خواتین ایک روزہ بین الاقوامی

خواتین ایک روزہ بین الاقوامی ( WODI ) خواتین کرکٹ محدود اوورکرکٹ کی ایک قسم ہے۔ میچ مردوں کے ایک روزہ بین الاقوامیکے برابر 50 اوور کا ہی کھیلا جاتا ہے۔ کرکٹ کی تاریخ میں خواتین کا پہلا ایک روزہ کرکٹ میچ 1973 میں انگلینڈ خواتین عالمی کپ کے سلسلے میں کھیلے جانے والے میچوں میں سے پہلا میچ تھا۔ پہلے ون ڈے میں انگلستان خواتین کرکٹ ٹیم نے انٹرنیشنل الیون کو شکست دی۔ خواتین کا 1،000 واں ون ڈے 13 اکتوبر 2016 کو جنوبی افریقہ اور نیوزی لینڈ کے درمیان کھیلا گیا تھا۔

شامل ممالکترميم

2006 میں ، آئی سی سی نے اعلان کیا کہ کرکٹ کی عالمی درجہ بندی میں صرف پہلے 10 فریقوں کو ہی ٹیسٹ اور ایک روزہ کھیلنے کی حیثیت حاصل ہوگی۔ 2011 کے خواتین کرکٹ ورلڈ کپ دوران کوالیفائر نیدرلینڈ نے ٹاپ 6 درجہ بندیوں میں میں جگہ نہ بن پانے کی وجہ سے ایک روزہ کھیلنے کی حیثیت کھو دی۔ چونکہ ون ڈے اسٹیٹس کے لیے ٹاپ 4 ٹیموں کو اس کوالیفائنگ ٹورنامنٹ میں حصہ لینے کی ضرورت نہیں تھی ، اان ٹیموں کی ملا کر کل دس ٹیمیں شامل کی گئیں۔ بنگلہ دیش نے نیدرلینڈ کے پیچھے چھوڑتے ہوئے ان دس ممالک میں سے ایک کے طور پر ایک روزہ میچ کھیلنے کی اہلیت حاصل کر لی۔ وہ ممالک جن کو فی الحال ایک دن کی حیثیت حاصل ہے درج ذیل ہیں:

 

مندرجہ ذیل ٹیمیں ایک روزہ بھی کھیل چکی ہیں ، لیکن فی الحال ایک کا درجہ حاصل نہیں ہے ، حالانکہ وہ مستقبل میں اس حیثیت کو دوبارہ حاصل کرنے کے اہل ہوسکتی ہیں۔

یہاں چار دیگر ٹیمیں بھی ہیں جن کو پہلے ایک روزہ کرکٹ کھیلنے کی اہلیت حاصل تھی لیکن اب وہ ایک روزہ عالمی کرکٹ کھیلنے کی اہل نہیں ہیں۔ ۔ تین ٹیمیں صرف 1973 کے خواتین کرکٹ ورلڈ کپ میں کھیل سکیں۔ چار سابق ایک روزہ کرکٹ ٹیمیں یہ ہیں۔

درجہ بندیترميم

اکتوبر 2018 سے پہلے ، آئی سی سی نے خواتین کے کھیل کے لیے الگ ٹی ٹوئنٹی رینکنگ برقرار نہیں رکھی ، اس کی بجائے کھیل کی تینوں شکلوں پر مجموعی کارکردگی کو مجموعی طور پر خواتین کی ایک ٹیم کی درجہ بندی میں شامل کیا۔ [1] جنوری 2018 میں ، آئی سی سی نے ساتھی ممالک کے مابین ہونے والے تمام میچوں کو بین الاقوامی حیثیت دی اور خواتین کے لیے علاحدہ ٹی ٹونٹی رینکنگ شروع کرنے کے منصوبے کا اعلان کیا۔ [2] اکتوبر 2018 میں ٹی ٹوئنٹی رینکنگ مکمل ممبروں کے لیے الگ ایک روزہ رینکنگ کے ساتھ شروع کی گئی تھی۔

آئی سی سی خواتین کرکٹ کی درجہ بندی
درجہ ٹیم میچ پوائنٹ ریٹنگ
1   آسٹریلیا 17 2,781 164
2   جنوبی افریقا 24 2,828 118
3   انگلستان 17 1,993 117
4   بھارت 20 2,226 111
5   نیوزی لینڈ 30 1,864 93
6   ویسٹ انڈیز 12 1,025 85
7   پاکستان 15 1,101 73
8   بنگلادیش 5 306 61
9   سری لنکا 11 519 47
10   آئرلینڈ 2 25 13
ماخذ: ICC Women's Rankings، ICC Women's Championship، 4 فروری 2017
"Matches" is the number of matches played in the 12-24 months since the اکتوبر before last, plus half the number in the 24 months before that۔

