ابراہیم بن محمد بن احمد شافعی

ابراہیم بن محمد بن احمد شافعی ((عربی: إبراهيم بن محمد بن أحمد الشافعي الباجوري)‏) اپنے وقت کے ممتاز ترین شافعی عالم اور ماہر الہیات تھے، بیس کتابیں تصنیف کیں جو اسلاقی شریعت کی شروحات، اصول عقائد، دولت اسلامیہ کی تقسیم، علم الہیات، مطنق اور عربی زبان سے متعلق تھیں۔[3]

ابراہیم بن محمد بن احمد شافعی
Bagoury.jpg
ذاتی
پیدائش1783
وفات17 جون 1860(1860-60-17) (عمر  76–77 سال)
مذہباسلام
نسلیتعرب قوم
فرقہاہل سنت
فقہی مسلکشافعی[2]
معتقداتاشعری[2]
بنیادی دلچسپیاسلامی الہیات کے مکاتب فکر، حدیث، فقہ
مرتبہ
متاثر
  • Muhammad Adzro'i Bojong, Garut, Jawa Barat, Indonesia
    Muhammad Shoheh Bunikasih, Cianjur, Jawa Barat, Indonesia

وفاتترميم

آپ کی وفات 1276/1860 میں ہوئی۔[1]

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب Gibb، H. A. R.؛ Kramers، J. H.؛ Lévi-Provençal، E.؛ Schacht، J.؛ Lewis، B.؛ Pellat، Ch.، ویکی نویس (1960). The Encyclopaedia of Islam, New Edition, Volume I: A–B. Leiden: E. J. Brill. صفحہ 867. OCLC 495469456. 
  2. ^ ا ب Spevack، Aaron (1 Oct 2014). The Archetypal Sunni Scholar: Law, Theology, and Mysticism in the Synthesis of Al-Bajuri. State University of New York Press. صفحہ 1. ISBN 1-4384-5371-X. 
  3. Keller، Nuh Ha Mim (1997). Reliance of the Traveller. A classic manual of Islamic Sacred Law. Beltsville, Maryland: Amana Publications. صفحہ 1041. ISBN 0-915957-72-8.