وارث لدھیانوی

پنجابی شاعر

وارث لدھیانوی (پیدائش: 11 اپریل، 1928ء - وفات: 5 ستمبر، 1992ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے پنجابی زبان کے شاعر اور فلمی نغمہ نگار ہیں، جو اپنے گیتوں دیساں دا راجا میرے بابل دا پیارا ، باریں برسیں کھٹن گیا سیں اور دلاں ٹھہر جا یار دا نظارا لین دے کی وجہ سے شہرت رکھتے ہیں۔

وارث لدھیانوی
پیدائشچوہدری محمد اسماعیل
11 اپریل 1928(1928-04-11)ء
لدھیانہ، پنجاب (برطانوی ہندوستان)
وفات5 ستمبر 1992(1992-90-05) (عمر  64 سال)
لاہور، پاکستان
قلمی ناموارث لدھیانوی
پیشہشاعر
زبانپنجابی
نسلپنجابی
شہریتFlag of پاکستانپاکستانی
اصناففلمی نغمہ نگاری
نمایاں کام دیساں دا راجہ میرے بابل دا پیارا نغمہ
دلاں ٹھہر جا یار دا نظارا لین دے (نغمہ)
جھانجھریا پہنا دو، بندیا بھی چمکا دو (نغمہ)
باریں برسیں کھٹن گیا سیں (نغمہ)

حالات زندگیترميم

وارث لدھیانوی 11 اپریل، 1928ء کو لدھیانہ، پنجاب (برطانوی ہندوستان) میں پیدا ہوئے[1][2]۔ ان کا اصل نام چوہدری محمد اسماعیل تھا۔ ابتدا میں عاجز تخلص کرتے تھے پھر استاد دامن کے شاگرد ہوئے اور وارث تخلص کر لیا۔ ابتدا میں وہ محکمہ ریلوے میں کلرک تھے۔ بعد ازاں نوکری چھوڑ کر فلمی دنیا سے وابستے ہو گئے۔[2]

وارث لدھیانوی نے لاتعداد پنجابی فلموں کے نغمات تحریر کیے جن میں کرتار سنگھ، مکھڑا، رنگیلا، دو رنگیلے، باوجی، شیر خان اور شعلے کے نام سرفہرست ہیں۔[2]

مشہور فلمیںترميم

مشہور نغماتترميم

  • اساں جان کے میت لئی اکھ وے (ہیر)
  • دلا ٹھہر جا یار دا نظارا لین دے (مکھڑا)
  • پہلی واری اج اوہناں اکھیاں نیں تکیا، ایہو جیہا تکیا کہ ہائے مار سٹیا(ٹھاہ)
  • آسینے نال لگ جا ٹھاہ کر کے (ٹھاہ)
  • نی چنبے دیے بند کلیئے (پہلا وار)
  • دیساں دا راجا میرے بابل دا پیارا (کرتار سنگھ)
  • باریں برسیں کھٹن گیا سیں (کرتار سنگھ)
  • جھانجھریا پہنا دو، بندیا بھی چمکا دو (شیر خان)
  • سانوں وی لے چل نال وے ،بائو سوہنی گڈی والیا (باؤجی)

وفاتترميم

وارث لدھیانوی 5 ستمبر، 1992ء کو لاہور، پاکستان میں وفات پا گئے۔[1][2]

حوالہ جاتترميم