ٹیم کے اعدادوشمارترميم

ٹیم دورانیہ میچ کھیلے جیتے ہارے برابر بے نتیجہ % جیت کا تناسب
  آسٹریلیا 1973– 329 258 63 2 6 80.18
  بنگلادیش 2011– 38 9 27 0 2 25.00
  ڈنمارک 1989–1999 33 6 27 0 0 18.18
  انگلستان 1973– 348 204 131 2 11 60.83
  بھارت 1978– 272 151 116 1 4 56.52
 انٹرنیشنل الیون 1973–1982 18 3 14 0 1 17.64
  آئرلینڈ 1987– 148 39 103 0 6 27.46
  جمیکا 1973 5 1 4 0 0 20.00
  جاپان 2003 5 0 5 0 0 0.00
  نیدرلینڈز 1984–2011 101 19 81 0 1 19.00
  نیوزی لینڈ 1973– 335 170 157 2 6 51.97
  پاکستان 1997– 165 48 113 1 3 29.93
  سکاٹ لینڈ 2001–2003 8 1 7 0 0 12.50
  جنوبی افریقا 1997– 193 94 88 3 8 51.62
  سری لنکا 1997– 167 56 106 0 5 34.56
  ٹرینیڈاڈ و ٹوباگو 1973 6 2 4 0 0 33.33
  ویسٹ انڈیز 1979– 177 80 91 1 5 46.80
  ینگ انگلستان 1973 6 1 5 0 0 16.66
مآخذ: کرک انفو، 14 دسمبر 2019، جیت کا تناسب

ریکارڈترميم

13 ستمبر 2019 تک

بیٹنگترميم

ریکارڈ پہلا دوسرا ریفری
سب سے زیادہ رنز   میتھالی راج 6720   شارلٹ ایڈورڈز 5992 [3]
اعلی اوسط (کم سے کم 20 اننگز)   راچیل ہاہو-چکمک 58.45   لنڈسے رییلر 57.44 [4]
سب سے زیادہ اسکور   امیلیا کیر 232 *   بیلنڈا کلارک 229 * [5]
زیادہ تر صدیوں   میگ لیننگ 13   سوزی بیٹس 10 [6]
زیادہ تر 50s (اور زیادہ)  میتھالی راج 59  شارلٹ ایڈورڈز 55 [7]

بولنگترميم

ریکارڈ پہلا دوسرا حوالہ
زیادہ وکٹیں   جھولن گوسوامی 218   کیتھرین فٹزپٹرک 180 [8]
بہترین اوسط (کم سے کم 1000 گیندیں)   گل سمتھ 12.53   لن فلسٹن 13.26 [9]
اکانومی کی بہترین شرح (کم سے کم 1000 گیندیں )   براؤن 1.81   شیرون ٹریڈریا 1.86 [10]
بولنگ کے بہترین اعداد و شمار   ساجدہ شاہ بمقابلہ  جاپان  جاپان (2003) 7/4   جو چیمبرلین بمقابلہ  ڈنمارک  ڈنمارک (1991) 7/8 [11]

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. "ICC Women's Team Rankings launched". International Cricket Council. 25 دسمبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 جنوری 2017. 
  2. "Women's Twenty20 Playing Conditions" (PDF). بین الاقوامی کرکٹ کونسل. 24 جولا‎ئی 2011 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 فروری 2010. 
  3. "Women's One-Day Internationals / Batting records / Most runs in career". Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 13 ستمبر 2019. 
  4. "Women's One-Day Internationals / Batting records / Highest career batting average". Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 13 ستمبر 2019. 
  5. "Women's One-Day Internationals / Batting records / Most runs in an innings". Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 13 ستمبر 2019. 
  6. "Women's One-Day Internationals / Batting records / Most hundreds in a career". Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 13 ستمبر 2019. 
  7. "Women's One-Day Internationals / Batting records / Most fifties in career". Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 13 ستمبر 2019. 
  8. "Women's One-Day Internationals / Bowling records / Most wickets in career". Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 13 ستمبر 2019. 
  9. "Women's One-Day Internationals / Bowling records / Best career bowling average". Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 13 ستمبر 2019. 
  10. "Women's One-Day Internationals / Bowling records / Best career economy rate". Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 13 ستمبر 2019. 
  11. "Women's One-Day Internationals / Bowling records / Best figures in an innings". Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 13 ستمبر 2019.