"دہشت گردی" کے نسخوں کے درمیان فرق

3,643 بائٹ کا اضافہ ،  1 سال پہلے
م (خودکار: درستی املا ← کر دیا، \1 رہے، ہو گئے؛ تزئینی تبدیلیاں)
* 28 نومبر 2008 کو جمعہ کے روز بنوں کے علاقے ڈومیل کے علاقے پشاور بنوں روڈ پر ایک خودکش بمبار نے اپنے دھماکا خیز مواد سے بھری کوچ کو پولیس کی گاڑی سے ٹکرایا جس سے چار پولیس سمیت 9 افراد ہلاک اور 16 زخمی ہو گئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2008</ref>
 
* یکم دسمبر 2008 کو پیر کے روز مینگورہ سے تقریباتقریباْ seven سات کلومیٹر شمال مشرق میں سنگاٹا سیکیورٹی پوسٹ کے قریب خودکش بمبار نے بارود سے بھری ٹرک کو اڑا دیا جب دس افراد ہلاک اور 49 زخمی ہو گئے۔<ref>https://www.dawn.com/news/332692/10-killed-in-mingora-suicide-attack</ref>
 
* 5 دسمبر 2008 کو شمال مغربی پاکستان کے پر ہجوم بازاروں میں دو بم پھٹنے سے کم از کم 27 افراد ہلاک اور درجنوں زخمی ہو گئے۔ پشاور کے قلب میں ہوئے ایک دھماکے میں 21 افراد ہلاک اور 5 فٹ گہرائی میں (1.5 میٹر) گڑھا پیدا ہوا۔ اورکزئی کے قبائلی ضلع اورکزئی کے ایک بازار میں کار بم دھماکے میں 6 افراد ہلاک ہو گئے۔ کسی نے بھی فوری طور پر دونوں حملوں کی ذمہ داری قبول نہیں کی۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2008</ref>
* 28 دسمبر 2008 کو اتوار کے روز ضلع بونیر کے ایک سرکاری اسکول میں ایک پولنگ اسٹیشن کے قریب کار بم حملے میں کم از کم 36 افراد ہلاک ہو گئے۔ اس دھماکے میں 16 افراد زخمی ہوئے۔یہ دھماکا صمنی الیکشن میں پولنگ اسٹیشن پر ہوا۔<ref>https://www.dawn.com/news/336337/suicide-blast-rocks-buner-on-polling-day-36-killed</ref>
 
* 4 جنوری 2009 کو ڈیرہ اسماعیل خان میں ملتان روڈ پر واقع ایک امام بارگاہ کے قریب گورنمنٹ پولی ٹیکنک کالج کے سامنے خودکش حملہ آور نے خود کو دھماکے سے اڑادیا جس سے کم از کم سات افراد ہلاک ہو گئے ، جن میں تین پولیس اہلکار اور دو صحافی تھے۔ تقریباتقریباْ 25 افراد زخمی ہوئے ، جن میں زیادہ تر پولیس اہلکار تھے۔<ref>https://www.dawn.com/news/337449/suicide-bomber-kills-seven-in-d-i-khan</ref>
 
* 10 جنوری 2009 کو ہنگو میں حریف فرقوں کے مابین زبردست فائرنگ کا تبادلہ ہفتہ کے روز بھی جاری رہا جس میں خونریزی روکنے کے لیے ابتدائی جنگ بندی کی کوشش کی گئی تھی۔ سرکاری ذرائع نے بتایا ہے کہ دو روزہ لڑائی میں اہل سنت والجماعت کے مقامی باب کے ڈپٹی چیئرمین مفتی رستم سمیت 26 افراد ہلاک اور متعدد زخمی ہو گئے ہیں۔<ref>https://www.dawn.com/news/338245/fierce-battles-in-hangu-leave-26-dead</ref>
* 3 مارچ 2009 کو قذافی اسٹیڈیم کے قریب ، لاہور میں اسٹیڈیم کے قریب ، دو بسوں میں سری لنکن کرکٹرز اور عہدیداروں کو لے جانے والے قافلے پر 12 بندوق برداروں نے فائرنگ کردی۔ کرکٹرز دوسرے ٹیسٹ میچ کے تیسرے دن پاکستانی کرکٹ ٹیم کے خلاف کھیلنے جا رہے تھے۔ سری لنکن کرکٹ ٹیم کے چھ ارکان زخمی ہوئے۔ چھ پاکستانی پولیس اہلکار اور دو عام شہری ہلاک ہو گئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/2009_attack_on_the_Sri_Lanka_national_cricket_team</ref>
 
