راولپنڈی

پنجاب صوبے کا شہر
اس صفحہ کو محفوظ کر دیا گیا ہے؛ استفسارِ وجوہات اور متعلقہ گفتگو کے لیے تبادلۂ خیال کا صفحہ استعمال کریں۔

راولپنڈی (انگریزی: Rawalpindi), (ہندی: रावलपिंडी‎) ((بنگالی: রাওয়ালপিন্ডি)‏)،[4] صوبہ پنجاب، پاکستان میں سطح مرتفع پوٹھوہار پر واقع ایک اہم شہر ہے۔ یہ شہر افواجِ پاکستان کا صدر مقام بھی ہے اور 1960ء میں جب موجودہ دار الحکومت اسلام آباد زیر تعمیر تھا انہی دنوں میں قائم مقام دار الحکومت کا اعزاز راولپنڈی کو ہی حاصل تھا۔[5] راولپنڈی اور اسلام آباد کے درمیان سماجی اور اقتصادی روابط کو مشترکہ طور پر " جڑواں شہر " کے نام سے جانا جاتا ہے۔[6] 2017ء کی مردم شماری کے مطابق راولپنڈی میٹروپولیٹن کی آبادی 3،461،806 افراد پر مشتمل ہے[7] اور یہ آبادی کے لحاظ سے پاکستان کا چوتھا بڑا شہر ہے۔ راولپنڈی کی مشہور سڑک مری روڈ ہمیشہ ہی سے سیاسی جلسوں کا مرکز رہی ہے۔ 1765ء میں اس علاقے کے حکمران گکھڑوں کو شکست ہوئی اور یہ شہر سکھوں کی حکمرانی کے تحت آگیا۔[8][9][10] 1849ء میں اس شہر کو برطانوی راج نے فتح کر لیا۔ راولپنڈی کی آب و ہوا برطانوی حکام کو بہت پسند آئی جس کی وجہ سے 19ویں صدی کے آخر میں یہ شہر برطانوی انڈین آرمی کی شمالی کمان کا سب سے بڑا گیریژن شہر بن گیا۔ برطانوی فوج نے 1921ء تک اس شہر کو ایک چھوٹے سے قصبے سے پنجاب کے تیسرے بڑے شہر میں تبدیل کر دیا۔[11]


راولپنڈی
میٹروپولیس
اوپر سے دائیں بائیں: راول جھیل، گلشن دادن خان مسجد، بحریہ ٹاؤن، قلعہ روات، کرائسٹ چرچ، راولپنڈی ریلوے اسٹیشن
اوپر سے دائیں بائیں:
راول جھیل، گلشن دادن خان مسجد، بحریہ ٹاؤن، قلعہ روات، کرائسٹ چرچ، راولپنڈی ریلوے اسٹیشن
Rawalpindi
Emblem
ملک پاکستان
صوبہپنجاب، پاکستان کا پرچم پنجاب، پاکستان
ڈویژنراولپنڈی ڈویژن
ضلعضلع راولپنڈی
تحصیل8
یونین کونسلیں46
قییام1867؛ 157 برس قبل (1867)[1]
حکومت
 • قسمراولپنڈی میونسپل کارپوریشن
 • ناظمکوئی نہیں (خالی)
 • نائب ناظمکوئی نہیں (خالی)
 • کمشنرلیاقت علی چٹھہ (پی اے ایس) [2]
 • ایڈمنسٹریٹر/ڈپٹی کمشنرحسن وقار چیمہ (پی اے ایس) [2]
رقبہ
 • شہر479 کلومیٹر2 (185 میل مربع)
 • میٹرو311 کلومیٹر2 (120 میل مربع)
بلندی508 میل (1,667 فٹ)
آبادی (خانہ و مردم شماری پاکستان 2017ء)[3]
 • شہر2,098,231
 • درجہچوتھا
 • کثافت4,400/کلومیٹر2 (11,000/میل مربع)
 • میٹرو2,098,231
 راولپنڈی میٹروپولیٹن
منطقۂ وقتپاکستان کا معیاری وقت (UTC+05:00)
 • گرما (گرمائی وقت)پاکستان کا معیاری وقت (UTC)
ٹیلی فون کوڈ051
دفتری زبانیںاردو, انگریزی زبان
صوبائی زبانپنجابی زبان
مقامی زبانیںپنجابی زبان، پوٹھوہاری، دیگر
ویب سائٹدفتری ویب سائٹ

راولپنڈی پوٹھوہار سطح مرتفع پر واقع ہے اور 18ویں صدی تک کم اہمیت کا حامل ایک چھوٹا سا شہر رہا۔[12] پوٹھوہار کا علاقہ اپنے قدیم ہندو اور بدھ مت کے ورثے کے لیے جانا جاتا تھا، خاص طور پر پڑوسی شہر ٹیکسلا، جو یونیسکو کے عالمی ثقافتی ورثے میں شامل ہے۔[13] 1947ء میں برٹش انڈیا کی تقسیم کے بعد، یہ شہر پاکستان آرمی کے ہیڈ کوارٹر کا گھر بن گیا، جس نے ایک بڑے فوجی شہر کی حیثیت برقرار رکھی۔[14][15][16][17]

راولپنڈی مری، نتھیا گلی، ایوبیہ، ایبٹ آباد اور شمالی علاقہ جات سوات، کاغان، گلگت، ہنزہ، سکردو اور چترال جانے والے سیاحوں کا بیس کیمپ ہے۔ اس شہر میں بہت سے کارخانے ہیں۔[18] نالہ لئی، اپنے سیلابی ریلوں کی وجہ سے بہت مشہور ہے جو راولپنڈی شہر کے بیچوں بیچ بہتا ہوا راولپنڈی کو دو حصّوں راولپنڈی شہر اور راولپنڈی کینٹ میں تقسیم کرتا ہے۔[19] راولپنڈی شہر دار الحکومت اسلام آباد سے 8 کلومیٹر، لاہور سے 275 کلومیٹر، کراچی سے 1540 کلومیٹر، پشاور سے 160 کلومیٹر اور کوئٹہ سے 1440 کلومیٹر کی دوری پر ہے۔[20][21][22] راولپنڈی کا بابو محلہ ایک زمانے میں یہودی تاجروں کی ایک جماعت کا گھر تھا جو 1830ء کی دہائی میں مشہد، فارس چلے گئے تھے۔[23] جدید راولپنڈی سماجی اور اقتصادی طور پر اسلام آباد میٹروپولیٹن علاقے سے جڑا ہوا ہے۔ [24][25] راولپنڈی شہر تاریخی حویلیاں، مساجد، مندر اور گرجا گھر بھی موجود ہیں اور قلعہ روہتاس، آزاد کشمیر، ٹیکسلا اور گلگت بلتستان جانے والے سیاحوں کے لیے ایک مرکز کے طور پر کام کرتا ہے۔[26][27][28]

تاریخ ترمیم

 
ممکنہ کشنو-ساسانیان پلیٹ ، چوتھی صدی عیسوی میں راولپنڈی میں کھدائی کی گئی۔ برٹش میوزیم 124093۔

راولپنڈی شہر گجر راول شہنشاہ بپا راول کے نام پر رکھا گیا تھا۔ ماہرینِ آثارِ قديمہ اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ پوٹھوہار سطح مرتفع پر واقع تہذیب و ثقافت 3000 سال قدیم ہے۔ یہاں ملنے والا مادہ اس بات کا ثبوت پیش کرتا ہے کہ یہاں پر بدھ پرست لوگوں کی تہذیب، ٹیکسلا اور ویدی تہذیب (ہندو تمدّن) کی معاصر تھی۔ ٹیکسلا اتنی اہمیت کا حامل ہے کہ اس کا شمار "گینز بک آف ورلڈ ریکارڈ" میں بھی ہوتا ہے کیونکہ یہاں پر دنیا کی سب سے قدیم یونیورسٹی "ٹیکسلا یونیورسٹی" کے آثارات ملے ہیں۔[29]

 
لندن کے برٹش میوزیم میں نمائش کے لیے پیش کردہ "روزہ بدھ" ، راولپنڈی میں دریافت ہوا۔

بظاہر، ایشیا کی ایک خانہ بدوش قوم سفید ہن کے زوال کے ساتھ ہی یہ شہر بھی زوال پزیر ہو گیا۔ اس علاقے میں پہلے مسلمان حملہ آور محمود غزنوی نے تباہ شدہ شہر کو ایک گکھڑ حاکم "کائے گوہر" کی سرپرستی میں دے دیا۔ لیکن شہر کی صورت حال میں کوئی واضح تبدیلی نہ آ سکی۔ آخر گکھڑ رہنما جھنڈا خان کی حکومت نے شہر کی صورت حال کو درست کیا اور اس کا نام ایک گاؤں "راول" کے نام پر 1493ء میں "راولپنڈی" رکھ دیا[30] ۔ راولپنڈی گکھڑوں کے زیرِ حکومت رہا۔ آخری گکھڑ حکمران "مقرب خان" کو سکھوں کے ہاتھوں 1765ء میں شکست کے بعد یہ شہر گکھڑوں کے ہاتھوں کھو دیا۔[31] سکھوں نے دوسرے علاقوں کے تاجروں کو راولپنڈی میں آ کر رہنے کی دعوت دی۔ یوں راولپنڈی آباد ہوا اور تجارت کے لیے بہترین علاقہ ثابت ہونے لگا۔

پھر انگریزوں نے 1849ء میں سکھوں کی ہی روش کو اپناتے ہوئے راولپنڈی کو 1851ء میں انگریز فوج کا مستحکم قلعہ بنا دیا۔ 1880 کے عشرہ میں راولپنڈی تک ریلوے لائن بچھائی گئی اور ٹرین سروس کا افتتاح 1 جنوری 1886ء میں کیا گیا۔ ریلوے لنک کی ضرورت لارڈ ڈلہوزی کے بعد پیش آئی جب راولپنڈی کو شمالی کمانڈ کا صدر مقام بنا دیا گیا اور راولپنڈی برطانوی فوج کا ہندوستان میں سب سے بڑا قلعہ بن گیا۔[32]

1951ء میں راولپنڈی میں پاکستان کے پہلے وزیر اعظم لیاقت علی خان کو کمپنی باغ میں خطاب کرتے ہوئے شہید کر دیا گیا۔ اس سانحے کے باعث کمپنی باغ کا نام لیاقت قومی باغ رکھ دیا گیا۔[33][34]

2007ء میں لیاقت باغ کے مین گیٹ پر پاکستان کی سابق وزیر اعظم بے نظیر کو قتل کیا گیا۔ 1979ء میں ان کے والد پاکستان کے سابق وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو کو راولپنڈی کی سنٹرل جیل میں پھانسی دی گئی تھی۔[35][36]

قرون وسطی ترمیم

راولپنڈی کے اردگرد کا خطہ ہزاروں سالوں سے آباد ہے۔ راولپنڈی گندھارا کی قدیم حدود میں آتا ہے اور اس طرح ایک ایسے خطے میں ہے جس میں بہت سے بدھ کھنڈر ہیں۔ راولپنڈی کے شمال مغربی علاقے میں، خروشتھی رسم الخط میں کم از کم 55 سٹوپا، 28 بدھ خانقاہوں، 9 مندر اور مختلف آثار قدیمہ کے نمونوں کے آثار ملے ہیں۔[37] جنوب مشرق میں مانکیالہ اسٹوپا کے کھنڈر ہیں۔ یہ دوسری صدی کا اسٹوپا ہے۔ جتک کہانیوں کے مطابق، گوتم بدبدھ کے ایک سابقہ اوتار نے اپنی لاش سات بھوکے شیر کے بچوں کو پیش کرنے کے لیے ایک چٹان سے چھلانگ لگا دی تھی۔ [38] ٹیکسلا کے قریبی قصبے میں دنیا کی پہلی یونیورسٹی کے آثار ملے ہیں۔[39] سر الیگزینڈر کننگھم نے راولپنڈی چھاؤنی کے مقام پر کھنڈر کی نشان دہی قدیم شہر گنجی پور (یا گجنی پور) کے طور پر کی ہے، جو عیسائی دور سے پہلے کے دور میں بھٹی قبیلے کا دار الحکومت تھا۔[40]

مغل دور ترمیم

مغل دور کے دوران، راولپنڈی گکھڑ قبیلے کی حکمرانی میں رہا، جس نے بدلے میں مغلیہ سلطنت سے وفاداری کا عہد کیا۔ اس شہر کو مغل سلطنت کی سرحدوں کی حفاظت کے لیے ایک اہم چوکی کے طور پر تیار کیا گیا تھا۔ گکھڑوں نے 16 ویں صدی میں قریبی کاروان سرائے کو مضبوط کیا اور اسے روات قلعہ میں تبدیل کر دیا[41] تاکہ سطح مرتفع پوٹھوہار کو شیر شاہ سوری کی افواج سے بچایا جا سکے۔ 1581ء میں اٹک قلعہ کی تعمیر کی۔[42] اکبر نے اپنے بھائی مرزا محمد حکیم کے خلاف مہم کی قیادت کرتے ہوئے راولپنڈی کو مزید محفوظ بنایا۔ دسمبر 1585ء میں، شہنشاہ اکبر راولپنڈی پہنچا اور 13 سال تک راولپنڈی اور اس کے آس پاس رہا جب اس نے سلطنت کی سرحدوں کو بڑھایا، اس دور میں جسے شہنشاہ کے طور پر اپنے کیریئر میں "شاندار دور" کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔[43]

1559ء میں کمال خان کی موت کے بعد گکھڑ کے سرداروں کے درمیان انتشار اور دشمنی کے آغاز کے ساتھ ہی، مغل بادشاہ نے راولپنڈی کو سید خان کو نوازا تھا۔[44] شہنشاہ جہانگیر نے 1622ء میں راولپنڈی میں شاہی کیمپ کا دورہ کیا، جہاں اسے پہلی بار فارس کے شاہ عباس اول کے قندھار پر حملہ کرنے کے منصوبے کا علم ہوا۔[45][45][46]

سکھ مصل ترمیم

مغل اقتدار میں کمی کے ساتھ ہی راولپنڈی کی اہمیت کم ہو گئی، یہاں تک کہ 1760ء کی دہائی کے وسط میں سردار گجر سنگھ اور اس کے بیٹے صاحب سنگھ کے ماتحت سکھوں نے مقرب خان سے قصبے پر قبضہ کر لیا۔ [47] شہر کا نظم و نسق سردار ملکھا سنگھ کے حوالے کر دیا گیا جس نے 1766ء میں جہلم اور شاہ پور کے پڑوسی تجارتی مراکز سے تاجروں کو اس علاقے میں آباد ہونے کی دعوت دی [48][47] اس کے بعد شہر نے ترقی کرنا شروع کی، حالانکہ 1770ء میں آبادی کا تخمینہ صرف 300 خاندانوں پر مشتمل تھا۔ راولپنڈی 19ویں صدی کے اوائل میں افغانستان کے جلاوطن بادشاہ شاہ شجاع اور ان کے بھائی شاہ زمان کی پناہ گاہ بنا۔ [49]

سکھ دور ترمیم

سکھ حکمران مہاراجہ رنجیت سنگھ نے 1810ء میں ضلع پر قبضہ کرنے کے بعد سردار ملکھا سنگھ کے بیٹے کو راولپنڈی کا گورنر بنایا۔ جولائی 1813ء میں حیدران کے مقام پر افغانوں کی شکست سے راولپنڈی پر سکھوں کی حکومت مضبوط ہو گئی۔ سکھ حکمرانوں نے کچھ مقامی گکھڑ قبائل کے ساتھ اتحاد کیا اور 1827ء میں اکوڑہ خٹک میں سید احمد بریلوی کو مشترکہ طور پر شکست دی۔[50] یہودی پہلی بار 1839ء میں مشہد، فارس سے راولپنڈی کے بابو محلہ میں پہنچے، تاکہ قاجار خاندان کے قائم کردہ یہودی مخالف قوانین سے فرار ہوسکیں۔ 1841ء میں دیوان کشن کور کو راولپنڈی کا سردار مقرر کیا گیا۔[51][52]

14 مارچ 1849ء کو سکھ سلطنت کے سردار چتر سنگھ اور راجا شیر سنگھ نے راولپنڈی کے قریب جنرل گلبرٹ کے سامنے ہتھیار ڈال دیے اور شہر کو انگریزوں کے حوالے کر دیا۔ اس کے بعد سکھ سلطنت کا خاتمہ 29 مارچ 1849ء کو ہوا۔[53][54]

