سلیمانیہ مسجد (ترک:Süleymaniye Camii، سلیمانیہ جامع) ترکی کے شہر استنبول کی ایک عظیم جامع مسجد ہے۔ یہ مسجد سلطان سلیمان اول (سلیمان قانونی) کے احکام پر مشہور عثمانی ماہر تعمیرات معمار سنان پاشا نے تعمیر کی۔ مسجد کی تعمیر کا آغاز 1550ء میں اور تکمیل 1557ء میں ہوئی[1]۔

سلیمانیہ مسجد
View of Süleymaniye Mosque from the Galata Tower.jpg
گلاٹا ٹاور سے مسجد کا ایک منظر
بنیادی معلومات
مقاماستنبول، ترکی
متناسقات41°00′58″N 28°57′50″E / 41.01611°N 28.96389°E / 41.01611; 28.96389متناسقات: 41°00′58″N 28°57′50″E / 41.01611°N 28.96389°E / 41.01611; 28.96389
مذہبی انتساباسلام
ملکترکی
تعمیراتی تفصیلات
معمارمیمار سنان
نوعیتِ تعمیرمسجد
طرز تعمیرعثمانی معماری
سنگ بنیاد1550
سنہ تکمیل1558
تفصیلات
انتہائی بلندی53 میٹر
گنبد کا قطر (داخلی)26 میٹر
مینار4
مینار کی بلندی72 میٹر

مسجد سلیمانیہ کو بازنطینی طرز تعمیر کے شاہکار ایاصوفیہ کے مقابلے میں تعمیر کیا گیا تھا۔ جسے مسیحی طرز تعمیر کا عظیم شاہکار قرار دیتے ہوئے دعوی کرتے تھے کہ اس کے گنبد سے بڑا کوئی گنبد تیار نہیں کیا جاسکتا۔[1] (ایاصوفیہ کو فتح قسطنطنیہ کے بعد سلطان محمد ثانی نے مسجد میں تبدیل کر دیا تھا)اس چیلنج کو قبول کرتے ہوئے سنان پاشا نے مسجد کی تعمیر کا آغاز کیا اور یہ عظیم شاہکار تخلیق کیا۔

1660ء میں آتش زدگی کے نتیجے میں مسجد کو شدید نقصان پہنچا جس کے بعد سلطان محمد چہارم نے اس کی بحالی کا کام کرایا۔ پہلی جنگ عظیم کے دوران مسجد میں دوبارہ آگ بھڑک اٹھی جس کے بعد مسجد کی آخری تزئین و آرائش 1956ء میں کی گئی۔

آج کل یہ استنبول کے مشہور ترین مقامات میں سے ایک ہے۔ مسجد سلیمانیہ کی لمبائی 59 میٹر اور چوڑائی 58 میٹر ہے۔ اس کا گنبد 53 میٹر بلند اور 57.25 میٹر قطر کا حامل ہے۔ 462 سالوں سے، سلیمانی مسجد اس شہر کی سب سے بڑی مسجد تھی، یہاں تک کہ سنہ 2019 میں اس جامع مسجد تعمیر کی گئی۔ سلیمانیہ مسجد استنبول کی تیسری پہاڑی پر واقع ہے اور گولڈن ہارن کے آس پاس ایک عمدہ نظارہ پیش کرتی ہے۔

فن تعمیرترميم

بیرونیترميم

استنبول کی دیگر شاہی مساجد کی طرح، خود بھی مسجد کے داخلی راستے کے سامنے ایک مرکزی چشمہ ہے۔ صحن کی تعمیر سنگ مرمر، گرینائٹ اور پورفری کے کالموں کے ساتھ غیر معمولی شان و شوکت کا مظہر ہے۔

صحن کے چاروں کونوں پر چار مینار ہیں۔ دونوں لمبے لمبے میناروں میں تین گیلری ہیں اور ان کی اونچائی 63،8 میٹر (209 فٹ) تک پہنچ جاتی ہے۔ مسجد کے چار مینار ہیں کیونکہ مسجد میں چار مینار تعمیر کرنے کا حق صرف سلطان کا تھا۔ اگر کوئی شہزادی یا شہزادہ مسجد تعمیر کرتا تھا تو وہ دو اور دیگر افراد ایک مینار تعمیر کرسکتے تھے۔ میناروں میں کل 10 گیلریاں ہیں، جو روایت کے مطابق اشارہ کرتی ہیں کہ سلیمان اول دسویں عثمانی سلطان تھے۔

