لو جہاد

سازشی تھیوری، جس کے مطابق مسلمان مرد غیر- مسلم برادریوں سے تعلق رکھنے والی خواتین سے محبت کا ڈھونگ کرکے اسلام قبول کرنے کے لئے نشانہ بناتے ہی

لو جہاد (Love Jihad) یا محبت جہاد یا جہاد عشق یا رومیو جہاد[5] ایک اسلاموفوبک،[11] نظریہ سازش'"`UNIQ--nowiki-0000004B-QINU`"'22'"`UNIQ--nowiki-0000004C-QINU`"' ہے جس کو ہندوتوا نظریے[25] (ہندو انتہا پسند) کے حامیوں نے ایجاد کیا۔ انتہا پسندوں کا دعویٰ ہے کہ مسلمان نوجوان ہندو لڑکیوں کو اپنے پیار کے جال میں پھنسا کر انہیں مسلمان کرکے شادیاں کر رہے ہیں[26][27] جس کا مقصد بھارت میں ہندوؤں کی آبادی کو ختم کرنا ہے۔[28] نومبر 2009 میں، ڈی جی پی جیکب پنوز نے کہا کہ ایسی کوئی تنظیم نہیں ہے جس کے ممبروں نے کیرلا میں لڑکیوں کو اپنی محبت کا لالچ  میں تبدیلی کے ارادے سے اپنی طرف راغب کیا. انہوں نے کیرالہ ہائی کورٹ کو بتایا کہ انہیں موصول ہونے والی 18 میں سے 3 اطلاعات نے رجحان کے بارے میں کچھ شکوک و شبہات پیدا کیا ہے. تاہم، تحقیقات کے ٹھوس شواہد کی عدم موجودگی کی وجہ سے تحقیات جاری رہی. دسمبر 2009 میں، جسٹس کے ٹی۔ سنکرن نے پنوز کی رپورٹ کو قبول کرنے سے انکار کردیا انہوں نے ایک کیس ڈائری سے یہ نتیجہ اخذ کیا گیا تھا کہ زبردستی مذہبی تبدیلیوں کے اشارے مل رہے ہیں اور یہ پولیس رپورٹس سے واضح ہے کہ کِسی خاص مقصد کے لیے خواتین کو "کچھ برکتوں" سے مذہب تبدیل کرنے کی "اجتماعی کوشش" کی جارہی ہے۔ عدالت نے "محبت جہاد" مقدمات کے دو ملزمان کی درخواست ضمانت پر سماعت کرتے ہوئے کہا کہ پچھلے چار سالوں میں اس طرح کے 3،000 سے 4،000 مذہبی تبدیلیاں ہوئے ہیں۔ کیرالہ ہائی کورٹ نے دسمبر 2009 میں اس معاملے کی تحقیقات پر روک لگاتے ہوئے دو ملزموں کو ریلیف دیا تھا،   اور پولیس تفتیش پر تنقید کی تھی.پنسوس کے اس بیان کہ "محبت جہاد" کے وجود کے لئے کوئی حتمی ثبوت نہیں مل سکے ہیں کے بعد جسٹس ایم ساسیدہارن نمبیار نے اس تفتیش کو بند کردیا تھا.

کرناٹک کی حکومت نے 2010 میں کہا تھا کہ اگرچہ بہت ساری خواتین نے اسلام قبول کیا تھا، لیکن انھیں اس بات پر راضی کرنے کی کوئی منظم کوشش نہیں کی گئی تھی۔2012 میں، مبینہ محبت جہاد کے بارے میں دو سال کی تحقیقات کے بعد، کیرالہ پولیس نے اس کو "کوئی حقیقت نہیں مہم" قرار دیا۔اس کے بعد، ویب سائٹ کے خلاف ایک مقدمہ شروع کیا گیا جہاں مسلم تنظیموں کے جعلی پوسٹرز ملی جو نوجوانوں کو لالچ اور خواتین کو پھنسانے کے لئے رقم کی پیش کش کرتے تھے۔اتر پردیش پولیس کو ستمبر 2014 میں پچھلے تین ماہ سے محبت جہاد کے چھ میں سے پانچ رپورٹڈ مقدمات میں کوشش یا زبردستی مذہب تبدیل کرنے کا کوئی ثبوت نہیں ملا. پولیس نے کہا کہ بےایمان مردوں کے ذریعہ فریب کاری واردات کے  وَقفے وَقفے سے ھونے والے مقدمات کسی وسیع تر سازش کا ثبوت نہیں ہیں.

