منیر سرحدی (انگریزی: Munir Sarhadi) (ولادت: 1931ء - 23 مئی 1980ء) پاکستانی لوک گلوکار تھے۔ بطور موسیقار، منیر سرحدی نے متعدد ممالک میں پاکستان کی نمائندگی کی۔[1][2] منیر، 1978ء میں تمغائے حسن کارکردگیکے وصول کنندہ بنے۔ تمغائے حسن کارکردگی ایک سول ایوارڈ ہے جو حکومت پاکستان کے ذریعہ دیا جاتا ہے ۔[3][4][5]

منیر سرحدی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1931  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پشاور  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 23 مئی 1980 (48–49 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ابتدائی زندگی اور کیریئرترميم

منیر سرحدی 1931ء میں خیبر پختونخوا کے پشاور میں پیدا ہوئے تھے۔ وہ بنیادی طور پر سریندا بجاتے تھے اس کے باوجود اس کے والدین نے ان کو تاروں والے ساز بجانے کی خواہش ظاہر کی تھی۔ ان کے والد نے انہیں سریندا کے علاوہ تار کے بجانے کی اجازت دینے کی کوشش میں روایتی موسیقی کا آلہ سکھانے سے انکار کر دیا۔[1][6]

ایوارڈ اور پہچانترميم

وفاتترميم

منیر سرہدی سریندا موسیقی کے آلے کا شوق رکھتے تھے۔ وہ اپنے پیشے سے زیادہ کما نہیں سکے۔ ان کی آمدنی کا واحد ذریعہ ایک نشریاتی نیٹ ورک ریڈیو پاکستان میں ان کا کام تھا۔ منیر سرہدی کو جو تنخواہ دی جارہی تھی، وہ ان کی ادویات کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ناکافی تھی اور 23 مئی 1980ء کو، وہ غربت میں پشاور میں فوت کر گئے۔[6][1]

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب پ ت Aziz، Shaikh (20 January 2002). "SPOT LIGHT: Munir Sarhadi – the sarinda virtuoso". Dawn (newspaper). 03 نومبر 2007 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 10 جون 2020. 
  2. اورکزئی، رفعت اللہ (June 1, 2017). "کیا پاکستان میں سارندہ خاموش ہورہا ہے؟". BBC News اردو. 
  3. Sheikh، M. A. (2012-04-26). Who's who: Music in Pakistan. ISBN 9781469191591. 
  4. "Centre urged to recognise work of KP artistes". The Nation (Pakistani newspaper). 19 March 2012. اخذ شدہ بتاریخ 10 جون 2020. 
  5. 50 Years of Lahore Arts Council, Alhamra: An Overview. Sang-e-Meel Publications. March 4, 2000. ISBN 9789693510836 – Google Books سے. 
  6. ^ ا ب "Cultural heritage: Last patron of sarinda struggles to keep strings resonating". The Express Tribune (newspaper). 8 February 2013. اخذ شدہ بتاریخ 10 جون 2020.