مرکزی مینیو کھولیں
One of the most famous depictions of Heracles, originally by Lysippos (marble, Roman copy called Hercules Farnese, 216 CE)
یونانی دیومالا میں ہرقل اپولو کے تصور مردانگی کا ہم معنی ہے۔

مردانگی (انگریزی: Masculinity)، جسے مردانہ وجاہت یا مردانہ پن بھی کہا جاتا ہے، ان صفات، برتاؤ اور رولوں کا مجموعہ ہے کو لڑکوں اور آدمیوں سے متعلق ہیں۔ ایک سماجی نظام کے طور پر یہ ممتاز ہے اس تعریف سے جو حیاتیات کی رو سے جنس سے متعلق ہے۔[1][2] مردانگی کے معیارات ثقافتوں اور تاریخی ادوار میں مختلف رہے ہیں۔[3] یہ بھی بعض اقوال سے ثابت ہے کہ مرد و زن دونوں مردانہ صفات اور برتاؤ کا مظاہرہ کر سکتے ہیں۔[4]

مغربی دنیا میں مردانگی سے جڑی صفات میں طاقت، ہمت، آزادی، قیادت، اور بار آوری شامل ہیں۔[5][6][7][8]

تاریخ میں عورتوں کا مردانگی سے متصف ہوناترميم

تاریخ میں کئی عورتیں ہمت و طاقت کا مظاہرہ کرتی ہوئی دیکھی گئی ہیں۔ اس وجہ سے ان کے کردار کو مردانہ کہا گیا ہے۔ ایسی ہی ایک شخصیت رانی لکشمی بائی تھی، جنہوں نے 1857ء میں ہندوستان کی پہلی جنگ آزادی میں لڑکر اپنا لوہا منوایا۔ ان کے میں ہندی میں کہا گیا ہے کہ خوب لڑی مردانی، ارے جھانسی واری رانی (ہندی: खूब लड़ी मरदानी, अरे झांसी वारी रानी[9]) تھی۔


مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. Ferrante, Joan (2008), "Gender and sexualities: with emphasis on gender ideals", in Joan Ferrante, ویکی نویس. (2010-01-01)۔ Sociology: a global perspective (اشاعت 7th۔)۔ Belmont, California: Thomson Wadsworth۔ صفحات 269&ndash, 272۔ آئی ایس بی این 9780840032041۔
  2. "Gender, Women and Health: What do we mean by "sex" and "gender"?"۔ who.int۔ عالمی ادارہ صحت۔ مورخہ 8 ستمبر 2014 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 ستمبر 2014۔
  3. Michael S. Kimmel؛ Amy Aronson, ویکی نویس. (2004)۔ Men and Masculinities: A Social, Cultural, and Historical Encyclopedia, Volume 1۔ Santa Barbara, Calif.: ABC-CLIO۔ صفحہ xxiii۔ آئی ایس بی این 978-1-57-607774-0۔
  4. Halberstam, Judith (2004)۔ "'Female masculinity'"۔ بہ Michael S. Kimmel؛ Amy Aronson۔ Men and Masculinities: A Social, Cultural, and Historical Encyclopedia, Volume 1۔ Santa Barbara, Calif.: ABC-CLIO۔ صفحات 294–5۔ آئی ایس بی این 978-1-57-607774-0۔
  5. Michael S. Kimmel (1994)۔ "Masculinity as Homophobia: Fear, Shame, and Silence in the Construction of Gender Identity"۔ Theorizing Masculinities۔ Thousand Oaks: SAGE Publications, Inc.۔ صفحات 119–141۔
  6. Mary Vetterling-Braggin۔ "Introduction"۔ "Femininity", "masculinity", and "androgyny": a modern philosophical discussion۔ Totowa, N.J: Littlefield, Adams۔ صفحہ 6۔ آئی ایس بی این 9780822603993۔ the [personality] theorist might classify a person as "masculine" if the person thought that person to have any or all of the following P-traits [personality traits] - GROUP Y TRAITS: strength of will, ambition, courage, independence, assertiveness, aggressiveness, ...
  7. Linda L. Carli۔ "Assertiveness"۔ بہ Judith Worell۔ Encyclopedia of women and gender: sex similarities and differences and the impact of society on gender, Volume 1۔ San Diego, California: Academic Press۔ صفحات 157–168۔ آئی ایس بی این 9780122272462۔
  8. Thomas, R. Murray (2001), "Feminist perspectives", in R. Murray Thomas (ویکی نویس.)۔ Recent theories of human development۔ Thousand Oaks, California: Sage۔ صفحہ 248۔ آئی ایس بی این 9780761922476۔ Gender feminists also consider traditional feminine traits (gentleness, modesty, humility, sacrifice, supportiveness, empathy, compassion, tenderness, nurturance, intuitiveness, sensitivity, unselfishness) morally superior to the traditional masculine traits (courage, strong will, ambition, independence, assertiveness, initiative, rationality and emotional control).
  9. खूब लड़ी मरदानी, अरे झांसी वारी रानी