ضیاء الدین سہروردی

عبد القاہر ابو نجیب سہروردی(490ھ-563ھ) سلسلہ سہروردیہ کے بانی ہیں جو اپنے نام کہ جگہ ضیاء الدین سہروردی سے زیادہ شہرت رکھتے ہیں سہروردیہ ان کے بھتیجے شہاب الدین سہروردی کی وجہ شہرت کی بلندیوں پر پہنچ گیا۔

نامترميم

پورا نام عبد القاہر بن عبد الله بن بن محمد بن عمویہ بن سعد البكري الصدّيقی کنیت ابو النجیب تھا اورلقب ضیاء الدین سہروردی ہے[1]

ولادتترميم

آپ پانچ فروری 1094ء۔ صفر 490ھ میں بمقام سہرورد جو زنجان کے قریب واقع ہے پیدا ہوئے ان کا سلسلہ نسب 13 واسطوں سے حضرت ابوبکر سے جا ملتا ہے

نسبترميم

ابو النجيب السہروردي ابو النجيب عبد القاہر بن عبد الله بن محمد بن عمویہ، انکا نام عبد الله، بن سعد بن الحسين بن القاسم بن علقمہ بن النضر بن معاذ بن عبد الرحمن بن القاسم بن محمد بن ابو بكر الصديق، الملقب ضياء الدين السہروردي.اور محب الدين بن النجار " تاريخ بغداد "میں یوں نقل کیا نسب الشيخ أبو النجيب جو ان کے ہاتھ سے لکھا ہوا ہے: عبد القاہر بن عبد الله بن محمد بن عمویہ اور انکا نام عبد الله، بن سعد بن الحسين بن القاسم بن النضر بن سعد بن النضر عبد الرحمن بن القاسم بن محمد بن أبو بكر الصديق،[2]

علوم ظاہریترميم

بچپن میں ہی سہرورد سے بغداد تشریف لائے جامعہ نظامیہ بغداد سے تعلیم حاصل کی۔ امام اسعد یمنی سے فقہ اصول فقہ اور علم کلام حاصل کیا۔ علامہ ابو الحسن سے نحو و ادب کی تعلیم حاصل کی۔ آپ احمد غزالی کے صحبت میں بھی رہے امام بیہقی خطیب بغدادی اور امام قشیری سے علم حدیث حاصل کیا[3]

تصنیفاتترميم

  1. آداب المريدين
  2. شرح الأسماء الحسنى
  3. غريب المصابيح[4]

وصالترميم

563 ہجری بمطابق 1168ء میں بغداد میں وفات ہوئی۔ آپکوعباسی خلیفہ مستنجدباللہ کی طرف سے کافی تکالیف ملیں جس سے آپکی شہادت ہوئی آپ بغداد میں مدفن ہیں۔

حوالہ جاتترميم

  1. ہدیۃ العارفين أسماء المؤلفين وآثار المصنفين،مؤلف: إسماعيل بن محمد البابانی البغدادی،دار إحياء التراث العربی بيروت
  2. وفيات الأعيان ،مؤلف: أبو العباس شمس الدين أحمد بن محمد بن إبراهيم بن أبي بكر ابن خلكان البرمكي الإربلي،ناشر: دار صادر - بيروت
  3. یادگار سہروردیہ،ابو الفیض قلندر علی سہرردی،صفحہ 108،حسیب خاور سہروردی لاہور
  4. الأعلام،مؤلف: خير الدين الزركلي ،ناشر: دار العلم للملايين