سر آئزک نیوٹن (انگریزی: Sir Isaac Newton) (4 جنوری 1643ء31 مارچ 1727ء) ایک انگریز طبیعیات دان، ریاضی دان، ماہر فلکیات، فلسفی اور کیمیادان تھے جن کا شمار تاریخ کی انتہائی اہم شخصیات میں ہوتا ہے۔[19]1687ء میں چھپنے والی ان کی کتاب قدرتی فلسفہ کے حسابی اصول (لاطینی: Philosophiæ Naturalis Principia Mathematica) سائنس کی تاریخ کی اہم ترین کتاب مانی جاتی ہے جس میں کلاسیکی میکینکس کے اصولوں کی بنیاد رکھی گئی۔ اسی کتاب میں نیوٹن نے کشش ثقل کا قانون اور اپنے تین قوانین حرکت بتائے۔ یہ قوانین اگلے تین سو سال تک طبیعیات کی بنیاد بنے رہے۔ نیوٹن نے ثابت کیا کہ زمین پر موجود اجسام اور سیارے اور ستارے ایک ہی قوانین کے تحت حرکت کرتے ہیں۔ اس نے اپنے قوانین حرکت اور کیپلر کے قوانین کے درمیان مماثلت ثابت کر کے کائنات میں زمین کی مرکزیت کے اعتقاد کو مکمل طور پر ختم کر دیا اور سائنسی انقلاب کو آگے بڑھانے میں مدد دی۔ اور آئزک نیوٹن نے مسیحیت کے مشهور ٹرینیٹی کے نظریے کو رد کر دیا -

سر[1]  ویکی ڈیٹا پر (P511) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آئزک نیوٹن
(انگریزی میں: Isaac Newton)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
GodfreyKneller-IsaacNewton-1689.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 25 دسمبر 1642[2][3]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وولزتھورپ مانور[4]،  وولزتھورپ-بائی-کولسٹرورتھ[2][1]  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 20 مارچ 1727 (85 سال)[5][6]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کنزنگٹن[7]  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن ویسٹمنسٹر ایبی[8]  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رہائش انگلستان[1]  ویکی ڈیٹا پر (P551) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of England.svg مملکت انگلستان[9][1]
Flag of Great Britain (1707–1800).svg مملکت برطانیہ عظمی[10][1]  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نسل انگریز [1]  ویکی ڈیٹا پر (P172) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رکن رائل سوسائٹی[2][11]  ویکی ڈیٹا پر (P463) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مناصب
صدر رائل سوسائٹی (12 )   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
1703  – 1727 
عملی زندگی
مادر علمی ٹرینٹی کالج، کیمبرج (جون 1661–اگست 1665)[2][12][1]
ٹرینٹی کالج، کیمبرج (اپریل 1667–1668)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تعلیمی اسناد بی اے،ماسٹر آف آرٹس  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ریاضی دان[1]،  طبیعیات دان[13][1]،  فلسفی[14][15][16]،  ماہر فلکیات[17][1]،  الٰہیات دان[16]،  موجد[1]،  کیمیا گر،  سیاست دان[1]،  جامع العلوم،  استاد جامعہ،  غیر فکشن مصنف،  نظری طبیعیات[1]،  کیمیادان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان لاطینی زبان،  انگریزی[18][1]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل طبیعیات[16]،  میکانیات[16]،  ریاضی[16]،  فلکیات[16]  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت جامعہ کیمبرج  ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کارہائے نمایاں فلکس آین کے طریقے  ویکی ڈیٹا پر (P800) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مؤثر رینے دیکارت[1]  ویکی ڈیٹا پر (P737) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
Knight Bachelor ribbon.svg نائٹ بیچلر  (1705)[2][1]  ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دستخط
Isaac Newton signature ws.svg
 

نیوٹن اور مالیاتترميم

نیوٹن 1700ء سے 1727ء تک شاہی ٹکسال (Royal Mint) کا سربراہ رہا تھا جو مملیکت کے لیے سکے بنایا کرتی تھی۔ اس وقت کاغذی کرنسی بھی گردش میں آ چکی تھی۔ نیوٹن اسٹاک مارکیٹ میں بری طرح ناکام رہا اور اپنی دولت کا بڑا حصہ شیئر میں سرمائیہ کاری کر کے گنوا بیٹھا۔

“I can calculate the movement of stars, but not the madness of men.”

