سید معین الدین ہادی نقشبند

سید السادات سید معین الدین ہادی نقشبند الحسنی والحسینی (وفات 5 مئی 1674)، جو "حضرت نقشبند صاحب" کے نام سے مشہور ہیں، بخارا کے ایک صوفی بزرگ تھے اور اپنے والد حضرت ایشان کے توسط سے پیغمبر اسلام کی براہ راست اولاد تھے۔ ان کے والد خواجہ بہاؤالدین نقشبند کی ساتویں نسل میں اولاد اور وارث تھے۔ معین الدین نقشبند نے اپنے والد کے بعد سلسلۂ عالیہ نقشبندیہ کی قیادت کی۔

حضرت سید معین الدین ہادی نقشبند
خواجه خواجگان جهان, قطب الاقطاب, مغل شہزادہ اور دومین حضرت ایشان
Ziyarat Naqshband Sahab Shrine.jpg
زیارت معین الدین ہادی نقشبند صاحب
جانشینسید میر جان شاہ صاحب
والدحضرت ایشاں
پیدائشبخارا
وفات1674
سری نگر, کشمیر
تدفینخواجه بزار, سری نگر, کشمیر
مذہبنقشبندی سنی اسلام (سپریم لیڈر)
پیشہفقیہ

نسبترميم

حضرت معین الدین ہادی نقشبند ایک سید تھے، جو اپنی بیٹی فاطمہ الزہرا اور ان کے داماد اور چچا زاد بھائی علی ابن ابو طالب کے ذریعے پیغمبر اسلام محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی براہ راست اولاد تھے۔[1]

آبائی نسلترميم

اس وقت ان کے مختلف آبائی سید نسب مشہور ہیں۔ ایک سطر سے وہ اپنے بیٹے ابراہیم المرتضیٰ اور معروف صوفی استاد خواجہ سید میر علاؤالدین عطار کے ذریعے ساتویں امام موسیٰ کاظم کی براہ راست اولاد ہیں۔ سید علاؤالدین عطار حضرت بہاؤالدین نقشبند کے جانشین اور داماد تھے۔ لہٰذا، حضرت ایشان بھی حضرت بہاؤالدین نقشبند کی اولاد سے ہیں جو خود گیارہویں امام حسن عسکری علیہ السلام کی اولاد میں سے تھے، اپنے بیٹے سید علی اکبر کے ذریعے۔ حضرت ایشان صاحب کا صوفی بزرگ فریدالدین عطار سے خاندانی تعلق بھی جانا جاتا ہے۔شاہ نقشبند کی والدہ معین الدین ہادی سید عبدالقادر گیلانی کی اولاد میں سے ہیں۔[2][3]

تعلیمترميم

خواجہ معین الدین ہادی نقشبندی نے ابتدائی تعلیم اپنے والد حضرت ایشان سے حاصل کی اور پھر ممتاز حنفی عالم خواجہ عبدالحق محدث دہلوی کی رہنمائی میں علوم حدیث کی تعلیم حاصل کی۔ ایک ممتاز طالب علم کی حیثیت سے انہوں نے خواجہ دہلوی سے حدیث اور فقہ میں اعجاز حاصل کیا اور اپنے والد کے ساتھ لاہور اور کشمیر میں نقشبندیہ کو فروغ دیا۔ وہ شاہ جہاں کی درخواست پر اپنے والد کے ساتھ لاہور آیا اور اپنے والد کے انتقال کے بعد کشمیر واپس آکر وہاں اس کی نمائندگی کی۔ اپنے زمانے کے قطب کے طور پر پنجاب اور کشمیر کے اسلامی علماء ان کی فقہ پر منحصر تھے۔ اس لیے اس نے بہت سی تصانیف لکھی ہیں جن میں سے ایک ان کے فتاویٰ نقشبندیہ کا ایک ضابطہ تھا جس سے ان کے زمانے کے علماء نے فائدہ اٹھایا۔[4]

کام کرتا ہے۔ترميم

خواجہ معین الدین ہادی نقشبند نے بہت سی کتابیں لکھی ہیں:[5]

  • فتویٰ نقشبندیہ
  • کنزالعمال
  • میرات القلوب
  • سیرِ خیر البشر
  • مراۃ الطیبہ
  • رسالہ احوال الخواجہ خواند محمود
  • مقام، مشارق الانوار
  • رسالہ دار ردی ملیحہ
  • تفسیر مصحف مجید
  • رسالہ ردی۔