برطانوی دور ترمیم

 
سولہویں صدی کے راوت قلعے نے راولپنڈی کو فوجی تحفظ فراہم کیا۔
 
ملکہ وکٹوریہ کا مجسمہ، راولپنڈی، 1939
 
نالہ لئی، راولپنڈی

برطانوی ایسٹ انڈیا کمپنی کی طرف سے راولپنڈی پر قبضہ کرنے کے بعد، کمپنی کی فوج کی 53ویں رجمنٹ نے نئے قبضے میں لیے گئے شہر میں ایک مستقل فوجی چھاؤنی بنانے کا فیصلہ کیا۔ اس شہر نے اپنا پہلا ٹیلی گراف آفس 1850ء کی دہائی کے اوائل میں دیکھا۔ شہر کا گیریژن چرچ 1854 ء میں تعمیر کیا گیا تھا[55] اور یہ وہ جگہ ہے جہاں کلکتہ کے بشپ رابرٹ ملمین کو 1876ء میں راولپنڈی میں ان کی موت کے بعد دفن کیا گیا تھا۔ 1857ء کے سپاہی بغاوت کے دوران، علاقے کے گکھڑ اور جنجوعہ قبائل انگریزوں کے وفادار رہے۔ برطانوی دور میں متعدد سول اور فوجی عمارتیں تعمیر کی گئیں اور راولپنڈی کی میونسپلٹی 1867ء میں قائم کی گئی۔[56] یہ شہر ریلوے سے بھی جڑا ہوا تھا۔ راولپنڈی کی چھاؤنی پورے خطے میں دیگر چھاؤنیوں کے لیے فیڈر کے طور پر کام کرتی تھی۔[57] راولپنڈی برطانوی دور میں بڑی حد تک صنعتی بنیاد سے خالی رہا۔ کشمیر کی بیرونی تجارت کا ایک بڑا حصہ شہر سے گزرتا تھا۔ سنٹرل راولپنڈی میں 1883ء میں سردار سوجن سنگھ کی طرف سے ایک بڑی مارکیٹ کھولی گئی اور انگریزوں نے شہر کے اشرافیہ کے لیے ایک شاپنگ ڈسٹرکٹ تیار کیا جسے صدر بازار کے نام سے جانا جاتا ہے جس میں بریگیڈیئر جنرل میسی کی یاد میں ایک محراب بھی تعمیر کیا گیا تھا۔[58][59] اسی باغ میں 1902ء میں سجھان سنگھ نے سردار ہردیت سنگھ لائبریری قائم کی۔ شہر کے اہم تعلیمی اداروں میں سریشت نیتی ہائی اسکول، اینگلو سنسکرت ہائی اسکول، ڈینیز ہائی اسکول، ماموں جی اسلامیہ ہائی اسکول، مشن اسکول اور مشن جسے بعد میں گارڈن کالج کہا گیا۔[60] بنی میں مائی ویرو کا تالاب بھی شہر کے اہم مقامات میں شامل تھا۔ راولپنڈی کی چھاؤنی 1883ء میں قائم ہوئی اور قیام کے بعد فوجی طاقت کا ایک بڑا مرکز بن گئی۔[61] برطانیہ کی فوج نے شہر کو ایک چھوٹے سے قصبے سے 1921ء تک پنجاب کے تیسرے سب سے بڑے شہر تک پہنچا دیا۔ شہر کی موافق آب و ہوا اور مری کے قریبی پہاڑی اسٹیشن کی وجہ سے اس شہر کو انگلینڈ سے نئے آنے والے فوجیوں کے لیے پسندیدہ پہلی پوسٹنگ سمجھا جاتا تھا۔ 1901ء میں راولپنڈی کو ناردرن کمانڈ اور راولپنڈی ملٹری ڈویژن کا سرمائی ہیڈ کوارٹر بنا دیا گیا۔ پہلی جنگ عظیم کے دوران، راولپنڈی ضلع برطانوی جنگی بھرتی کرنے والے اضلاع میں "پہلے نمبر پر" رہا۔ جس کے بدلے میں برطانوی حکومت کی طرف سے زیادہ مالی امداد اس علاقے میں بھیجی گئی۔ 1921ء تک، راولپنڈی کی چھاؤنی نے شہر پر سایہ کر لیا تھا - راولپنڈی پنجاب کے ان سات شہروں میں سے ایک تھا جس کی نصف سے زیادہ آبادی ضلع چھاؤنی میں رہتی تھی۔ 1926ء میں راولپنڈی کی سکھوں اور مسلم برادریوں[62] کے درمیان فرقہ وارانہ فسادات اس وقت شروع ہوئے جب سکھوں کے ایک جلوس نے موسیقی کو بند کرنے سے انکار کر دیا جو ایک مسجد کے سامنے سے گذر رہا تھا۔[58] ایچ ایم ایس راولپنڈی کو 1925ء میں ہارلینڈ اینڈ وولف نے اوشین لائنر کے طور پر لانچ کیا تھا۔ برطانوی حکومت نے 1930ء کی دہائی سے شروع ہونے والے ایک دہائی سے زیادہ عرصے کے دوران راولپنڈی کے تجربات کے دوران ہندوستانی فوجیوں پر زہریلی گیس کا تجربہ کیا۔[63]

تقسیم ہند ترمیم

 
باغ سرداراں میں ہندو مندر

5 مارچ 1947 ء کو راولپنڈی کی ہندو اور سکھ برادریوں نے حکومت پنجاب کے اندر مسلم وزارت کے قیام کے خلاف ایک جلوس نکالا۔ پولیس اہلکاروں نے مظاہرین پر گولیاں چلائیں، جبکہ ہندو اور سکھ کمزور مسلم جوابی مظاہرین کے خلاف لڑے۔ اس علاقے کی تقسیم کا پہلا فساد اگلے دن 6 مارچ 1947 ء کو شروع ہوا۔[64] تحریک پاکستان کی کامیابی کے بعد 1947 ء میں پاکستان کی آزادی کے آغاز کے وقت، راولپنڈی میں 43.79% مسلمان تھے۔ جبکہ ضلع راولپنڈی میں مجموعی طور پر 80% مسلمان تھے۔ یہ خطہ بڑی مسلم اکثریت کی وجہ سے پاکستان کو دیا گیا۔ راولپنڈی کی ہندو اور سکھ آبادی جو شہر کے 33.72% اور 17.32% پر مشتمل تھی نے مغربی پنجاب میں ہندو مخالف اور سکھ مخالف قتل و غارت گری کے بعد بڑے پیمانے پر ہندوستان کی طرف ہجرت کی۔ جبکہ ہندوستان سے مسلمان مہاجرین مشرقی پنجاب اور شمالی ہندوستان میں مسلم دشمنی کے بعد راولپنڈی شہر میں آ کر آباد ہوئے۔[65][66][67]

جدید راولپنڈی ترمیم

 
مری روڈ راولپنڈی کی اہم شاہراہوں میں سے ایک ہے
 
بحریہ ٹاؤن راولپنڈی

پاکستان کی آزادی کے آغاز پر خطے میں سب سے بڑی برطانوی چھاؤنی ہونے کے باعث راولپنڈی کو پاکستانی فوج کے لیے ہیڈ کوارٹر کے طور پر چنا گیا۔ [68] 1951ء میں راولپنڈی کی سازش ہوئی جس میں بائیں بازو کے فوجی افسران نے پاکستان کے پہلے منتخب وزیر اعظم لیاقت علی خان کو معزول کرنے کی سازش کی۔ [69] بعد میں کمپنی باغ راولپنڈی میں لیاقت علی خان کو قتل کیا گیا، جسے اب لیاقت باغ پارک کے نام سے جانا جاتا ہے۔ 1958ء میں فیلڈ مارشل ایوب خان نے راولپنڈی سے بغاوت کا آغاز کیا۔ [69] 1959ء میں، یہ شہر ایوب خان کے دور میں ملک کا عبوری دار الحکومت بن گیا، راولپنڈی کے پاس ایک نیا منصوبہ بند دار الحکومت اسلام آباد بنایا گیا۔ 1961ء میں پاکستان کے نئے دار الحکومت اسلام آباد کی تعمیر راولپنڈی میں زیادہ سرمایہ کاری کا باعث بنی۔ [70] 1969ء میں دار الحکومت اسلام آباد منتقل ہونے کے بعد راولپنڈی پاکستانی فوج کا ہیڈ کوارٹر رہا، جبکہ پاکستان ایئر فورس راولپنڈی کے چکلالہ میں ایک ایئربیس کو برقرار رکھے ہوئے ہے۔[71][72] جنرل ضیاء الحق کی فوجی آمریت نے پاکستان کے معزول وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو کو 1979ء میں راولپنڈی میں پھانسی دے دی تھی۔[73] 10 اپریل 1988ء کو، راولپنڈی کا اوجھڑی کیمپ، جس میں افغانستان میں سوویت افواج کے خلاف لڑنے والے افغان مجاہدین کے لیے گولہ بارود کا ڈپوتھا واقع پیش آیا جس میں راولپنڈی اور اسلام آباد میں بہت سے لوگ مارے گئے۔[74][75] اس وقت، نیویارک ٹائمز نے بتایا کہ 93 سے زیادہ ہلاک اور دیگر 1,100 زخمی ہوئے۔ بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ تعداد بہت زیادہ تھی۔ 1992ء میں راولپنڈی میں فسادات پھوٹ پڑے جب ہندوستان میں بابری مسجد کی تباہی کے بدلے میں ہجوم نے ہندو مندروں پر حملہ کیا۔ [76] 27 دسمبر 2007ء کو راولپنڈی سابق وزیر اعظم بے نظیر بھٹو کے قتل کی جگہ تھی۔ جدید راولپنڈی سماجی اور اقتصادی طور پر اسلام آباد اور بڑے میٹروپولیٹن علاقے سے جڑا ہوا ہے۔ راولپنڈی میں متعدد مضافاتی رہائشی علاقے بھی ہیں۔ [77] جون 2015ء میں، راولپنڈی-اسلام آباد میٹروبس، اسلام آباد میں مختلف پوائنٹس کے ساتھ ایک نئی بس ریپڈ ٹرانزٹ لائن، سروس کے لیے کھول دی گئی۔[78]

جفرافیہ ترمیم

 
اسلام آباد۔ راولپنڈی میٹروپولیٹن ایریا کی سیٹلائٹ تصویر۔

راولپنڈی میں بہت سارے اچھے ہوٹل، طعام خانے، عجائب گھر اور سبزہ زار ہیں۔ راولپنڈی کو دیکھنے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ اس کے بازاروں میں گھوما جائے۔ شہر کی دو اہم شاہراہیں: جی ٹی روڈ بالعموم مشرق سے مغرب تک چلتے ہوئے مال روڈ کنٹونمنٹ سے ہوتا ہوا گزرتا ہے اور مری روڈ مال روڈ کے شمال سے شروع ہوتا، ریلوے لائنوں کو اوپر اور نیچے سے عبور کرتا ہوا اسلام آباد تک پہنچتا ہے۔ راولپنڈی کے دو اہم بازار ہیں جن میں راجا بازار جو پرانے راولپنڈی شہر میں واقع ہے اور دوسرا صدر بازار ہے۔ میٹرو بس سروس کے لیے بنائے گئے 9 کلومیٹر طویل پل اور اتنی ہی لمبی پھولدار پودوں سے لدی کیاریاں شامل ہیں۔[79]

آبی ذخائر ترمیم

رقبہ ترمیم

راولپنڈی شہر کا کل رقبہ تقریباً 108.8 مربع کلومیٹر (42.0 مربع میل) ہے۔ جبکہ ضلع راولپنڈی کا کل رقبہ تقریباً 5,286 کلومیٹر (2,041 مربع میل) ہے۔[80]

آب و ہوا ترمیم

اسلام آباد اور راولپنڈی جڑواں شہر ہیں اور مارگلہ کی پہاڑیوں کے قریب ہونے کی وجہ سے یہاں موسم سردیوں میں کافی سرد ہو جاتا ہے۔ 17 جنوری 1967ء کو راولپنڈی کی تاریخ میں سب سے زیادہ سردی ریکارڈ کی گئی اور اس شہر کا درجہ حرارت منفی 3.9 ڈگری ریکارڈ کیا گیا اور اسی دن اسلام آباد میں منفی 6 ڈگری سردی پڑی اور یہ ان دونوں شہروں کی سب سے شدید ترین سردی ہے جو اب تک ریکارڈ کی گئی۔ راولپنڈی ایک بے ترتیب لیکن گرد سے پاک صاف ستھرا شہر ہے۔ شہر کا درجہ حرارت گرمیوں میں نا قابل برداشت ہوتا ہے۔ شہر میں بارش سالانہ اوسط درجہ 36 انچ ہوتی ہے۔ موسم گرما میں گرمی کی حد زیادہ سے زیادہ 52 ڈگری اور موسم سرما میں درجہ حرارت 5- تک گر سکتا ہے۔[81][82][83]

آب ہوا معلومات برائے راولپنڈی
مہینا جنوری فروری مارچ اپریل مئی جون جولائی اگست ستمبر اکتوبر نومبر دسمبر سال
بلند ترین °س (°ف) 30.1
(86.2)
30
(86)
34.5
(94.1)
40.6
(105.1)
45.6
(114.1)
46.6
(115.9)
44.4
(111.9)
42
(108)
38.1
(100.6)
37.5
(99.5)
32.2
(90)
28.3
(82.9)
46.6
(115.9)
اوسط بلند °س (°ف) 17.9
(64.2)
19.7
(67.5)
24.5
(76.1)
30.5
(86.9)
36
(97)
38.4
(101.1)
35.3
(95.5)
33.7
(92.7)
33.7
(92.7)
30.9
(87.6)
25.9
(78.6)
20.2
(68.4)
28.89
(84.03)
یومیہ اوسط °س (°ف) 10.6
(51.1)
12.9
(55.2)
17.6
(63.7)
23.2
(73.8)
28.4
(83.1)
31.1
(88)
29.9
(85.8)
28.8
(83.8)
27.4
(81.3)
22.7
(72.9)
17.1
(62.8)
12.3
(54.1)
21.83
(71.3)
اوسط کم °س (°ف) 3.2
(37.8)
6
(43)
10.7
(51.3)
15.8
(60.4)
20.7
(69.3)
23.7
(74.7)
24.4
(75.9)
23.8
(74.8)
21.1
(70)
14.5
(58.1)
8.3
(46.9)
4.3
(39.7)
14.71
(58.49)
ریکارڈ کم °س (°ف) −3.9
(25)
−2.7
(27.1)
1.1
(34)
5.0
(41)
6.1
(43)
15.5
(59.9)
17.2
(63)
17.2
(63)
11.6
(52.9)
5.5
(41.9)
−0.5
(31.1)
−2.8
(27)
−3.9
(25)
اوسط عمل ترسیب مم (انچ) 67.1
(2.642)
84.1
(3.311)
92.4
(3.638)
63.2
(2.488)
34.1
(1.343)
75.3
(2.965)
305.3
(12.02)
340.3
(13.398)
110.7
(4.358)
31.7
(1.248)
14.4
(0.567)
36.2
(1.425)
1,254.8
(49.403)
اوسط عمل ترسیب ایام 5 6 6 5 4 6 15 17 7 2 2 3 78
ماخذ#1:
ماخذ #2: SCBM[85]

شہری علاقہ ترمیم

راولپنڈی کے تاریخی بنیادی مرکز سماجی ڈھانچے کو محلہ کے نام سے جانا جاتا ہے۔ ہر محلے میں بازار اور مسجدیں ہیں۔ [86] ہر محلہ میں تنگ گلیاں ہیں اور چھوٹی گلیوں کے ارد گرد مکانات ہیں۔ ہر بڑے چوراہے کوچوک کہا جاتا ہے۔ راولپنڈی نسبتاً ایک نیا شہر ہے جو پاکستان کے ہزاروں سال پرانے شہروں جیسے کہ لاہور، ملتان اور پشاور کے برعکس ہے۔[87] راولپنڈی کے جنوب میں نالہ لئی اور دوسری طرف راولپنڈی چھاؤنی ہے۔ راولپنڈی چھاؤنی تاریخی فن تعمیر کے ساتھ برطانوی نوآبادیاتی دور میں تیار ہونے والا مرکزی یورپی علاقہ تھا۔ برطانوی استعمار نے تاریخی مرکز کے جنوب میں صدر بازار بھی تعمیر کیا، جو شہر میں یورپیوں کے لیے ایک شاپنگ مرکز تھا۔[88]

آبادیات ترمیم

جنوری 2006ء کے مطابق راولپنڈی میں خواندگی کی شرح %70.5 ہے۔ شہر کی آبادی میں پوٹھوہاری، پنجابی، مہاجر قوم (بھارت سے پاکستان ہجرت کر کے آنے والے افراد) اور پٹھان شامل ہیں۔ راولپنڈی شہر میں ضلع اٹک سے تعلق رکھنے والی برادریاں کافی تعداد میں آباد ہیں اس کے علاوہ خیبر پختونخوا کے ہزارہ ڈویژن سے تعلق رکھنے والے افراد کی ایک بڑی تعداد رہائش پزیر ہے جن کی مادری زبان ہندکو ہے یہ لوگ شہر اور شہر کے اطراف میں بکھری آبادیوں، اپنی ذاتی رہائش گاہوں یا پھر کرایہ کے گھروں میں رہتے ہیں۔

آبادی ترمیم

آبادی کے لحاظ سے راولپنڈی پاکستان کا چوتھا بڑا اور پنجاب کا تیسرا بڑا شہر ہے۔ مرکزی حثیت ہونے کی وجہ سے اس کی آبادی دن بدن بڑھتی چلی جا رہی ہے۔ 2017ء کی مردم شماری کے مطابق اس وقت راولپنڈی شہر کی آبادی 2,098,231[89] ہے۔ آبادی کا تناسب فی مربع کلومیٹر 1936.17 ہے۔[90]

سال 1855 1868 1881 1891 1901 1911 1921 1931 1941 1951 1961 1972 1981 1998 2017 2020
آبادی 15913 28586 52975 72023 87688 86483 101142 119284 185000 237000 340000 615000 795000 1409768 2098231 2280733

زبانیں ترمیم


 
  پوٹھوہاری/پنجابی (68.7%)
  پشتو (10.9%)
  اردو (10.2%)
  Others (5.33%)
  ہندکو (1.8%)
  کشمیری (1.00%)
  سرائیکی (0.02%)
  سندھی (0.01%)
  بلوچی ({{{value9}}}%)

راولپنڈی شہر کی آبادی ایک یا ایک سے زیادہ زبانیں بولتی ہے۔[91]

