مرکزی مینیو کھولیں

جس طرح طرح پشتو زبان کی قدامت کا دعویٰ کیا جاتا ہے، اس طرح پشتو ادب کو بھی قدیم بتایا جاتا ہے۔ لہذا اس پر تفصیلی بحث کی ضرورت ہے۔

مولانا عبد القادر لکھتے ہیں کہ کہا جاتا ہے پشتو نثر کی ابتدا چوتھی صدی ہجری / دسویں صدی عیسویں میں سلطان محمود غزنوی کے ایک وزیر احمد بن میمندی کی تھی۔

عبد الحئی حبیبی کا کہنا ہے کہ غوریوں کی زبان پہلے پشتو تھی۔ گشتہ صدی کے وسط میں پشتو کی کوئی کتاب سترویں صدی سے پہلے کی شائع ہوئی تھی۔ لیکن 1940۔ 1941ئ میں عبد الحئی حبیبی نے سلیمان ماکو کے کچھ اجزائ شائع کیے۔ یہ ایسی نظموں پر مشتمل ہے جن کے متعلق دعویٰ کیا جاتاہے کہ یہ گیارویں صدی میں لکھی گئیں تھیں۔

1944 میں عبد الحئی حبیبی نے کابل میں محمد ہوتک کی ’ پٹہ خزانہ ‘ ( تکمیل 1729 ) میں شائع کی۔ جس کے متعلق دعویٰ کیا گیاکہ یہ قندھار میں لکھی گئی تھی، جو آٹھویں صدی سے مولف کے عہد تک کے شعرا کی بیاض ہے۔

ڑاورٹی لکھتا ہے کہ شیخ ملی نے 1417 میں یوسف زئیوں کی ایک تاریخ لکھی تھی۔ لیکن اس تصنیف کے متعلق کچھ معلوم نہیں ہے۔ ایک مخطوطہ موجود ہے جو بایزید انصاری ( م 1585 )کی خیر البیان پر مشتمل ہے۔ اس کا معائنہ کیا جاچکا ہے۔

سترویں صدی کی ابتدائی دور سے ہمارے پاس بایزید انصاری کے راسخ العقیدہ مد مقابل اخوندہ درویزہ کی دینی اور تاریخی کتاب ( مخزن افغانی، مخزن اسلام ) موجود ہیں، جو طعن و تشنع سے لبریز ہیں۔ سترھویں اور اٹھارویں صدی میں متعدد شعرا پیدا ہوئے۔ لیکن ان میں سے زیادہ تر فارسی کے نقال ہیں۔ یورپی معیار کی رو سے اور جدید افغانستان کے فومی شاعر کی حثیت سے ان میں سب سے نمایاں خوشحال خان خٹک ( 1022ھ / 1613 تا 1106ھ / 1694 ) ہے۔

سلیمان ماکو اور محمد ہوتک کی کتابیں معتدد لسانی اور تاریخی گنجلکیں پیدا کرتی ہیں اور ان کے صحیح ہونے کا سوال حتمی طور پر اس وقت تک طہ نہیں ہو سکتا ہے کہ جب تک ان کے اصلی مخلوطات لسانی تحقیقات کے لیے سامنے نہیں لائے جاتے ہیں۔

اگر محمد ہوتک کی پٹہ خزانہ کی صحت تسلیم کرلی جائے تو یہ امر بھی پھر بھی مشتبہ رہتا ہے کہ محمد ہوتک نے نظموں کی جو تاریخی لکھی ہیں وہ کہاں تک درست ہیں۔

