محمد بن بشار بن عثمان بن داود بن كيسان أبو بكر عبدي بصري المعروف (بُندار)، (167 هـ - 252 هـ) آپ محدث ، فقیہ اور ثقہ حدیث نبوی کے راوی ہیں۔ائمہ صحاح ستہ بخاری ، مسلم ، ترمذی ، ابوداؤد ، نسائی اور ابن ماجہ نے ان سے روایات لی ہیں۔آپ نے دو سو باون ہجری میں وفات پائی.[3]

محمد بن بشار
معلومات شخصیت
پیدائشی نام محمد بن بشار بن عثمان بن داود بن كيسان
کنیت أبو بكر
لقب بندار[1]
عملی زندگی
طبقہ الثالثة عشر
نسب العبدي البصري
وجۂ شہرت: روى له أصحاب الكتب الستة
ابن حجر کی رائے ثقة حافظ
ذہبی کی رائے ثقة حافظ
تعداد روایات روى عنه البخاري 205 حديثًا، ومسلم 460 حديثًا[2]
استاد بہز بن اسد   ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ محدث   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

سیرت

ترمیم

نسب: محمد بن بشار بن عثمان بن داؤد بن کیسان عبدی بصری ہیں، ابو بکر بندار کے نام سے مشہور ہیں، حدیث کے ایک معتبر حافظ ہیں، انھوں نے اپنی زندگی کے بیشتر حصے میں اپنی والدہ کے احترام میں بصرہ نہیں چھوڑا اور جب ان کا انتقال ہوا تو آپ نے سفر کیا اور آپ نے اللہ تعالیٰ سے دعا مانگی: "اے اللہ"میں باہر جانا چاہتا تھا اور میری والدہ نے مجھے ایسا کرنے سے روکا تو میں نے ان کا حکم مانا، اس لیے مجھے اس میں برکت عطا فرما"، جب وہ اٹھارہ سال کے تھے تو وہ روایت کرتے تھے، بصرہ کے لوگ ان کے پاس آتے تھے اور ان کے پاس بہت سی احادیث تھیں، امام ابوداؤد کہتے ہیں: میں نے بندار کی سند سے تقریباً پچاس ہزار حدیثیں لکھیں۔ ان کی احادیث کو حفظ کیا اور اپنے حفظ سے ان کی تلاوت کی، وہ باکمال تھے اور ان میں وہ کچھ پایا جو کسی اور کے پاس نہیں تھا، امام بخاری نے ان سے 205 احادیث اپنی صحیح میں اور امام مسلم نے اپنی صحیح میں 460 احادیث نقل کی ہیں۔[4]

شیوخ

ترمیم

یزید بن زریع، معتمر بن سلیمان، مرحوم بن عبد العزیز العطار، عبد العزیز بن عبد الصمد العمی، غندر، یحییٰ بن سعید، عبد الوہاب ثقفی، کی سند سے روایت ہے۔ عمر بن علی، طفاوی، بہز بن اسد، عبد الرحمٰن بن مہدی اور معاذ بن معاذ، معاذ بن ہشام، یزید بن ہارون، وکیع بن جراح، حجاج بن منہال، عفان، ابو الولید اور روح بن عبادہ اور حرمی بن عمارہ، ابن ابی عدی، یحییٰ بن سعید القطان، ابوداؤد طیالسی، یزید بن ہارون، جعفر بن عون، سالم بن نوح، حماد بن مسعدہ، سہل بن یوسف، عبد الاعلی بن عبد الاعلی، عمر بن یونس یمامی اور محمد بن عرعرہ، ابو عامر العقدی، ابو علی الحنفی، عثمان بن عمر بن فارس، محمد بن بکر برسانی، امیہ بن خالد، ابو عاصم، عبد الملک بن الصباح، عبد الصمد بن عبد الوارث ۔ [3]

تلامذہ

ترمیم

ان سے روایت ہے: ائمہ صحاح ستہ: محمد بن اسماعیل بخاری، مسلم بن حجاج، ابو عیسیٰ محمد ترمذی، امام ابوداؤد، محمد بن ماجہ ، امام نسائی، ابو زرعہ رازی، ابو حاتم رازی، ابراہیم حربی، بقی بن مخلد اور عبد اللہ بن احمد بن حنبل، ابو عباس السراج، امام ابن خزیمہ، زکریا الساجی، قاسم بن زکریا مطرز، یحییٰ بن صاعد ، محمد بن مسیب ارغیانی، بغوی، ابوبکر بن ابی داؤد، محمد بن اسماعیل بصلانی، حسن بن علی طوسی، عبد اللہ بن ناجیہ اور ابوبکر مروزی، زکریا سجزی اور ابو خلیفہ۔

جراح اور تعدیل

ترمیم

احمد بن عبد اللہ العجلی نے کہا: "وہ ثقہ ہے اور اس کے پاس بہت سی حدیثیں ہیں۔" ابو حاتم رازی نے کہا: "صدوق ہے۔" ابن خزیمہ نے کہا: "میں نے بندار کو یہ کہتے ہوئے سنا: میں کسی شیخ کے ساتھ میں بیٹھا کر نہیں اٹھا تھا۔ جب تک کہ انھوں نے جو کچھ بیان کیا ہے میں نے سب کچھ یاد نہ کر لیا۔ اور ابن خزیمہ نے اپنی کتاب توحید میں کہا: "علم اور معلومات میں اپنے زمانے کے امام محمد بن بشار نے ہم سے بیان کیا۔" امام نسائی نے کہا: "بندار صالح۔ لا باس بہ " اس کے ساتھ کوئی مسئلہ نہیں ہے۔" امام دارقطنی نے کہا: "الحافظ ، ثابت ہے۔"امام مسلم نے کہا "ثقہ ہے۔حافظ ابن حجر عسقلانی نے کہا ثقہ ہے ۔ حافظ ذہبی نے کہا ثقہ ہے۔امام بخاری ، ترمذی نے کہا ثقہ ہے۔امام بخاری نے ان سے 205 احادیث اپنی صحیح میں اور امام مسلم نے اپنی صحیح میں 460 احادیث نقل کی ہیں ،[5]

وفات

ترمیم

آپ نے 252ھ میں وفات پائی ۔

حوالہ جات

ترمیم
  1. بيانات الراوي - بندار آرکائیو شدہ 2016-04-03 بذریعہ وے بیک مشین
  2. ميزان الاعتدال 3: 30 والجمع بين رجال الصحيحين 2: 435 وتاريخ بغداد 2: 101 - 105 وتهذيب التهذيب 9: 70 والجرح والتعديل: القسم الثاني من الجزء الثالث 214
  3. ^ ا ب "الكتب - سير أعلام النبلاء - الطبقة العاشرة - أبو كريب - الجزء رقم 12، صـ 144: 149، طبعة مؤسسة الرسالة"۔ موقع إسلام ويب۔ 27 نوفمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  4. ميزان الاعتدال 3: 30 والجمع بين رجال الصحيحين 2: 435 وتاريخ بغداد 2: 101 - 105 وتهذيب التهذيب 9: 70 والجرح والتعديل: القسم الثاني من الجزء الثالث 214
  5. الأعلام للزركلي، ترجمة محمد بن بشار، جـ 6، صـ 52، الموسوعة الشاملة آرکائیو شدہ 2017-03-07 بذریعہ وے بیک مشین