مذہب ترمیم

2017ء کی مردم شماری کے مطابق راولپنڈی شہر کی 97.01% مسلمان ہے۔ جب کہ عیسائی، سکھ مت، ہندومت اور دوسرے مذاہب کے لوگ بھی آباد ہیں۔[92] 1947ء میں تقسیم ہند سے قبل راولپنڈی ایک اکثریتی ہندو اور سکھ شہر تھا، جو 1941ء کی مردم شماری کے مطابق کل آبادی کا 51.05 فیصد پر مشتمل تھا۔ [93] :32اسی مردم شماری کے مطابق مسلمان کل آبادی کا 43.79 فیصد تھے۔ [94][93] راولپنڈی میں بابا دیال سنگھ گوردوارہ تھا جہاں سے سکھ مت کی اصلاحی نرنکاری تحریک شروع ہوئی تھی۔ شہر میں اب بھی سکھوں کی چھوٹی آبادی موجود ہے۔ راولپنڈی میں اب بھی چند سو ہندو خاندان آباد ہیں۔ ہندوؤں کے اکثریت خاندان تقسیم کے بعد ہندوستان چلے گئے، پرانے شہر میں زیادہ تر ہندو مندر موجود ہیں۔ پرانے شہر کے بہت سے محلے ہندو اور سکھوں کے ناموں کو برقرار رکھے ہوئے ہیں جن کرشن پورہ، آریہ محلہ، اکال گڑھ، موہن پورہ، امر پورہ، کرتار پورہ، باغ سرداراں، انگت پورہ وغیرہ شامل ہیں۔

شری کرشنا مندر راولپنڈی کا واحد فعال ہندو مندر ہے۔ یہ کباڑی بازار میں 1897ء میں تعمیر کیا گیا تھا۔ راولپنڈی کا بڑا کلیان داس مندر 1880ء سے "گورنمنٹ" کی تحویل میں تھا۔ [95] کنک منڈی میں رام لیلا مندر اور کباڑی بازار میں کانجی مال اجگر مل رام رچپال مندر، دونوں اس وقت کشمیری پناہ گزینوں کے رہنے کے لیے استعمال ہوتے تھے۔ لنڈا بازار میں موہن مندر موجود ہے، لیکن اس میں عبادت نہیں ہوتی اور عمارت اب کسی مقصد کے لیے استعمال نہیں ہوتی۔ راولپنڈی کا شمشان گھاٹ اب بھی پرانے شہر میں موجود ہے جس کی تزئین و آرائش 2012ء میں کی گئی تھی۔ برطانوی دور میں برطانوی فوجیوں کی عبادت کے لیے بہت سے گرجا گھر بنائے گئے تھے کیونکہ راولپنڈی چھاؤنی برطانوی فوج کا گھر تھا۔

راولپنڈی شہر کے مذاہب (1891−2017)[ا]
مذہب
1891[96]:68 1901[97]:44 1911[98]:20 1921[99]:23 1931[100]:26 1941[93]:32 2017[101]
آبادی % آبادی % آبادی % آبادی % آبادی % آبادی % آبادی %
اسلام   32,787 44.43% 40,807 46.54% 40,678 47.04% 47,653 47.11% 55,637 46.64% 81,038 43.79% 2,029,304 96.73%
ہندو   29,264 39.66% 33,227 37.89% 29,106 33.66% 35,279 34.88% 40,161[ب] 33.67% 62,394[ب] 33.72% 628 0.03%
مسیحی   6,072 8.23% 6,275 7.16% 7,846 9.07% 8,111 8.02% 6,850 5.74% 3,668 1.98% 65,729 3.13%
سکھ مت   4,767 6.46% 6,302 7.19% 8,306 9.6% 9,144 9.04% 15,532 13.02% 32,064 17.33%
جین مت   848 1.15% 1,008 1.15% 963 1.11% 916 0.91% 1,025 0.86% 1,301 0.7%
زرتشتیت   51 0.07% 65 0.07% 58 0.07% 39 0.04% 65 0.05%
یہودی   2 0% 16 0.02% 0 0% 5 0%
بدھ مت   0 0% 0 0% 10 0.01% 0 0% 9 0.01%
احمدیہ   1,848 0.09%
دیگر مذیب 4 0.01% 1 0% 0 0% 0 0% 0 0% 4,587 2.48% 315 0.02%
کل آبادی 73,795 100% 87,688 100% 86,483 100% 101,142 100% 119,284 100% 185,042 100% 2,097,824 100%

انتظامی حکومت و سیاست ترمیم

راولپنڈی ڈویلپمنٹ اتھارٹی ترمیم

 
راولپنڈی کے ڈپٹی کمشنران

راولپنڈی ڈویلپمنٹ اتھارٹی، ایک سرکاری سیکٹر کارپوریشن اور اتھارٹی ہے جو راولپنڈی شہر میں میونسپل اور ٹاؤن سروسز  فراہم کرنے کا ذمہ دار ہے۔ راولپنڈی ڈویلپمنٹ اتھارٹی کا قیام مئی 1989ء میں راولپنڈی شہر کے لیے ترقی کے منصوبے کو بہتر بنانے، بڑھانے اور لاگو کرنے کے لیے کیا گیا تھا۔ راولپنڈی ڈویلپمنٹ اتھارٹی کنٹونمنٹ بورڈ کے علاوہ راول ٹاؤن اور پوٹھوہار ٹاؤن کے 64 دیگر ریونیو اور لینڈ اسٹیٹس میں پھیلی ہوئی ہے۔ [102]

بلدیہ عظمی راولپنڈی ترمیم

راولپنڈی میٹروپولیٹن کارپوریشن، راولپنڈی شہر کی 46 لوکل گورنمنٹ یونین کونسلوں پر مشتمل ہے۔ یونین کونسلیں اپنے چیئرمین کا انتخاب کرتی ہیں جو راولپنڈی کے میئر اور ڈپٹی میئرز کے انتخاب کے ذمہ دار ہیں۔[103]

یونین کونسلیں ترمیم

درج ذیل میں راولپنڈی شہر کی یونین کونسلوں کی فہرست ہے:[104]

  • یو سی نمبر 1 رتہ امرال
  • یو سی نمبر 2 ڈھوک رتہ
  • یو سی نمبر 3 ہزارہ کالونی
  • یو سی نمبر 4 ڈھوک مانگتل
  • یو سی نمبر 5 ڈھوک حسو نارتھ
  • یو سی نمبر 6 ڈھوک حسو جنوبی
  • یو سی نمبر 7 پیروادھائی
  • یو سی نمبر 8 فوجی کالونی
  • یو سی نمبر 9 بنگش کالونی
  • یو سی نمبر 10 خیابان سر سید نارتھ
  • یو سی نمبر 11 خیابان سر سید جنوبی
  • یو سی نمبر 12 ڈھوک نجو
  • یو سی نمبر 13 نیو کٹاریان
  • یو سی نمبر 14 سیٹلائٹ ٹاؤن ایف بلاک
  • یو سی نمبر 15 سید پور سکیم
  • یو سی نمبر 16 عید گاہ
  • یو سی نمبر 17 ڈھوک بابو عرفان
  • یو سی نمبر 18 پنڈ ڈوران
  • یو سی نمبر 19 سیٹلائٹ ٹاؤن اے بلاک
  • یو سی نمبر 20 اصغر مال سکیم
  • یو سی نمبر 21 ڈھوک کالا خان
  • یو سی نمبر 22 قیوم آباد
  • یو سی نمبر 23 ڈھوک کشمیریاں
  • یو سی نمبر 24 ڈھوک علی اکبر
  • یو سی نمبر 25 صادق آباد
  • یو سی نمبر 26 آفندی کالونی
  • یو سی نمبر 27 کرنال یوسف کالونی
  • یو سی نمبر 28 مسلم ٹاؤن
  • یو سی نمبر 29 خرم کالونی
  • یو سی نمبر 30 چاہ سلطان
  • یو سی نمبر 31 ڈھوک حکم داد
  • یو سی نمبر 32 امر پورہ
  • یو سی نمبر 33 کرتار پورہ
  • یو سی نمبر 34 بنی۔
  • یو سی نمبر 35 امام باڑہ
  • یو سی نمبر 36 موہن پورہ
  • یو سی نمبر 37 ڈھوک دلال
  • یو سی نمبر 38 گنج منڈی
  • یو سی نمبر 39 وارث خان
  • یو سی نمبر 40 پرانہ قلعہ
  • یو سی نمبر 41 شاہ چک چراغ
  • یو سی نمبر 42 ملت کالونی
  • یو سی نمبر 43 ڈھوک کھبہ
  • یو سی نمبر 44 ڈھوک فرمان علی
  • یو سی نمبر 45 چمن زر کالونی
  • یو سی نمبر 46 پنڈی سٹی (لیاقت روڈ، ٹرنک بازار، گورڈن کالج)

قومی اسمبلی پاکستان ترمیم

 
مجلس شوریٰ پاکستان

راولپنڈی سے قومی اسمبلی کی 7 نشستیں ہیں جس کی فہرست مندرجہ ذیل ہے۔[105]

پنجاب صوبائی اسمبلی ترمیم

 
پنجاب صوبائی اسمبلی

راولپنڈی سے پنجاب صوبائی اسمبلی کے لیے 14 حلقے ہیں جن کی فہرست مندرجہ ذیل ہے۔[106]

انتظامی تقسیم ترمیم

راولپنڈی ڈویژن ترمیم

 
خطہ پوٹھوہار کا نقشہ

راولپنڈی ڈویژن پاکستان کے صوبہ پنجاب کی ایک انتظامی تقسیم ہے۔ 2000ء کی حکومتی اصلاحات کے نتیجے میں اس تیسرے درجے کی تقسیم کو ختم کر دیا گیا۔ 2008ء کے عام انتخابات کے بعد پنجاب کے آٹھ ڈویژنوں کو بحال کر دیا۔[107]

راولپنڈی ڈویژن کے چھ اضلاع مندرجہ ذیل ہیں۔[108]

انتظامی ٹاؤن ترمیم

راولپنڈی کی تحصیلیں ترمیم

راولپنڈی کی درج ذیل تحصیلیں ہیں:[109]

نمبر شمار تحصیل صدر مقام علاقہ

(km2)

آبادی

(2017)

1 تحصیل ٹیکسلا ٹیکسلا NA 677,951
2 تحصیل راولپنڈی راولپنڈی 479 2,237,000
3 تحصیل گوجرخان گوجرخان 1,466 678,503
4 تحصیل کلر سیداں کلر سیداں 421 217,273
5 تحصیل کہوٹہ کہوٹہ NA 220,576
6 تحصیل کوٹلی ستیاں کوٹلی سیتیاں NA 119,312

جی ایچ کیو ترمیم

جی ایچ کیو (پاکستان) (جنرل ہیڈ کوائٹرز)، پاکستان فوج کے مرکزی دفاتر کا مخفف ہے۔ اور یہ راولپنڈی شہر میں جی ٹی روڈ پر واقع ہے۔ اس کا آغاز 14 اگست 1947ء کو برطانوئی ہندی فوج کی نادرن کمانڈ ہیڈ کوارٹر کے طور پر ہوا تھا۔[110]

معیشت ترمیم

 
کالج روڈ الیکٹرانک مارکیٹوں کے لیے مشہور ہے۔

راولپنڈی صنعت اور تجارت کے لحاظ سے پاکستان کے اہم شہروں میں شمار ہوتا ہے۔ راولپنڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری یہاں کے تاجروں اور صنعت کاروں کی نمائندہ تنظیم ہے۔ تاریخی طور پر پنجاب کے خطے کا ایک اہم صنعتی اور تجارتی مرکز رہا ہے۔ راولپنڈی کی معاشی اہمیت تاریخی طور پر کشمیر میں داخل ہونے کی وجہ سے امتیازی رہی ہے۔ یہ کشمیر اور خیبر پختونخوا کے درمیان تجارت کا سب سے اہم راستہ ہے۔[111][111] راولپنڈی کی اہم صنعتوں میں آئل ریفائنری، گیس پروسیسنگ، سٹیل مینوفیکچرنگ، آئرن ملز، ریل روڈ یارڈز، ایک مری بریوری، آرا ملز، ٹینٹ فیکٹریاں، ٹیکسٹائل، ہوزری، مٹی کے برتن، چمڑے کے سامان کی پیداوار، [111] نقل و حمل اور سیاحت شامل ہیں۔

راولپنڈی شہر میں کئی بینک موجود ہیں ہے جن میں بینک دولت پاکستان، نیشنل بینک آف پاکستان، ایچ بی ایل پاکستان، ایم سی بی بینک لمیٹڈ، یونائیٹڈ بینک لمیٹڈ پاکستان، الائیڈ بینک لمیٹڈ پاکستان اور بینک آف پنجابشامل ہیں۔

زراعت ترمیم

معاشی طور پر راولپنڈی زراعت میں خود کفیل ہے زرعی لحاظ سے درج ذیل سبزیاں پھل راولپنڈی میں وافر مقدار میں پیدا ہوتی ہیں جن میں گندم، مکئی، جوار، مونگ پھلی، باجرہ، مونگ، ماش، مسور،  چنا، گوار سیڈ، سورج مکھی، ریپ سیڈ اور سرسوں، جو، سیزنم،   شوگر، السی، سن ہیمپ، ارنڈ اور اخروٹ، امرود، آم، آڑو، ناشپاتی، خوبانی، کیلے، لوکاٹ،  بیر، شہتوت، تربوز، کستوری، بیر، لوکاٹ، بڑی سبزیاں آلو، پیاز، بھنڈی، کریلا، بیگن، شلجم، گاجر،  گوبھی، مٹر، ٹماٹر، مرچ، لہسن وغیرہ شامل ہیں۔[112]

صنعت ترمیم

راولپنڈی برصغیر کو چین، افغانستان سے ملانے والے مرکزی راستے پر ہے۔ یہ شہر ایک چھوٹے سے تجارتی شہر سے ایک صنعتی پاور ہاؤس بن گیا ہے۔ یہاں  انجینئرنگ سے لے کر چپ بورڈ، کیمیکل اور سیمنٹ تک ہر قسم کی صنعتوں سے بھرا ہوا ہے۔  یہاں 74 فلور ملز، 9 ٹیکسٹائل ملز، 14 فارماسیوٹیکل یونٹس، 7 صنعتی جلنے والی گیسیں اور 8 فوڈ فیکٹریاں ہیں۔   یہاں گھی اور خوردنی تیل کی ملیں، فلور ملز، کولڈ سٹوریج، آئس فیکٹریاں، فوڈ پروسیسنگ اور   مشروبات کی فیکٹریاں بڑی تعداد میں موجود ہیں۔[112]

راولپنڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری ترمیم

راولپنڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری راولپنڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری، پاکستان کی ایک بزنس ایسوسی ایشن ہے جسے 1952ء میں قائم کیا گیا تھا اور اسے حکومت پاکستان نے 1959ء میں تسلیم کیا تھا۔ آج راولپنڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری 8000 سے زیادہ ارکان کی خدمت کر رہا ہے جس میں مینوفیکچررز سے لے کر گھریلو چھوٹے کاروبار تک شامل ہیں۔ راولپنڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری نے خطے میں تجارتی، صنعتی اور اقتصادی سرگرمیوں کی ترقی میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ راولپنڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری، فیڈریشن آف پاکستان چیمبرز آف کامرس اینڈ انڈسٹری سے منسلک ہے۔ جو خود انٹرنیشنل چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کا رکن ہے۔[113]

روات انڈسٹریل ایریا ترمیم

راولپنڈی چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے زیر انتظام پوٹھوہار ریجن کا واحد انڈسٹریل زون راوت انڈسٹریل اسٹیٹ کو 1992ء میں اس کے قیام کے بعد ٹیکس فری زون قرار دیا گیا تھا۔ راوت انڈسٹریل اسٹیٹ 1300 یونٹس کی گنجائش والی جگہ پر اس وقت 400 صنعتی یونٹ ہیں۔ روات انڈسٹریل ایریا آٹھ ہزار کنال سے زائد اراضی پر پھیلی ہوئی ہے۔[114]

بازار ترمیم

راجا بازار ترمیم

 
راجا بازار

راجا بازار، راولپنڈی کا تجارتی اور رہائشی علاقہ ہے۔ راجا بازار میں ضروریات زندگی کی بہت سی چیزیں دستیاب ہیں۔ راجا بازار میں بڑے کاروباری اور تجارتی مراکز اور تھوک کی بڑی بڑی مارکیٹیں موجود ہیں۔ راجا بازار سے جڑی کئی سڑکیں ٹرنک بازار، لیاقت روڈ، موتی بازار، بھابڑا بازار، نمک منڈی اور نرنکاری بازار کو جاتی ہیں۔[115]

صدر ترمیم

صدر، راولپنڈی چھاؤنی کا اہم تجارتی مرکز ہے۔ یہ مال روڈ اور مرکزی ریلوے لائنوں کے درمیان واقع ہے جو راولپنڈی کو دوسرے شہروں سے ملاتی ہیں۔ اس میں بڑے کاروباری اور تجارتی مراکز، پاکستانی بینکوں کی شاخیں اور برطانوی نوآبادیاتی دور کے رہائشی علاقے ہیں۔ صدر میں دوکانوں اور شاپنگ مالز میں مقامی طور پر تیار کردہ مصنوعات اور درآمد شدہ اشیاء دستیاب ہوتی ہیں۔[116]

نقل و حمل ترمیم

 
راولپنڈی- اسلام آباد کی عوامی ٹراسپورٹ کا نقشہ

شہر میں سفر کی مناسب سہولتیں میسر ہیں اور شہر کے بڑے حصوں کو ملانے والی سڑکوں کی حالت بہترین ہے۔ مری روڈ شہر کی سب سے مصروف ترین سڑک ہے۔ شہر کے اندر سفر کرنے کے لیے پبلک ٹرانسپورٹ جن میں ٹیکسی، بسیں، رکشا، ویگن وغیرہ ہر وقت دستیاب رہتی ہیں۔ پیر ودھائی اڈا، سواں اڈا اور فیض آباد اڈا پر پورے پاکستان کے لیے ہر وقٹ ٹرانسپورٹ موجود رہتی ہے۔[117] اس کی علاوہ داولپنڈی شہر میں راولپنڈی-اسلام آباد میٹرو بس بھی ہے جس سے روزانہ ہزاروں کی تعداد میں مسافر سفر کر رہے ہیں۔ یہ سروس بذریعہ فیض آباد انٹرچینج کے قریب سے اسلام آباد میں داخل ہوتی ہے اور اسلام آباد ریڈ زون میں اس کا آخری سٹاپ ہے۔[118]