پٹہ خزانہ اور حسن میمندی کے متعلق دعویٰ کی صھت کو تسلیم کرنا مشکل ہے۔ دیمز کا کہنا ہے کہ یہ بات فرض کرنے کے لیے کوئی شہادت نہیں ہے کہ غور کے باشندے شروع میں پشتو بولتے تھے۔ صاحب طبقات ناصری منہاج سراج نے غور کے شاہی محل میں پرورش پائی تھی۔ مگر پشتو کے بارے میں کچھ نہیں کہتا ہے۔ یہی وجہ ہے ڈیمز کو کہنا پڑا کہ اس بات کی کوئی شہادت نہیں ملتی ہے کہ غوریوں کی زبان ابتدا میں پشتو تھی۔

اگرچہ عبد الحئی حبیبی نے تقلیمات طبقات ناصری میں متعدد ایسے کلمات کی طرف اشارہ کیا ہے جو پشتو میں استعمال ہوتے ہیں۔ مگر خود عبد الحئی حبیبی کا کہنا ہے کہ پشتو پہلوی سے نکلی ہے۔ تو اس کا مطلب ہرگز یہ نہ لیا جائے کہ پشتو کی تشکیل ساسانی عہد یا اس سے پہلے ہی تشکیل پاچکی تھی اور وہ علمی اور ادبی زبان بن چکی تھی۔ کیوں کے محض دعوں کے علاوہ کسی قسم کا ثبوت نہیں ملا ہے۔ اگر ہم پٹہ خزانہ پر اعتبار کریں تو شنسب کا پوتا امیر کڑور ( آٹھویں صدی عیسویں ) پشتو کا پہلا شاعر تھا۔ مگر معتدد وجوہات اس بیان کو جھٹلاتی ہیں۔

پتہ خزانہ میں امیر کڑور کا نام پہلی دفعہ سامنے آتا ہے۔ یہ جو پولاد غوری کا بیٹا تھا۔ کا تاریخ میں کہیں ذکر نہیں ملتا ہے اور نہ ہی ایسا کوئی ثبوت ملتا ہے کہ اس وقت ( 139 ھ ) یہاں اسلام آچکا تھا۔ صاحب طبقات ناصری منہاج سراج نے پہلی دفعہ امیر فولاد ( پٹہ خزانہ میں پولاد ) کا ذکر کرتا ہے۔ اس سے پہلے اس کا تاریخ کوئی تذکرہ نہیں ملتا ہے۔ لیکن اس نے روایت کے طور پر درج کیا۔

روشن خان نے امیر کڑور کا باپ ماہویہ سوری کو بتایا ہے۔ ماہویہ کبھی غور کا حکمران نہیں رہا ہے اور نہ ہی غور سے اس کا کوئی تعلق رہا ہے۔ تاہم وہ مرو کا مزبان ضرور تھا اور تاہم اس روایت کو ہم تسلیم کر بھی لیں تو ماویہ کا غور سے تعلق ثابت نہیں ہوتا ہے اور دوسری طرف امیر کڑور جس کا تعلق غور سے تھا، اس کا دور دوسری صدی ہجری کی دوسری چوتھائی ( 139 ھ ) بتایا جاتا ہے۔ اس طرح دونوں کے مابین سو سال کا فرق ہو جاتا ہے، یہ بھلا کس طرح ممکن ہے۔

واضح رہے کہ یہ تمام روایات موضع اور وضح کی گئیں ہیں۔ چوتھی صدی ہجری تک یہاں کے لوگ مسلمان نہیں ہوئے تھے اور محمود غزنوی کے دور میں یہاں کے اکشر قبائل مسلمان ہوئے۔

