دائرہ عام

دائرۂ عام (Public Domain) میں ایسے کام شامل ہیں جن کی فکری ملکیت کے حقوق کی میعاد ختم ہو چکی ہو [1] یا ناقابل تطبیق ہو۔ مثال کے طور پر ولیم شیکسپیئر اور لڈوگ بیتھوون کا کام، زیادہ تر ابتدائی خاموش فلمیں، نیوٹونین طبیعیات کے صیغے (فارمولے) وغیرہ۔

غیر رسمی طور پر، دائرۂ عام کام وہ ہیں جو عوامی طور پر دستیاب ہیں۔ جبکہ باضابطہ تعریف کے مطابق ایسے کام ہیں جو نجی ملکیت کے لیے دستیاب نہیں ہیں یا عوامی استعمال کے لیے دستیاب ہیں۔ حقوق مختلف ممالک کی بنیاد پر ہیں، ایک کام کسی ملک میں دائرۂ عام میں جبکہ دوسرے حقوق سے مشروط ہو سکتا ہے۔

تعریفترميم

دائرہ عام کی حدود کا تعین حقوق نسخہ اور فکری ملکیت سے مربوط ہے۔ یہ ایسے کام ہیں جو اب حق اشاعت کی مدت میں نہیں یا کبھی بھی حق اشاعت کے قانون سے محفوظ نہیں تھے۔[2]

جیمز بویل (James Boyle) نے اصطلاح دائرہ عام کے مشترکہ استعمال کو واضح کیا اور عوامی املاک کو دائرہ عام کے مترادف قرار دیا ہے اور حقوق نسخہ کو نجی ملکیت کرار دیا۔[3]

حوالہ جاتترميم

  1. Boyle، James (2008). The Public Domain: Enclosing the Commons of the Mind. CSPD. صفحہ 38. ISBN 978-0-300-13740-8. مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ.  Check date values in: |archive-date= (معاونت)
  2. Ronan، Deazley (2006). Rethinking copyright: history, theory, language. Edward Elgar Publishing. صفحہ 104. ISBN 978-1-84542-282-0. مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ.  Check date values in: |archive-date= (معاونت)
  3. Ronan، Deazley (2006). Rethinking copyright: history, theory, language. Edward Elgar Publishing. صفحہ 105. ISBN 978-1-84542-282-0. مورخہ 6 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ.  Check date values in: |archive-date= (معاونت)