عبد اللہ بن ابی کا مکمل نام اپنی ماں کی نسبت سے، عبد اللہ بن ابی بن سلول، بتایا جاتا ہے۔ اسلامی تاریخ کے مطابق محمد صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کی آمد سے قبل اہل مدینہ میں اس کی حیثیت اثر اور مرتبہ سب سے ممتاز تھا اور ہجرت سے کچھ روز قبل اہل مدینہ کے تمام قبائل نے اسے متفقہ طور پر اپنا سردار مقرر کر لیا تھا اور اس کی باقاعدہ رسم تاج پوشی کے لیے دن اور بھی تیہ کر لی گئی تھی۔ لیکن عین اسی وقت محمد محمد صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے مکہ مکرمہ سے ہجرت کرکے بے تاج بادشاہ کے طور پر مدینہ منورہ تشریف لائے تو اہل مدینہ نے اپنا پہلا منصوبہ ترک کرکے اپنے تمام معاملات کو محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے سپرد کر دیا۔ اس صورت حال کی وجہ سے عبد اللہ بن ابی کے سینے میں آپ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سے ذاتی بغض اور عناد پیدا ہو گیا اور وہ دل ہی دل میں آپ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سے جلنے کڑھنے لگا۔ کیونکہ اہل مدینہ کے تمام قبائل کی ہمدردیاں شمع رسالت کے ساتھ تھیں اس لیے وہ ان کی کھلم کھلا مخالفت نہیں کر سکتا تھا چنانچہ اس نے منافقت کی راہ اپنائی۔

عبد اللہ بن ابی
معلومات شخصیت
پیدائش مدینہ منورہ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات جنوری 631  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد عبد اللہ بن عبد اللہ بن ابی  ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

عبد اللہ بن ابی نے بظاہر اسلام قبول کر لیا اور ظاہری اعتبار سے اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے تمام احکامات کی پاپندی شروع کردی لیکن اندر ہی اندر وہ محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سے بغض اور عناد کی عاد میں جل رہا تھا۔ وہ جب تک زندہ رہا اس نے اسلام کی جڑ کاٹنے کے لیے یہودیوں اور مشرکین مکہ سے رابطے استوار رکھے اور غزوہ بدر اور احد میں نہ خود حصہ نہیں لیا بلکہ اندر ہی اندر صحابہ کو بھی جہاد پہ جانے سے روکتا رہا۔ یہی منافق شخص آپ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی بیوی عائشہ بنت ابی بکر پر تہمت لگانے میں بھی پیش پیش رہا۔

اسلامی تاریخ اور بطور خاص مسلمانوں میں تفرقات پیدا ہونے کے ابتدائی ماحول اور محرکات کے سلسلے میں عبد اللہ بن ابی کا نام اولین شخصیات میں لیا جاتا ہے۔،[1] اسی وجہ سے اسلام میں اس کو رئیس المنافقین کہا گيا۔ اس کی وفات پر عمر فاروق نے اس کا واضح طور پر اظہار بھی کیا تھا کہ یہ شخص منافق تھا اور آپ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اس کی نماز جنازہ نہ پڑھائیں۔[2][3] لیکن اس کے باوجود محمد صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے اس کے مسلمان بیٹے کی دلجوئی کے لیے کمال رحم اور عفو در گذر سے کام لیتے ہوئے اس کی نماز جنازہ میں شرکت کے لیے گئے اور کفنانے کے لیے اپنا کرتا عنایت فرمایا نا صرف اس کی نماز جنازہ ادا کی بلکہ عبداللّٰہ ابن ابی کے لیے 70 سے زائد بار دعائے مغفرت بھی فرمائی۔ (صحیح بخاری۔ حدیث نمبر 1366)

(صحیح بخاری حدیث نمبر 2691)





پسند

سندپ


حوالہ جاتترميم

  1. William Montgomery Watt, "`Abd Allah b. Ubayy"، Encyclopaedia of Islam. Brill publisher آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ brill.nl [Error: unknown archive URL]۔
  2. Saif-ur-Rahman al-Mubarakpuri, Ar-Raheeq Al-Makhtum (2002)، p. 285.
  3. Sayed Ali Asgher Razwy, Restatement of History of Islam۔