ایک سیکولر ریاست خیارفکری سے متعلق ایک نظریہ ہے، جس کے تحت کوئی ریاست مذہب کے معاملات میں سرکاری طور پر غیر جانبدار رہتی ہے یا رہنے کا اظہارکرتی ہے اوروہ مذببیت اور دین بیزریت میں سے کسی کی بھی حمایت نہین کرتی ہے۔ [1] ایک سیکولر ریاست اپنے تمام شہریوں کے ساتھ مذہب سے قطع نظر یکساں سلوک کرنے کا دعویٰ کرتی ہے اور یہ دعویٰ کرتی ہے وہ کہ کسی شہری کے ساتھ ان کے مذہبی عقائد، وابستگی یا دیگر پروفائلز کے حامل افراد سے کسی ایک کی کمی کی بنیاد پر ترجیحی سلوک سے گریز کرتی ہے۔ 

سیکولر ریاستوں کا کوئی ریاستی مذہب /ترجیحی مذہب (مثلاً، ایک قائم شدہ مذہب) یا اس کے مساوی نہیں ہوتا ہے، حالانکہ ایک قائم شدہ ریاستی مذہب کی عدم موجودگی کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ریاست ہر لحاظ سے مکمل طور پر سیکولر یا مساوات پر مبنی ہے۔ مثال کے طور پر، کچھ ریاستیں جو خود کو سیکولر ہونے کا دعوکرتی ہیں ، ان کے قومی ترانے اور جھنڈوں میں مذہبی حوالہ جات ہیں ، یا ایسے قوانین ہیں جو ایک مذہب یا دوسرے مذہب کو فائدہ پہنچاتے ہیں۔

اصل وعملترميم

خود بیان کردہ سیکولر ریاستوں کی فہرست بلحاظ براعظمترميم

 
نیلے رنگ میں سیکولر ریاستوں کا نقشہ۔ ریاستی مذاہب والی ریاستوں کو سرخ رنگ میں دکھایا گیا ہے اور مبہم ریاستوں کو بھوری رنگ میں دکھایا گیا ہے۔

مبہم ریاستیں۔ترميم

مزید دیکھیںترميم

حوالہ جاتترميم

  1. Madeley، John T. S.؛ Enyedi، Zsolt (2003). Church and State in Contemporary Europe: The Chimera of Neutrality. Psychology Press. صفحہ 14. ISBN 978-0-7146-5394-5.