آلۂ مسدس (انگریزی: Sextant) ایک 60° درجہ دار قوس پر مشتمل آلہ جو دور کے دو نقطوں کا زاویائی فاصلہ ناپنے کے کام آتا ہے۔ بحری فلکیات میں اسے اجسام سماوی کی افق سے زاویہ ارتفاع کی پیمائش کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ اس آلہ کے اصولوں پر سب سے پہلے 1730ء میں عمل کیا گیا۔ یہ کا جان ہیڈلی (1682–1744) اور تھامس گاڈفرے (1704–1749) نے کیا۔ یہ بات بعد میں انیسویں صدی میں آئزک نیوٹن (1643–1727) کی غیر مطبوعہ تحریروں سے پتا چلی۔

آلۂ مسدس کا استعمال برائے پیمائش سورج کی افق سے زاویہ ارتفاع

اس آلے کو تاجکستان کے ایک مسلم سائنسدان أبو محمود خجندي یا أبو محمود حميد بن الخضر الخجندي نے ایجاد کیا تھا۔فلکیات اور ریاضیات کے ماہر أبو محمود خجندي کی پیدائش تقریباً 940 سنہ عیسوی اور وفات تقریباً 1000 سنہ عیسوی میں ہوئی ۔[1]

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. https://ar.wikipedia.org/wiki/%D8%A3%D8%A8%D9%88_%D9%85%D8%AD%D9%85%D9%88%D8%AF_%D8%A7%D9%84%D8%AE%D8%AC%D9%86%D8%AF%D9%8A.  مفقود أو فارغ |title= (معاونت)
  یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