"دہشت گردی" کے نسخوں کے درمیان فرق

126 بائٹ کا اضافہ ،  1 سال پہلے
=== عراق ===
 
[[عراق]] [[دہشت گردی]] کے شکار [[ممالک]] کی فہرست میں گزشتہ مسلسل تیرہ برس سے سر فہرست ہے۔ رواں برس کے گلوبل ٹیررازم انڈیکس کے مطابق گزشتہ برس عراق میں دہشت گردی کے تین ہزار کے قریب واقعات پیش آئے جن میں تقریباً 10 ہزار افراد ہلاک جبکہ 13 ہزار سے زائد زخمی ہوئے۔ دہشت گرد تنظیم داعش نے سب سے زیادہ دہشت گردانہ کارروائیاں کیں۔ عراق کا جی ٹی آئی اسکور دس رہا۔
 
=== افغانستان ===
 
فغانستان[[افغانستان]] اس فہرست میں دوسرے نمبر پر رہا جہاں قریب ساڑھے تیرہ سو دہشت گردانہ حملوں میں ساڑھے چار ہزار سے زائد [[انسان]] ہلاک جب کہ پانچ ہزار سے زائد زخمی ہوئے۔ افغانستان میں دہشت گردی کے باعث ہلاکتوں کی تعداد، اس سے گزشتہ برس کے مقابلے میں چودہ فیصد کم رہی۔ زیادہ تر حملے [[طالبان]] نے کیے جن میں پولیس،[[پولیس]]، عام شہریوں اور حکومتی دفاتر کو نشانہ بنایا گیا۔ افغانستان کا جی ٹی آئی اسکور 9.44 رہا۔
 
=== [[نائجیریا]] ===
 
دہشت گردی سے متاثرہ ممالک کی فہرست میں جی ٹی آئی اسکور 9.00 کے ساتھ نائجیریا تیسرے نمبر پر ہے۔ اس افریقی [[ملک]] میں 466 دہشت گردانہ حملوں میں اٹھارہ سو سے زائد افراد ہلاک اور ایک ہزار کے قریب زخمی ہوئے۔ سن 2014 میں ایسے حملوں میں ہلاکتوں کی تعداد ساڑھے سات ہزار سے زائد رہی تھی۔
 
=== شام ===
 
جی ٹی آئی انڈیکس کے مطابق [[خانہ جنگی]] کا شکار ملک [[شام]] دہشت گردی سے متاثرہ ممالک کی فہرست میں چوتھے نمبر پر ہے۔ شام میں دہشت گردانہ کارروائیوں میں زیادہ تر [[داعش]] اور النصرہ کے شدت پسند ملوث تھے۔ شام میں سن 2016 میں دہشت گردی کے 366 واقعات رونما ہوئے جن میں اکیس سو انسان ہلاک جب کہ ڈھائی ہزار سے زائد زخمی ہوئے۔ جی ٹی آئی انڈیکس میں شام کا اسکور 8.6 رہا۔
 
=== پاکستان ===
 
[[پاکستان]] اس فہرست میں پانچویں نمبر پر ہے جہاں گزشتہ برس 736 دہشت گردانہ واقعات میں ساڑھے نو سو افراد ہلاک اور سترہ سو سے زائد زخمی ہوئے۔ [[دہشت گردی]] کی زیادہ تر کارروائیاں تحریک طالبان پاکستان، داعش کی خراسان شاخ اور [[لشکر جھنگوی]] نے کیں۔ رپورٹ کے مطابق پاکستان میں دہشت گردی کے باعث ہلاکتوں کی تعداد سن 2013 کے مقابلے میں 59 فیصد کم رہی جس کی ایک اہم وجہ [[دہشت گردی]] کے خلاف ضرب عضب نامی فوجی آپریشن بنا۔
 
=== یمن ===
 
[[یمن]] میں متحارب گروہوں اور سعودی قیادت میں حوثیوں کے خلاف جاری [[جنگ]] کے علاوہ اس [[ملک]] کو دہشت گردانہ حملوں کا بھی سامنا ہے۔ مجموعی طور پر دہشت گردی کے 366 واقعات میں قریب ساڑھے چھ سو افراد ہلاک ہوئے۔ دہشت گردی کے ان واقعات میں حوثی شدت پسندوں کے علاوہ [[القاعدہ]] کی ایک شاخ کے دہشت گرد ملوث تھے۔
 
=== صومالیہ ===
 
دہشت گردی سے متاثرہ ممالک کی فہرست میں [[صومالیہ]] ساتویں نمبر پر رہا جہاں الشباب [[تنظیم]] سے تعلق رکھنے والے دہشت گردوں نے نوے فیصد سے زائد حملوں کی ذمہ داری قبول کی۔ الشباب کے شدت پسندوں نے سب سے زیادہ ہلاکت خیز حملوں میں عام شہریوں کو نشانہ بنایا۔ جی ٹی آئی انڈیکس میں شام کا اسکور 7.6 رہا۔
 
=== بھارت ===
 
جنوب ایشیائی ملک [[بھارت]] بھی اس فہرست میں آٹھویں نمبر پر ہے جہاں دہشت گردی کے نو سو سے زائد واقعات میں 340 افراد ہلاک جب کہ چھ سو سے زائد زخمی ہوئے۔ یہ تعداد سن 2015 کے مقابلے میں اٹھارہ فیصد زیادہ ہے۔ انڈیکس کے مطابق بھارت کے مشرقی حصے میں ہونے والی زیادہ تر دہشت گردانہ کارروائیاں ماؤ نواز باغیوں نے کیں۔ 2016ء میں [[لشکر طیبہ]] کے دہشت گردانہ حملوں میں پانچ [[بھارتی]] شہری ہلاک ہوئے۔
 
=== ترکی ===
 
دہشت گردی سے متاثرہ [[ممالک]] کی فہرست میں [[ترکی]] پہلی مرتبہ پہلے دس ممالک کی فہرست میں شامل کیا گیا۔ ترکی میں 364 دہشت گردانہ حملوں میں ساڑھے چھ سو سے زائد افراد ہلاک اور قریب تئیس سو زخمی ہوئے۔ [[دہشت گردی]] کے زیادہ تر حملوں کی ذمہ داری پی کے کے اور ٹی اے کے نامی کرد شدت پسند تنظیموں نے قبول کی جب کہ [[داعش]] بھی ترک سرزمین پر دہشت گردانہ حملے کیے۔
 
=== لیبیا ===
 
[[لیبیا]] میں معمر قذافی کے اقتدار کے خاتمے کے بعد یہ [[ملک]] تیزی سے دہشت گردی کی لپیٹ میں آیا۔ گلوبل ٹیررازم انڈیکس کے مطابق گزشتہ برس لیبیا میں 333 دہشت گردانہ حملوں میں پونے چار سو افراد ہلاک ہوئے۔ لیبیا میں بھی دہشت گردی کی زیادہ تر کارروائیاں دہشت گرد تنظیم ’اسلامک اسٹیٹ‘ سے منسلک مختلف گروہوں نے کیں۔ جی ٹی آئی انڈیکس میں لیبیا کا اسکور 7.2 رہا۔
 
== دنیا میں دہشت گردی کے واقعات ==
720

ترامیم