مرکزی گنبد کی اونچائی 53 میٹر (174 فٹ) ہے اور اس کا قطر 26.5 میٹر (86.9 فٹ) ہے۔ جس وقت یہ تعمیر کیا گیا تھا، اس وقت گنبد عثمانی سلطنت کا سب سے اونچا گنبد تھا [2]۔

اندرونیترميم

 
سلیمانیہ مسجد کا اندرونی حصہ
 
سلیمانیہ مسجد کی محراب

مسجد کا اندرونی حصہ ایک مربع ہے، جس کی لمبائی 59 میٹر (194 فٹ) اور چوڑائی 58 میٹر (190 فٹ) ہے، جس سے ایک وسیع و عریض جگہ بنتی ہے۔ گنبد کے ساتھ آدھے گنبد جڑے ہوئے ہیں۔ محراب کے اوپر قرآن پاک کی سورہ فاتح کی آیات کندہ ہیں۔

مقبرےترميم

 
قبر سلطان سلیمان اول
 
سلطان سلیمان اور حورم سلطان کے مقبرے

مسجد کی قبلہ دیوار کی طرف سلطان سلیمان اول اور ان کی اہلیہ حورم سلطان کے الگ الگ مقبرے موجود ہیں۔ حورم سلطان کا مقبرہ ان کی وفات کے سال 1558 میں تعمیر ہوا۔[3] جبکہ سلطان سلیمان کے مقبرہ کی تعمیر ان کی وفات کے سال 1566 میں شروع ہوئی تھی اور یہ حورم سلطان کے مقبرے سے بڑا ہے اور اس مقبرے میں ان کی بیٹی مہریمہ سلطان اور بعد میں دو سلطانوں سلطان سلیمان دوم (1687–1791 میں حکومت کی) اور سلطان احمد دوم (1691–1796) کی قبریں بھی موجود ہیں۔ اس کے علاوہ سلطان سلیمان اول کی والدہ دل آشوب صالحہ اور ہمشیرہ عائشہ کی قبریں بھی انہی مقبروں میں موجود ہیں۔ سلطان مصطفٰی ثانی کی صاحبزادی صفیہ بھی یہیں مدفون ہیں۔ مسجد کی دیواروں کے ساتھ ہی شمال کی جانب سنان پاشا کا مقبرہ ہے۔

کمپلیکسترميم

استنبول کی دیگر شاہی مساجد کی طرح، سلیمانی مسجد کو رفائے عامہ کے طور پر بنایا گیا تھا تاکہ مذہبی اور ثقافتی دونوں ضروریاتپورہ کی جا سکیں۔ اصل کمپلیکس میں خود ہی مسجد، ایک اسپتال، پرائمری اسکول، پبلک حمام، ایک کاروان سرای، چار قرآن اسکول، حدیث کی تعلیم کے لیے ایک خصوصی اسکول، اور ایک میڈیکل کالج شامل تھے۔ ایک عوامی باورچی خانہ بھی تعمیر کیا گیا تھا جس نے غریبوں کو کھانا پیش کیا۔ ان میں سے بہت سے ڈھانچے ابھی بھی موجود ہیں اور سابقہ ​​امارت اب ایک مشہور ریسٹورنٹ ہے۔ سابقہ ​​اسپتال اب ایک چھپائی کی فیکٹری ہے جس کی ملکیت ترک فوج کی ہے۔[4]

مسجد کی دیواروں کے بالکل بالکل شمال میں، معمار سینان کا مقبرہ ہے۔ اسے 1922 میں مکمل طور پر بحال کیا گیا تھا۔

متعلقہ مضامینترميم

نگار خانہترميم

  1. ^ ا ب Necipoğlu، Gülru (2005). The Age of Sinan: Architectural Culture in the Ottoman Empire. London: Reaktion Books. ISBN 978-1-86189-253-9. 
  2. Necipoğlu، Gülru (2005). The Age of Sinan: Architectural Culture in the Ottoman Empire. London: Reaktion Books. 
  3. Goodwin، Godfrey (2003). A History of Ottoman Architecture. Thames & Hudson. صفحات 215–239. 
  4. Neci̇poğlu-Kafadar، Gülru (1985). The Süleymaniye Complex in Istanbul: an interpretation. Muqarnas. صفحات 92–117.