پٹہ خزانہ تاریخ سوری اور دوسری کتب کی جو انیسویں صدی کے وسط میں شائع کی گئیں اور ان کے اصلی مخطوطے معائنے اور تجزیہ کے لیے پیش نہیں کیے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ یہ معتدد لسانی اور تاریخی گنجلکیں پیدا کر رہی ہیں، اس لیے ان کی حقیقت مشتبہ ہے۔ غالباً یہ کتب پشتو کی قدامت کو ثابت کرنے کے لیے مخزن افغانی (جس کی روایتیں خود تاریخ سے ماخذ نہیں ہیں) کے اور دوسرے فرضی شعرئ اور تاریخی ناموں کی مدد سے یہ کتب مرتب دی گئیں ہیں۔ تاکہ پشتو کی قدامت کو ثابت کیا جاسکے اور ان کتب کے بیشتر نام فرضی یا تاریخ سے ماخذ نہیں ہیں۔ مثلاً جہان پہلوان کا نام ہمیں ملتا ہے وہ پہلی صدی ہجری میں جب عربوں نے خرسان پر حملہ کیا تھا غور پر حکمران تھا اور اس کے نام پہلوان سے یہ فرض کیا گیا کہ وہ بہت طاقت ور آدمی تھا۔ حالانکہ یہ نسبتی کلمہ ہے اور پہلوی کی ایک شکل ہے۔ علاوہ ازیں یہ کہیں ثابت ہوتا ہے کہ وہ مسلمان ہو گیا تھا۔ اس کے علاوہ ملتان کے اسماعیلیوں کو راسخ عقیدہ مسلمان اور افغان بتایا گیا ہے۔ جن کے مذہبی عقائد کے بارے میں ہم عصر مصنفین نے تفصیل سے لکھا۔

بالاالذکر بیانات جن میں نہایت تضاد ہے اور تاریخ سے ماخذ بھی نہیں ہیں اور ان کے تجزیعہ سے واضع ہوتا ہے کہ یہ تمام روایات اور دلائل غلط سلط اور موضع ہیں اور انہیں محض اپنی نسلی اور لسانی برتری کے لیے وضح کی گئی ہیں اور انہیں پیش کرتے ہوئے تاریخی حقائق کو مد نظر بھی نہیں رکھا گیا ہے، لہذا ان پر کو تسلیم نہیں کیا جاسکتا ہے۔

پروفیسر پری شان خٹک کا کہنا کہ پشتو شاعری اپنے ابتدائی دور میں بھی خالص رہی ہے۔ پشتو خزانہ کی یہی بات کھٹکتی ہے۔ جب کوئی بولی ترقی کی منزلوں کی طرف گامزن ہوتی ہے تو ارد گرد کی ترقی یافتہ زبانوں کی نقالی کرتی ہے۔ اگر پٹہ خزانہ کو تسلیم کر لیا جائے تو یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ اس نے کو ن سے ارتقائی مراحل طے کیے ہیں؟ اگر اس نے ارتقائی مراحل طے کیے ہیں تو تہذیبی اور ثقافتی مراحل بغیر کس طرح ممکن ہے؟ مگر ہمیں اس کا کوئی ایسا جواب نہیں ملتا ہے جو تاریخ سے ماخذ ہو۔

دنیا کے تمام ادبوں کی ابتدا شاعری سے ہوئی ہے۔ شعر زندہ قوت ہے جس کا وجود نثر سے بیشتر کا معلوم ہوتا ہے۔ جب کہ فن تحریر ایجاد نہیں ہوا تھا شعر اپنے زبردست اثر سے دماغ میں محفوظ رہے سکتا ہے تھا اور مجموع کو سنانے کے قابل شعر ہی ہوسکتے ہیں۔ گو ظاہراً نثر ہمارے خیلات اور گفتگو کا آسان طریقہ ہے مگر غور کرنے کے بعد تجربہ سے معلوم ہوا ہے کہ وہ رسمی گفتگو کہ لیے موزوں ہے۔ کوئی بولی جب ترقی کرتی ہوئی زبانوں کی صف میں قدم رکھتی ہے تو ارد گرد کی زبانوں کے زیر اثر ہوتی ہے اور قدم قدم پر ان کی پیروی بلکہ نقالی کرتی ہے۔ اس سے فائدہ یہ ہے کہ اسے ترقی کے جو مدارج طے کرنے ہوتے ہیں وہ اسے طے نہیں کرنے ہوتے ہیں۔ خود اردو شاعری دیسی شاعری نہیں ہے بلکہ فارسی سے پیدا ہوئی ہے اور فارسی کے نمونے اس کے پیش نظر تھے۔ شروع میں اکثر اردو کے اشعار فارسی کا لفظی ترجمہ ہوتے تھے۔ اردو کے ابتدائی شعرا نے غزل میں فارسی شعرا کی تقلید کی۔ ولی کے دور میں مشکل سے کوئی ایسا شاعر ملے گا جس نے ہر بات میں فارسی کی تقلید نہیں کی۔

کوئی بھی زندہ زبان ساکن نہیں رہتی ہے، اسے زندہ رہنے کے لیے مسلسل ارتقائی مراحل سے گزرنا ہوتا ہے۔ اس میں نئے الفاظوں کی شمولیت اور غیر ضروری الفاظوں کی قظع برید اسے زندہ رکنے کے لیے ضروری ہے۔ اگر کسی زبان میں اس عمل کو روکا جائے تو وہ زبان روز کی بولی سے بہت دور ہوجاتی ہے اور رفتہ رفتہ اس کا شمار مردہ زبانوں ہونے لگتا ہے۔ ہمارے سامنے اس کی مثالیں سنسکرت اور لاطینی کی ہیں جو اب مردہ ہوچکی ہیں۔ لہذا کوئی زبان ابتد میں جب بولی ہوتی ہے اور اس کے ترقی یافتہ ہونے تک اس میں اس حد تک تبدیلیاں واقع ہو چکی ہوتی ہیں کہ وہ ابتدائی بولی سے بہت دور ہوجاتی ہے۔ اس زبان کے بولنے والوں کے لیے زبان استعمال کرنا تو درکنار اسے سمجھنا بھی دشوار ہوجاتا ہے۔

یہی وجہ ہے پشتو سولویں صدی میں اس قابل ہوئی کہ بولی سے زبان کہلائی جاسکے۔ اس کا واضح ثبوت اس سے ملتا ہے کہ پشتو مسلمانوں سے قبل تشکیل پاچکی ہوتی اور علمی و ادبی زبان بن چکی ہوتی تو اس میں دو لہجہ نہیں ہوتے۔ کیوں کے علمی اور ادبی ترقی زبان کو ایک ہی لہجہ پر مرکوز ہوجاتی ہے۔ اس کی واضح مثال اردو کی ہے، یہ اپنے ابتدائی دور میں کئی لہجوں میں بولی جاتی تھی۔ بعد کے دور میں اس کے کئی دبستان قائم ہو گئے اور ہر دبستان اپنی زبان کو مستند سمجھتا تھا۔ لیکن اردو کی علمی ترقی اور مقبولیت نے اسے ان دبستانوں کی قید سے نکال کر آزاد کر دیا۔[1]

پشتو یا پختوترميم

پشتو یا پختو ایک مشرقی ایرانی زبان ہے جو پٹھانی یا افعانی بھی کہلاتی ہے۔ یہ افغانستان اور پاکستان میں بولی اور پڑھی جاتی ہیں۔ یہ افخانستان کی سرکاری اور قومی زبان بھی ہے۔ اسی وجہ سے اسے بین الاقوامی حیثیت حاصل ہے۔

ادب کیا ہےترميم

ادب اصطلاح اپنے معنوی لحاظ سے ایک عجیب اور کائنات جیسے وسیع ہے۔ ابی تک کسی نے اس کی مختصر اور جامع تعرف نہیں کی۔ ہر ادیب، ہر نقاد، ہر محقق ہر علم نے اپنے علمی تجربے اور مطالعے اور مشاھدے کی روشنی میں ادب کی اتنی تعریف کی کہ حقیقت میں، میں اسے قوی اور جامع طور پر نہیں سمجھتا ۔

ادب کو ہم دو حصوں میں تقسیم کرتے ہیں۔ ایک نفسی ادب ہے جسے انسان کی اخلاقی اچھائی کوظاہر کرنا ہے۔ اوردوسری درسی ادب ہے جسے اچھے طریقے سے لکھنے، بولنے کی ہے۔

پشتو زبان اور تاریخترميم

جتنی پرانی تاریخ پشتونون کی ہے اتنی ہی پرانی تاریخ پشتو زبان کی ہیں۔ اس لیے پشتو نہ صرف پشتو زبان بلکہ اس کی اچھی ثقافتی اقدار کی ہیں۔ جس میں پشتونوں کو پہچانا و سمجہ جاسکتا ہیں۔ اگر ہم یہ کہے کی پشتو کی وجہ سے پشتون پشتون ہے تو غلط نہ ہوگا۔ اس لحاظ سے جتنی پشتو پرانی زبان ہے اتنی ہی پرانی تاریخ پشتونوں کی ہے۔

1۔ قاضی عبد الحلیم نے پشتو اکیڈمی پشاور کے ایک رسالہ "پشتو" میں یہ ثابت کیا ہے۔ کہ پشتوں سات ہزار سال پرانی زبان ہے۔ 2۔ رگ وید میں پشتوکا ذکرکیا گیا ہے۔ یہ کتاب ( 1400 )ق م میں لکھ گیا ہے۔ اس لحاظ سے تقریبا (3380 ) سال پرانی ہے۔

3۔ ھیروڈوٹس یونانی مورخ نے سال ( 484-425 ) ق م میں پشتون وطن پکتیکا کا ذکر کیا ہے۔ اس لحاظ سے یہ زبان تقریبا ( 2400 ) سال پرانی ہے۔ اور اسی جسے کہی تاریخی لوگوں نے اپنے کتابوں میں پشتو زبان کی تاریخ کا ذکر کیا ہے۔ جن میں البحرسکائی،بطلیموس بھی شامل ہے۔

4۔ پشتوں زبان کی محقق محترم جناب قاضی اثر مرحوم اپنے کتان پشتو ادب میں لکھتا ہے۔ کہ جاپان کے شہنشاہ میکاڈو اپنے کتب خانے میں محاتما بدھ کہ مذہب کا ایک کتاب ہے۔ رسم الخط پالی یعنی خروشتی ہے اور زبان پشتوہے۔ غالبا بلخ کے اس پاس لکھی گئی ہے۔ اس سے یہ ظاہر ہوتا ہے۔ کہ پشتو رسم الخط اسلام سے پہلے پالی زبان یعنی خروشی زبان میں لکھی جاتی تھی۔ اس لحاظ سے پشتو ادب کی تاریخ ( 2500 ) سال پرانی ہے۔

5۔ ایران کی بادشاہ "داریوش" جس نے (522 سے 486 ق م) تک حکوت کی ہے۔ اس نے پشتو زبان کی تین مصرعے لکھے ہیں جو میخی روسم الخط میں لکھی گئی ہے۔ اس لحاظ سے پشتو ادب (7500) سال پرانی ہے۔

6۔ محمد ھوتک "پٹی خزانہ" پشتو کتاب سے ثابت ہے کہ پشتو تیسری صدئ ھجرئ میں لکھا گیا ہے۔

اس لحاظ سے ہم یہ کہ سکتے ہیں کہ پشتو ادب کتنی پرانی ہے۔

پشتو، سنسکرت اور اوستا زبانوں میں مشابھت۔

- اوستا سنسکرت پشتو اردو معنی 1 گرم گھرمہ غرمہ دوپہر 2 جینی جینئ جینئ لڑکی 3 زیم جماکہ زمکہ زمین 4 حشب شپ شپہ رات 5 ون ون ونہ درخت