میٹرو بس ترمیم

 
فیض آباد انٹرچینج، میٹرو بس کا راولپنڈی سے اسلام آباد داخلی راستہ

راولپنڈی-اسلام آباد میٹرو بس میں تیز نقل و حمل کا ایک نظام ہے۔ راولپنڈی و اسلام آباد جڑواں شہروں میں شہری ٹرانسپورٹ کا جدید نظام جو حکومت پاکستان نے ترکی حکومت کی مدد سے تعمیر کیا۔ اس کی لمبائی 24 کلومیٹر (14.9میل) ہے۔ جس پر 24 اسٹیشن قائم کیے گئے ہیں، جو دونوں شہروں کے اہم مقامات پر واقع ہیں۔ روانہ ڈیڑھ لاکھ مسافر میٹرو بس کے ذریعے سفر کرتے ہیں۔ پنجاب کی صوبائی حکومت کے سربراہ وزیر اعلیٰ میاں محمد شہباز شریف نے تقریباً پینتالیس ارب روپے کی لاگت سے ترکی کی مدد سے مری روڈ و اسلام آباد میں تیار ایک عظیم الشان بین الاقوامی طرز کی راولپنڈی-اسلام آباد میٹرو بس کا افتتاح کیا۔[119] جہاں شہریوں کو ٹرانسپورٹ کی سستی اور اعلیٰ سہولت فراہم کی، وہیں شہر کی خوبصورتی میں مزید اضافہ کر دیا۔[120]

شاہراہیں ترمیم

راولپنڈی تاریخی طور پر بہت اہمیت کا حامل رہا ہے جو مختلف راستوں سے وسط ایشیا، جنوبی ایشیا سے مربوط رہا ہے۔ شہر میں عمومی نقل و حمل کے لیے سڑکوں کا جال موجود ہے۔ پاکستان کے مروجہ نظام شاہرات کے تحت قائم بین الاضلاعی شاہرات کے ذریعے یہ شہر اسلام آباد، اٹک، جہلم، چکوال، مری، گوجرخان، کوہاٹ، مظفر آباد، لاہور، پشاور اور ایبٹ آباد کے ساتھ متصل ہے۔ جی ٹی روڈ راولپنڈی شہر کو پاکستان مختلف حصوں سے ملاتی ہے۔ جی ٹی روڈ راولپنڈی شہر کے درمیان میں ہے۔[121] مندرجہ ذیل بین صوبائی یا بین الاقوامی شاہراہوں کا ذکر ہے۔

جی ٹی روڈ ترمیم

گرینڈ ٹرنک روڈ یا جسے مختصرًا جی ٹی روڈ بھی کہتے ہیں دراصل ایشیا کی طویل ترین اور قدیم ترین شاہراہوں میں سے ایک ہے۔ اس کی عمر 2000 سال ہے۔ یہ شاہراہ جنوبی ایشیا کو وسطی ایشیا سے ملاتی ہے جو بنگلہ دیش سے شروع ہوکر بھارتی علاقوں سے ہوتی ہوئی پاکستانی پنجاب پھر خیبر پختونخوا اور آخر میں افغان شہر کابل تک جاتی ہے۔ جی ٹی روڈ راولپنڈی شہر کے وسط سے گزرتی ہے۔[122] [123][124][125] [126][127]

مری روڈ ترمیم

 
راولپنڈی میں مری روڈ کا پل سے نظارہ، جبکہ کمیٹی چوک انڈر پاس پر تعمیراتی کام پس منظر میں کیا جا رہا ہے

مری روڈ، جسے متبادل طور پر بے نظیر بھٹو روڈ بھی کہا جاتا ہے، ایک بڑی سڑک ہے جو اسلام آباد اور راولپنڈی سے ہوتی ہوئی مری تک جاتی ہے۔ یہ سڑک راولپنڈی شہر کے وسط میں مرکزی علاقوں سے گزرتی ہے۔ [112] اس کا اصل نام رضا شاہ پہلوی روڈ تھا اس کو 1960ء کی دہائی میں ایران کے آخری شاہ محمد رضا پہلوی کے نام پر رکھا گیا تھا، جو پاکستان کا دورہ کرنے والے پہلے سربراہ مملکت تھے۔ تاہم، یہ ہمیشہ مری روڈ کے نام سے جانا جاتا ہے کیونکہ یہ آخر کار مری کے قریبی پہاڑی مقام تک پہنچا۔[112]

اسلام آباد ایکسپریس وے ترمیم

اسلام آباد ایکسپریس وے راولپنڈی کے مشرقی حصوں کو راول جھیل اور اسلام آباد سے جوڑتا ہے۔ جبکہ آئی جے پی روڈ راولپنڈی کے شمالی کنارے کو اسلام آباد سے جوڑتا ہے۔ [128]

راولپنڈی رنگ روڈ ترمیم

 
مری روڈ

راولپنڈی رنگ روڈ جو 38.3 کلومیٹر طویل رنگ روڈ ہے چھ لین پر مشتمل ہوگی۔ یہ روات کے قریب بانٹھ جی ٹی روڈ سے شروع ہوکر موٹر وے کے قریب ٹھلیاں پر اختتام پزیر ہوگا۔ رنگ روڈ پر بانٹھ، چک بیلی خان، اڈیالہ روڈ، چکری روڈ، ٹھلیاں، کل پانچ انٹر چینجز ہوں گے۔[129][130][131]

لئی ایکسپریس وے ترمیم

لئی ایکسپریس وے، اسلام آباد اور راولپنڈی کو آئی جے پی روڈ کے ذریعے جی ٹی روڈ سے ملانے کے لیے 17 کلومیٹر طویل زیر تعمیر متبادل سڑک ہے۔ منصوبے کی ابتدائی لاگت کا تخمینہ 70 ارب روپے لگایا گیا ہے۔ اسے سرکاری اور نجی اداروں کی شراکت سے بنایا جائے گا۔ ایشیائی ترقیاتی بینک اس منصوبے سے منسلک سیوریج ٹریٹمنٹ پلانٹ کی تنصیب کے لیے 10 ارب روپے فراہم کرے گا۔   [132][133][134][135]

فیض آباد انٹرچینج ترمیم

فیض آباد انٹرچینج جڑواں شہروں راولپنڈی اور اسلام آباد کو ملانے والی بنیادی گذرگاہ ہے۔ اسے 1990ء کی دہائی میں مری روڈ اور اسلام آباد ایکسپریس وے پر ٹریفک کا مسئلہ حل کرنے کے لیے بنایا گیا تھا۔[136]

موٹروے ترمیم

 
M-2 موٹروے راولپنڈی کو لاہور سے جوڑتی ہے۔

راولپنڈی شہر کو موٹروے ایم 1 موٹروے (پاکستان)[137] اسلام آباد اور پشاور اور ایم 2 موٹروے (پاکستان) لاہور اور اسلام آباد سے ملاتی ہے۔ دونوں موٹرویز چھ لینوں پر مشتمل ہیں۔[138]

ایم 1 موٹر وے جو خیبر پختونخوا اور پنجاب کو ملاتی ہے۔ گولڑہ موڑ کے ذریعے راولپنڈی میں داخل ہوتی ہے۔ یہ موٹر وے افغانستان اور وسطی ایشیا کے لیے ایک اہم رابطہ سڑک بن چکی ہے۔ جبکہ ایم 2 موٹر وے جو اسلام آباد اور لاہور کو ملاتی ہے۔ گولڑہ موڑ کے ذریعے راولپنڈی میں داخل ہوتی ہے۔ یہ موٹر وے پنجاب، سندھ، بلوچستان اور خیبر پختونخوا پاکستان کے تمام صوبوں کو آپس میں ملاتی ہے۔[139]

ریلوے ترمیم

 
راولپنڈی ریلوے اسٹیشن

راولپنڈی ریلوے اسٹیشن، پنجاب میں کراچی–پشاور مرکزی ریلوے لائن پر واقع ہے۔ یہ اسٹیشن پاکستان کے مصروف ترین ریلوے اسٹیشنوں میں سے ایک ہے اور پاکستان ریلویز کا ایک اہم ترین ریلوے اسٹیشن ہے۔ یہاں سبک خرام، گرین لائن ایکسپریس اور سبک رفتار ریل گاڑیاں چلتی ہیں۔ راولپنڈی ریلوے اسٹیشن 19ویں صدی میں تعمیر کیا گیا تھا۔ یہاں سے ٹرینیں پاکستان کے مختلف شہروں کو جاتی ہیں جن میں کراچی، لاہور، پشاور، کوئٹہ، حیدرآباد، سکھر، ملتان، بہاولپور، رحیم یار خان، فیصل آباد، کوہاٹ، سرگودھا، نارووال، ڈیرہ غازی خان، منڈی بہاؤ الدین، سیالکوٹ اور جیکب آباد ہیں۔[140]

کراچی اور پشاور کے درمیان مین لائن-1 ریلوے ٹریک کو $3.65 بلین کی لاگت سے اپ گریڈ کیا جائے گا۔ اور اس لائن کو راولپنڈی سے لاہور تک ڈبل کیا جائے گا۔  [141] ریلوے لائن کو اپ گریڈ کرنے سے ٹرین کی رفتار 160 کلومیٹر فی گھنٹہ ہو جائے گی، جبکہ موجودہ رفتار110 کلومیٹر فی گھنٹہ ہے۔ راولپنڈی ریلوے اسٹیشن کے علاوہ راولپنڈی میں مندرجہ ذیل ریلوے اسٹیشن ہیں:

سفاری ٹرین ترمیم

پاکستان ریلویز راولپنڈی ڈویژن کے زیر انتظام ایک سیاحتی سفاری ٹرین گولڑہ شریف جنکشن ریلوے اسٹیشن اور اٹک خورد ریلوے اسٹیشن کے درمیان ہر اتوار کو چلائی جاتی ہے۔[142]

فضائی ترمیم

 

اسلام آباد انٹرنیشنل ایئرپورٹ،[143]پاکستان کے دار الحکومت اسلام آباد اور راولپنڈی کی خدمت کرنے والا بین الاقوامی ہوائی اڈا ہے۔ یہ ہوائی اڈا شہر سے 25 کلومیٹر (16 میل) جنوب مغرب میں واقع ہے اور سری نگر ہائی وے کے ذریعے اس تک رسائی حاصل کی جاتی ہے۔ اس ہوائی اڈے نے 6 مئی 2018ء میں مکمل طور پر کام شروع کیا۔[144] جس نے بینظیر بھٹو بین الاقوامی ہوائی اڈا کی جگہ لے لی جو اب پی اے ایف بیس نور خان کا حصہ ہے۔ یہ رقبہ اور مسافروں کی گنجائش کے لحاظ سے پاکستان کا سب سے بڑا کارگو ہوائی اڈا ہے، جو سالانہ 9 ملین مسافروں کی خدمت کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ مستقبل میں مزید توسیع سے اسے سالانہ 25 ملین مسافروں کی خدمت کرنے کا موقع ملے گا۔ یہ جناح انٹرنیشنل ایئرپورٹ، کراچی کے بعد مسافروں کی آمدورفت کے لحاظ سے پاکستان کا دوسرا مصروف ترین ایئرپورٹ ہے۔ ٹرمینل میں 15 دروازے، ڈیوٹی فری شاپس، ایک فوڈ کورٹ اور 42 امیگریشن کاؤنٹرز شامل ہیں۔ اس ہوائی اڈے پر پی آئی اے کے علاوہ دیگر 25 ائیر لائنز اپنی خدمات سر انجام دیتی ہیں۔ پرانے ائیر پورٹ کو اب صرف عسکری فورسز استعمال کرتی ہیں جو نور خان ائیر بیس سے منسلک ہے۔[145] دھمیال آرمی ایئر بیس یا قاسم ائیر بیس جو صرف عسکری فورسز کے استعمال کے لیے ہے، راولپنڈی میں ہے۔[146]

راولپنڈی میں فضائی کمپنیوں کے دفاتر ترمیم

ثقافت ترمیم

 
راولپنڈی آرٹس کونسل
 
لال حویلی

اسلام آباد نزدیک ہونے کی وجہ سے راولپنڈی کی تہذيب ميں مغربی عناصر بڑھتے جا رہے ہيں۔ يہ امرا اور روساء ميں زيادہ نماياں ہے کيونکہ مغربی اشياء، ميڈيا اور تہذيب تک ان کی زيادہ رسائی ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ ايک بڑھتی ہوئی تحريک ہے جو مغربی اثرات کو کم ديکھنا چاہتی ہے اور ان لوگوں کا زيادہ تر جھکاؤ اسلام اور کچھ ميں روايات کی طرف ہے۔

ادب ترمیم

 
راولپنڈی آرٹ گیلری

راولپنڈی آرٹس کونسل کے زیر اہتمام پوٹھوہاری ادبی میلہ ہر سال دسمبر کے مہینے میں منعقد کیا جانے والا ایک سالانہ ادبی میلا میں ہے۔[149][150]

موسیقی اور فلم ترمیم

راولپنڈی ميں بہت مختلف قسم کی موسيقی ملتی ہے۔ کلاسيکی موسيقی، نيم کلاسيکی موسيقی، لوک موسيقی اور اس کے ساتھ ساتھ جديد پاپولر ميوزک اور قوالی وغیرہ شامل ہیں۔

فنون اور دستکاری ترمیم

راولپنڈی آرٹس کونسل کے زیر اہتمام ہر سال ٹیلنٹ ہنٹ اور دستکاری کے مقابلوں کا انعقاد کیا جاتا ہے۔ جس میں راولپنڈی ڈویژن اور اسلام آباد سے ہنر مند دستکار بھرپور طریقے سے شرکت کرتے ہیں۔[151][152][153]

پکوان ترمیم

راولپنڈی میں پاکستانی کھانوں کے ساتھ وسطی ایشیائی، شمالی ہندوستان اور مشرق وسطی کے کھانے کا اثر ہر جگہ موجود ہے۔ راولپنڈی کا زیادہ تر کھانا مقامی پنجابی اور مغلائی کھانوں سے متاثر دکھائی دیتا ہے۔ روایتی مقامی کھانے کے علاوہ چینی، مغربی اور غیر ملکی کھانے پوری شہر میں مشہور ہیں اور بہتر ذائقہ پیدا کرنے کے لیے اکثر مقامی ترکیبیں استعمال کی جاتی ہیں۔

راولپنڈی شہر میں تین فوڈ سٹریٹ ہیں ایک اندرون شہر میں جسے کرتار پور فوڈ اسٹریٹ کہتے ہیں دوسری ڈبل روڈ پر اور تیسری صدر بازار میں واقع ہے۔ اندرون شہر راولپنڈی میں روایتی پکوان جیسے بریانی، کباب اور حلیم کو مقامی لوگ پسند کرتے ہیں۔[154]

درج ذیل میں راولپنڈی کی تین بہترین فوڈ اسٹریٹس ہیں:

کرتارپور فوڈ اسٹریٹ ترمیم

 
بالٹی گوشت

بنی چوک میں واقع کرتار پورہ فوڈ اسٹریٹ میں روایتی پکوان جن میں نہاری، پائے، حلوہ پوری، مرغ چنے، پلاو، مٹن کڑھائی، بریانی، قیمہ، باربی کیو، کوفتے، پٹھورے، حلیم، دہی بھلے، کچوریاں قابل ذکر ہے۔ کرتار پور کی چھوٹی چھوٹی سڑکیں ہمیشہ نہاری کی خوشبو، بھاپ سے بھری ہوئے پائے اور پتھوروں کی تپش سے بھری رہتی تھیں۔ کرتارپورہ پنجاب کی ثقافت کا اظہار کرتا ہے اور دکان دار مختلف رنگوں کا روایتی پگ (ہیڈ گیئر) پہنے ہوئے پائے جاتے ہیں۔[155]

صدر فوڈ اسٹریٹ ترمیم

 
صدر فوڈ اسٹریٹ

فوڈ اسٹریٹ صدر اپنے خوشگوار ماحول کی وجہ سے بے حد مشہور ہے۔ یہ فوڈ اسٹریٹ 2015ء میں قائم کی گئی تھی۔ یہ فوڈ اسٹریٹ تلی ہوئی مچھلی، بار بی کیو، چکن کڑاہی، روسٹڈ چکن، بریانی، شوارما، مکئی کے سوپ، رول، دہی بھلے، فروٹ چاٹ، برگر، گلاب جامن، کھیر، برفی، ربڑی، آئس کریم کے لیے مشہور ہے۔[156]

پنڈی فوڈ اسٹریٹ ترمیم

یہ فوڈ اسٹریٹ راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم کے احاطے میں واقع ہے۔ یہ فوڈ اسٹریٹ مقامی کھانوں اور ثقافت کو فروغ دینے کے لیے 2005ء میں قائم کی گئی تھی جو کھانے پینے کے لیے ایک مقبول جگہ کے طور پر جانی جاتی ہے۔ پنڈی فوڈ اسٹریٹ مصروف ترین کھانے کی جگہ ہے۔ دن ہو یا رات، کھانے پینے کی دکانیں ہمیشہ لوگوں سے بھری رہتی ہیں۔ اس کے علاوہ، کھانے کی لذیذ خوشبو وہاں سے گزرنے والے کو اپنی طرف متوجہ کرتی ہے۔ یہ بار بی کیو، چینی، کانٹی نینٹل، روایتی پکوان، مٹھائیاں، سوپ، کڑاہی اور تکا سمیت کھانوں کی ایک وسیع رینج فراہم کرتا ہے۔[157]

