فاطمہ پہلوی

رضا شاہ پہلوی کی بیٹی

فاطمہ پہلوی ( فارسی: فاطمہ پهلوی‎ ; 30 اکتوبر 1928ء – 2 جون 1987ء) رضا شاہ پہلوی کی دسویں اولاد اور محمد رضا پہلوی کی سوتیلی بہن تھی۔ وہ پہلوی خاندان کی رکن تھیں۔

فاطمہ پہلوی
(فارسی میں: فاطمه پهلوی ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Princess Fatimeh Pahlavi (before 1979).jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 28 اکتوبر 1928  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تہران  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 2 جون 1987 (59 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لندن  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات سرطان  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Iran.svg ایران  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شریک حیات محمد خاتمی  ویکی ڈیٹا پر (P26) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد رضا شاہ پہلوی  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والدہ عصمت دولت شاہی  ویکی ڈیٹا پر (P25) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
شمس پہلوی،  اشرف پہلوی،  ہمدم‌السلطنہ پہلوی،  محمد رضا شاہ پہلوی،  علی رضا پہلوی،  احمد رضا پہلوی،  عبد الرضا پہلوی،  حمید رضا پہلوی  ویکی ڈیٹا پر (P3373) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
خاندان شاہی ایرانی ریاست  ویکی ڈیٹا پر (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دیگر معلومات
پیشہ کاروباری،  کاروباری شخصیت  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ابتدائی زندگی اور تعلیمترميم

فاطمہ پہلوی 30 اکتوبر 1928ء کو تہران میں پیدا ہوئیں۔ وہ رضا شاہ اور اس کی چوتھی اور آخری بیوی عصمت دولت شاہی کی دسویں اولاد تھیں۔ [1] ان کی والدہ قاجار خاندان سے تھیں اور 1923ء میں رضا شاہ سے شادی کی [2] فاطمہ عبدالرضا پہلوی، احمد رضا پہلوی، محمود رضا پہلوی اور حامد رضا پہلوی کی ہمشیرہ تھیں۔ [3]

وہ اور اس کے بھائی تہران میں ماربل پیلس میں اپنے والدین کے ساتھ رہتے تھے۔ [1]

سرگرمیاںترميم

 
اپنی جوانی میں

ذاتی زندگیترميم

فاطمہ پہلوی نے دو شادیاں کیں۔ انھوں نے ونسنٹ لی ہلیئر (1924ء – 7 جولائی 1999ء) سے 13 اپریل 1950ء [4] اٹلی کے شہر Civitavecchia میں ایک شہری تقریب میں شادی کی۔ ہلیر نے اسلام قبول کرلیا۔ 10 مئی کو انہوں نے پیرس میں ایران کے سفارت خانے میں ایک مذہبی تقریب میں شادی کی۔ [4][5] ہلیر اس کے بھائی عبدالرضا پہلوی کا دوست تھا۔ [6] فاطمہ اور ہلیر کی ملاقات ایران کے بعد کے دورے کے دوران میں ہوئی تھی۔ شاہ محمد رضا کی طرف سے شادی کی مکمل توثیق نہیں کی گئی، غالباً ایران میں منفی ردعمل کی وجہ سے۔ [7] ان کے تین بچے تھے، دو بیٹے، کیوان اور دریوش، اور ایک بیٹی، رعنا، جو 1954ء میں بچپن میں حادثاتی طور پر گر کر مر گئی تھی ستمبر 1959ء میں ان کی طلاق ہو گئی۔

ہلیر سے طلاق کے بعد، اس نے 22 نومبر 1959ء کو ایران کی فضائیہ کے کمانڈنگ جنرل محمد امیر خاتمی سے شادی کی۔ [8] شاہ اور ان کی اس وقت کی منگیتر فرح دیبا نے شادی کی تقریب میں شرکت کی۔ [9] ان کے دو بیٹے، کمبیز (پیدائش 1961ء) اور رامین (پیدائش 1967ء)، اور ایک بیٹی، پری (پیدائش 1962ء) تھی۔ [10]

پہلوی نے ہیلی کاپٹر اڑانا سیکھنے کے لیے ایک برطانوی پائلٹ سے کورس کیا۔ پہلی سولو فلائٹ مکمل کرنے کے بعد اس نے اپنے ٹرینر کو ایک گھڑی، اومیگا اسپیڈ ماسٹر تحفے میں دی، جو 1969ء میں اپالو 11 کے خلابازوں نے شاہ کو دی تھی جب وہ پہلی چاند پر لینڈنگ کا جشن منانے کے لیے ایران کے دورے پر گئے تھے۔ [11] 2021ء کے اوائل میں یہ گھڑی نیلامی میں £18,000 میں فروخت ہوئی۔ [11]

پہلوی نے 1979ء کے انقلاب سے پہلے ایران چھوڑ دیا تھا۔[7] اپنے آخری سالوں میں وہ لندن میں مقیم تھیں۔[12]

موتترميم

پہلوی کا انتقال 58 سال کی عمر میں 2 جون 1987 ءکو لندن میں ہوا۔ ان کے پسماندگان میں ان کے چار بیٹے تھے۔ [12]

اعزازاتترميم

قومیترميم

  •   ڈیم گرینڈ کارڈن امپیریل آرڈر آف دی پلیڈیز، سیکنڈ کلاس [ حوالہ درکار ]

غیر ملکیترميم

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب Diana Childress (2011). Equal Rights Is Our Minimum Demand: The Women's Rights Movement in Iran 2005. Minneapolis, MN: Twenty-First Century Books. صفحہ 40. ISBN 978-0-7613-7273-8. 
  2. Gholam Reza Afkhami (2008). The Life and Times of the Shah. Berkeley, CA: University of California Press. صفحہ 605. ISBN 978-0-520-94216-5. 
  3. "Reza Shah Pahlavi". Iran Chamber Society. اخذ شدہ بتاریخ 16 جولائی 2013. 
  4. ^ ا ب
  5. "Iran. Part II (1950–1955)" (PDF). Iranian Hotline. اخذ شدہ بتاریخ 16 جولائی 2013. 
  6. Ali Akbar Dareini (1 جنوری 1999). The Rise and Fall of the Pahlavi Dynasty: Memoirs of Former General Hussein Fardust. Delhi: Motilal Banarsidass Publications. صفحہ 123. ISBN 978-81-208-1642-8. 
  7. ^ ا ب Gholamali Haddad Adel؛ Mohammad Jafar Elmi؛ Hassan Taromi-Rad، ویکی نویس (2012). Pahlavi Dynasty: An Entry from Encyclopaedia of the World of Islam. London: EWI Press Ltd. صفحہ 144. ISBN 978-1-908433-01-5. 
  8. Abbas Milani (2008). Eminent Persians: The Men and Women who Made Modern Iran, 1941–1979: in Two Volumes. Syracuse, NY: Syracuse University Press. صفحہ 457. ISBN 978-0-8156-0907-0. 
  9. Ebrahim Hadidi. "Field Martial Mohammad Khatami". Institute for Iranian History. اخذ شدہ بتاریخ 4 نومبر 2012. 
  10. ^ ا ب
  11. ^ ا ب