یوم حیا پاکستان میں [1] فروری کو ویلنٹائن ڈے کے برعکس منایا جاتا ہے۔ یہ سب سے پہلے اسلامی جمعیت طلبہ پاکستان نے منایا۔ یہ دن ملک کے تمام حصوں میں منایا جاتا ہے۔

تقریبات ترمیم

دار الحکومت اسلام آباد ، کراچی ، لاہور ، گوجرانوالہ ، پشاور ، ملتان ، فیصل آباد ، کوئٹہ اور دیگر شہروں کے تمام بڑے کالجوں اور یونیورسٹی کیمپس میں ریلیاں، سیمینارز اور دیگر تقریبات منعقد کی جاتی ہیں جن میں ہزاروں طلبہ شریک ہوتے ہیں [2] [3]

 
جامعہ پنجاب میں اسلامی جمعیت طلبہ کی حیا واک کی ایک تصویر

ملک بھر کے مختلف اداروں میں آگاہی سٹالز لگائے جاتے ہیں اور ویلنٹائن ڈے کے حوالے سے لٹریچر تقسیم کیا جاتا ہے [4] ۔ ایسا ہی ایک سٹال گورنمنٹ اسلامیہ کالج سول لائنز لاہور کے قریب لوئر مال میں لگایا گیا جہاں اسلامی جمعیت طلبہ نے شائستگی کے موضوع پر نشیب و فراز ادا کیا۔

حوالہ جات ترمیم

  1. "Haya Day? Can we have an Anti-Sectarianism Day instead?"۔ The Nation (بزبان انگریزی)۔ 2015-02-19۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 مارچ 2023 
  2. "Pakistani Islamists hold 'modesty day' to counter Valentine's celebrations"۔ La Prensa Latina Media (بزبان انگریزی)۔ 2022-02-14۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 مارچ 2023 
  3. "Valentine's, Haya Day go side by side in Lahore"۔ Minute Mirror (بزبان انگریزی)۔ 2022-02-14۔ 12 فروری 2023 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 مارچ 2023 
  4. "Hallmark card required: Love no more - Haya Day is here"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 2012-02-14۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 مارچ 2023