ہوٹل / شرب وطعام ترمیم

  • سیور فوڈز[158]
  • بالا تکہ ہائوس
  • مصطفی دارالماہی
  • عادل ہوٹل
  • مجید نہاری
  • کالا خان نہاری
  • اکبر جی سری پائے
  • شہنشاہ تکہ ہائوس
  • تہذیب بیکرز
  • راحت بیکرز
  • کاکا سویٹس
  • کریم سموسہ
  • لذیذیہ ریسٹورنٹ
  • کے ایف سی
  • میکڈونلڈ
  • پرل کانٹیننٹل
  • فلیش مین ہوٹل[159]
  • او پی ٹی پی
  • چیزیس
  • حافظ مرغ چنے

مذہبی عمارات ترمیم

اسلامی ثقافت راولپنڈی کے رسم و رواج اور روایات کو متاثر کرتی ہے۔ عید الفطر اور عید الاضحی جیسے اسلامی تہوار بڑے جوش و خروش کے ساتھ منائے جاتے ہیں۔ راولپنڈی میں اسلامی خطاطی، اپنے خوبصورت عربی رسم الخط کے ساتھ، مساجد، عوامی مقامات اور آرٹ کی نمائشوں میں دیکھی جا سکتی ہے۔[160]

مساجد ترمیم

راولپنڈی میں درج ذیل مشہور مساجد ہیں:[161]

  • مرکزی جامع مسجد، راولپنڈی
  • موتی مسجد، لیاقت روڈ
  • زکریا مسجد، اقبال ٹاون
  • عیدگاہ شریف مسجد
  • جامع مسجد ملک ریاض حسین، بحریہ ٹاون
  • جامع مسجد فاطمہ، بحریہ ٹاون
  • گولیوں والی مسجد، چن بازار

مزارات ترمیم

 
عیدگاہ شریف

راولپنڈی میں اولیا اکرام کے بے شمار مزارات ہیں۔ درج ذیل میں اولیا کرام کے مزارات کی فہرست ہے۔[162]

گرجا گھر ترمیم

 
کرائسٹ چرچ، راولپنڈی

مندر ترمیم

یہودی عبادت گاہ ترمیم

قبرستان ترمیم

راولپنڈی کے ہر علاقے میں مقامی قبرستان موجود ہیں، درج ذیل قبرستان خصوصی اہمیت کے حامل ہیں۔[164][165]

تہوار ترمیم

 
یوم پاکستان کے موقع پر جے ایف-17 تھنڈر طیارے

راولپنڈی میں پورے ملک کی طرح مذہبی اور قومی تہوار بھی جوش و جذبے سے منائے جاتے ہیں۔ درج ذیل چند اہم تہواروں کی ایک فہرست ہے۔[166]

قومی ترمیم

مذہبی ترمیم

ذرائع ابلاغ ترمیم

راولپنڈی شہر میں ایک درجن سے زائد اخباری کمپنیاں ہیں جن میں روزنامہ نوائے وقت، روزنامہ جنگ، روزنامہ اساس، روزنامہ صدا حق، روزنامہ ایکسپریس، روزنامہ دین، روزنامہ آج کل راولپنڈی، روزنامہ اسلام، ایکسپریس ٹریبیون، ڈیلی ٹائمز، دی نیوز، روزنامہ پاکستان، ڈان (اخبار)، دی نیشن (پاکستان) اور دی ایکسپریس ٹریبیون شامل ہیں۔ شہر میں بڑی تعداد میں کیبل ٹی وی سروس فراہم کرنے والی کمپنیاں ہیں جن میں نیاٹیل، پی ٹی سی ایل، ایس اے کیبل نیٹ ورک اور ڈی ڈبلیو این شامل ہیں۔ پاکستان براڈکاسٹنگ کارپوریشن کا دفتر راولپنڈی میں واقع ہے۔[167]

پریس کلب راولپنڈی ترمیم

 
جنرل پوسٹ آفس، صدر ، راولپنڈی

راولپنڈی پریس کلب[168] اور راولپنڈی آرٹس کونسل صحافت اور ادبی سرگرمیوں میں نمایاں کردار ادا کر رہا ہے۔

اخبارات و رسائل ترمیم

جنرل پوسٹ آفس ترمیم

جنرل پوسٹ آفس (General Post Office / GPO) راولپنڈی کا مرکزی ڈاک خانہ ہے۔ یہ راولپنڈی شہر میں بنک روڈ پر واقع ہے۔[170]

شہر/قصبہ رمزِ ڈاک ضلع/صدر ڈاک خانہ صوبہ/عملداری
راولپنڈی Cantt 45000 راولپنڈی پنجاب
راولپنڈی GPO 46000 راولپنڈی پنجاب
راولپنڈی سیٹلائٹ ٹاؤن 46300 راولپنڈی پنجاب
راولپنڈی ویسٹرج 46060 راولپنڈی پنجاب

سینما گھر/ڈراما ترمیم

2012 کے وسط میں تھری ڈی سنیما، دی ایرینا نے راولپنڈی کے بحریہ ٹاؤن فیز 4 میں اپنا کام شروع کیا۔[171][172]

  • روز سینما فوارہ چوک
  • شبستان سینماکمیٹی چوک
  • گلستان سینما کمیٹی چوک
  • کہکشاں سینما کمیٹی چوک
  • ریالٹو سینما مری روڈ
  • موتی محل سینمامری روڈ
  • سنگیت سینما مری روڈ
  • ناز سینما مری روڈ
  • نادر سینما سیٹلائٹ ٹاؤن
  • پی اے ایف سینما چک لالہ
  • کیپیٹل سینما بینک روڈ صدر
  • اوڈین سینما مال روڈ
  • پلازہ سینما مال روڈ
  • سیروز سینما حیدر روڈصدر
  • خورشید سینما ڈِنگی کھوئی
  • ناولٹی سینما موہن پورہ
  • نشاط سینما لیاقت روڈ
  • امپیریل سینما راجا بازار
  • تاج محل سینما سٹی صدر روڈ
  • تصویر محل لالکڑتی بازار
  • گریژن سینما آر اے بازار
  • قاسم سینما دھمیال کیمپ

تعلیم ترمیم

 
گورنمنٹ کالج برائے خواتین
 
راولپنڈی کی فاطمہ جناح ویمن یونیورسٹی وکٹورین حویلی میں واقع ہے۔

راولپنڈی میں بہت سارے تعلیمی ادارے ہیں جن میں اسکول، کالج اور یونیورسٹیاں شامل ہیں۔ گارڈن کالج کو امریکن پریسبٹیرین مشن نے قائم کیا تھا جس میں شروع میں نو پروفیسرز تھے اور کالج کا سالانہ خرچ بیس ہزار روپے تھا۔ سریشت نیتی ہائی اسکول 1906ء میں رائے بہادر بوٹا سنگھ کے عطیہ سے قائم کیا گیا تھا۔ ڈینیز ہائی اسکول کی جگہ پر پہلے کنٹونمنٹ ٹریننگ اکیڈمی تھی لیکن 1893ء میں یہ عمارت گر گئی جس کے بعد کنٹونمنٹ کے مجسٹریٹ میجر ڈینی نے یہاں اسکول قائم کر دیا۔ ماموں جی اسلامیہ ہائی اسکول 1896ء میں مسلمانوں نے مل کر بنایا جسے حکومت سالانہ 1843 روپے گرانٹ دیتی تھی۔ ضلع میں لڑکیوں کے 34 اسکول تھے جن میں سے 20 کھیم سنگھ بیدی نے قائم کیے تھے۔ گرمکھی اسکولوں کے علاوہ لڑکوں کے تمام اسکولوں میں ذریعہ تعلیم اردو تھا۔ ذیل میں راولپنڈی کے سرکاری اور غیر سرکاری اسکول، کالج اور یونیورسٹیوں میں سے کچھ کے نام ہیں:[173] ضلع راولپنڈی میں 2,463 سرکاری اسکول ہیں، جن میں سے 1706 پرائمری اسکول، 306 مڈل اسکول، 334 ہائی اسکول ہیں، جب کہ 117 ہائیر ایجوکیشن کالج ہیں۔[174] ضلع راولپنڈی کے شہری علاقوں میں 6-16 سال کی عمر کے 97.4% بچے اسکول میں داخل ہیں – جو اسلام آباد اور کراچی کے بعد پاکستان میں تیسری سب سے زیادہ تعلیمی فیصدہے۔ [175][175] راولپنڈی میں 27% بچے پرائیویٹ اسکولوں میں پڑھتے ہیں۔[176]

 
گورنمنٹ گورڈن کالج ، راولپنڈی
 
پیر مہر علی شاہ بارانی یونیورسٹی
  • بورڈ آف انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن، راولپنڈی، 1978ء میں ثانوی تعلیم اور اعلی ثانوی تعلیم کے امتحانات منعقد کرنے کے لیے قائم کیا گیا۔
  • پیر مہر علی شاہ، ایرڈ ایگریکلچر یونیورسٹی (جسے بارانی یونیورسٹی بھی کہا جاتا ہے) ایک مشہور پبلک یونیورسٹی ہے جو متعدد شعبوں میں تحقیق اور تعلیم پیش کرتی ہے اور زراعت میں مہارت رکھتی ہے۔ یہ مری روڈ پر ہے اور اسے شہر کے دیگر مقامات بشمول راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم، راولپنڈی پبلک پارک، راولپنڈی آرٹس کونسل وغیرہ کے نزدیک ہے۔ ایرڈ یونیورسٹی واحد یونیورسٹی ہے جو راولپنڈی اور اسلام آباد میں زراعت کے متعلق ڈگریاں فراہم کرتی ہے۔
  • آرمی میڈیکل کالج کو کالج آف میڈیکل سائنسز کے نام سے بھی جانا جاتا ہے اور یہ راولپنڈی میں عابد مجید روڈ پر ہے۔ پوسٹ گریجویٹ اور انڈر گریجویٹ طلبہ کے لیے الگ الگ کمپیوٹر لیبز ہیں۔ کیمپس کی دیگر سہولیات میں ایک لائبریری، کیفے ٹیریا، کالج مسجد، سوئمنگ پول، جم، اسکواش کورٹ اور آڈیٹوریم شامل ہیں۔ کالج کیمپس کے قریب مرد اور خواتین طلبہ کے لیے سات ہاسٹل ہیں۔
  • کالج آف الیکٹریکل اینڈ مکینیکل انجینئرنگ راولپنڈی میں گرینڈ ٹرنک روڈ پر واقع ہے، [177] کیمپس میں تمام سہولیات، آڈیٹوریم اور کانفرنس ہال، رہائش اور میس کی سہولیات شامل ہیں۔ لائبریری مکمل طور پر کمپیوٹرائزڈ ہے، جس میں 70,000 جلدوں کا مجموعہ ہے۔
  • راولپنڈی یونیورسٹی، راولپنڈی کینٹ میں ہمایوں روڈ پر ہے۔ اس کی بنیاد 2022ء میں عمران خان کی حکومت کے بعد پاکستان کی مسلح افواج کے ارکان کو تربیت دینے کے لیے رکھی گئی تھی۔ کالج آف ٹیلی کمیونیکیشن انجینئرنگ اس کیمپس میں واقع ہے۔ MCS لائبریری کمپیوٹرائزڈ ہے، جس میں 55,000 سے زیادہ جلدیں ہیں۔
  • راولپنڈی میڈیکل یونیورسٹی صحت کی دیکھ بھال میں تعلیم فراہم کرتی ہے۔ یہ جامع، ریاست کی مدد سے چلنے والا ادارہ ہے۔ یہ مارچ 1974ء میں قائم کیا گیا تھا۔ پاکستان کے میڈیکل کالجوں میں اس میں سب سے زیادہ 350 طلبہ کا داخلہ ہے۔
  • راولپنڈی پبلک لائبریری ہندوستان سے علیحدگی کے بعد منظم ہونے والی ابتدائی نجی پبلک لائبریریوں میں سے ایک تھی۔ یہ عمارت اس وقت کے ڈپٹی کمشنر میجر ڈیوس نے مخیر حضرات خورشید انور جیلانی، جو ایک وکیل، مصنف اور سماجی کارکن ہیں، کی پہل پر ایک پبلک لائبریری کے لیے عطیہ کی تھی۔ تاہم، فیلڈ مارشل ایوب خان کے دور حکومت کے آخری دنوں میں اس عمارت کو انتخابی اور سیاسی مہم چلانے کے لیے ضبط کر لیا گیا تھا ا
  • اور نایاب نسخے اور نمونے بااثر افراد اپنے ساتھ لے گئے تھے۔
  • فاطمہ جناح ویمن یونیورسٹی پاکستان کی پہلی ویمن یونیورسٹی ہے۔
  • گورڈن کالج راولپنڈی شہر کے وسط میں واقع قدیم ترین کالجوں میں سے ایک ہے۔ یہ 1872ء میں قائم کیا گیا تھا۔ کالج گریجویٹ اور ماسٹر ڈگری پروگرام پیش کرتا ہے۔ تاریخی طور پر یہ کالج اپنی ثقافتی سرگرمیوں کے لیے جانا جاتا ہے کیونکہ اس کا ایک بڑا آڈیٹوریم ہے جس میں اسٹیج ڈرامے اور دیگر پروگرام باقاعدگی سے منعقد کیے جاتے تھے۔ کالج 1970ء کی دہائی کے اوائل تک مخلوط تعلیم رہا لیکن ضیاء الحق کی حکومت کے بعد اسے صرف لڑکوں میں تبدیل کر دیا گیا۔
  • فاؤنڈیشن یونیورسٹی راولپنڈی کیمپس لالہ زار میں واقع ہے۔ یہ بنیادی طور پر آئی ٹی اور بائیوٹیک سے متعلق کورسز پیش کرتے ہیں جیسے کمپیوٹر سائنس میں پی ایچ ڈی وغیرہ۔[178]
  • راولپنڈی ویمن یونیورسٹی ایک عوامی یونیورسٹی ہے جسے حکومت پنجاب کی طرف سے فنڈز فراہم کیے جاتے ہیں۔ یونیورسٹی 15 بی ایس آنرز، 16 ماسٹرز اور 1 ایم فل پروگرام کامیابی سے چلا رہی ہے۔

راولپنڈی کو اسکولوں، کالجوں، یونیورسٹیوں اور مدارس کا شہر بھی کہا جاتا ہے۔ مندرجہ ذیل راولپنڈی کے اہم تعلیمی اداروں کی ایک فہرست ہے۔

یونیورسٹیاں/جامعات ترمیم

راولپنڈی میں درج ذیل یونیورسٹیاں ہیں:[179][180]

کالج ترمیم

راولپنڈی میں درج ذیل کالج ہیں:[181][182]

  • گورنمنٹ اصغر مال کالج، راولپنڈی
  • لیڈرشپ کالج آف کامرس
  • راولپنڈی کالج آف کامرس
  • پنجاب کالج آف انفارمیشن ٹیکنالوجی
  • اسلام آباد کالج آف مینجمنٹ اینڈ کامرس
  • راول کالج آف کامرس
  • سکالرز کینٹ کالج آف کامرس
  • اورینٹ انٹرنیشنل کامرس کالج
  • فیڈرل سائنس اینڈ کامرس کالج
  • زاویہ کالج
  • سپر ونگز کالج
  • اقرا کالج آف کامرس اینڈ کمپیوٹر سائنسز
  • جناح انسٹی ٹیوٹ آف انفارمیٹکس اینڈ کامرس
  • فاطمہ جناح کالج آف کامرس
  • ہورائزن کالج فار گرلز
  • گلوبل کالج سسٹم
  • ظہور الاسلام گرلز ڈگری کالج
  • پنجاب کالج آف انفارمیشن ٹیکنالوجی
  • فاطمہ جناح ڈگری کالج برائے خواتین
  • اورینٹ انٹرنیشنل کامرس کالج
  • عسکری کالج
  • سول کالج آف کامرس
  • راولپنڈی ماڈل کالج آف کامرس
  • پنجاب کالج آف ایکسی لینس ان کامرس
  • اسلام آباد کالج آف مینجمنٹ اینڈ کامرس
  • پنجاب کالج آف کامرس
  • لٹل آکسفورڈ کالج آف کامرس
  • خیبر انسٹی ٹیوٹ آف پروفیشنل سکلز
  • انڈس کالج آف کامرس
  • راولپنڈی کالج آف کامرس
  • فوجی فاؤنڈیشن کالج
  • تصورات کالج اور اکیڈمی
  • ایف جی۔ سر سید کالج
  • چناب کالج آف سائنس اینڈ کامرس
  • ملٹری کالج آف سگنلز
  • گورنمنٹ گورڈن کالج ، راولپنڈی
  • بلقیس ایجوکیشن کالج برائے خواتین
  • جناح اسلامیہ کالج آف کامرس
  • سر سید سائنس کالج
  • مسلم لا کالج
  • او پی ایف گرلز کالج
  • بہترین لا کالج
  • راول کالج آف کامرس
  • فضایہ انٹرمیڈیٹ کالج
  • گورنمنٹ کالج آف ٹیکنالوجی
  • ماڈرن کالج آف کامرس اینڈ سائنسز
  • کیپس کالج

