مظفر علی سید

پاکستانی اردو نقاد، محقق، مترجم

مظفر علی سید (پیدائش: 6 دسمبر، 1929ء - وفات: 28 جنوری، 2000ء) پاکستان سے تعلق رکھنے و الے اردو زبان کے ممتاز نقاد، محقق اور مترجم تھے۔

مظفر علی سید
معلومات شخصیت
پیدائش 6 دسمبر 1929  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
امرتسر،  برطانوی پنجاب  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 28 جنوری 2000 (71 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور،  پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن کیولری گراؤنڈ،  لاہور  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ ادبی تنقید نگار،  مترجم  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P literature.svg باب ادب

حالات زندگیترميم

مظفر علی سید 6 دسمبر، 1929ء کو امرتسر، برطانوی ہندوستان میں پیدا ہوئے۔[1][2][3]۔ ان کی تصانیف میں تنقید کی آزادی، احمد ندیم قاسمی کے بہترین افسانے، یادوں کی سرگم اور تراجم میں فکشن، فن اور فلسفہ اور پاک فضائیہ کی تاریخ کے نام شامل ہیں۔ اس کے علاوہ انہوں نے اردو کے ممتاز محقق و نقاد مشفق خواجہ کے کالموں کے تین مجموعے خامہ بگوش کے قلم سے ، سخن در سخن اور سخن ہائے گفتنی کے نام سے مرتب کیے۔ یہ مجموعے اردو ادب میں اہم مقام رکھتے ہیں۔[2]

تصانیفترميم

  1. تنقید کی آزادی (تنقید)
  2. پاک فضائیہ کی تاریخ (تاریخ)
  3. یادوں کی سرگم (خاکے)
  4. احمد ندیم قاسمی کے بہترین افسانے (ترتیب)
  5. خامہ بگوش کے قلم سے (ترتیب)
  6. سخن در سخن (ترتیب)
  7. سخن ہائے گفتنی (ترتیب)
  8. سخن اور اہل سخن
  9. 1001سوال جواب(معلومات عامہ) طبع فیروز سنز
  10. فکشن ، فن اور فلسفہ ( ڈی ایچ لارنس کے تنقیدی مضامین کے تراجم)

مقالہترميم

ڈاکٹر روبینہ شاہین نے ان کی شخصیت اور فن پر پی ایچ ڈی مقالہ لکھا، "مظفر علی سید، ایک مطالعہ "، یہ مقالہ کتابی صورت میں بھی شائع ہو چکا ہے، یہ مقالہ 2004ء میں پشاور یونیورسٹی میں پیش کیا گیا، نگران مقالہ صابر کلوروی تھے۔

وفاتترميم

مظفر علی سید28 جنوری، 2000ء کو لاہور، پاکستان میں وفات پا گئے۔ وہ لاہور میں کیولری گراؤنڈ قبرستان میں سپردِ خاک ہوئے۔[1][2][3]

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب مظفر علی سید، بائیو ببلوگرافی ڈاٹ کام، پاکستان
  2. ^ ا ب پ عقیل عباس جعفری، پاکستان کرونیکل، ورثہ / فضلی سنز، کراچی، 2010ء، ص 852
  3. ^ ا ب ڈاکٹر محمد منیر احمد سلیچ، وفیات ناموران پاکستان، اردو سائنس بورڈ لاہور، 2006ء، ص 834