بھورے بونے (brown dwarf) سے مراد ایسے اجسام فلکی ہیں جو سورج سے چھوٹے اور ہلکے ہونے کی وجہ سے اپنی ہائیڈروجن (hydrogen) کے ائنتلاف (fusion) کے قابل نہیں ہوتے۔ اس وجہ سے ان میں سے اتنی توانائی خارج نہیں ہوتی کہ یہ اجسام فلکی کسی ستارے کی طرح روشن ہو سکیں۔

اس تصویر میں دو بھورے بونوں Gliese 229B اور Teide 1 کا موازنہ مشتری اور سورج سے کیا گیا ہے۔

سورج کے گرد گردش کرنے والا سب سے بڑا سیارہ مشتری ہے۔ خیال کیا جاتا ہے کہ اگر مشتری کی کمیت سو گنا زیادہ ہوتی تو مشتری خود بھی ایک ستارہ بن جاتا کیونکہ اتنی کمیت پر ہائیڈروجن میں ائنتلاف کا عمل شروع ہو جاتا ہے جس سے شمصر (helium) بنتی ہے اور بے پناہ توانائی بھی خارج ہوتی ہے جو ستارے کو گرم کر کے روشن کر دیتی ہے۔ مشتری کا وزن ہماری دنیا کے مقابلے میں 317.8 گنا زیادہ ہے جبکہ مشتری کے مقابلے میں سورج 1047 گنا زیادہ کمیت رکھتا ہے۔
بھورے بونے سیاروں کی سطح کا درجہ حرارت لگ بھگ 2500 ڈگری سینٹی گریڈ تک ہوتا ہے۔ ہمارے نظام شمسی کے سورج کی سطح کا درجہ حرارت 6000 ڈگری سینٹی گریڈ ہے۔

بھورے بونوں کے بارے میں اندازہ لگایا جاتا ہے کہ ان کی کمیت مشتری کے مقابلے میں 75 سے 80 گنا زیادہ ہوتی ہے۔ اگر ایسے کسی جسم کی کمیت مشتری سے صرف 13 گنا زیادہ ہو تو ہائیڈروجن میں تو ائنتلاف ممکن نہیں ہو گا لیکن دومصر (deuterium) میں گاہے بگاہے ائنتلاف ہوتا رہے گا جس سے تھوڑی بہت توانائی نکلتی رہے گی۔ اگر کمیت مشتری سے 65 گنا زیادہ ہو تو سنگصر (lithium) میں بھی ائنتلاف ممکن ہو جاتا ہے لیکن سنگصر اتنی فراوانی نہیں رکھتا۔

نظام شمسی کے بڑے سیاروں میں مشتری، زحل، یورینس اور نیپچون شامل ہیں۔ یورینس کے علاوہ باقی تینوں سیارے سورج سے جتنی توانائی حاصل کرتے ہیں اس سے زیادہ خارج کرتے ہیں۔ اس سے واضح ہوتا ہے کہ یا تو یہ سیارے اب بھی سکڑ رہے ہیں یا ان میں کبھی کبھار ائنتلاف ہوتا رہتا ہے مگر چین ری ایکشن ممکن نہیں۔ زحل اور مشتری کی جسامت میں تھوڑا سا فرق ہے حالانکہ زحل کی کمیت مشتری کی ایک تہائی ہے۔ اسی طرح بھورے بونے چاہے زیادہ کمیت کے ہوں یا کم کمیت کے، ان کی جسامت مشتری کی جسامت سے بہت زیادہ بڑی نہیں ہوتی یعنی مشتری کے نصف قطر سے صرف 10–15% تک زیادہ ہوتی ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ بڑے بھورے بونوں کی جسامت سفید بونے ستاروں کی طرح electron-degeneracy دباؤ سے تضبیط (control) ہوتی ہے۔

بھورے سیاروں میں عام طور پر سنگصر پایا جاتا ہے جو روشنی کے طیف میں 670.8 قزمہ پیما (nanometers) پر سنگصر لائن بناتا ہے۔ اس کے برعکس ستارے اپنا سنگصر بڑی تیزی سے استعمال کرتے ہیں اس لیے یہ صرف نئے ستاروں میں ہی پایا جاتا ہے اور جوان اور بڈھے ستاروں میں یہ نہیں پایا جاتا۔ ہمارے نظام شمسی کے سورج میں بھی سنگصر نہ ہونے کے برابر ہے۔ چونکہ سنگصر صرف ستارے کے مرکز میں ہی ائنتلاف میں استعمال ہو سکتا ہے اس لیے ستارے کی سطح کا سنگصر خرچ نہیں ہوتا۔ لیکن اگر ستارے کے شاکلہ (plasma) میں مرکز کی جانب بہاو موجود ہو تو سطح کا سنگصر بھی کم ہوتا چلا جاتا ہے۔ سمجھا جاتا ہے کہ جن ستاروں کے گرد سیارے ہوتے ہیں ان ستاروں میں سنگصر کی شدید کمی ہو جاتی ہے کیونکہ سیاروں کی کشش کی وجہ سے ستاروں کے اندر شاکلے (plasma) کا بہاو بڑھ جاتا ہے۔[1]


مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

حوالہ جاتترميم