کتب خانے ترمیم

 
میونسپل لائبریری راولپنڈی

راولپنڈی میں بہت سے کتب خانے موجود ہیں۔ ان میں کچھ عوامی اور کچھ نجی کتب خانے ہیں۔ کچھ حکومتی، کچھ تنظیمی اور تعلیمی اداروں کے کتب خانے ہیں۔ عوامی کتب خانے کی مختلف اقسام ہیں۔ ان میں سے کچھ کتب خانے میں مطالعہ کرنے کے لیے رکنیت کا ہونا لازمی ہے۔ لیکن کچھ ایسی ہیں جن میں آپ بغیر رکنیت کے استفادہ کرسکتے ہیں راولپنڈی پاکستان کے ان شہروں میں شامل ہے جن میں مطالعہ کرنے والوں کی تعداد نسبتاً بہتر ہے۔ پچھلے چند برسوں میں مطالعہ کی طرف راغب ہونے والوں کی تعداد میں خاصا اضافہ ہوا ہے۔ راولپنڈی میں درج ذیل کتب خانے ہیں:[183][184]

  1. میونسپل لائبریری راولپنڈی
  2. کنٹونمنٹ پبلک لائبریری
  3. گورڈن کالج لائبریری
  4. فاطمہ جناح یونیورسٹی لائبریری
  5. لائبریری جامع محمدیہ غوثیہ ضیاء العلوم، صدر راولپنڈی
  6. آرٹس کونسل لائبریری

کھیل ترمیم

 
راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم

کرکٹ راولپنڈی کے لوگوں میں مقبول ترین کھیل ہے۔ راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم راولپنڈی میں ٹیسٹ کرکٹ کا اسٹیڈیم ہے، دیگر اسٹیڈیموں میں کے آر ایل کرکٹ اسٹیڈیم اور پنڈی کلب گراؤنڈ شامل ہیں۔ راولپنڈی کی مقامی کرکٹ ٹیم راولپنڈی ریمز ہے۔ فیلڈ ہاکی اور اسکواش بھی راولپنڈی میں بہت مقبول ہیں۔ راولپنڈی گالف کلب راولپنڈی میں ایک بڑا گالف کورس ہے۔ یہ شہر کے مرکز میں گرینڈ ٹرنک روڈ پر واقع ہے۔ یہ برطانوی راج کے نو آبادی دور میں تعمیر گیا۔ موجودہ دور میں یہ پاک آرمی کے زیر انتظام ہے۔ درج ذیل میں راولپنڈی میں واقع اسٹیڈیمز کی فہرست ہے۔[185]

لیاقت باغ اسپورٹس کمپلیکس ترمیم

 
لیاقت باغ اسپورٹس کمپلیکس ، راولپنڈی

لیاقت اسپورٹس کمپلیکس، لیاقت باغ، راولپنڈی مختلف قسم کے انڈور اور آؤٹ ڈور گیمزکے لیے ایک اسپورٹس کمپلیکس ہے۔ یہاں کھلاڑیوں کو سکھانے کے لیے بہت سے تجربہ کار ماہرین موجود ہیں۔ لیاقت اسپورٹس کمپلیکس راولپنڈی شہر میں کھیلوں اور صحت مند ایونٹس کے فروغ میں اہم کردار ادا کر رہا ہے۔ اسپورٹس کمپلیکس اسٹیڈیم، جم / جسمانی فٹنس سینٹر کی سہولیات فراہم کرتا ہے۔ کھیلوں میں یہاں بیڈمنٹن، ٹیبل ٹینس، کراٹے، ووشو، باکسنگ اور اسکواش کھیلے جاتے ہیں۔[186]

راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم ترمیم

 
راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم

راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم، راولپنڈی، میں ایک اسٹیڈیم ہے۔ یہ اسٹیڈیم اسلام آباد سے 4 میل کے فاصلے پر ہے۔ اس اسٹیڈیم میں تقریباً 15000 افراد بیٹھنے کی گنجائش ہے۔ راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم کو ون ڈے کا درجہ 1992ء میں اور ٹیسٹ کا درجہ 1993ء میں دیا گیا۔ اس کرکٹ گراؤنڈ پر 1996 کے ورلڈ کپ کے کئی میچز ہوئے۔ پاکستان سپر لیگ کے زیادہ تر میچز راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم میں کھیلے جاتے ہیں۔[187]

راولپنڈی گالف کلب ترمیم

راولپنڈی گالف کورس 1926ء میں برطانوی دور میں بنایا گیا جو پاکستان کے قدیم ترین گالف کلبوں میں سے ایک ہے۔ یہ گالف کورس 27 سوراخوں پر مشتمل ہے اور پاکستان میں سب سے بڑا کورس ہے۔ گالف کلب سے فیصل مسجد، اسلام آباد اور راولپنڈی کے جڑواں شہروں کا دلکش نظارہ ہے۔ یہاں پر گولف ٹورنامنٹ یاقاعدگی سے منعقد ہوتے ہیں۔ [188]

پاکستان آرمی فٹ بال کلب ترمیم

پاکستان آرمی فٹ بال کلب، راولپنڈی، پنجاب میں واقع ہے۔ یہ کلب پاکستان آرمی کی طرف سے 1950ء میں قائم کیا گیا تھا اور کے الیکٹرک (1913ء) اور پاکستان نیوی (1948ء) کے بعد پاکستان کا تیسرا قدیم ترین کلب ہے۔ یہ کلب پاکستان فٹ بال فیڈریشن کے تحت پاکستان پریمیئر لیگ میں کھیلتا ہے۔ پاکستان آرمی 4 بار پاکستان میں ٹاپ فلائٹ فٹ بال لیگ، 2 بار نیشنل فٹ بال چیلنج کپ اور 5 بار قائد اعظم ٹرافی جیت چکی ہے۔[189]

خان ریسرچ لیبارٹریز فٹ بال کلب ترمیم

خان ریسرچ لیبارٹریز فٹ بال کلب، راولپنڈی میں واقع ایک پیشہ ور فٹ بال کلب ہے۔ کلب خان ریسرچ لیبارٹریز سے منسلک ہے اور ٹیم اپنے ہوم گیمز کے آر ایل اسٹیڈیم میں کھیلتی ہے۔ کلب نے پانچ لیگ ٹائٹل اور چھ نیشنل فٹ بال چیلنج کپ جیتے ہیں۔ وہ گیارہ ٹرافیوں کے ساتھ ملک کا سب سے کامیاب کلب ہے۔[190]

صحت ترمیم

راولپنڈی میں دیگر سہولیات کی طرح یہاں صحت عامہ کی اعلیٰ سہولیات مسیر ہیں۔ درج ذیل راولپنڈی کے اہم ہسپتالوں اور طبی درس گاہوں کی ایک فہرست ہے۔[191]

سرکاری ہسپتال ترمیم

درج ذیل راولپنڈی کے بڑے اور قابل ذکر سرکاری ہسپتال ہیں۔[192][193]

پرائیویٹ ہسپتال ترمیم

درج ذیل راولپنڈی کے اہم نجی ہسپتال ہیں۔

  • ہارٹ انٹرنیشنل ہسپتال
  • ویلی کلینک
  • راولپنڈی لیپروسی ہسپتال
  • سینٹ جوزف ہاسپیس ہسپتال، راولپنڈی
  • عبد الستار جنرل ہسپتال
  • الخدمت رازی ہسپتال
  • اٹک ہسپتال لمیٹڈ
  • بلال ہسپتال
  • حنیف ہسپتال
  • جناح انٹرنیشنل ہسپتال
  • مدینہ میڈیکل سینٹر
  • مریم میموریل ہسپتال بحریہ ٹاؤن فیز 4
  • محبوب ہسپتال
  • نصرت ہسپتال
  • شفیع انٹرنیشنل ہسپتال

طبی درسگاہیں ترمیم

راولپنڈی کے مشہور علاقے ترمیم

 
قلعہ پھروالہ کا دروازہ
 
سکستھ روڈ کلاک ٹاور
 
پرانا قلعہ، راجا بازار

راولپنڈی میں بہت سی نجی کالونیاں بھی ہیں، جیسے گلریز ہاؤسنگ سوسائٹی، کورنگ ٹاؤن، آغوش ٹاؤن، غوری ٹاؤن، پاکستان ٹاؤن، جوڈیشل ٹاؤن، بحریہ ٹاؤن[194] جو ایشیا کی سب سے بڑی نجی کالونی ہے، کشمیر ہاؤسنگ سوسائٹی، دانیال ٹاؤن، الحرام سٹی، ایجوکیشن سٹی، گل افشاں کالونی، علامہ اقبال کالونی وغیرہ۔ راولپنڈی کے مشہور علاقے درج ذیل ہیں:[195]

سیاحتی و تفریحی مقامات ترمیم

 
پنجاب ہاؤس کے باہر سائن بورڈ

ایوب نیشنل پارک جو پہلے 'ٹوپی رکھ' کے نام سے جانا جاتا تھا، پرانی ایوان صدر سے آگے جہلم روڈ پر واقع ہے۔ اس کا رقبہ تقریباً 2300 ایکڑ ( 930 ہیکٹر) ہے اور اس میں پلے لینڈ، کشتی رانی کی سہولت والی جھیل، ایکویریم اور ایک ریسٹورنٹ ہے۔ ایوب پارک میں تفریحی کے لیے " جنگل کنگڈم " موجود ہے جو نوجوان میں کافی مقبول ہے۔

 
راول جھیل کا ایک منظر

2008ء میں راولپنڈی کے مرکز میں جناح پارک کا افتتاح کیا گیا تھا اور اس کے بعد سے یہ شہر کی سرگرمیوں کا مرکز بن گیا ہے۔ اس میں جدید ترین سنیما، ایک میٹرو کیش اینڈ کیری سپر مارٹ، میکڈونلڈز کا ایک آؤٹ لیٹ، گیمنگ لاؤنجز، موشن رائیڈز اور دیگر تفریحی سہولیات موجود ہیں۔

لیاقت باغ، جو پہلے "کمپنی باغ" (ایسٹ انڈیا کمپنی کا باغ) کے نام سے جانا جاتا تھا، بہت تاریخی دلچسپی کا حامل ہے۔ پاکستان کے پہلے وزیر اعظم لیاقت علی خان کو یہاں 1951ء میں قتل کر دیا گیا تھا۔ پاکستان کی وزیر اعظم بے نظیر بھٹو کو 27 دسمبر 2007ء کو یہاں قتل کر دیا گیا تھا۔ وہ پاکستان کی وزیر اعظم منتخب ہونے والی سب سے کم عمر اور واحد خاتون تھیں۔ راولپنڈی پبلک پارک (پہلے نواز شریف پارک، جسے 2019ء میں اقبال پارک کا نام دیا گیا تھا۔[196] ) مری روڈ پر پیر مہر علی شاہ ایریڈ ایگریکلچر یونیورسٹی راولپنڈی کے بالکل سامنے واقع ہے۔ پارک 1991ء میں کھولا گیا تھا۔ اس میں بچوں کے لیے کھیلوں کے جھولے، لان، چشمے اور پھولوں کی کیاریاں لگائی گئی ہیں۔ راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم کو 1992ء میں پبلک پارک کے سامنے بنایا گیا تھا۔[197][198]

پارک ترمیم

عجائب گھر ترمیم

 
آرمی میوزیم، راولپنڈی

فن تعمیر ترمیم

مرکزی جامع مسجد ترمیم

 
مرکزی جامع مسجد، راولپنڈی

مرکزی جامع مسجد راولپنڈی ایک مشہور مسجد ہے جوجامع مسجد روڈ پر واقع ہے۔ یہ مسجد خطہ پوٹھوہار کی چند قدیم مساجد میں سے ایک ہے۔ شہر کے مصروف ترین سڑک جامع مسجد روڈ اس مسجد کے نام پر ہے۔ یہ مسجد 18 کنال پر پھیلی ہوئی ہے اور بہتریناسلامی طرز تعمیر کا نمونہ پیش کرتی ہے۔ اس مسجد کے تین گنبد اورایک درجن سے زائد مینار ہیں۔ مسجد کو چلانے کی ذمہ داری محکمہ اوقاف کے پاس ہے۔[201][202][203] مسجد کی بنیاد پیر مہر علی شاہ آف گولڑہ شریف نے 1896ء میں رکھی تھی اور 1902ء میں اس مسجد کی تکمیل ہوئی۔[204]

پونچھ ہاؤس ترمیم

 
پونچھ ہاؤس

صدر، راولپنڈی میں آدم جی روڈ پر واقع پونچھ ہاؤس جو ڈیڑھ سو سال پرانا ہے۔ یہ بادشاہوں، شہزادوں کے لیے آرام گاہ اور آزاد جموں و کشمیر کے وزیر اعظم کے دفتر اور گھر حتی کہ فوجی عدالتوں کے طور پر استعمال ہوتی رہی ہے۔ پونچھ ہاؤس کو پونچھ کے حکمران راجا موتی سنگھ نے دوسرے راجاؤں کی آرام گاہ کے طور پر تعمیر کروایا تھا۔ مرکزی ہال میں خالصتاً کشمیری انداز میں اخروٹ کے درخت کی لکڑی سے بنی بالکنیاں، جہاں سے خواتین ہال میں ہونے والی پرفارمنس سے محضوظ ہوتی تھیں۔

1914ء میں جب پونچھ ریاست جموں اور کشمیر کا حصہ بنا تو یہ عمارت کشمیر کے حکمران مہاراجا گلاب سنگھ کی جائداد بن گئی۔ قیام پاکستان کے بعد 1950ء کی دہائی میں یہ عمارت آزاد جموں و کشمیر کے پہلے وزیر اعظم کی رہائش گاہ اور صدر و وزیر اعظم کے کیمپ آفس کے طور پر استعمال ہوتی رہی۔[205][206]

لال حویلی ترمیم

 
لال حویلی

لال حویلی، ایک صدی پُرانی تاریخی عمارت ہے۔ راولپنڈی میں سہگل حویلی کی مرکزی عمارت، جو اب لال حویلی کے نام سے مشہور ہے، شہر کے بالکل وسط میں بوہڑ بازار میں ایک سو سال سے زائد زیادہ عرصے سے کھڑی ہے۔ اس حویلی کو شاہ راج سہگل نے سیالکوٹ سے تعلق رکھنے والی ایک جواں سال مسلم رقاصہ باندھ بائی کے لیے تعمیر کیا تھا۔ مشہور ہے کہ سہگل جو جہلم کے ایک امیر کبیر ہندو خاندان سے تعلق رکھتا تھا سیالکوٹ کی اس رقاصہ سے ایک شادی کی تقریب میں ملاقات ہوئی۔ پہلی ہی نظر میں سہگل باندھ بائی کو دل دے بیٹھا اور اس کو شادی پر آمادہ کر لیا۔ کچھ ہی عرصے بعد ان دونوں کی شادی ہو گئی اور سہگل باندھ بائی کو سیالکوٹ سے راولپنڈی لے آیا اور اس کے لیے ایک حویلی تعمیر کروائی۔[207][208]

حویلی سوجن سنگھ ترمیم

 
حویلی سوجن سنگھ ، راولپنڈی

حویلی سوجن سنگھ بھابڑا بازار میں واقع ہے۔ اسے راولپنڈی کے ایک امیر تاجر رائے بہادر سوجن سنگھ نے بنوایا تھا۔ حویلی کا رقبہ 24,000 مربع فٹ (2,230 مربع میٹر) تھا جو چار منزلوں پر مشتمل تھا جس میں کل 45 کمرے تھے۔ کمروں میں بڑی کھڑکیاں تھیں۔ حویلی کی دیدہ زیب اور لکڑی کی سجاوٹ نے وسطی ایشیائی اور یورپی فن تعمیرات سے بہت کچھ لیا ہے۔[209] حویلی کو ایک شاہی محل سے مشابہت کے لیے بنایا گیا تھا جس میں ایک شاندار سنہری تخت اور اصلی ہاتھی دانت کے فرنیچر والے بیڈ روم تھے۔ مختلف صحنوں میں ناچتے موروں کو شام کے وقت ناچنے کے لیے رکھا گیا تھا اور ایک پالتو شیر رکھا گیا تھا جو باقاعدگی سے راہداریوں میں چلتا تھا۔ موسیقاروں کو حویلی میں رہائش دی جاتی تھی جو شام کو گانے گاتے تھے۔ اس حویلی نے رائے سوجن سنگھ کے خاندان کے لیے ایک میوزیم کے طور پر بھی کام کیا۔ اس میں خاندانی تصاویر، نوادرات، وکٹورین فرنیچر اور خاندانی چاندی کے برتن تھے۔[210]

عید گاہ شریف ترمیم

عید گاہ شریف سلسلہ نقشبندیہ کی عظیم صوفی خانقاہ اور مزار کا نام ہے۔[211] یہ خانقاہ 1936ء میں تعمیر کی گئی جسے حافظ محمد عبد الکریم نے 126 سال پہلے راولپنڈی میں سلسلہ طریقت کا مرکز بنایا۔ یہ قدیم ترین عیدگاہ اور شہر کے وسط میں واقع ایک محلے کا نام بھی ہے اور مسلمانوں کی ایک مشہور عبادت گاہ ہے۔ اس کی اصل شہرت قدیم عیدگاہ گراؤنڈ کے نام سے ہے اس میں ایک وقت میں ہزاروں نمازیوں کی عید پڑھنے کی گنجائش ہے۔[212]

حویلی باغ سرداراں ترمیم

حویلی باغ سرداراں مرکزی جامع مسجد کے پچھلی طرف واقع ہے۔ اس حویلی سے ملحق نہرو روڈ پر سردار سوجن سنگھ کی لائبریری تھی جس میں ہزاروں نایاب کتب موجود تھیں، جن سے تمام مذاہب کے لوگ استفادہ کرتے۔ لائبریری کے اوپر گھنٹہ گھر تھا جو ہر گھنٹے بعد بجتا اور اہل شہر کو وقت سے آگاہ کرتا تھا۔[213]

