رانجھا، جٹ قبیلہ ہے۔ پاکستان میں اس ذات کے افراد بہت بڑی تعداد میں موجود ہیں ۔ہیر رانجھا کی کہانی دریائے چناب کے گرد میں گھومتی ہے۔ اس کہانی میں رانجھا کا اصل نام دتو تھا جو رانجھا قوم کا فرد ہونے کی وجہ سے رانجھا مشہور ہوا۔ ان کے عشق کی داستان لا زوال ہے۔ رانجھا قوم جٹ قبیلہ ہے جو محمد بن قاسم کے ہمراہ سند پر حملہ آور ہوئے تھے انھوں نے پنجاب سندھ کے کچھ علاقوں پر قبضہ کرلیا اور یہاں اپنی نسل کو پروان چڑھایا یہ وہ واحد جٹ قبیلہ ہیں جنھوں نے سب سے قبل اسلام کو قبول کیا تھا۔ تاریخ کے مطابق جٹ قبائل خاص طور پر رانجھا قوم سیدنا اکرمہ رضی اللّٰہ عنہ کی اولاد ہیں جو ابو جہل کے بیٹے تھے۔ آپ رضی اللّٰہ عنہ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وآلہ وسلم کے انتہائی قریبی صحابی ہیں ۔۔[1]

علاقےترميم

  • مڈھ رانجھا (ضلع سرگودھا)

° میانوال رانجھا (منڈی بہاوالدین)

° دھول رانجھا (منڈی بہاوالدین)

° نین رانجھا (منڈی بہاوالدین)

شخصیاتترميم

  • سابق صدر ڈسٹرکٹ بار محمود پرویز رانجھا (منڈی بہاوالدین)
  • محسن شاہنواز رانجھا (ن لیگی سیاسی رہنما)
  • میو ہسپتال کے میڈیکل سپریڈنٹ ڈاکٹر فیاض احمد رانجھا (سماجی کارکن)
  • میاں مناظر حسین رانجھا (ضلع سرگودھا/ رکن پنجاب اسمبلی)
  • امتیاز احمد رانجھا سابق MPA(منڈی بہاوالدین)

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. Rose، H. A (1997). A Glossary of the Tribes and Castes of Punjab. Atlantic Publishers & Distributors. ISBN 81-85297-68-1.