عشرت آفرین (ہندی: इशऱत आफरीन؛ پیدائش:25 دسمبر 1956) ایک اردو شاعرہ اور حقوق نسواں کی سرگرم کارکن اور اردو ادب میں سب سے زیادہ بااثر پانچ خواتین میں سے ایک ہیں۔ [1] ان کی تخلیقات کا انگریزی، جاپانی، سنسکرت اور ہندی سمیت متعدد زبانوں میں ترجمہ کیا گیا ہے۔ معروف غزل گلوکار جگجیت سنگھ اور چترا سنگھ نے بھی وقت سے پرے (1987) میں ان کی شاعری پیش کی۔ مشہور اداکار ضیاء محی الدین اپنی 17 ویں اور 20 ویں والیم کے ساتھ اپنی براہ راست محافل موسیقی میں بھی ان کی نظمیں پیش کرتے ہیں۔

عشرت آفرین
معلومات شخصیت
پیدائش 25 دسمبر 1956
کراچی، پاکستان
رہائش ہوسٹن  ویکی ڈیٹا پر (P551) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قومیت پاکستانی
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ اردو شاعرہ، مصنف
وجہ شہرت اردو ادب میں حقوق نسواں کی علمبردار

ابتدائی زندگی اور کیریئرترميم

عشرت جہاں پانچ بچوں میں سب سے بڑی تھیں۔ وہ کراچی، پاکستان میں ایک تعلیم یافتہ گھرانے میں پیدا ہوئی تھی۔ بعد میں انہوں نے اپنا نام تبدیل کیا اور قلمی نام عشرت آفرین لیا۔ ان کی پہلا کلام 31 اپریل 1971 کو روزنامہ جنگ میں 14 سال کی عمر میں شائع ہوئی تھی۔ انہوں نے لکھنا جاری رکھا اور ہندوستان اور پاکستان بھر میں بہت سارے ادبی رسالوں میں ان کا کلام شائع ہوا۔ وہ بالآخر ماہانہ میگزین آواز کے لئے اسسٹنٹ ایڈیٹر بن گئیں، اس رسالہ کی ایڈیٹر مشہور شاعرہ فہمیدہ ریاض تھیں۔ اپنے تحریری کیریئر کے متوازی انہوں نے 1970–1984 میں ریڈیو پاکستان کے متعدد ریڈیو شوز میں حصہ لیا تھا جو قومی اور عالمی سطح پر نشر ہوئے تھے۔ بعد میں انہوں نے مرزا جمیل کے ساتھ عالمگیر نوری نستعلیق اردو اسکرپٹ برائے ان پیج پر کام کیا۔

اس نے 1985 میں ایک ہندوستانی وکیل سید پرویز جعفری سے شادی کی اور ہجرت کرگئی۔ اس کے پانچ سال بعد وہاپنے دو بچوں کے ہمراہ امریکا منتقل ہوگئے۔ وہ اب اپنے تین بچوں کے ساتھ ٹیکساس کے ہیوسٹن میں مقیم ہیں۔

عشرت آفرین اس وقت آسٹن کے ہندو اردو فلیگ شپ پروگرام میں یونیورسٹی آف ٹیکساس کے پرنسپل اردو لیکچرار ہیں۔ [2]

تعلیمترميم

آفرین نے علامہ اقبال گورنمنٹ کالج کراچی سے انڈر گریجویٹ تعلیم حاصل کی اور بعد میں اردو ادب میں ماسٹر ڈگری جامعہ کراچی، پاکستان سے حاصل کی۔ وہ آغا خان اسکول اور بورڈنگ ہاؤس میں بھی پڑھاتی تھیں۔

ادبی اندازترميم

عشرت آفرین اردو ادب میں حقوق نسواں کی تحریک کا حصہ ہیں۔ اس تحریک میں شامل دیگر خواتین میں ادا جعفری، زہرا نگاہ، فہمیدہ ریاض، کشور ناہید اور پروین شاکر شامل ہیں۔

انہوں نے "عشرت آفرین" کا ادبی نام رکھا، عشرت ان کا اصلی نام ہے اور آفرین کا مطلب کامیابی کا مثبت ردعمل ہے۔

عشرت آفرین اردو شاعروں محمد اقبال اور فیض احمد فیض کے ساتھ پختہ شناخت رکھتی ہیں۔ وہ ان کے نفیس اور روایتی انداز کو استعمال کرتی ہے اور اس کی صلاحیت کے ساتھ انفرادیت اور پادری اور جابرانہ معاشرتی اصولوں کے برعکس بدنام زمانہ پیغامات تخلیق کرتی ہے۔

ان کی شاعری پاکستان کی یونیورسٹی آف لاہور سے لے کر آسٹن کی یونیورسٹی آف ٹیکساس تک کی متعدد یونیورسٹیوں کے نصاب میں بھی مشخص ہے۔ [حوالہ درکار][ حوالہ کی ضرورت ]

ایوارڈز اور اعزازاتترميم

آفرین کو 1986 میں سجاد ظہیر ایوارڈ سمیت متعدد پُر وقار ایوارڈز سے نوازا گیا تھا۔ آفرین کو یہ اعزاز نئی دہلی میں ہندوستان کے ترقی پسند مصنفین کی انجمن کے 50 ویں سالگرہ کے موقع پر ملا۔

آفرین کو 9 دسمبر 2006 کو لاس اینجلس میں اردو مرکز انٹرنیشنل کی جانب سے احمد ادایا ایوارڈ بھی ملا تھا، ان کی کتاب، "دھوپ اپنے حصے کی" کو انٹرنیشنل اردو جیوری نے 2004–2005 کے بہترین اردو شعری اشاعت کے طور پر منتخب کیا تھا۔

ستمبر 1999 میں، اس نے اسٹاوینجر، ناروے میں بین الاقوامی شاعری کے میلے میں حصہ لیا۔

وہ پورے امریکا، یورپ اور ایشیاء میں مشاعرہ میں لیکچر دینے، ورکشاپس منعقد کرنے، کانفرنسوں میں شرکت اور اپنی شاعری پڑھاتی رہیں۔

حوالہ جاتترميم

  1. by a research paper presented at NIPA
  2. "Archived copy". 25 جولائی 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 31 مئی 2010. 

بیرونی روابطترميم