حویلی سردار پردیت سنگھ ترمیم

حویلی سردار پردیت سنگھ، باغ سرداراں کے اندر واقع تھی۔ یہ باغ سردار سوجان سنگھ کی یاد گار ہے، جس کے بیٹے سردار پردیت سنگھ نے یہ حویلی برطانیہ کے شہنشاہ ایڈورڈ ہفتم کے نام 19 اگست 1902ء کو وقف کر دی تھی۔[214]

حویلی راجا پرتاب سنگھ ترمیم

1860ء میں پونچھ کے راجا پرتاب سنگھ نے راجا بازار کے اندر یہ حویلی بنوائی اور یہاں بعد ازاں دکانیں بنتی چلی گئیں اور انگریز دور میں ڈپٹی کمشنر نے 1879ء میں اسے باقاعدہ بازار کی شکل دے دی۔[215]

جڑواں شہر ترمیم

اسلام آباد اور راولپنڈی کو پاکستان کے جڑواں شہر کہا جاتا ہے۔[216] بلکہ بعض جگہوں پر آج بھی دونوں شہروں کے تھانوں کو مسئلہ ہوتا ہے کہ یہ حدود اسلام آباد کی ہے یا راولپنڈی کی۔ دو ہزار سال پہلے بھی گندھارا سندھ کی تہذیب کا ایک جیتا جاگتا مرکز تھا اور آج پھر تاریخ نے جو انگڑائی لی ہے اور اسلام آباد کو پاکستان کا مرکز بنا دیا ہے۔ یہی نہیں بلکہ یہاں دنیا کی دو بڑی تجارتی شاہراہوں کا ملاپ ہو رہا ہے۔ ایک چین کو مشرقِ وسطیٰ سے ملاتی ہے تو دوسری بھارت اور بنگلہ دیش سمیت جنوبی ایشیاء کو کابل اور ماسکو تک لے جاتی ہے۔ ان دونوں شاہراہوں پر ابھی بین الاقوامی تجارت شروع نہیں ہوئی لیکن جب بھی ہو گی راولپنڈی اور اسلام آباد پاکستان کا سب سے بڑا شہری علاقہ بن جائیں گے۔ یہاں دنیا بھر سے تاجر اور سیاح آئیں گے.[217]

شہر علاقہ ملک سال
اسلام آباد   پاکستان   پاکستان 1967

اسلام آباد/راولپنڈی میٹروپولیٹن علاقہ ترمیم

جب 1960ء میں اسلام آباد کا ماسٹر پلان تیار کیا گیا تو اسلام آباد کو اور راولپنڈی کے ملحقہ علاقوں کے ساتھ مل کر اسلام آباد/راولپنڈی میٹروپولیٹن ایریا کے نام سے ایک بڑا میٹروپولیٹن علاقہ بنایا جانا تھا۔[218][219] یہ علاقہ ترقی پزیر اسلام آباد، پرانے نوآبادیاتی چھاؤنی کا شہر راولپنڈی اور مارگلہ ہلز نیشنل پارک پر مشتمل ہو گا، بشمول آس پاس کے دیہی علاقوں کے۔ تاہم، اسلام آباد شہر اسلام آباد کیپٹل ٹیریٹری کا حصہ ہو گا اور راولپنڈی ضلع راولپنڈی کا حصہ ہو گا جو صوبہ پنجاب کا حصہ ہے۔ ابتدائی طور پر، یہ تجویز کیا گیا تھا کہ دونوں کو چار بڑی شاہراہوں سے ملایا جائے گا۔ مری ہائی وے، اسلام آباد ہائی وے، سواں ہائی وے اور کیپٹل ہائی وے۔ مارگلہ ایونیو کی تعمیر کے منصوبے بھی زیر تکمیل ہیں۔[220] اسلام آباد تمام سرکاری سرگرمیوں کا مرکز ہے جبکہ راولپنڈی تمام صنعتی، تجارتی اور فوجی سرگرمیوں کا مرکز ہے۔ دونوں شہروں کو جڑواں شہر سمجھا جاتا ہے اور ایک دوسرے پر بہت زیادہ انحصار کرتے ہیں۔[221]

شہر نتائج ترمیم

درجہ شہر آبادی (1998 مردم شماری) آبادی (2017 مردم شماری) اضافہ صوبہ
1 کراچی 9,856,318 16,051,521 [222] 62.86% سندھ
2 لاہور 5,143,495 11,126,285  116.32% پنجاب، پاکستان
3 فیصل آباد 2,008,861 3,203,846 59.49% پنجاب، پاکستان
4 راولپنڈی 1,409,768 2,098,231 48.84% پنجاب، پاکستان
5 گوجرانوالہ 1,132,509 2,027,001 78.98% پنجاب، پاکستان
6 پشاور 982,816 1,970,042 100.45% خیبر پختونخوا
7 ملتان 1,197,384 1,871,843  56.33% پنجاب، پاکستان
8 حیدرآباد، سندھ 1,166,894 1,732,693 48.49% سندھ
9 اسلام آباد 529,180 1,014,825 91.77% اسلام آباد وفاقی دارالحکومت علاقہ
10 کوئٹہ 565,137 1,001,205 77.16% بلوچستان