* 7 مارچ 20072009 کو پشاور میں بم سے بھری گاڑی پھٹ گئی جب پولیس نے لاش کو کھینچنے کی کوشش کی تو آٹھ افراد ہلاک اور پانچ زخمی ہو گئے۔ جاں بحق ہونے والوں میں سات پولیس اہلکار تھے جبکہ دوسرا راہگیر تھا۔ ایک اور واقعے میں ، درہ آدم خیل قصبے میں سڑک کنارے نصب بم دھماکے میں تین شہری ہلاک اور چار فوجی زخمی ہو گئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 11 مارچ 2009 کو خیبر پختونخوا کے سینئر وزیر اور عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما بشیر بلور قاتلانہ حملے میں بال بال بچ گئے ، جس کے نتیجے میں بدھ کے روز پشاور کی نمک منڈی میں دو مشتبہ خودکش حملہ آوروں سمیت چھ افراد ہلاک ہوگئے۔ فائرنگ ، دستی بم حملے اور خودکش دھماکے میں ایک نوجوان لڑکی سمیت چار افراد جن کی گذشتہ اتوار کو شادی ہوئی تھی ، شدید زخمی ہوگئے تھے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 16 مارچ 2009 کو پیرواڈھائی کے مقام پر راولپنڈی کے مصروف ترین بس اسٹینڈ کے قریب پیر کے روز خودکش حملہ آور نے خود کو دھماکے سے اڑالیا جس کے نتیجے میں کم از کم 14 افراد ہلاک اور 17 زخمی ہوگئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 18 مارچ 2009 کو منگل کی رات ضلع لوئر دیر کے ضلع چکدرہ میں مالاکنڈ یونیورسٹی کے داخلی دروازے پر 100 سے زائد نامعلوم مسلح افراد نے پولیس کی گاڑی پر حملہ کر کے 3 پولیس اہلکاروں سمیت 5 افراد کو ہلاک اور چار کو زخمی کردیا۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 23 مارچ 2009 کو پیر کو اسلام آباد میں پولیس اسپیشل برانچ کے دفتر کے باہر خودکش بم دھماکے میں ایک سیکیورٹی اہلکار ہلاک اور تین زخمی ہوگئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 26 مارچ 2009 کو جمعرات کے روز جنوبی وزیرستان کے جندولہ کے قریب تحریک طالبان پاکستان کے سربراہ بیت اللہ محسود کے مخالفین کو نشانہ بنانے والے ایک ریستوراں میں خودکش حملے میں کم از کم 10 افراد ہلاک اور 25 زخمی ہوگئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 27 مارچ 2009 کو خیبر ایجنسی کے علاقہ جمرود میں پشاور طورخم شاہراہ پر جمعہ کے اجتماع کے دوران ایک مسجد پر بظاہر خودکش حملے میں 76 افراد ہلاک اور 100 سے زائد زخمی ہوگئے۔ تاہم ، انٹیلیجنس ذرائع نے مرنے والوں کی تعداد 86 بتائی لیکن پولیٹیکل انتظامیہ کے اہلکار ہلاکتوں کی تعداد 50 بتائی۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 30 مارچ 2009 کو پیر کو بھارت کی سرحد کے قریب لاہور میں واقع مناواں پولیس ٹریننگ اسکول پر پیر کے روز 10 دہشت گردوں نے بندوقوں اور دستی بموں سے حملہ کیا جس میں کم از کم 8 پولیس بھرتی اہلکار اور ایک شہری ہلاک ہوگئے۔ سیکیورٹی فورسز نے آٹھ گھنٹے سے زیادہ جاری رہنے والے آپریشن میں اسکول پر دوبارہ کنٹرول حاصل کرلیا۔ تقریباً 93 کیڈٹ اور شہری زخمی بھی ہوئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/2009_Lahore_police_academy_attacks</ref>
 
 
 
720

ترامیم