سکوپ کا مواخذہ ایک مشہور امریکی عدالتی مواخذہ تھا (جو مونکی ٹرائل بھی کہلایا ) اس میں امریکی ریاست ٹنیسی کے ہائی اس کو ل استاد جان ٹی سکوپ کو چارلس ڈارون کے نظریہ ارتقا پڑھانے پر سزا دی گئی جس کی وجہ ملکی قانون کی خلاف ورزی اور اس نظریہ کا بائبل انسانی تخلیق سے متعلق تعلیمات کا خلاف ہونا تھا۔ مارچ 1925 میں اس ریاست کے قانون دانوں نے یہ فیصلہ کیا تھا کہ بائبل سے متصادم کوئی بھی قانون پڑھانے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ اس مواخذے پر ساری دنیا کی توجہ سامنے آئی اور لبرل اور قدامت پرستوں میں اس حوالے سے کافی بحث ہوئی۔ جج نے آئین کی اس شق کی اصلیت کو تجربات سے جانچے جانے کو دیکھے جانے کی بجائے اس بات پر فیصلہ دیا کہ آیا استاد نے یہ نظریہ پڑھایا یا نہیں چونکہ انھوں نے ایسا کیا تھا لہذا انھیں اس وجہ سے 100 ڈالر جرمانہ کیا گیا۔ سکوپ نے پھر اعلیٰ عدالت میں جاکر زائد جرمانے کی شکایت کی جس پر اس عدالت نے قانون کو تو برقرار رکھا لیکن سکوپ کو دی گئی سزا کو بھی ناجائز قرار دیا۔1967 میں اس قانون کو ختم کر دیا گیا۔

عدالتٹیسنی کی فوجداری قوانین کی عدالت
مقدمے کا مکمل نامریاست ٹینسی بمقابلہ۔ جون تھامس سکوپ
تاریخ فیصلہجولائی 21, 1925
حوالہ جاتکوئی نہیں
کیس ہسٹری
نتیجہسکوپ کا مواخذہ
عدالتی اراکین
سماعت کرنے والے ججJohn T. Raulston

مزید دیکھیے ترمیم

حوالہ جات ترمیم

کتابیات ترمیم

  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
    • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • Shapiro, Adam R. Trying Biology: The Scopes Trial, Textbooks, and the Antievolution Movement in American Schools (2013) excerpt and text search
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • لوا خطا ماڈیول:Citation/CS1/Utilities میں 38 سطر پر: bad argument #1 to 'ipairs' (table expected, got nil)۔
  • Grabiner, J.V. & Miller, P.D.، Effects of the Scopes Trial, Science، New Series, Vol. 185, No. 4154 (ستمبر 6, 1974)، pp. 832–837
  • George Gaylord Simpson, Evolution and Education, Science 07 Feb 1975: Vol. 187, Issue 4175, pp. 389
  • Ronald P. Ladouceur, Ella Thea Smith and the Lost History of American High School Biology Textbooks, Journal of the History of Biology، Vol. 41, No. 3, 2008, pp. 435–471

مزید پڑھیے ترمیم

  • Cline, Austin. "Atheism: Scopes Monkey Trial". About.com. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 21 جولا‎ئی 2017. 
  • Ginger, Ray۔ Six Days or Forever?: Tennessee v. John Thomas Scopes. London: اوکسفرڈ یونیورسٹی پریس، 1974 [1958]۔
  • Haldeman-Julius, Marcet۔ "Impressions of the Scopes Trial." Haldeman-Julius Monthly، vol. 2.4 (Sept. 1925)، pp. 323–347 (excerpt – included in "Clarence Darrow's Two Great Trials (1927)۔ Haldeman-Julius was an eye-witness and a friend of Darrow’s.
  • Larson, Edward John۔ Summer for the Gods: the Scopes Trial and America's Continuing Debate Over Science and Religion۔ New York: Basic Books, 1997.
  • McKay, Casey Scott (2013). "Tactics, Strategies, & Battles – Oh My!: Perseverance of the Perpetual Problem Pertaining to Preaching to Public School Pupils & Why it Persists". University of Massachusetts Law Review. 8 (2): 442–464.  Article 3.
  • Mencken, H.L.۔ A Religious Orgy in Tennessee: A Reporter's Account of the Scopes Monkey Trial۔ Hoboken: Melville House, 2006.
  • "Monkey Trial". American Experience |. PBS. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 21 جولا‎ئی 2017. 
  • Scopes, John Thomas and William Jennings Bryan. The World's Most Famous Court Trial: Tennessee Evolution Case: A Complete Stenographic Report of the Famous Court Test. Cincinnati: National Book Co.، ca. 1925.
  • Shapiro, Adam R. Trying Biology: The Scopes Trial, Textbooks, and the Antievolution Movement in American Schools۔ Chicago: UCP، 2013.
  • Shapiro, Adam R. “‘Scopes Wasn't the First’: Nebraska's 1924 Anti-Evolution Trial.” Nebraska History، vol. 94 (Fall 2013)، pp. 110–119.
  • The Church Case between Prof. Johannes du Plessis and the Dutch Reformed Church in Cape Town, South Africa, on 27 فروری 1930–1931, regarding the Biblical chapter of Genesis and evolution, was a similar event. The Church lost its case. [1]

بیرونی روابط ترمیم

Original materials from and news coverage of the trial: