فاطمہ بنت اسوداسلامی نبی محمد بن عبد اللہ کی ایک صحابیہ تھیں۔۔ فاطمہ پہلی مسلمان خاتون ہیں جن پر چوری کی حد لگائی گئی۔ [1][2][3]

ابتدائی زندگیترميم

فاطمہ کا تعلقمکہ مکرمہ کے قریش قبیلہ کی ایک شاخبنی مخزوم سے تھا۔انہیں ام عمرو بنت سفیان کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔ [3] چونکہ سفیان الاسود بن عبدالاسد کا بیٹا تھا، [4] تو اس سے ایسا معلوم ہوتا ہے کہ الاسود شاید اس کا دادا تھا۔ اس کا بھائی ابوسلمہ اس لحاظ سے نانا لگتا ہے۔ [5]

فاطمہ کی والدہ فاطمہ بنت عبد عبدالعزی ابن ابی قیس تھیں، جو امیر بن لوی قبیلے سے تھیں، [3] حویتب بن عبدالعزی اس لحاظ سے اس کا ماموں ہوا۔ فاطمہ کے دو بھائی تھے، ہبار اور عبد اللہ، جنہوں نے اسلام کے آغاز میں اسلام قبول کر لیا اور مسلمان ہو گئے۔ [6]

مارچ 624 میں الاسود بن عبدالاسد بدر کی لڑائی میں مسلمانوں کے خلاف کافروں کے شانہ بشانہ لڑا۔ اس غزوہ میں اسے محمد بن عبد اللہ کے چچا حمزہ نے قتل کیا تھا۔ [7]

فاطمہ مسلمان ہوگئیں اور محمد بن عبد اللہ کی بیعت کی۔ [8] یہ نہیں بتایا گیا ہے کہ اس نے فتح مکہ کے وقت بیعت کی یا اس سے قبل کی۔

قانونی مقدمہترميم

جرمترميم

فاطمہ کے جرم کی تاریخ اور نوعیت دونوں ہی متنازع ہیں۔ یہ یا تو فتح مکہ [2][9] جنوری 630 میں یا مارچ 632 میں الوداعی حج کے دوران میں کی بات ہے۔[3]

عائشہ کے مطابق، وہ سامان ادھار لیتی تھیں اور پھر اس بات کا انکار کر دیتی تھیں کہ انہوں نے کوئی سامان لیا ہے۔ [10] ایک اور روایت میں چوری شدہ اشیاء کو "زیورات" کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔ [3] ایک اور جگہ یہ روایت ملتی ہے کہ وہ رات کو باہر چلی گئی اور مسافروں کے ایک کیمپ سے ملنے کے بعد، اس نے ان کا ایک بیگ اٹھالیا، لیکن وہ رنگے ہاتھوں پکڑی گئی اور مسافروں نے اسے پکڑ کر باندھ لیا۔

فیصلہترميم

صبح انہیں محمد بن عبد اللہ کے سامنے لایا گیا تھا۔ [1][2][3][9] انہوں نے حکم دیا کہ اس کا ہاتھ کاٹ دیا جائے۔ [10]

قریش اس کے بارے میں بہت پریشان ہوگئے، [9][11][12] اور اس سزا میں کمی کےلئے کسی سفارش کی تلاش شروع کر دی۔ ایک سے زیادہ افراد نے اس کے لئے محمد بن عبد اللہ سے سفارش کی۔ [3] فاطمہ کے لواحقین نے محسوس کیا کہ وہ واحد شخص جو محمد بن عبد اللہ سے رابطہ کرنے کی ہمت کرے گا، اور صرف ایک ہی شخص ان کے مطابق ایسا تھا جو سفارش کر سکتا تھا اور وہ ان کا اپنا نواسہ اسامہ بن زید تھا، جو حضرت محمد   کا بہت قریبی تھا۔ اس خاندان نے اسامہ سے بات کی، [10] اور اسامہ نے محمد بن عبد اللہ سے فاطمہ کی سزا معاف کرنے کی استدعا کی۔

اسامہ نے فاطمہ کی جانب سے بات کی لیکن محمد بن عبد اللہ کے چہرے کا رنگ تبدیل ہو گیا اور انہوں نے فرمایا: "کیا تم اللہ کے قانون کی خلاف ورزی کرنا چاہت ہو؟ [9][11][12] اسامہ، مجھ سے بات مت کرو۔ جب حد کی خلاف ورزی کی جائے تو اس کی کوئی معافی نہیں۔ اس فاطمہ کی جگہ اگر میری بیٹی فاطمہ بھی چوری کرتی تو میں اس کا ہاتھ بھی کاٹ دیتا۔ [3] اسامہ نے جواب دیا، "اللہ کے رسول، اللہ سے معافی کا طلبگار ہوں۔"

اس کے بعد فاطمہ نے ام سلمہ سے پناہ مانگی جو محمد   کی بیویوں میں سے ایک تھی اور وہ اس کے اپنے ہی قبیلے کی رکن تھی۔ [1][3] لیکن محمد بن عبد اللہنے اپنی بیوی کو اس بات کا حکم دیا کہ اس فاطمہ کو الگ کر دیں کیونکہ اس کی جگہ اگر اپنی بیٹی بھی ہوتی تو اس کو بھی چوری کی سزا سے معافی نہیں مل سکتی تھی۔

شام کے وقت محم د لوگوں کو تبلیغ کرنے کھڑے ہوئے۔ انہوں نے اللہ کی حمدبیان کی، پھر فرمایا: “اب ہمارے عنوان کی طرف۔ اے لوگو! آپ سے پہلے کی قومیں گمراہ ہوئیں اور تباہ ہوگئیں کیوں کہ اگر کوئی طاقتور شخص چوری کرتا تو وہ اسے بخشا کرتے تھے، لیکن اگر ان میں سے کوئی کمزور شخص چوری کرتا تو وہ اس پر حد مقرر کرتے اور سزا دیتے تھے۔ اسی کی قسم جس کے ہاتھ میں میری جان ہے، یہاں تک کہ اگر فاطمہ بنت محمد نے بھی چوری کی ہوتی تو میں اس کا بھی ہاتھ کاٹ دیتا۔ [1][9][11][12]

اس اعلان کے بعد، انہوں نے حکم دیا کہ سزا پر عملدرآمد کیا جائے۔ [3][9] عام طور پر، انہوں نے سکھایا کہ: "کسی ایسی چیز کی چوری کرنے کے لئے ہاتھ کاٹ دینا چاہئے جس کی قیمت ایک دینار کے ایک چوتھائی یا اس سے زیادہ قیمت کی ہو۔" [13]

سزاترميم

فاطمہ کا ہاتھ کاٹ دیا گیا۔ [1][9] "اوراس کے ہاتھوں سے خون ٹپکنا شروع ہو گیا۔ " [3]

فاطمہ عبد الشہل قبیلے کے پاس گئی، جہاں اسید بن حودر کی اہلیہ نے اسے پہچان لیا، اس کو مدعو کیا اور کھانا پکایا۔ [3] اسید، جو قبیلے کا سردار تھا، [14] جب وہ مسجد سے واپس آئے تو، اس نے اپنی بیوی سے گھر میں داخل ہونے سے پہلے ہی اس سے پوچھا کیا اس نے فاطمہ کے بارے میں خبرسنی ہے۔ اس نے جواب دیا، "ہاں، وہ یہاں میرے ساتھ ہے۔" اسید محمد سے مشورہ کرنے کے لئے مسجد واپس آئے، جس نے اس سے کہا: "وہ اس نے اپنے اوپر رحم کیا۔ اللہ آپ پر رحم کرے! "

جب فاطمہ اپنے والد کے پاس واپس آئیں، تو اس نے انھیں ہدایت کی کہ وہ اپنے ماموں رشتے داروں کے ساتھ زندگی گزاریں کیونکہ وہ ان سے "مشابہت" رکھتی ہے۔ [3] انہوں نے اس پر وضاحت نہیں کی کہ یہ مماثلت ظاہر میں ہے یا طرز عمل میں۔ اس کے ماموں، حویطب بن عبد العزی، اسے اندر لے گئے۔

بعد کی زندگیترميم

محمد کی اہلیہ عائشہ نے زور دے کر کہا کہ فاطمہ نے واقعتا توبہ کی۔ جب وہ محتاج ہوتی، تو وہ عائشہ سے ملتی، جو ان کی درخواست کو محمد   کے سامنے پیش کرتی تھی۔ [2][9]

فاطمہ کی شادی محمد بن عبد اللہ کی زندگی میں ہوئی تھی۔ [2][9] اس کے کنیت ام عمرو [3] سے ظاہر ہوتا ہے کہ اس کا ایک بیٹا تھا جس کا نام عمرو تھا۔

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب پ ت ٹ Muslim 17:4190.
  2. ^ ا ب پ ت ٹ Bukhari 4:55:2505.
  3. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ ذ ر​ Muhammad ibn Saad, Tabaqat vol. 8. Translated by Bewley, A. (1995)۔ The Women of Madina، p. 185. London: Ta-Ha Publishers.
  4. Muhammad ibn Ishaq, Sirat Rasulallah۔ Translated by Guillaume, A. (1955)۔ The Life of Muhammad، p. 311. Oxford: Oxford University Press.
  5. Muhammad ibn Ishaq, Sirat Rasulallah۔ Translated by Guillaume, A. (1955)۔ The Life of Muhammad، p. 329. Oxford: Oxford University Press.
  6. Muhammad ibn Ishaq, Sirat Rasulallah۔ Translated by Guillaume, A. (1955)۔ The Life of Muhammad، p. 528. Oxford: Oxford University Press.
  7. Muhammad ibn Ishaq, Sirat Rasulallah۔ Translated by Guillaume, A. (1955)۔ The Life of Muhammad، p. 299. Oxford: Oxford University Press.
  8. Muhammad ibn Saad, Tabaqat vol. 8. Translated by Bewley, A. (1995)۔ The Women of Madina، p. 184. London: Ta-Ha Publishers.
  9. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح Muslim 17:4188.
  10. ^ ا ب پ Muslim 17:4189.
  11. ^ ا ب پ Bukhari 8:81:779.
  12. ^ ا ب پ Muslim 17:4187.
  13. Bukhari 8:81:780.
  14. Muhammad ibn Saad, Tabaqat vol. 3. Translated by Bewley, A. (2013)۔ The Companions of Badr، p. 470. London: Ta-Ha Publishers.