سطح مرتفع پوٹھوہار

سطح مرتفع پوٹھوہار کے علاقے کو وادی سواں بھی کہا جاتا ہے۔سطح مرتفع پوٹھوہار پاکستان کے شمال مشرقی علاقے میں واقع سطح مرتفع ہے۔ اس کی مغربی سرحد آزاد کشمیر اور جنوبی حصہ خیبر پختونخوا سے ملحقہ ہے۔ موجودہ کمشنری ،ڈویژن راولپنڈی، جہلم(جزوی)، راولپنڈی، چکوال، اٹک کے اضلاع پر مشتمل ہے۔دریائے سواں، سطح مرتفع پنجاب کا اہم دریا ہے جو دریائے سندھ میں شامل ہو جاتا ہے۔ اس کا معاون دریا دریائے لنگ ہے۔ زمین غیر ہموار ہونے کی وجہ سے صرف بارانی کاشتکاری ممکن ہے۔ لوگوں کا ذریعہ آمدنی ملکی اور غیر ملکی ملازمت، زراعت، تجارت اور تعلیم ہیں۔ قلعہ روہتاس(ممکنا)، قلعہ پھروالہ، قلعہ روات اور قلعہ نندنہ قدیم قلعے ہیں۔ جی ٹی روڈ اور موٹروے سطح مرتفع پنجاب میں سے گزرتی ہیں۔ دارالحکومت اسلام آباد اور اہم فوجی تنصیبات یہاں ہونے کی وجہ سے اس علاقے کی اہمیت بڑھ گئی ہے۔اس خطے کی تاریخ میں اہمیت کا درست اندازہ چندر گپت موریا کے خاندان سے لگایا جا سکتا ہے،326 قبل مسیح سے لیکر 550 قبل مسیح تک سکندر اعظم کی حکومت رہی اور پھر چندر گپت کے پوتے مہاراجا اشوک نے ٹیکسلا شہر کو اپنا دار الخلافہ بنایا جس سے اس علاقے کی اہمیت اور تاریخی درجہ بندی انتہائی اہم ہو گئی۔ اس کے قابل ذکر علاقے سٹوپا مانلیلا ،کٹاس راج، ٹلہ جوگیاں جیسے تاریخی کھنڈر جو قومی ورثے کا حصہ ہے۔

خطہ پوٹھوہار کا نقشہ

تاریخترميم

قدیم ٹیکسلا، ایک قدیم یونیسکو عالمی ثقافتی ورثہ ہے جو سطح مرتفع پر واقع ہے۔ ٹیکسلا، ہندومت اور بدھ مت کی تعلیمی جامعہ تھی ، جو خنجراب کے اس پار سے شاہراہِ ریشم سے منسلک تھی اور پوری دنیا کے طلباء کو راغب کرتی تھی۔

روات قلعہ، لاہور کی طرف جی ٹی روڈ پر راولپنڈی سے 17 کلومیٹر (11 میل) دور مشرق میں واقع ہے ۔ ایک گکھڑ سردار ، سلطان سارنگ خان کی قبر قلعے کے اندر واقع ہے۔ وہ 1546 ء میں شیر شاہ سوری کی افواج کے خلاف لڑتے ہوئے فوت ہوا۔ بدھ مت کے اس اسٹوپا کی باقیات مانکئلا گاؤں میں راولپنڈی سے 32 کلومیٹر جنوب مشرق میں دریافت ہوئیں۔ بظاہر ، یہ گندھارا اسٹوپا کنیشکا (128-151 AD) کے دور میں بنایا گیا تھا ۔ علامات کے مطابق ، گوتم بدھ نے بھوکے شیروں کو کھانا کھلانا کرنے کے لئے اپنے جسم کے کچھ حصے یہاں قربان کر دیئے تھے۔ 1930 میں ، اس ستوپا سے سونے ، چاندی اور تانبے کے متعدد سکے (660 تا 730 ء) اور ایک کانسی کا تابوت ملا تھا۔

فرہوالا قلعہ لہرتر سڑک سے پرے راولپنڈی سے تقریبا 40 کلومیٹر (25 میل) دور ہے۔ گکھڑ حکمران ، سلطان کائی گوہر نے اسے 10 ویں صدی کے ہندو شاہی قلعے کے کھنڈرات پر تعمیر کیا تھا۔ گکھڑوں نے پوٹھوہار خطہ پر تقریباً آٹھ سو پچاس سال حکومت کی۔ مغلیہ سلطنت نے 1519 ء میں قلعے پر حملہ کیا۔

پروفیسر عبد الرحمن ، ماہر چیئرمین شعبہ آثار قدیمہ جامعہ پشاور ، اور پاکستان ہریٹیج سوسائٹی کے بانی فرید خان نے مشترکہ منصوبے میں ، جنوبی ایشین آرکیٹیکچر کی تاریخ میں ان اہم یادگاروں کا دستاویزی ریکارڈ تیار کرنا شروع کیا ہے۔ پنسلوانیا یونیورسٹی نے شمالی کافرکوٹ کے مقام پر کھدائی کے دو سیزن انجام دیئے ہیں۔

مزید دیکھیےترميم