چغتائی خان - (Mongolian: Цагадай, Tsagadai) چنگیز خان کا بیٹا تھا۔

چغتائی خان
(منگولی میں: ᠴᠠᠭᠠᠲᠠᠢ ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Chagatai Khan.JPG
 

معلومات شخصیت
پیدائش 22 دسمبر 1183  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
منگولیا  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 1242 (58–59 سال)[1][2]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
المالک  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت منگول سلطنت
یوآن خاندان
خانیت چغتائی  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد چنگیز خان[1][2]  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والدہ بورتے  ویکی ڈیٹا پر (P25) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
خاندان بورجگین،  چنگیز خاندان  ویکی ڈیٹا پر (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مناصب
خان (منگول سلطنت)   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
18 اگست 1227  – 1 جولا‎ئی 1242 
Fleche-defaut-droite-gris-32.png چنگیز خان 
قرہ ہلاکو  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
دیگر معلومات
پیشہ خان (منگول سلطنت)  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

حکومتترميم

چغتائی خان کی زندگی میں ماوراالنہر، قازقستان، کاشغر اور ترکستان کے علاقے اس کی تحویل میں تھے۔ اس نے اپنے باپ کی وصیت کے مطابق اپنے وزیر اعظم قراچار نوئیاں سے اپنی بیٹی توکل خانم کی شادی کر کے رشتہ داری قائم کی اور اپنے علاقوں کا انتظام سپرد کر کے خود اوکتائی خان کے پاس سکونت اختیار کر لی اور امور سلطنت میں ہاتھ بٹاتارہا۔ المالیق چغتائیوں کا پایہ تخت تھا۔

موتترميم

چغتائی خان کی موت شکارگاہ میں ایک بازگشتہ تیر پینکنے سے ہوئی۔ یہ تیر اس کی پشت پہ لگا اور مہلک ثابت ہوا۔ یہ واقعہ 1241ء میں اوکتائ خان کی موت سے 6 ماہ پیشتر پیش آیا۔

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب عنوان : Джагатай
  2. ^ ا ب عنوان : Джагатай

قاضی محمد اقبال چغتائی : وسط ایشیا کے مغل حکمران۔ چغتائی ادبی ادارہ، لاہور۔ 1983ء۔ صفحہ 32-33۔

مزید دیکھیےترميم