مرکزی مینیو کھولیں

جہالۃ بالراوی (اصطلاح حدیث)

علم مصطلح الحديث

اقسامِ حدیث باعتبار مُسند الیہ

حدیث قدسی  · حدیث مرفوع
حدیث موقوف  ·
حدیث مقطوع

اقسامِ حدیث باعتبار تعدادِ سند

حدیث متواتر  · حدیث احاد

اقسامِ اُحاد باعتبار تعدادِ سند

حدیث مشہور  · حدیث عزیز  · حدیث غریب

اقسامِ اُحاد باعتبار قوت و ضعف

حدیثِ مقبول  · حدیثِ مردود

اقسامِ حدیثِ مقبول

حدیثِ صحیح  · حدیثِ صحیح لذاتہٖ · حدیثِ صحیح لغیرہٖ
حدیثِ حسن  ·
حدیثِ حسن لذاتہٖ · حدیثِ حسن لغیرہٖ

اقسامِ حدیثِ مردود

حدیث ضعیف
حدیثِ مردود بوجہ سقوطِ راوی
حدیثِ مردود بوجہ طعنِ راوی

اقسامِ حدیثِ مردود بوجہ سقوطِ راوی

حدیث مُعلق  · حدیث مُرسل
حدیث مُعضل  ·
حدیث منقطع
حدیث مدلس  ·
حدیث مرسل خفی
حدیث معنعن

اقسامِ حدیثِ مردود بوجہ طعنِ راوی

حدیث موضوع  · حدیث متروک
حدیث منکر  ·
حدیث معلل

اقسامِ حدیثِ معلل

حدیث مدرج  · حدیث مقلوب
حدیث مزید فی متصل الاسناد  ·
حدیث مضطرب
حدیث مصحف  ·
حدیث شاذ

طعنِ راوی کے اسباب

مخالفتِ ثقات  · جہالۃ بالراوی
بدعت  ·
سوءِ حفظ

اقسامِ کتبِ حدیث

اربعین  · سنن  · جامع  · مستخرج  · جزو  · مستدرک  · معجم

دیگر اصطلاحاتِ حدیث

اعتبار  · شاہد  · متابع
متصل  ·
متفق علیہ  · مسند · واضح
مسلسل بالید  ·
مسلسل بالاولیہ  · مسلسل بالحلف

طعن کا لفظی معنی ہے نیزہ مارنا۔ راوی میں طعن کا مطلب ہے کہ راوی کی عدالت و ثقاہت میں کلام کیا اور کسی وجہ سے راوی کی عدالت کو مجروح قرار دیا جائے۔ ان طعن کے اسباب میں سے ایک سبب جہالت بالراوی ہے۔ لغت میں جہالت علم کا متضاد ہے۔ اصطلاح میں راوی کی ذات یا صفات کے غیر معروف ہونے کو جہالت کہتے ہیں۔
اسباب جہالت تین ہیں۔

  1. راوی کی صفات بہت زیادہ ہوں اور اس کا تذکرہ کسی خاص مقصد کے لیے مشہور صفت کی بجائے دوسری صفت سے کیا جائے۔
  2. اسناد میں نام نہ لینے کی وجہ سے جہالت ہوتی ہے اور مبہم الفاظ استعمال ہوتے ہیں ایسے لوگوں کے تعارف کے لیے محدثین نے مبہمات نامی کتابیں تحریر کی ہیں۔
  3. کئی روای بہت تھوڑی روایات والے ہوتے ہیں ان کے تلامذہ بھی کم ہوتے ہیں عام واقفیت نہ ہونا باعث جہاالت ہوتا ہے ایسے راویوں کے لیے محدثین نے وحدان نامی کتابیں لکھی ہیں۔[1]

حوالہ جاتترميم

  1. التحدیث فی علوم الحدیث، عبد الرؤف ظفر، صفحہ 223، مکتبہ قدوسیہ۔ لاہور