2017 میں، کیرالہ ہائی کورٹ کے اس فیصلے[29] کے بعد کہ ایک ہندو عورت کی مسلمان مرد سے شادی محبت جہاد کی بنیاد پر غلط ہے،[30] اور مسلمان شوہر کے ذریعہ ہندوستان کی سپریم کورٹ میں اپیل دائر کی گئی تھی،[31] جہاں عدالت کے ذریعہ این آئی اے سے "غیر جانبدارانہ اور آزادانہ" شواہد کی بنا پر درخواست کی گئی،[31][32] عدالت نے این آئی اے کو محبت جہاد کی طرز پر قائم اسی طرح کے تمام معاملات کی تحقیقات کرنے کی ہدایت کی۔[31]سیمی کالعدم تنظیم کمزور ہندو خواتین کو شکار بنا کر دہشت گرد بنانے کے طور پر بھرتی کر رہی ہیں یا نہیں اور سیمی جیسی کالعدم تنظیموں کی اسی طرح کے تمام مشکوک واقعات کی کھوج کرنے کے لئے عدالت کی ان ہدایات نے  این آئی اے کو اجازت دی تھی.این آئی اے نے اس سے قبل عدالت میں عرض کیا تھا کہ یہ معاملہ "الگ تھلگ" واقعہ نہیں اور اس نے ریاست میں ایک نمونہ سامنے آنے کا پتہ لگایا ہے، جس میں کہا گیا تھا کہ ایک اور مقدمہ میں وہی لوگ شامل ہیں جنہوں نے اشتعال انگیزی کا مظاہرہ کیا تھا۔

یہ خیال سب سے پہلے 2009 میں ہندوستان میں قومی توجہ کا مرکز بنا، اس میں کیرالہ اور کرناٹک میں بڑے پیمانے پر مذہبی تبدیلیوں کے دعوے شامل تھے، لیکن بعد میں یہ دعوے پورے ہندوستان اور اس سے آگے پاکستان اور برطانیہ میں پھیل چکے ہیں۔2009، 2010، 2011 اور 2014 میں تشہیر کی لہروں کے ساتھ، ہندوستان میں محبت جہاد کے الزامات نے مختلف ہندو، سکھ اور عیسائی تنظیموں میں تشویش پیدا کردی ہے، جبکہ مسلم تنظیموں نے ان الزامات کی تردید کی ہے۔ریوٹرز (Reuters) کے مطابق، یہ تصور بہت سے لوگوں کے لئے سیاسی تنازعات اور معاشرتی تشویش کا باعث بنا ہوا ہے، حالانکہ سنہ 2014 تک ایک منظم محبت جہاد کے خیال کو ہندوستانی دھارے میں بڑے پیمانے پر ایک سازشی تھیوری سمجھا جاتا تھا۔

اگست 2017 میں، قومی تفتیشی ایجنسی (این آئی اے) نے بتایا کہ اسے اگست 2017 میں محبت جہاد کے کچھ معاملات میں ایک عام گُرُو (رہنما) ملا تھا۔دی اکانومسٹ کے بعد کے مضمون کے مطابق، "بار بار پولیس کی تفتیش کسی منظم منصوبے میں تبدیلی کے ثبوت تلاش کرنے میں ناکام رہی ہے۔نامہ نگاروں نے "محبت جہاد" کے دعووں کو بخار میں مبتلا بہترین تصورات اور بدترین، دانستہ انتخابات کی ترکیب کے طور پر بار بار بے نقاب کیا ہے۔" اسی رپورٹ کے مطابق، "محبت جہاد" کے مشترکہ موضوع کے بارے میں بہت سے دعوے بین المذاہب شادی پر سخت اعتراضات کا اظہار کرتے رہے ہیں جبکہ "ہندوستانی قانون عقائد کے مابین شادیوں میں ، یا رضاکارانہ اور باخبر رضامندی سے تبادلوں کے خلاف کوئی رکاوٹ نہیں کھڑا کرتا ہے"۔اس کے باوجود یہ خیال ابھی بھی قائم رہتا ہے، یہاں تک کہ جب "متاثرین" نے اسے بکواس قرار دے کر مسترد کردیا۔"[33]

