حکیم محمد اختر (1928 – 2 جون 2013) ایک پاکستانی عالم، مصنف، شاعر اور صوفی مرشد تھے۔وہ جامعہ شرف المدارس کے بانی تھے۔

حکیم محمد اختر
Hakeem Muhammad Akhtar calligraphy.png
 

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1928  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پرتاپ گڑھ، اتر پردیش  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 2 جون 2013 (84–85 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ عالم،  انسان دوست،  شاعر  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

1928 میں پیدا ہوئے، حکیم اختر اسٹیٹ یونانی میڈیکل کالج الہ آباد اور مدرسہ بیت العلوم سرائے میر کے فاضل تھے۔ وہ ابرار الحق حقی کے خلیفہ مجاز تھے۔ ان کی تصانیف میںمعارف مثنوی اور فیضان محبت شامل ہیں۔

سوانحترميم

حکیم محمد اختر 1928 میں پرتاپ گڑھ میں پیدا ہوئے۔[1] ان کی ابتدائی تعلیم پرتاپ گڑھ میں ہوئی اور انہوں نے سلطان پور میں قاری محمد صادق سے فارسی پڑھی۔[2] انہوں نے اسٹیٹ یونانی میڈیکل کالج الہ آباد سے طب یونانی کی تعلیم حاصل کی اور 1944 میں فارغ التحصیل ہوئے۔[2] اختر نے مدرسہ بیت العلوم سرائے میر میں درس نظامی کی تکمیل کی۔[3] انہوں نے ماجد علی جونپوری کے شاگرد عبد الغنی پھولپوری سے صحاح ستہ پڑھیں۔[3] اختر ابتدائی عمر سے ہی تصوف سے متاثر تھے۔ انہوں نے عبد الغنی پھولپوری، ابرار الحق حقی اور محمد احمد پرتاپ گڑھی سے استفادہ کیا۔ [4] حکیم اختر تصوف کے اشرفیہ، چشتیہ، نقشبندیہ، قادریہ، سہروردیہ میں ابرار الحق کے خلیفہ مجاز ہیں۔[5]

حکیم اختر کی وفات 2 جون 2013 کو کراچی میں ہوئی۔[5][4]

تصانیفترميم

حکیم اختر کی معروف تصانیف:[6]

  • معارف مثنوی، حکیم اختر کی شاہکار تصنیف جو مثنوی مولانا روم کی اردو شرح ہے۔
  • تجلیات جذب
  • معرفت الاہیہ
  • روح کی بیماریاں اور ان کا علاج
  • فیضان محبت

حوالہ جاتترميم

  1. سید عشرت جمیل میر، رشک اولیا، حیات اختر، صفحہ 23 
  2. ^ ا ب خالق داد، "مولانا شاہ حکیم محمداختر: حیات و خدمات"، راحتہ القلوب، 3 (1): 30 
  3. ^ ا ب خالق داد، "مولانا شاہ حکیم محمداختر: حیات و خدمات"، راحتہ القلوب، 3 (1): 31 
  4. ^ ا ب زاہد الراشدی. "مولانا شاہ حکیم محمد اختر". zahidrashdi.org. اخذ شدہ بتاریخ 17 مئی 2021. 
  5. ^ ا ب مفتی سراج ڈیسائی (10 جون 2013). "ایک عظیم صوفی مرشد کا انتقال". ilmgate.org. اخذ شدہ بتاریخ 17مئی 2021. 
  6. "حکیم محمد اختر کی تصانیف". worldcat.org. ورلڈ کیٹ. اخذ شدہ بتاریخ 17 مئی 2021. 

کتابیاتترميم