تاریخ شیرہ شاہ سوری

تاریخ شیر شاہ سوری 1580ء میں ایک تاریخی کام تھا جو  عباس خان سروانی،[1] ایک وقیہ-نویس نے مغل شہنشاہ اکبر کی حکمرانی میں مرتب کیا۔  یہ کام  اکبر نے سونپا تھا تاکہ  شیر شاہ کی انتظامیہ بارے  تفصیلی دستاویزات فراہم کی جا سکیں -  اکبر کے والد ہمایوں کو شیر شاہ سوری نے شکست دی تھی (اردو: تاریخ شير شاہ سوری)[2]

عباس نے تاریخ شیر شاہ سوری اپنے مخصوص مقامی ثقافتی اسلوب اختیار کرکے لکھی  جو اس وقت کے مروجہ معیار فارسی سے یکسر مخلتف تھی۔

جدید تاریخترميم

اس تالیف کی وجہ سے تاریخ قرون وسطی بھارت کو بہت فائدہ ہوا۔  شکریہ  ان افراد کی کوششوں  کا  K. Qanungo, H. Haig ، اے رحیم او ر  صدیقی.[3]

حوالہ جاتترميم

  1. Abbas Sarwani, I.H. Siddiqui, The Encyclopaedia of Islam, Vol. XII, ed. P.J.Bearman, T. Bianquis, C.E.Bosworth, E. van Donzel and W.P.Heinrichs, (Brill, 2004), 1.
  2. Tarikh-i-Sher Shahi (1580). "Táríkh-i Sher Sháhí; or, Tuhfat-i Akbar Sháhí, of 'Abbás Khán Sarwání. CHAPTER I. Account of the reign of Sher Sháh Súr.". Sir H. M. Elliot. London: Packard Humanities Institute. صفحہ 77. 10 مارچ 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 04 ستمبر 2010. 
  3. Abbas Khān Sarwānī and the Tuḥfa-yi Akbar Shāhī. A Critical Study, Rahim Raza, East and West, 143.