کتا

ایک پالتو اور جنگلی جانور
اضغط هنا للاطلاع على كيفية قراءة التصنيف
Domestic dog
دور: 0.033–0 ما
Pleistocene – Recent
Collage of Nine Dogs.jpg
Nine different کتوں کی نسلیں.

صورت حال
! colspan = 2 | حیثیت تحفظ
Domesticated
جماعت بندی
مملکت: جانور
جماعت: ممالیہia
طبقہ: گوشت خور جانور
خاندان: Canidae
جنس: Canis
نوع: C. lupus
ذیلی نوع: C. l. familiaris
Trinomial name
Canis lupus familiaris[1]
  ویکی ڈیٹا پر (P935) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

کتا بھیڑیئے کی نسل سے تعلق رکھنے والا پالتو جانور ہے۔ پالتو کتا انسان کا سب سے قدیم ساتھی ہے۔ کتا اس کی نسل کے نر کو کہتے ہیں جبکہ مادہ کو کتیا کہا جاتا ہے۔

کتا پالتو بننے کے فوراً بعد ہی دنیا بھر کی ثقافتوں کا اہم جز بن گیا ہے۔ ابتدائی تہذیبوں میں اسے انتہائی اہم مقام حاصل تھا۔ بیرنگ سٹریٹ کے راستے نقل مکانی کتوں کے بغیر ممکن نہیں مانی جاتی۔ اس کے علاوہ کتے انسانوں کے لیے بے شمار خدمات سر انجام دیتے ہیں جن میں شکار، گلہ بانی، حفاظت، پولیس اور فوج کی معاونت، بطور ساتھی اور حال ہی میں معذور افراد کے لیے خصوصی معاون وغیرہ شامل ہیں۔ انہی فوائد کی بدولت اسے انسان کا سب سے بہترین دوست گردانا جاتا ہے۔ دنیا بھر میں چالیس کروڑ سے زیادہ کتے موجود ہیں۔

دیسی کتیا اپنے بچوں کو دودھ پلاتے ھوئے
کتے کا ڈھانچه

مختلف نسلیںترميم

دنیا بھر میں اس وقت کتوں کی 400 نسلیں موجود ہیں۔ ان میں سے زیادہ تر جدید ہیں جن کو جنیات اورمخلوط طریقوں کے ذریعے پیدا کیا گیا ہے۔ ان کی مختلف نسلوں کو خالص نسل،دوغلی نسل، مخلوط نسل اور فطری نسل جیسے زمروں میں تقسیم کیا گیا ہے۔


ریبیز بیماری کا باعثترميم

انسانوں میں ریبیز کے زیادہ تر معاملے کتوں کے کاٹنے سے ہوتے ہیں۔ ان ممالک میں جہاں کتوں میں عام طور پر ریبیز ہوتے ہیں، ریبیز کے 99 فیصد سے زائد معاملے کتوں کے کاٹنے سے ہوتے ہیں۔ یہ بیماری انتہائی تیز دماغی انتشار پیدا کرتی ہے۔ اس کی ابتدائی علامات میں بخار اور اکسپوزر کے مقام پر سنسناہٹ شامل ہو سکتی ہے ان علامات کے بعد مندرجہ ذیل ایک یا کئی علامات ہوتی ہیں: پرتشدد سرگرمی، بے قابو اشتعال،آب تَرسیدگی (Hydrophobia) یا پانی کا خوف، جسم کے اعضاء کو ہلانے کی ناقابلیت، ذہنی انتشار اور ہوش کھونا۔ علامات ظاہر ہونے کے بعد، ریبیز کا نتیجہ تقریبا ہمیشہ موت ہے۔ مرض کی منتقلی اور علامات کے آغاز کے درمیان کی مدت عام طور پر ایک سے تین ماہ ہوتی ہے۔ تاہم، یہ وقت کی مدت ایک ہفتے کم سے لے کر ایک سال سے زیادہ تک میں بدل سکتی ہے۔ اس وقت کی مدت اس فاصلے پر منحصر ہے جسے وائرس کے لیے مرکزی اعصابی نظام تک پہنچنے کے لیے طے کرنا ضروری ہے۔