فروری 1720 میں نیوٹن نے South Sea کے کچھ شِئیر خریدے اور صرف مہینے دیڑھ مہینے بعد جب ان کی قیمت دوگنی ہو گئیں تو خوشی خوشی بیچ کر منافع حاصل کر لیا۔ مگر نیوٹن نے دیکھا کہ جولائی تک ان کی قیمت تین گنی ہو چکی ہے اور اس کے جن دوستوں نے شیئر نہیں بیچے تھے وہ اب بڑے امیر ہو گئے ہیں۔ اس پر نیوٹن نے بڑی مقدار میں مزید شیئر خریدے جن کی قیمتیں تیزی سے اوپر جا رہی تھیں۔ لیکن اگست کے مہینے سے قیمتیں تیزی سے گریں اور نومبر تک نیوٹن زبردست نقصان اٹھا چکا تھا۔[20]

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ https://www.biography.com/people/isaac-newton-9422656 — اخذ شدہ بتاریخ: 19 جولا‎ئی 2018
  2. ^ ا ب پ ت ٹ مصنف: ارتھر بری — عنوان : A Short History of Astronomy — ناشر: جون مرے
  3. بی این ایف - آئی ڈی: https://catalogue.bnf.fr/ark:/12148/cb119176085 — اخذ شدہ بتاریخ: 26 جون 2020 — مصنف: Bibliothèque nationale de France — عنوان : اوپن ڈیٹا پلیٹ فارم — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  4. http://www.nationaltrustcollections.org.uk/place/woolsthorpe-manor — اخذ شدہ بتاریخ: 22 فروری 2020
  5. http://www.bbc.co.uk/timelines/zwwgcdm
  6. http://westminster-abbey.org/our-history/people/sir-isaac-newton
  7. مدیر: الیکزینڈر پروکورو — عنوان : Большая советская энциклопедия — اشاعت سوم — باب: Ньютон Исаак — ناشر: Great Russian Entsiklopedia, JSC
  8. https://www.francetvinfo.fr/monde/royaume-uni/stephen-hawking-sera-enterre-au-cote-de-newton-et-darwin-a-l-abbaye-de-westminster_2666542.html
  9. http://www.humanistictexts.org/newton.htm
  10. http://db.stevealbum.com/php/chap_auc.php?site=2&lang=1&sale=4&chapter=17&page=3
  11. https://collections.royalsociety.org/DServe.exe?dsqIni=Dserve.ini&dsqApp=Archive&dsqCmd=Show.tcl&dsqDb=Persons&dsqPos=0&dsqSearch=((text)%3D%27NA8414%27) — اخذ شدہ بتاریخ: 7 مئی 2020
  12. Cambridge Alumni Database ID: http://venn.lib.cam.ac.uk/cgi-bin/search-2018.pl?sur=&suro=w&fir=&firo=c&cit=&cito=c&c=all&z=all&tex=NWTN661I&sye=&eye=&col=all&maxcount=5
  13. http://www.nndb.com/cemetery/815/000208191/
  14. http://www.infoplease.com/biography/science-mathematicians.html
  15. http://www.tandfonline.com/doi/full/10.1080/10926480903028094
  16. ^ ا ب Isaac Newton — اخذ شدہ بتاریخ: 19 جولا‎ئی 2018 — ناشر: Biography.com
  17. http://www.worldatlas.com/webimage/countrys/europe/england/ukefamous3.htm
  18. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb119176085 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: Bibliothèque nationale de France — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  19. Religion of History's 100 Most Influential People
  20. How Isaac Newton Went Flat Broke Chasing A Stock Bubble