دیپالی برٹھاکر

ہندوستانی گلوکار

دیپالی برٹھاکور (انگریزی: Dipali Barthakur) ( جنوری ٣٠، 1941 - 21 دسمبر 2018) آسام کی ایک ہندوستانی گلوکارہ تھیں۔ اس نے اپنے گانے بنیادی طور پر آسامی زبان میں گائے تھے، انہیں 1998 میں ہندوستان کا چوتھا سب سے بڑا سویلین ایوارڈ ، پدم شری ملا.[1]

دیپالی برٹھاکور
Dipali Barthakur
معلومات شخصیت
پیدائش 30 جنوری 1941(1941-01-30)
نیلومونی ٹی اسٹیٹ, سوناری, شیو ساگر, آسام
وفات 21 دسمبر 2018(2018-12-21) (عمر  77 سال)
گوہاٹی
شہریت Flag of India.svg بھارت (26 جنوری 1950–)
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شریک حیات نیل پون برئوا
عملی زندگی
پیشہ گلوکار
دور فعالیت 1955-1969
اعزازات
پدم شری اعزاز, 1998

ابتدائی زندگیترميم

برٹھاکور کا جنم بسوواناتھ باراٹھاکور اور چندراکانتی دیوی کے گھر، سوناری سواساگر، آسام میں ہوا تھا.[2][3]

میوزیکل کیریئرترميم

برٹھاکور نے جلد ہی بطور گلوکارہ اپنے کیریئر کا آغاز کیا تھا۔ 1958 میں، جب وہ کلاس نو میں تعلیم حاصل کررہی تھی، تب انہوں نے آل انڈیا ریڈیو، گوہاٹی میں "مور بوپائی لاہوری" کا گانا اور فلم لچت بورفوکان (1959) کے لیے "جووبون امونی کورے چنیدھن" گانا گایا تھا۔[4]محترمہ برٹھاکر نے اپنے پُرجوش گانوں سے لاکھوں افراد کو اپنا مداح بنایا، جب وہ ہائی اسکول میں تھی تو اس وقت ان  گانوں میں سے سب سے پہلے  ایک گانا ریکارڈ کیا گیا تھا.[3]

آسامی میں اس کے کچھ مشہور گیت ہیں:[5]

  • "سونور کھرو نالاگے مک "
  • "جوبونے امونی کورے, چینیدھوں"
  • "جںدھونے جنالتے"
  • "کونمانا بوروکسائر سپ"
  • "سینائی موئی جو دی"
  • "او' بوندھو سوموئی پالے امر پھالے"

ذاتی زندگیترميم

برٹھاکر نے اپنا آخری گانا "لیوٹو نجابی بوئی" سن 1969 میں گایا تھا۔ اس کے بعد وہ عصبون حرکی مرض (موٹر نیورون (Motor neuron)) کی شدید بیماری میں مبتلا ہونے لگی جس نے ان کی گائیکی میں رکاوٹ ڈالی اور وہیل چیئر استعمال کرنے پر مجبور کر دیا۔ 1976 میں اس نے آسامی کے مشہور مصنف بنند چندرا بڑوا کے بیٹے نیل پون برواہ سے شادی کی جو آسام سے تعلق رکھنے والے ممتاز ہندوستانی فنکار اور مصور تھے.[6][7] برٹھاکر کا طویل علالت کے بعد گوہاٹی کے نیمکیئر اسپتال میں، 21 دسمبر 2018 کو ٧٧ سال کی عمر میں وفات کر گئیں۔[8] ان کو آسام کی بُلبُل کے نام سے جانا جاتا تھا.[9]

ایوارڈترميم

برٹھاکر کو کئی بار اعزاز سے نوازا گیا، خاص طور پر 1990-92 میں لوک اور روایتی موسیقی کے لیے پدما شری ایوارڈ سے نوازا گیا۔

اس کے کچھ ایوارڈ / قدر شناسی ذیل میں درج ہیں:

  • حکومت ہند کے ذریعہ پدما شری (1998) فنون لطیفہ میں ان کے تعاون کے لیے۔[10][11]
  • آسام حکومت کی طرف سے سلپی بوٹا (2010)۔[12]
  • سدو آسوم لیکھیکا سومروہ سمیتی کے ذریعہ ایڈو ہینڈیک سلپی ایوارڈ (2012)[13]

حوالہ جاتترميم

  1. "Padma Awards" (PDF). Ministry of Home Affairs, Government of India. 2015. 15 نومبر 2014 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 21 جولا‎ئی 2015. 
  2. Suchibrata Ray, Silpi Dipali Barthakuror 71 Sonkhyok Jonmodin, Amar Asom, 31 January 2012, accessed date: 03-02-2012
  3. ^ ا ب "Assamese singer Dipali Barthakur passes away". The Hindu (بزبان انگریزی). Special Correspondent. 2018-12-22. ISSN 0971-751X. اخذ شدہ بتاریخ 10 مارچ 2020. 
  4. "Musical Minds". enajori.com. 10 اپریل 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 اپریل 2013. 
  5. "Deepali-Borthakur". assamspider.com. اخذ شدہ بتاریخ 02 اپریل 2013. 
  6. "A tribute to marriage of arts & minds - Book on celebrity couple". The Telegraph. 26 December 2003. doi:ڈی او ئي. http://www.telegraphindia.com/1031226/asp/guwahati/story_2719265.asp. 
  7. "Where Rubies are Hidden - II". Rukshaan Art. اخذ شدہ بتاریخ 08 جولا‎ئی 2019. 
  8. Dipali Borthakur Passes Away
  9. "Singer Dipali Barthakur passes away, last rite today with state honour". www.thehillstimes.in. اخذ شدہ بتاریخ 10 مارچ 2020. 
  10. "October 16th, 2010 - October 28th, 2010, The Strand Art Room, Neel Pawan Baruah". ArtSlant. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2013. 
  11. "Rediff On The NeT: Nani Palkhivala, Lakshmi Sehgal conferred Padma Vibushan". Rediff.co.in. 1998-01-27. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2013. 
  12. TI Trade (2010-01-18). "The Assam Tribune Online". Assamtribune.com. 03 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 اپریل 2013. 
  13. "Aideu Handique Silpi Award to Dipali Borthakur". htsyndication.com. 2012-10-06. اخذ شدہ بتاریخ 12 اپریل 2013.