کیرالا چرچ کا کہنا ہے کہ 'محبت جہاد' حقیقی ہے، چرچ مزید دعویٰ کرتا ہے کہ عیسائی خواتین کو آئی ایس کے جال میں پھنسایا جاتا ہے.[34][35] یہ خبر جنوری 2020ء کی ہے۔

اسی سال 2020ء میں بھارت کی مرکزی حکومت کے مملکتی وزیر داخلہ جی کشن ریڈی نے فروری میں لوک سبھا میں بیان دیا کہ لو جہاد کی اصطلاح کی کوئی تعریف قانون میں نہیں دی گئی ہے اور اس سے متعلق کسی بھی مرکزی ایجنسی نے کوئی بھی معاملے کی اطلاع نہیں دی ہے۔[36]

اصطلاحترميم

کیرالا اور پڑوسی ریاست ریاست کرناٹک میں پہلی بار 2007 کے ارد گرد "محبت جہاد" کا تذکرہ ہوا تھا، لیکن یہ 2009 میں عوامی گفتگو کا حصہ بن گیا تھا۔ اصل میں اسے "رومیو جہاد" کہا جاتا تھا۔[37]

تاہم جس طرح کہ فروری 2020ء میں مرکزی حکومت کے مملکتی وزیر داخلہ جی کشن ریڈی نے لوک سبھا بیان دیا ہے، اس سے متعلق کسی بھی مرکزی ایجنسی نے کوئی بھی معاملے کی اطلاع نہیں دی ہے۔ [36]