اہم شخصیات ترمیم

 
شیخ رشید احمد
 
شعیب اختر

تصاویر ترمیم

مزید دیکھیے ترمیم

حوالہ جات ترمیم

  1. "Rawalpindi"۔ Encyclopedia Britannica۔ 20 دسمبر 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 فروری 2022 
  2. ^ ا ب "Rawalpindi commissioner, DC assume charge"۔ The Nation (newspaper)۔ 22 January 2022۔ 22 جنوری 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 فروری 2022 
  3. "Provisional Summary Results of 6th Population and Housing Census-2017"۔ pbs.gov.pk۔ 10 جنوری 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2017 
  4. "Rawalpindi | Meaning of Rawalpindi by Lexico"۔ 06 مارچ 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 04 مارچ 2019 
  5. irfannhmp (2022-03-01)۔ "When did Rawalpindi became capital city of Pakistan?"۔ PakMcqs (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  6. "Rawalpindi"۔ Google Arts & Culture (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  7. "Pakistan - Constitutional Beginnings"۔ www.country-data.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2022 
  8. Ikram Junaidi (23 October 2015)۔ "What is being built on GHQ land?"۔ www.dawn.com۔ 07 نومبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2016 
  9. "Pakistan - Constitutional Beginnings"۔ www.country-data.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 اکتوبر 2022 
  10. "Pakistan - Constitutional Beginnings"۔ www.country-data.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2022 
  11. "New Islamabad Airport: 'Faulty' airport design stirs Senate debate – The Express Tribune"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 18 June 2016۔ 18 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2016 
  12. Nur al-Din Muhammad Jahangir Padishah (1968)۔ Tuzk-e Jahangiri۔ Majlis-e Taraqqi-e Adab 
  13. "Rawalpindi: History behind a bustling city"۔ 26 August 2012۔ 23 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 ستمبر 2016 
  14. Ikram Junaidi (23 October 2015)۔ "What is being built on GHQ land?"۔ www.dawn.com۔ 07 نومبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2016 
  15. "The lost Jewish history of Rawalpindi"۔ 24 فروری 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 ستمبر 2016 
  16. "Pakistan - Constitutional Beginnings"۔ www.country-data.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 اکتوبر 2022 
  17. "Pakistan - Constitutional Beginnings"۔ www.country-data.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2022 
  18. Lonely Planet۔ "History of Islamabad & Rawalpindi – Lonely Planet Travel Information"۔ www.lonelyplanet.com۔ 04 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2016 
  19. "About: Lai Nullah"۔ dbpedia.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  20. Zulfiqar Ali Kalhoro (13 June 2015)۔ "The havelis of Potohar: Pakistan's opportunity to promote heritage tourism"۔ www.dawn.com۔ 09 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2016 
  21. A Reporter (20 March 2013)۔ "NCA to document Potohar history"۔ www.dawn.com۔ 05 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2016 
  22. Taimur Shamil (16 October 2015)۔ "The temples of Rawalpindi: Old wisdom in a new world"۔ 26 ستمبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 ستمبر 2016 
  23. "The lost Jewish history of Rawalpindi"۔ 24 فروری 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 ستمبر 2016 
  24. Aamir Yasin | Kashif Abbasi (8 July 2015)۔ "Rawalpindi-Islamabad metro bus project not waterproof"۔ www.dawn.com۔ 14 مئی 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2016 
  25. "Furniture"۔ Scribd۔ 25 ستمبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 ستمبر 2016 
  26. Zulfiqar Ali Kalhoro (13 June 2015)۔ "The havelis of Potohar: Pakistan's opportunity to promote heritage tourism"۔ www.dawn.com۔ 09 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2016 
  27. A Reporter (20 March 2013)۔ "NCA to document Potohar history"۔ www.dawn.com۔ 05 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2016 
  28. Taimur Shamil (16 October 2015)۔ "The temples of Rawalpindi: Old wisdom in a new world"۔ 26 ستمبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 ستمبر 2016 
  29. Nur al-Din Muhammad Jahangir Padishah (1968)۔ Tuzk-e Jahangiri۔ Majlis-e Taraqqi-e Adab 
  30. "حقائق کی دنیا"۔ 14 جون 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  31. "قلعہ پھروالہ... گکھڑوں کی عظمت کا نشان"۔ jang.com.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  32. Nalinaksha Dutt (1998)۔ Buddhist Sects in India۔ Motilal Banarsidass Publ.۔ ISBN 978-8120804289۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 04 جنوری 2020 
  33. Zarrar Khuhro (27 December 2010)۔ "Unexplained assassinations, Benazir's assassination changed Pakistan's future, but there are others that have altered the course of history"۔ The Express Tribune۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2018 
  34. "Liaquat Bagh adds to its gory history"۔ Dawn۔ 28 December 2007۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 نومبر 2018 
  35. "Plate British Museum"۔ The British Museum (بزبان انگریزی)۔ 19 اکتوبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2020 
  36. Richard Bernstein (2001)۔ Ultimate Journey: Retracing the Path of an Ancient Buddhist Monk who Crossed Asia in Search of Enlightenment۔ A.A. Knopf۔ ISBN 978-0-375-40009-4۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 جون 2017 
  37. Nalinaksha Dutt (1998)۔ Buddhist Sects in India۔ Motilal Banarsidass Publ.۔ ISBN 978-8120804289۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 04 جنوری 2020 
  38. Richard Bernstein (2001)۔ Ultimate Journey: Retracing the Path of an Ancient Buddhist Monk who Crossed Asia in Search of Enlightenment۔ A.A. Knopf۔ ISBN 978-0-375-40009-4۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 جون 2017 
  39. "Takshashila – World's Oldest University"۔ Hitxp.com۔ 10 September 2007۔ 24 فروری 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 اگست 2012 
  40. Gazetteer of the Rawalpindi district۔ "Civil and Military Gazette" Press۔ 1895۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 دسمبر 2017 
  41. "Rawat Fort"۔ Great Pakistan (بزبان انگریزی)۔ 2012-06-17۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  42. "Attock Fort"۔ Naqoosh-e-Javidan (بزبان انگریزی)۔ 2021-05-29۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  43. Iftikhar Haider Malik (2006)۔ Culture and Customs of Pakistan۔ Greenwood Publishing Group۔ ISBN 978-0-313-33126-8 
  44. "Rawalpindi Hotels travel information and Hotel discounts Rawalpindi Hotels cheap hotels in Pakistan lodging"۔ Travel and Culture Services۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  45. ^ ا ب Ashvini Agrawal (1983)۔ Studies in Mughal History۔ Motilal Banarsidass۔ ISBN 9788120823266۔ 18 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 دسمبر 2017 
  46. Ellison Findly (1993)۔ Nur Jahan: Empress of Mughal India۔ Oxford University Press۔ صفحہ: 173۔ ISBN 978-0-19-536060-8۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 دسمبر 2017 
  47. ^ ا ب Sir Lepel Henry Griffin (1890)۔ The Panjab Chiefs: Historical and Biographical Notices of the Principal Families in the Lahore and Rawalpindi Divisions of the Panjab, Volume 2۔ Civil and Military Gazette Press۔ 20 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 دسمبر 2017 
  48. "Imperial Gazetter of India, Volume 21, page 272 – Imperial Gazetteer of India – Digital South Asia Library"۔ Dsal.uchicago.edu۔ 18 February 2013۔ 02 دسمبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 نومبر 2013 
  49. Gazetteer of the Rawalpindi district۔ "Civil and Military Gazette" Press۔ 1895۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 دسمبر 2017 
  50. "سید احمد شہید کی تحریکِ جہاد: ایک مطالعہ - ڈاکٹر عرفان شہزاد"۔ alsharia.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  51. Sir Lepel Henry Griffin (1890)۔ The Panjab Chiefs: Historical and Biographical Notices of the Principal Families in the Lahore and Rawalpindi Divisions of the Panjab, Volume 2۔ Civil and Military Gazette Press۔ 20 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 دسمبر 2017 
  52. Gazetteer of the Rawalpindi district۔ "Civil and Military Gazette" Press۔ 1895۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 دسمبر 2017 
  53. Ayesha Pamela Rogers۔ "Rawalpindi Historic Urban Landscape Project"۔ 24 فروری 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 دسمبر 2017 
  54. "Christ Church, Rawalpindi."۔ victorianweb.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  55. "Rawalpindi Cantonment"۔ www.globalsecurity.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  56. The Indian Army and the Making of Punjab۔ Orient Blackswan۔ 2003۔ ISBN 9788178240596۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 10 دسمبر 2017 
  57. ^ ا ب Bakhshish Singh Nijjar (1996)۔ History of the United Panjab۔ Atlantic Publishers & Dist۔ ISBN 9788171565344۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 دسمبر 2017 
  58. News desk (2022-07-05)۔ "Neglected valuable heritage of Rawalpindi city | By Brig Muhammad Asif (R)"۔ Pakistan Observer (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  59. Aamir Yasin (2017-04-02)۔ "A symbol of Rawalpindi's pluralistic history"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  60. "Rawalpindi – Rawalpindi Development Authority"۔ rda.gop.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  61. "RAWALPINDI RIOT"۔ Examiner۔ 1926-06-18۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  62. "UK tested poison gas on Indian soldiers"۔ USA Today۔ 1 September 2007۔ 05 جنوری 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 نومبر 2013 
  63. "The forgotten massacre"۔ The Nation (بزبان انگریزی)۔ 2014-12-29۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  64. "The forgotten massacre"۔ The Nation۔ 29 December 2014۔ 07 دسمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 دسمبر 2017 
  65. A.G. NOORANI۔ "Horrors of Partition"۔ Frontline (India)۔ 25 فروری 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 دسمبر 2017 
  66. Farahnaz Ispahani (2017)۔ Purifying the Land of the Pure: A History of Pakistan's Religious Minorities۔ Oxford University Press۔ ISBN 978-0-19-062167-4۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 دسمبر 2017 
  67. Shahid Javed Burki (2015)۔ Historical Dictionary of Pakistan۔ Rowman & Littlefield۔ ISBN 978-1-4422-4148-0۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 دسمبر 2017 
  68. ^ ا ب Shahid Javed Burki (2015)۔ Historical Dictionary of Pakistan۔ Rowman & Littlefield۔ ISBN 978-1-4422-4148-0۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 دسمبر 2017 
  69. Lonely Planet۔ "History of Islamabad & Rawalpindi – Lonely Planet Travel Information"۔ www.lonelyplanet.com۔ 04 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2016 
  70. "Pakistan Air Force"۔ Defense General۔ 18 اکتوبر 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 اگست 2012 
  71. "PAF Active Bases"۔ Pakistan Air Force۔ 26 جون 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 اگست 2012 
  72. Salman Siddiqui (4 April 2009)۔ "No Morning English Daily Carried the News of Bhutto's Hanging"۔ Daily Dawn۔ 01 دسمبر 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 اگست 2012 
  73. Kamal Siddiqi (14 April 1998)۔ "Ojhri disaster saw end of Junejo govt: Report"۔ Archive.indianexpress.com۔ 14 ستمبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 فروری 2015 
  74. "Pakistan Refuses To Release 1988 Blast Reports To – Pakistani Military & Strategic Discussion Forum – Pakistani Defence Forum"۔ Forum.pakistanidefence.com۔ 27 فروری 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 فروری 2015 
  75. Farahnaz Ispahani (2017)۔ Purifying the Land of the Pure: A History of Pakistan's Religious Minorities۔ Oxford University Press۔ ISBN 978-0-19-062167-4۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 دسمبر 2017 
  76. "Furniture"۔ Scribd۔ 25 ستمبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 ستمبر 2016 
  77. Aamir Yasin | Kashif Abbasi (8 July 2015)۔ "Rawalpindi-Islamabad metro bus project not waterproof"۔ www.dawn.com۔ 14 مئی 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2016 
  78. "Geographic Conditions | Rawalpindi"۔ rawalpindi.punjab.gov.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  79. "Rawalpindi"۔ History Pak (بزبان انگریزی)۔ 2014-03-15۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  80. Shahid Javed Burki (2015)۔ Historical Dictionary of Pakistan۔ Rowman & Littlefield۔ ISBN 978-1-4422-4148-0۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 دسمبر 2017 
  81. "Pakistan Air Force"۔ Defense General۔ 18 اکتوبر 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 اگست 2012 
  82. "PAF Active Bases"۔ Pakistan Air Force۔ 26 جون 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 اگست 2012 
  83. "PAKISTAN - RAWALPINDI"۔ Centro de Investigaciones Fitosociológicas۔ 19 مئی 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 جون 2016 
  84. Hull, M. S. (2013).
  85. Jonathan M. Kenoyer (1998)۔ Ancient Cities of the Indus Valley Civilization (بزبان انگریزی)۔ Oxford University Press۔ ISBN 978-0-19-577940-0 
  86. Hull, M. S. (2013).
  87. "Pakistan Buerue of Statistics" (PDF)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  88. "Pakistan Buerue of Statistics" (PDF)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  89. Census-2017 - Detailed Tables
  90. "Pakistan Beureo of Statics - Religion" (PDF)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  91. ^ ا ب پ ت "CENSUS OF INDIA, 1941 VOLUME VI PUNJAB"۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 جنوری 2023 
  92. Farahnaz Ispahani (2017)۔ Purifying the Land of the Pure: A History of Pakistan's Religious Minorities۔ Oxford University Press۔ ISBN 978-0-19-062167-4۔ 19 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 دسمبر 2017 
  93. "A 200-year-old temple in Rawalpindi is a school for special children"۔ Gounesco۔ 6 September 2016۔ 14 اگست 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 اگست 2018 
  94. "CENSUS OF INDIA, 1891 GENERAL TABLES BRITISH PROVINCES AND FEUDATORY STATES VOL I"۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 جنوری 2023 
  95. "CENSUS OF INDIA, 1901 VOLUME I-A INDIA PART II-TABLES"۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 جنوری 2023 
  96. "CENSUS OF INDIA, 1911 VOLUME XIV PUNJAB PART II TABLES"۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 جنوری 2023 
  97. "CENSUS OF INDIA, 1921 VOLUME XV PUNJAB AND DELHI PART II TABLES"۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 جنوری 2023 
  98. "CENSUS OF INDIA, 1931 VOLUME XVII PUNJAB PART II TABLES"۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 جنوری 2023 
  99. "Final Results (Census-2017)"۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 جنوری 2023 
  100. "About RDA - Rawalpindi Development Authority"۔ Rawalpindi Development Authority۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 نومبر 2015 
  101. "PML-N likely to grab Pindi mayor slot – The Express Tribune" (بزبان انگریزی)۔ 2015-12-06۔ اخذ شدہ بتاریخ 10 ستمبر 2016 
  102. "Union Council in Rawalpindi | PDF"۔ Scribd (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  103. "National Assembly of Pakistan"۔ na.gov.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  104. "Punjab Assembly | Members - Members' Directory"۔ www.pap.gov.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  105. "Division Profile | Division Rawalpindi"۔ rawalpindidivision.punjab.gov.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  106. "راولپنڈی ڈویژن کے چار اضلاع کے ضلعی سربراہوں کو تبدیل کردیا گیا"۔ jang.com.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  107. "Rawalpindi District UC List MNA MPA Seats راولپنڈی ضلع کی یونین کونسلز"۔ Political and Sports News (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 جولا‎ئی 2023 
  108. "www.pakistanarmy.gov.pk" 
  109. ^ ا ب پ Economy of Rawalpindi, Rawalpindi Chamber of Commerce and Industry
  110. ^ ا ب پ ت Smeda Smeda (16 July 2023)۔ "DISTRICT ECONOMIC PROFILE RAWALPINDI" (PDF)۔ سمیڈا۔ 26 جولا‎ئی 2023 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 جولا‎ئی 2023 
  111. "Rawalpindi Chamber of Commerce and Industry – Empowering Business" (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  112. https://tribune.com.pk/author/190 (2022-01-11)۔ "Lack of facilities mars Rawat Industrial Estate's output"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 جولا‎ئی 2023 
  113. انگریزی ویکیپیڈیا کے مشارکین۔ "Raja Bazaar" 
  114. "City Maps"۔ Pindionline.com۔ 16 فروری 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 دسمبر 2011 
  115. "پنجاب ٹراسپورٹ اتھارٹی" (PDF)۔ اخذ شدہ بتاریخ 10 مئی 2023 
  116. "PSV Routs | City Traffic Police Rawalpindi"۔ 05 اپریل 2023 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  117. "راولپنڈی، اسلام آباد میٹرو بس منصوبے کا افتتاح"۔ BBC News اردو۔ 2015-06-04۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  118. Minaal Shamimi (2022-03-27)۔ "Islamabad and Rawalpindi Metro Bus Routes"۔ Graana.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  119. "Area Guide GT Road, undefined | Graana.com"۔ GT Road | Graana.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  120. UNESCO, Caravanserais along the Grand Trunk Road in Pakistan
  121. The Atlantic: "India's Grand Trunk Road"
  122. Parag Khanna۔ "How to Redraw the World Map"۔ The New York Times۔ ISSN 0362-4331۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 جولا‎ئی 2016 
  123. UNESCO World Heritage Centre۔ "Sites along the Uttarapath, Badshahi Sadak, Sadak-e-Azam, Grand Trunk Road"۔ UNESCO World Heritage Centre (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 دسمبر 2018 
  124. Vadime Elisseeff, p. 159-162, The Silk Roads: Highways of Culture and Commerce
  125. K. M. Sarkar (1927)۔ The Grand Trunk Road in the Punjab: 1849-1886۔ Atlantic Publishers & Distri۔ صفحہ: 2–۔ GGKEY:GQWKH1K79D6 
  126. "Access Islamabad"۔ Islamabad Guide۔ Islamabad Capital Administration, Government of Pakistan۔ 13 دسمبر 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 جنوری 2012 
  127. "Rawalpindi Ring Road: Imran Khan to lay foundation stone today"۔ Latest News - The Nation (بزبان انگریزی)۔ 19 March 2022۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 مارچ 2022 
  128. "Work on Rawalpindi Ring Road formally kicks off"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 2022-03-22۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 مارچ 2022 
  129. Aamir Yasin (2018-12-14)۔ "Rawalpindi Ring Road project approved"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 مارچ 2022 
  130. "Construction of Lai Expressway | PPP"۔ ppp.punjab.gov.pk۔ 19 جون 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 فروری 2023 
  131. "PM for early completion of RUDA, CBD, Nullah Lai Expressway projects"۔ Associated Press of Pakistan۔ 6 January 2022۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 اکتوبر 2022 
  132. "Work on Leh Expressway to begin next month"۔ The Express Tribune۔ 7 March 2022۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 اکتوبر 2022 
  133. "'Work on Nullah Leh Expressway to kick off soon'"۔ The News International۔ 10 October 2021۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 اکتوبر 2021 
  134. NESPAK۔ "Faizabad Interchange"۔ 10 اگست 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  135. https://www.nha.gov.pk۔ "Islamabad-Peshawar Motorway (M-1)"۔ www.nha.gov.pk (بزبان انگریزی)۔ 18 مئی 2023 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  136. https://nha.gov.pk۔ "Lahore-Islamabad Motorway (M-2)"۔ nha.gov.pk (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  137. Ali Gulrez (2021-12-25)۔ "List of Motorways in Pakistan"۔ INCPak (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  138. "Rawalpindi Railway Station Train Time Information 2023"۔ www.pakinformation.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  139. "PURCHASE OF POWER: PAYMENTS TO CHINESE COMPANIES TO BE FACILITATED THROUGH REVOLVING FUND".
  140. Sarim Chaudary (2021-03-29)۔ "Rail Safari from Golra to Attock Khurd Station"۔ Locally Lahore (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  141. "Islamabad International Airport - IIAP - اسلام آباد انٹرنیشنل ائیرپورٹ"۔ islamabadairport.com.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  142. "Airports Near Me - Rawalpindi, Pakistan | Travelmath"۔ www.travelmath.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  143. "Benazir Bhutto International Airport - BBIAP Timeline"۔ caapakistan.com.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  144. انگریزی ویکیپیڈیا کے مشارکین۔ "Dhamial Army Airbase" 
  145. "www.airlineshubs.com/pakistan-international-airlines/pakistan-international-airlines-office-in-rawalpindi-pakistan/" 
  146. "airlines-airports.com/shaheen-air-city-ticketing-office-in-rawalpindi-pakistan/" 
  147. admin (2022-12-28)۔ "راولپنڈی،پوٹھوہاری ادبی میلہ 31دسمبر کو آرٹس کونسل میں منعقد ہو گا"۔ pindipost.pk (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  148. "راولپنڈی آرٹس کونسل میں پوٹھوہاری کتاب میلہ 2022کا انعقاد"۔ Nawaiwaqt۔ 2023-01-02۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  149. "راولپنڈی آرٹس کونسل میں مقابلہ دستکاری ، ہنر مندوں کے منفرد کام کی پذیرائی"۔ jang.com.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 جولا‎ئی 2023 
  150. niafam.com۔ "راولپنڈی،پنجاب آرٹس کونسل میں خطاطی کے فن پاروں کی نمائش"۔ ur.icro.ir۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 [مردہ ربط]
  151. "راولپنڈی آرٹس کونسل میں پنجاب لوک میلہ کی رنگا رنگ افتتاحی تقریب"۔ Nawaiwaqt۔ 2017-02-18۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  152. Umar Sialvi (2022-05-14)۔ "راولپنڈی اور اسکے دیسی کھابے - پارٹ 2"۔ اخبارِ خیبرپشاور۔ 28 جولا‎ئی 2023 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 جولا‎ئی 2023 
  153. "پاکستان ڈائری - 23"۔ www.trt.net.tr۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 جولا‎ئی 2023 
  154. "Discover Food Street in Rawalpindi"۔ JagahOnline (بزبان انگریزی)۔ 2022-07-30۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 جولا‎ئی 2023 
  155. Mariana Aslam (2023-04-04)۔ "Everything You Need To Know About Rawalpindi Food Street"۔ Graana.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 جولا‎ئی 2023 
  156. "peekaboo.guru/rawalpindi/detail/5808/savour-foods/branches" 
  157. "www.reservations.com/Hotels/rawalpindi-pakistan" 
  158. "راولپنڈی، پاکستان – اسلامی تاریخ، فن تعمیر، اور ثقافت | IqraSense.com"۔ www.iqrasense.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 جولا‎ئی 2023 
  159. "Mosques | Auqaf & Religious Affairs Department"۔ auqaf.punjab.gov.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  160. "ضلع راولپنڈی، 35درباروں' مزارات کے حفاظتی انتظامات بہتر بنانے کی تجاویز"۔ jang.com.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  161. "jang.com.pk/news/281905-todays-print-city-news" 
  162. Sadaqat Ali (2022-01-28)۔ "راول پنڈی کےقبرستان بھرگئے،نئےقبروں کی جگہ ملنا دشوار"۔ Samaa (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  163. Ammad Ali (2016-01-01)۔ "راولپنڈی کا 150 سال قدیم پارسی قبرستان"۔ Dawn News Television (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  164. "Upcoming Pakistan Public Holidays (Asia)"۔ The qppstudio.net website (بزبان انگریزی)۔ 2023-07-01۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  165. "Best Newspapers in Rawalpindi, Pakistan - List of Newspapers Pakistan"۔ www.businesslist.pk (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  166. "Rawalpindi Press Club | Venues | CPDI" (بزبان انگریزی)۔ 10 جون 2023 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  167. "www.businesslist.pk/category/newspapers/city:rawalpindi" 
  168. "www.bizsouthasia.com/PK/gpo-general-post-office-saddar-051-9272032" 
  169. "The Arena: About Us"۔ Bahria Construction۔ 04 ستمبر 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  170. "Pakistan's first gold class 3D cinema: 'The Arena' opened at Bahria Town"۔ The Nation۔ 01 جولا‎ئی 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 اگست 2012 
  171. "District Education Authority | Rawalpindi"۔ rawalpindi.punjab.gov.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  172. "Rawalpindi" (PDF)۔ Annual Status of Education Report۔ 08 دسمبر 2017 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 دسمبر 2017 
  173. ^ ا ب "Summary Report Card 2014" (PDF)۔ Summary Report Cards (National – Urban)۔ Annual Status of Education Report۔ 22 جنوری 2016 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 دسمبر 2017 
  174. "Annual Status of Education Report – 2015" (PDF)۔ صفحہ: 81–83۔ 09 نومبر 2016 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 دسمبر 2017 
  175. "NUST"۔ Nust.edu.pk۔ 22 نومبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 نومبر 2013 
  176. Foundation University Islamabad
  177. Mariana Aslam (2023-04-27)۔ "List of Universities in Rawalpindi"۔ Graana.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  178. "List of universities in Rawalpindi"۔ tutoria.pk Blog (بزبان انگریزی)۔ 2020-11-18۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  179. "Private Degree Colleges - Rawalpindi | Higher Education Department, Government of the Punjab"۔ hed.punjab.gov.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  180. "Top Colleges & Universities in Rawalpindi - BSCS Engr MBA MED"۔ ilmkidunya.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  181. "Libraries of Rawalpindi"۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 جولائی 2023 
  182. "لائبریری، کتب خانہ، راولپنڈی، پاکستان"۔ دریچہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  183. "Rawalpindi Cricket Stadium, Rawalpindi, Pakistan - Upcoming Match Schedule - Cricketwa.com"۔ www.cricketwa.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  184. Khilari۔ "Liaquat Bagh Sports Complex-Rawalpindi - Sports Facility - Khilari"۔ www.khilari.com.pk (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 جولا‎ئی 2023 
  185. "راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم"۔ کرک انفو۔ 17 جون 2011۔ 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 جون 2011 
  186. M.M. Ahmed 1985.
  187. "Pakistan Army FC - Facts and data"۔ www.transfermarkt.us (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  188. "AFC PRESIDENT'S CUP 2013"۔ Wayback Machine۔ December 19, 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ January 23, 2019 
  189. "Top Certified Hospitals in Rawalpindi"۔ healthwire.pk (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  190. Narmeen Taimoor (2022-03-15)۔ "Top Hospitals in Rawalpindi"۔ Graana.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  191. "Top Certified Hospitals in Rawalpindi"۔ healthwire.pk (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  192. "About Bahria Town Rawalpindi – Bahria Town – Your Lifestyle Destination"۔ Bahriatown.com۔ 25 دسمبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 نومبر 2013 
  193. "Famous Places in Rawalpindi"۔ www.pakmiti.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  194. "Nawaz Sharif, Shahbaz Sharif parks renamed"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ 2019-08-07۔ 07 اگست 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 مئی 2020 
  195. Saad Raza (2023-01-01)۔ "10 Best Places to Visit in Rawalpindi [Updated 2023]"۔ Pakistani Healthy Recipes (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  196. "Best Places To Visit In Rawalpindi With Chalo Pakistan Tour"۔ www.chalopakistan.com.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  197. "www.pakmiti.com/famous-places-in-rawalpindi.html" 
  198. "List Of Top Museums In Rawalpindi"۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  199. "Jamia Masjid - an expression of devotion in architecture"۔ 4 January 2015 
  200. "Markazi Jamia Masjid — the oldest mosque in Rawalpindi"۔ 16 August 2018 
  201. "Courtyard of history: Markazi Jamia Masjid artwork still 'fresh' after a century"۔ The Express Tribune۔ October 2, 2016 
  202. "Markazi Jamia Masjid | Pakistan Tourism Portal"۔ paktourismportal.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جنوری 2023 
  203. Aamir Yasin (2015-02-22)۔ "Poonch House – a mansion fit for a king"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  204. "پاکستان میں مہاراجہ کشمیر کی اربوں کی 'متنازع جائیداد'"۔ Urdu News – اردو نیوز۔ 2023-02-04۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  205. "Tracing the history of Lal Haveli"۔ Dawn۔ May 13, 2018۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 مئی 2018 
  206. "A walk down memory lane: Lal Haveli's love tale"۔ Dunya News۔ 23 April 2018۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 مئی 2018 
  207. "Lal Haveli offered to women varsity: Turning heritage buildings into varsities"۔ Dawn.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 جنوری 2015 
  208. "Rai Bahadur Soojan Singh, Haveli"۔ Sikhwiki.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 جنوری 2015 
  209. https://vymaps.com/PK/1552505798175005/
  210. https://pakistanplaces.com/listing/eidgah-sharif-rawalpindi/
  211. "Roznama Dunya: اسپیشل فیچرز :- راولپنڈی کی قدیم حویلیاں"۔ Roznama Dunya: اسپیشل فیچرز :- (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  212. "Roznama Dunya: اسپیشل فیچرز :- راولپنڈی کی قدیم حویلیاں"۔ Roznama Dunya: اسپیشل فیچرز :- (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  213. "Roznama Dunya: اسپیشل فیچرز :- راولپنڈی کی قدیم حویلیاں"۔ Roznama Dunya: اسپیشل فیچرز :- (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  214. "What are the twin cities of Pakistan? How many twin cities are there in the world? Write names."۔ Quora (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  215. "What are twin cities in Pakistan?"۔ www.calendar-uk.co.uk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  216. Dulyapak Preecharushh (6 April 2011)۔ "Myanmar's New Capital City of Naypyidaw"۔ $1 میں Stanley D. Brunn۔ Engineering Earth: The Impacts of Megaengineering Projects (1st ایڈیشن)۔ Springer۔ صفحہ: 1041۔ ISBN 978-9048199198 
  217. Muhammad۔ "Planning of Islamabad and Rawalpindi" (PDF) 
  218. "Margalla Avenue to benefit commuters of KPK, traffic on Kashmir Highway"۔ OnePakistan۔ 04 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 اکتوبر 2013 
  219. profilbaru.com۔ "Islamabad-Rawalpindi metropolitan area - Profilbaru.Com"۔ profilbaru.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  220. "آرکائیو کاپی" (PDF)۔ 16 جون 2020 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جنوری 2022 

بیرونی روابط ترمیم

City District Government Rawalpindi, Official Website, archived at 13 March 2008

  1. 1891-1941: Data for the entirety of the town of Rawalpindi, which included Rawalpindi Municipality and Rawalpindi Cantonment.[93]:34
  2. ^ ا ب 1931-1941: Including Ad-Dharmis