روحانی درجہترميم

حضرت معین الدین ہادی نقشبند اپنے وقت کے اعلیٰ ترین ولی اللہ (ولی) قطب تھے۔ قطب کو پوری کائنات کے کائناتی رہنما اور نبی محمد کے صالح جانشین کے طور پر جانا جاتا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ حضرت ایشان نے فرمایا کہ ان کی اولاد میں ان کا ایک بیٹا آئے گا جو ان کے روحانی نسب اور میراث کو زندہ کرے گا اور جو ان کے بعد قطب کی حیثیت سے ان کی جگہ لے گا۔ نقشبندیہ کے منتظر جانشین سید السادات حضرت سید میر جان تھے۔[6]

جانشینترميم

خواجہ معین الدین ہادی نقشبند کی جانشینی ان کے پوتے نظام الدین نقشبندی نے کی کیونکہ ان کے تین بیٹے خواجہ جانی، خواجہ ضیاء اور خواجہ شرف الدین محمد ان سے پہلے وفات پا چکے تھے۔ چونکہ خواجہ شرف الدین محمد کے بیٹے خواجہ نظام الدین نقشبندی ابھی چھوٹے ہی تھے کہ خواجہ معین الدین نقشبند صاحب کی اہلیہ گل بیگم نے نقشبندیہ کی ذمہ داری سنبھالی۔ خواجہ معین الدین نقشبند کا سلسلہ بعد میں ان کی اولاد خواجہ کمال الدین نقشبندی کی شہادت کے بعد ختم ہو گیا، لیکن ان کی اولاد سید السادت حضرت سید میر جان نقشبندی نے 19ویں صدی کے وسط میں اسے زندہ کیا۔[7]

ادبترميم

  • متوازی معاشروں اور مستقبل میں جارگ نیمیئر: متوازی معاشرے - جیسا کہ میڈیا اور ادب میں جھلکتا ہے
  • اذکار خواندان حضرت ایشان (حضرت عیسان خاندان کا نسب نامہ) (مصنف و تحقیق کار: محمد یاسین قصفاری نقشبندی کمپنی: تولیمت نقشبندی انتظامیہ لاہور)
  • ڈیوڈ ولیم ڈمل: ایک بھولی ہوئی نعمت: خواجہ خواند محمود نقشبندی وسطی ایشیا اور مغل ہندوستان میں۔ ایڈ: ڈیوک یونیورسٹی۔ مائیکرو فلم یونیورسٹی، ڈرہم، شمالی کیرولائنا، USA 1994۔

بیرونی روابطترميم

  • www.sayidraphaeldakik.com
  • www.hazrat-ishaan.com
  • www.imamalaskari.com
  • سوبھ نور، 19 جنوری 2019، 92 نیوز ایچ ڈی پروگرام؛ یوٹیوب پر ریکارڈ اور شائع کیا گیا https://www.youtube.com/watch?v=g1RvArLDLck

حوالہ جاتترميم

  1. تذکرے خوانانے حضرت ایشان (حضرت ایشان کے خاندان کا نسب نامہ) (مصنف و تحقیق کار: محمد یاسین قصواری نقشبندی کمپنی: ادارہ تعلیم نقشبندیہ لاہور)، ص۔ 57
  2. فراگوٹن گریس میں ڈیمرل، صفحہ۔ 20، ایل۔ 13-16
  3. تذکرے خوانانے حضرت ایشان (حضرت ایشان کے خاندان کا نسب نامہ) (مصنف و تحقیق کار: محمد یاسین قصواری نقشبندی کمپنی: ادارہ تعلیم نقشبندیہ لاہور)، ص۔ 57
  4. "Hazrat Khwaja Moinud'din Naqshbandi (radiallahu anhu):The Ziyarat Of Khwaja Naqshbandh at Khwaja Bazar Srinagar"
  5. فراگوٹن گریس، ڈیوڈ ڈیمریل، صفحہ۔ 1-9
  6. تذکرے خوانانے حضرت ایشان (حضرت ایشان کے خاندان کا نسب نامہ) (مصنف و تحقیق کار: محمد یاسین قصواری نقشبندی کمپنی: ادارہ تعلیم نقشبندیہ لاہور)، ص۔ 281 ff.
  7. تذکرے خوانانے حضرت ایشان (حضرت ایشان کے خاندان کا نسب نامہ) (مصنف و تحقیق کار: محمد یاسین قصواری نقشبندی کمپنی: ادارہ تعلیم نقشبندیہ لاہور)، ص۔ 281 ff.