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. Khatun، Nadira (14 December 2018). "'Love-Jihad' and Bollywood: Constructing Muslims as 'Other'". Journal of Religion & Film. University of Nebraska Omaha. 22 (3). ISSN 1092-1311. 20 نومبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 جنوری 2021. 
  2. Gupta، Charu (2009). "Hindu Women, Muslim Men: Love Jihad and Conversions". Economic and Political Weekly. 44 (51): 13–15. ISSN 0012-9976. JSTOR 25663907. 22 جنوری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 جنوری 2021جے اسٹور سے. 
  3. Rao، Mohan (1 October 2011). "Love Jihad and Demographic Fears". Indian Journal of Gender Studies (بزبان انگریزی). 18 (3): 425–430. ISSN 0971-5215. doi:10.1177/097152151101800307سیج پبلی شنگ سے. 
  4. Khalid، Saif (24 August 2017). "The Hadiya case and the myth of 'Love Jihad' in India". الجزیرہ. 03 اکتوبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 اکتوبر 2017. 
  5. [1][2][3][4]
  6. ^ ا ب پ Farokhi، Zeinab (2020). "Hindu Nationalism, News Channels, and "Post-Truth" Twitter: A Case Study of "Love Jihad"". In Boler، Megan؛ Davis، Elizabeth. Affective Politics of Digital Media: Propaganda by Other Means (بزبان انگریزی). روٹلیج. صفحات 226–239. ISBN 978-1-00-016917-1. اخذ شدہ بتاریخ 17 فروری 2021گوگل بکس سے. 
  7. Jenkins، Laura Dudley (11 April 2019). "Persecution: The Love Jihad Rumor". Religious Freedom and Mass Conversion in India (بزبان انگریزی). یونیورسٹی آف پنسلوانیا پریس. ISBN 978-0-8122-9600-6. doi:10.9783/9780812296006-007. اخذ شدہ بتاریخ 30 مارچ 2021گوگل بکس سے. The masterplot of love jihad is not just literary imaginings but also a potent brew of Islamophobia and patriarchy that harms Muslims and women. Akin to some of the post-9/11 rhetoric in the United States, contemporary Hindu nationalists propagate "a mythical history of medieval Muslim tyranny and present-day existential threat, demanding mobilization and revenge." 
  8. Sharma، Ajita (1 April 2020). "Afrazul's murder: Law and love jihad". Jindal Global Law Review. Springer. 11 (1): 77–95. doi:10.1007/s41020-020-00114-5. The fake claim by the Hindu right-wing that love jihad forces Hindu women to love and marry a Muslim man and convert to Islam is perpetuating an already existing anti-Muslim narrative in the country. The love jihad phenomenon has thus become a tool of hate and anger towards Muslims. Afrazul's killing by Raigher is an extreme demonstration of this form of hate and anger towards Muslims. 
  9. Upadhyay، Nishant (18 May 2020). "Hindu Nation and its Queers: Caste, Islamophobia, and De/coloniality in India". Interventions. روٹلیج. 22 (4): 464–480. doi:10.1080/1369801X.2020.1749709. اخذ شدہ بتاریخ 30 مارچ 2021Academia.edu سے. Heterosexual couples who defy caste and religious structures often face violence, some of which results in death through honor killings and lynching targeting specifically Muslim and Dalit men. For instance, the Hindutva campaign against what it calls the "love jihad" is an attempt to protect Hindu women from Muslim men, as the latter are imagined/blamed to convert Hindu women to Islam through trickery and marriage (Gupta 2018b, 85). Needless to say, these claims are unfounded and Islamophobic imaginations of the Hindu Right. 
  10. Frydenlund، Iselin (24 September 2018). "Buddhist Islamophobia: Actors, Tropes, Contexts". In Dyrendal، Asbjørn؛ Robertson، David G.؛ Asprem، Egil. Handbook of Conspiracy Theory and Contemporary Religion. Brill Handbooks on Contemporary Religion. 17. Brill. صفحات 279–302. ISBN 9789004382022. doi:10.1163/9789004382022_014. 11 جون 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 اکتوبر 2020گوگل بکس سے. 
  11. [6]:226–227[7][8][9][10]:289
  12. ^ ا ب Strohl، David James (11 October 2018). "Love jihad in India's moral imaginaries: religion, kinship, and citizenship in late liberalism". Contemporary South Asia. روٹلیج. 27 (1): 27–39. ISSN 0958-4935. doi:10.1080/09584935.2018.1528209. 28 نومبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 20 فروری 2021. 
  13. Nair، Rashmi؛ Vollhardt، Johanna Ray (6 May 2019). "Intersectional Consciousness in Collective Victim Beliefs: Perceived Intragroup Differences Among Disadvantaged Groups". Political Psychology. جان وائلی اینڈ سنز. 40 (5): 2. doi:10.1111/pops.12593. اخذ شدہ بتاریخ 17 فروری 2021ResearchGate سے. Muslims form about 15% of India's population and have suffered severe marginalization in education and employment, since the partition of Hindu-majority India and Muslim-majority Pakistan in 1947 (Alam, 2010). They have since faced recurrent riots (Varshney, 2003). Other hostilities include false accusations of love jihad (a conspiracy theory claiming Muslim men feign love with non-Muslim women to convert them to Islam) and attempts to convert Muslims to Hinduism by Hindu fundamentalist organizations (Gupta, 2009). 
  14. George، Cherian (2016). Hate Spin: The Manufacture of Religious Offense and Its Threat to Democracy (بزبان انگریزی). MIT Press. صفحات 96–101. ISBN 978-0-262-33607-9. اخذ شدہ بتاریخ 17 فروری 2021گوگل بکس سے. 
  15. Zimdars، Melissa؛ McLeod، Kembrew (24 January 2020). Fake News: Understanding Media and Misinformation in the Digital Age (بزبان انگریزی). MIT Press. صفحات 147–148. ISBN 978-0-262-53836-7. 24 جون 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 فروری 2021گوگل بکس سے. 
