گردیز (انگریزی: Gardez) افغانستان کا ایک رہائشی علاقہ جو صوبہ پکتیا میں واقع ہے۔<ref>{{cite web |author =انگریزی |url =https://en.wikipedia.org/w/index.php?title=Gardez&re =}

گردیز
Gardez
Gardez paktya.jpg
 

انتظامی تقسیم
ملک Flag of Afghanistan (2002–2004).svg افغانستان  ویکی ڈیٹا پر (P17) کی خاصیت میں تبدیلی کریں[1]
دارالحکومت برائے
جغرافیائی خصوصیات
متناسقات 33°36′00″N 69°13′01″E / 33.60000°N 69.21694°E / 33.60000; 69.21694
بلندی 2300 میٹر  ویکی ڈیٹا پر (P2044) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قابل ذکر
جیو رمز 1141857  ویکی ڈیٹا پر (P1566) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

گردیز شہر افغانستان کا تیسرا سب سے بڑا صوبائی دارالحکومت ہے، جو تورا بورا کے علاقے سے دور نہیں ہے۔

یہ شہر پرانے شہر کی قلعہ بندی کے عین قدموں میں واقع ہے "پرانے شہر" کو پانی گردیز دریا سے ملتا ہے، یہ دریا آگے جا کر " آبِ ایستادا " جھیل میں شامل ہو جاتا ہے.

پشتون اکثریتی گردیز شہر افغانستان کی دو اہم سڑکوں کے درمیان ایک جنکشن پر واقع ہے، جس میں سے ایک سڑک پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخواہ کے ساتھ غزنی سے منسلک ہے، جب کہ دوسری سڑک کابل کے ساتھ خوست کو ملاتی ہے۔ یہ سڑکیں ہندوکش کے پہاڑوں اور صحراؤں کی طرف سے گھومتی ہوئی شمال، مشرق اور مغرب سے وادی کے میدان سے گزرتی ہیں۔

یہ شہر کابل کے جنوب میں100 کلومیٹر (62 میل) اور خوست کے شمال مغرب میں 70 کلو میٹر (43 میل) پر واقع ہے۔

مشرقی افغانستان کے ایک بڑے علاقے کے لئے تجارت کا محور اور ملک بھر میں فوجوں کے لئے ایک اسٹریٹجک مقام کا حامل یہ شہر 6 اضلاع اور 6،174 ہیکٹرز (23.84 مربع میل) کے مجموعی علاقے پر مشتمل ہے۔ سطح سمندر سے اس شہر کی بلندی 2300 میٹر ہے۔


گردیز شہر کی آبادی کا تخمینہ 1979ء میں10,000 اور 2008 میں 70،000 افراد اور 7849 گھرانوں کا لگایا گیا تھا۔

تاریخی تفصیلاتترميم

یوسف شاہ گردیز ایک اسلامی ولی تھے جو 1088ء میں گردیز, افغانستان سے ملتان موجودہ پاکستان تشریف لائے۔


گردیز کا علاقہ موری سلطنت سے الگ ہوا، جو چندرگپت موریا کی قیادت میں تھی۔ موریہ نے علاقے میں ہندوؤں اور بدھ مت کی بحالی کی،

اور مقامی "Greco-Bactrian" 

فورسز کا سامنا کرنے تک وہ جنوبی ایشیاء کے مزید علاقے پر قبضہ کرنے کی منصوبہ بندی کررہا تھا۔

گردیز ایک ابھی تک قدیم تاریخی لانیحل معمہ ہے جو ہندوکش کے پہاڑوں میں تاحال دفن ہے. بدقسمتی سے، اس کی تاریخ صرف خرابی سے مستند ہے اور آثار قدیمہ کی دریافت، بشمول یونانی، ساسانی، ہفت شاہی، اور ترکی شاہی سکے گردیز کی امیر تاریخ میں ایک چھوٹی سی روشنی کی کرن دیتے ہیں.

تنازعات کی طویل تاریخی دور کی نشانیوں میں سے سکندرِ اعظم کی طرف سے تعمیر شدہ حفاظتی چوکیاں ابھی بھی شہر کی حدود سے باہر پہاڑیوں کی چوٹیوں پر ایستاده ہیں۔

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1.    "صفحہ گردیز في GeoNames ID". GeoNames ID. اخذ شدہ بتاریخ 30 اکتوبر 2020ء.