چوہان خود کو ایک گجر اور راجپوت اگنی ونشی (آگ سے پیدا) قوم بتاتے ہیں۔ چوہان قوم بھارت اور پاکستان میں پائی جاتی ہے۔ تاریخ میں انکو پرتھوی راج چوہان کی سلطنت کی وجہ سے خاص طور پہ یاد کیا جاتا ہے۔ تاریخی، ثقافتی اور تعداد کے لحاظ سے انکو بھارت اور پاکستان میں (لیکن خاص طور پہ بھارتی ریاست راجستھان میں) بہت اہمیت دی جاتی ہے۔

تاریخترميم

ہندو کتب ویدوں (Vedas) میں چوہانوں کا خاص ذکر موجود ہے۔ کہا جاتا ہے کہ یہ اگنی ونشی ہیں یعنی کہ انکو آگ سے منسوب کیا گیا تھا۔ انکو پیدا اس لیے کیا گیا تاکہ یہ اسوروں یعنی بُری بلاؤں سے لڑ کر انکو ختم کر دیں۔ ان کی ابتدا اس آگ سے ہوئی تھی جو کوہ ابو سے نکلی تھی۔ چوہانوں کے علاوہ دیگر خاندانوں کو جنمیں سوریہ " چندرا " یادوونشی میں گجرارا پرتی ہار، پرمار اورسولنکی شامل ہیں۔ ان کے بارے میں بھی معلوم نہیں ہو سکا کہ کب ان کی حکومت وجود میں آئیں کیوں قدیم لوگ ہیں۔ چوہان ٹھیٹھیاں ا چنیوٹ' پنڈی گھیب ،گُجرات، راول پنڈی، جہلم کی ڈھوکوں ، ہریپورہزارہ اور چکوال میں موجود ہیں۔[1]

پرتھوی راج چوہانترميم

تفصیل کے لیے دیکھیے پرتھوی راج چوہان۔

پرتھوی راج چوہان اجمیر کا راجا تھا ۔جس کو رائے پتھورہ کے نام سے بھی جانا جاتا ہے

۔ انھوں نے محمد غوری کے خلاف تین جنگیں لڑیں، جن میں سے دو جنگوں میں غوری کو شکست ہوئی اور پریتھوی راج نے اسے معاف کر کے ازادی دے دی ۔۔ یا تیسری جنگ جو کے ترین کی جنگ (The Battle of Tarain) میں شکست کے بعد قیدی بن گ۔۔۔اوراس طرح گجروں کے اخری خاندان چوہان سلطنت کا خاتمہ ہوا۔۔یو غوریوں کے بعد مغلوں نے سلطنت سنھبالی ۔۔پرتھوی کی اولاد اور ان کے بھائی ہریا راج چوہان کی اولاد میں چوہان 38 الگ الگ گوت میں تقسیم ہو گئے ۔۔۔جن میں مشہور گوتیں کالس کلشان ۔کلسیہ ۔کٹیثر۔وغیرہ شامل ہیں۔۔۔ پرتھوی راج کا دور سلطنت باتفصیل ایک کتاب پرتھوی راج چوراس میں لکھی گئی، جس میں ان کی زندگی اور ان کے مزاج پہ شاہ بروئی نے نظر ڈالی ہے۔

حوالہ جاتترميم

  1. [https://www.express.pk/story/111494/ پوٹھوہار: جہاں زندگی نے اپنا اوّلیں گیت گایا - ایکسپریس اردو