  16. Anand، Dibyesh (2011). "Pornosexualizing "The Muslim"". Hindu Nationalism in India and the Politics of Fear (بزبان انگریزی). Palgrave Macmillan. صفحات 63–69. ISBN 978-0-230-60385-1. 24 جون 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 فروری 2021گوگل بکس سے. 
  17. George، Cherian (3 April 2017). "Journalism's crisis of reason". Media Asia. روٹلیج. 44 (2): 71–78. ISSN 0129-6612. doi:10.1080/01296612.2017.1463620. 11 جون 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 فروری 2021. 
  18. Udupa، Sahana؛ Venkatraman، Shriram؛ Khan، Aasim (11 September 2019). ""Millennial India": Global Digital Politics in Context". Television & New Media. SAGE. 21 (4): 353. doi:10.1177/1527476419870516 . Vigilante action is targeted against what right-wing attackers describe as "love jihad," finding cause in the conspiracy theory of conniving Muslim men seducing gullible Hindu women into marriage and submission. "Love jihad" is a violent expression of the broader politics of regulating female sexuality—a core element of online Hindu nationalism manifest variously as shaming and abuse (Udupa 2017). 
  19. Bhat، M. Mohsin Alam (1 September 2018). "The Case for Collecting Hate Crimes Data in India". Law & Policy Brief (بزبان انگریزی). O. P. Jindal Global University. 4 (9). SSRN 3367329 . 01 اپریل 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 21 فروری 2021Social Science Research Network سے. A Muslim migrant worker was bludgeoned to death and his dead body set on fire, with all this being recorded on video, while his attacker blamed him for "love jihad" — a phrase used by the extremist members of Hindu right-wing organizations to refer to a conspiracy theory that Muslims are forcibly or fraudulently converting Hindu women on the pretext of marriage. 
  20. Purewal، Navtej K. (3 September 2020). "Indian Matchmaking: a show about arranged marriages can't ignore the political reality in India". The Conversation UK. 11 ستمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 ستمبر 2020. One popular conspiracy theory shared by the Hindu right is "Love Jihad". This is the idea that Muslim men target women belonging to non-Muslim communities to convert them to Islam by feigning love. It is an invention to incite suspicion and hatred against Muslims in India. 
  21. Byatnal، Amruta (13 October 2013). "Hindutva vigilantes target Hindu-Muslim couples". دی ہندو. ISSN 0971-751X. 11 نومبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 ستمبر 2020. They see themselves as warriors against what they call "Love Jihad," a conspiracy theory floated by Hindutva groups like the Hindu Janjagruti Samiti which claims that Muslim men lure Hindu women into marriage with the aim of increasing their own population. 
  22. [6]:226–227[12]:1–2[13][14]:96–97[15]:147[16]:69[17]:74[18][19][20][21]
  23. Sarkar، Tanika (1 July 2018). "Is Love without Borders Possible?". Feminist Review (بزبان انگریزی). 119 (1): 7–19. ISSN 0141-7789. doi:10.1057/s41305-018-0120-0. 24 جون 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 14 نومبر 2020سیج پبلی شنگ سے. 
  24. Waikar، Prashant (2018). "Reading Islamophobia in Hindutva: An Analysis of Narendra Modi's Political Discourse". Islamophobia Studies Journal. 4 (2): 161–180. ISSN 2325-8381. JSTOR 10.13169/islastudj.4.2.0161. doi:10.13169/islastudj.4.2.0161. 26 مارچ 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 جنوری 2021جے اسٹور سے. 
  25. [6][12]:4[23][24]
  26. "Hindu Women, Muslim Men: Love Jihad and Conversions". JSTOR. JSTOR. January 24, 2020. اخذ شدہ بتاریخ January 24, 2020.  الوسيط |first1= يفتقد |last1= في Authors list (معاونت)
  27. "A Muslim and a Hindu thought they could be a couple. Then came the 'love jihad' hit list.". The Washington Post. April 26, 2018. اخذ شدہ بتاریخ January 24, 2020. 
  28. بھارتی سپریم کورٹ کا ہندو لڑکیوں کی مسلمانوں سے شادیوں کی تحقیقات کا حکم
  29. "The Year of Love Jihad in India". New Yorker. 
  30. "The unfounded fear of 'love jihad'". The Express Tribune. September 29, 2017. اخذ شدہ بتاریخ January 24, 2020. 
  31. ^ ا ب پ "India Supreme Court restores 'love jihad' marriage". BBC. BBC News. March 8, 2018. اخذ شدہ بتاریخ January 24, 2020. 
  32. "India Supreme Court intervenes in 'love jihad' case". BBC. BBC News. November 27, 2017. اخذ شدہ بتاریخ January 24, 2020. 
  33. "Indian woman in 'love jihad' case says was not forced to embrace Islam". The Express Tribune. The Express Tribune. November 26, 2017. اخذ شدہ بتاریخ January 26, 2017. 
  34. "Kerala Church says 'Love Jihad is real', claims Christian women being lured into IS trap". deccanherald.com. The Printers (Mysore) Private Ltd. January 24, 2020. اخذ شدہ بتاریخ January 24, 2020. 
  35. "Christian girls targeted and killed in name of love jihad: Kerala's Syro-Malabar church". The Week magazine. The Week dot in. January 15, 2020. اخذ شدہ بتاریخ January 24, 2020. 
  36. ^ ا ب No 'love jihad' cases; not defined in law: MHA
  37. Khalid، Saif (August 24, 2017). "The Hadiya case and the myth of 'Love Jihad' in India". Al Jazeera. Al Jazeera Media Network. اخذ شدہ بتاریخ January 24, 2020. 

بیرونی روابطترميم