پشتو، سنسکرت اور اوستا زبان کی کئی سو الفاظ ملتے جلتے ہیں اور معنوی لحاظ سے بھی مشابھت رکھتے ہیں۔ جس کا ذکر جناب عبیبی نے اپنے کتاب پشتو ادب و تاریخ میں کی ہے۔

پشتو ادب اور انگریزترميم

برصخیر میں انگریزوں کی آمد کے بعد انگریزوں نے پشتوکی تاریخ اور ادب سے لگاو کے بعد انکی تھذیب و تمدن پر معلومات حاصل کرنے کے لیے پشتو زبان سیکھا اور ان پر کتابیں لکھیں جس میں ان کے مقاصد تھے۔ لیکن پھر بھی ان کی یہ کوشش قدر کی نگا سے دیکھی جاتی ہیں۔ ان کی یہ تصانیف اور تالیفات تین قسم کی ہیں۔

1۔ وہ کتابیں جوپشتو گریمر کی ہیں جو زبان بولنے کہ لیے لکھی گئی ہیں۔ 2۔ وہ کتابیں جو پشتو ادب اور تاریخ کی تھی۔ 3۔ وہ کتابیں جو پشتونوں کی تھذیب و تمدن پر لکھی گئی ہیں۔

ان کی نام اور کتاب درج زیل ہے
  • میجر راورٹی
  1. انگریزی پشتوڈیکشنری۔ 1856ء
  2. پشتو گرائمر 1856ء
  3. گلشن روہ جو 1860ء میں ھرٹ فورڈ میں چاپا گیاہے۔
  4. انجیل پشتو ترجمہ 1867ء
  • ہنر والٹر بیلیو
  1. تاریخ افغانستان
  2. پشتو ڈیکشنری
  3. پشتون گرائمر کتاب گرائمر آف دی پختوآر پشتولنگویج
  4. انجیل پشتو ترجمہ
  • برنرڈ ڈورن
  1. پشتو تاریخ
  2. پشتو روسی لغات کریستو مالتی اف دی پشتو
  • پادری ھیوز (پادری تھامس پیٹرک ھیوز)
  1. کلید افغانی 1872ء
  2. انجیل پشتو ترجمہ# اسی طرح مورگن سٹرن، کیپٹن واھگن، ڈاکٹر ارنسٹ ٹرومپ، تھارن، ھوگس، ٹومینوچ، گیگر المانی، ودغن، میجر روس کیپل، میجر کوکس، لاریمر، گلبرٹسن، پروفیسر برٹلز، لبیدیف، ڈاکٹر گریرسن، مالیون، وی ھانری، ڈاکٹر میکنزی، فلر بلوم ھارٹ، ھورمن ایتھا، ای جی برائون، گولڈن سٹیٹ، میجر آر لیچ، کلاپرٹ، گوندن شات، الفنسٹن، پادری لیونٹال، م،گ، السانوف، کرنل سی اے بایل، ولیم کیری، مسمون روسی، پروفیسر بیوٹلس، جی کرسچین، جی ایم روز، سراولف کیرو اور جنزانو لڈسن وغیرہ نے بے شمار کتابیں لکھی ہیں۔

حوالہ جاتترميم

  1. * مولانا عبد القار۔ پشتو۔ معارف اسلامیہ * افغانستان۔ معارف اسلامیہ * عبد الحئی حبیبی۔ تقلیمات طبقات ناصری جلد دوم * پرفیسر پری شان۔ مقدمہ پشتو شاعری * منہاج سراج طبقات ناصری جلد اول * روشن خان۔ تزکرہ * رام بابو سکسینہ۔ تاریخ اردو * ڈاکٹر ابولیث صدیقی۔ ادب اور لسانیات * ڈاکٹر اعجاز حسین۔ مختصر تاریخ اردو * سدھیشورورما۔ آریائی زبانیں * پرفیسر پردل خٹک۔ مقدمہ پشتو شاعری * بلازری۔ فتوح البدان * پشتو ادب و تاریخ