عالم لوہار

پاکستانی لوک گلوکار اور عارف لوہار کے والد۔

محمد عالم لوہار (ولادت: 1 مارچ 1928ء— وفات: 3 جولائی 1979ء) پاکستان کے لوک گلوکار اور موسیقار تھے۔[1] اُنہیں پاکستانی لوک موسیقی کا شہنشاہ بھی کہا جاتا تھا۔ جگنی اُن کی وجہ شہرت ہے۔[2]

عالم لوہار
Alam Lohar.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 1 مارچ 1928  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اچہ،  تحصیل کھاریاں،  ضلع گجرات،  برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 3 جولا‎ئی 1979 (51 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مانگا منڈی،  ضلع لاہور  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن لالہ موسیٰ،  ضلع گجرات  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فنکارانہ زندگی
آلہ موسیقی چمٹا،  صوت  ویکی ڈیٹا پر (P1303) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پروڈکشن کمپنی ای ایم آئی  ویکی ڈیٹا پر (P264) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ گلو کار  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
ویب سائٹ
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحہ  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ابتدائی زندگی اور کیریئرترميم

عالم لوہار کی پیدائش 1 مارچ 1928ء میں ضلع گجرات کے تحصیل کھاریاں کے ایک قصبہ اچہ میں ہوئی۔ وہ لوہار کے گھرانے میں پیدا ہوئے تھے۔ بچپن میں ہی عالم نے پنجابی کہانیوں اور شاعری کا مجموعہ صوفیانہ کلام پڑھا اور بچپن ہی سے نغمے گانا شروع کر دیا۔ ان کا خاندان اور بچے اب برطانیہ میں رہتے ہیں۔[3][4]

وفاتترميم

عالم لوہار 3 جولائی 1979ء کو شام کی بھٹیاں کے قریب ایک حادثے میں فوت ہوئے جب بھاری بھرکم ٹرک ان کی گاڑی سے ٹکرا گیا کیونکہ ٹرک ان کی گاڑی کو اوورٹیک کرنے میں ناکام رہا۔[5] وہ پاکستان کے لالہ موسیٰ میں دفن ہیں۔[6] ان کی وفات کے بعد، صدر پاکستان محمد ضیاء الحق نے عالم لوہار کو 1979ء میں پاکستان کا اعلیٰ سول ایوارڈ تمغائے حسن کارکردگی سے نوازا۔[7][8]

میراثترميم

عالم لوہار کی موت غیر متوقع تھی، پاکستان اور ہندوستان میں بہت سے گلوکاروں جن میں لال چند یملا جٹ، نور جہاں، نصرت فتح علی خان نے عالم لوہار کی موت کی 10 ویں برسی کے موقع پر ٹیلی ویژن نشریات میں عالم لوہار کے انتقال پر دکھ کا اظہار کیا۔ عالم لوہار کے ایک بیٹے، عارف لوہار نے اپنے والد کی روایت پر عمل کیا اور انہیں پاکستان میں ایک مشہور لوک گلوکار بھی سمجھا جاتا ہے۔[8] 1950ء کی دہائی کے پورے دور اور 1979ء میں ان کی وفات تک، انہوں نے پاکستان میں لوک گائیکی پر غلبہ حاصل کیا تھا اور وہ کےدنیا بھر میں پنجابی اور صوفی گائیکی بڑے گلوکار تھے۔ بہت سے دیہات میں مقامی روایتی لوگ ان کو 'شیرِ پنجاب یا 'ہیرا' کہتے ہیں۔[9][10]

بیرونی روابطترميم

حوالہ جاتترميم

  1. Folk singer Alam Lohar remembered پاکستان Today (newspaper)، Published 4 جولائی 2012. اخذکردہ بتاریخ 19 مارچ 2018
  2. Taneja، Shailaja Tripathi (8 نومبر 2008). "A balladeer's journey". The Hindu. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 6 مارچ 2012. In 1965 folk musician Alam Lohar came up with the genre of Jugni – songs about woman who travels from one place to another having interesting experiences. 
  3. "Profile of Alam Lohar". folkpunjab.org. 29 اکتوبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 مارچ 2018. 
  4. "Folk singer Alam Lohar being remembered today". Samaa TV website. 3 جولائی 2012. اخذ شدہ بتاریخ 19 مارچ 2018. 
  5. "Profile of Alam Lohar". folkpunjab.org. 29 اکتوبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 مارچ 2018. 
  6. خفتگان خاک گجرات، ڈاکٹر محمد منیر احمد سلیچ، صفحہ 106،سلیچ پبلیکیشنز گجرات
  7. "Folk singer Alam Lohar being remembered today". Samaa TV website. 3 جولائی 2012. اخذ شدہ بتاریخ 19 مارچ 2018. 
  8. ^ ا ب Profile of Alam Lohar on EMI پاکستان website اخذکردہ بتاریخ 19 مارچ 2018
  9. "Folk singer Alam Lohar being remembered today". Samaa TV website. 3 جولائی 2012. اخذ شدہ بتاریخ 19 مارچ 2018. 
  10. Folk singer Alam Lohar remembered پاکستان Today (newspaper)، Published 4 جولائی 2012. اخذکردہ بتاریخ 19 مارچ 2018