٹھجو، صفحہ 5-6۔