رام چندر بھاردواج

ہندوستانی انقلابی اور غدر پارٹی کے سابق صدر

رام چندر بھاردواج (انگریزی: Ram Chandra Bharadwaj، پنجابی= ਰਾਮ ਚੰਦਰ ਭਾਰਦਵਾਜ)، پیدائش: 1886ء - وفات: 23 اپریل، 1918ء) ہندوستان کے مشہور انقلابی ، غدر پارٹی کے لیڈر اور اخبار نویس تھے۔ ان پر دیگر غدر پارٹی کے لیڈروں اور کارکنوں کے ساتھ سان فرانسسکو، ریاستہائے متحدہ امریکا میں مقدمہ چلایا گیا جسے ہندو-جرمن سازش کیس کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔

رام چندر بھاردواج
Ram Chandra Bharadwaj.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1886  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پشاور  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 23 نومبر 1918 (31–32 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سان فرانسسکو،  ریاستہائے متحدہ امریکا  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات قتل ارادی  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ انقلابی،  صحافی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تحریک تحریک آزادی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P135) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

حالات زندگیترميم

رام چندر بھاردواج 1886ء کو پشاور، شمال مغربی سرحدی صوبہ (حالیہ پاکستان) میں پیدا ہوئے۔ میٹرک تک تعلم حاصل کی۔ اخبار نویس اور مصنف تھے۔ غدر پارٹی کے اہم رہنماؤں میں شامل تھے۔ آفتاب و آکاش دہلی اور بھارت ماتا لاہور کی ادارت کی۔ 1911ء میں ریاستہائے متحدہ امریکا کے شہر سان فرانسسکو چلے گئے اور غدر پارٹی کے ترجمان اور امریکا میں مقیم ہندوستانیوں کے حریت پسند ہفت روزہ اخبار غدر (اخبار) کے مدیر مقرر ہوئے۔ غدر اس وقت کا مقبول اخبار تھا جو امریکا اور کینیڈا میں ہزاروں کی تعداد میں بکتا تھا۔ اس اخبار کے شمارے امریکا، آسٹریلیا، یورپ اور ایشیا کے ان تمام ملکوں میں تقسیم ہوتا تھا جہاں ہندوستانی رہتے تھے۔ اس کی تقسیم و ترسیل میں جرمن قونصلیٹ اور سفارتخانے کا تعاون بھی حاصل تھا۔ لالہ ہردیال کی وفات کے بعد غدر پارٹی کے لیڈر کی حیثیت سے بھی کام کیا۔ 1917ء میں امریکی حکومت نے سان فرانسسکو میں غدر پارٹی کے اہم رہنماؤں لالہ ہردیال، سنتوکھ سنگھ، تارکناتھ سنگھ، بھگوان سنگھ گوپال سنگھ جیسے غدری رہنماؤں کے ساتھ ساتھ رام چندر بھاردواج کو برطانوی حکومت کے کہنے پر دہشت گردی کے الزامات میں دھر لیا۔ رام چندر سمیت 8 غدری رہنماؤں پر مقدمہ چلایا گیا۔ جسے ہندو-جرمن سازش کیس کے نام سے شہرت حاصل ہوئی۔ یہ مقدمہ 20 نومبر 1917ء سے 24 اپریل 1918 تک چلا۔ 23 اپریل 1918ء کو سان فرانسسکو کی ایک عدالت کے کمرے میں انہیں ہلاک کر دیا گیا۔ خیال کیا جاتا ہے کہ برطانوی خفیہ جاسوسوں نے انہیں قتل کرایا۔[1]

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. شہیدانِ آزادی (جلد اول)، چیف ایڈیٹر: ڈاکٹر پی این چوپڑہ، قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان نئی دہلی، 1998ء، ص 54