سر زمینِ اولیاء چورہ شریف یا چورا شریف

یونین کونسل
خواجہ نور محمد کا مزار
خواجہ نور محمد کا مزار
چورہ شریف Chura Sharif is located in پاکستان
چورہ شریف Chura Sharif
چورہ شریف
Chura Sharif
متناسقات: 33°41′33″N 72°27′12″E / 33.69250°N 72.45333°E / 33.69250; 72.45333
ملکپاکستان
صوبہپنجاب
ضلعضلع اٹک
تحصیلجنڈ تحصیل
منطقۂ وقتپاکستان کا معیاری وقت (UTC+5)
Chura-Sharif

چورہ کی تاریخترميم

چو ُرہ گا ؤں جسے با با جی خواجہ نور محمد تیراہی کی نسبت کی وجہ سے چورہ شریف کہتے ہیں۔ چورہ شریف میں ریلوے اسٹیشن اور بس سٹاپ بھی ہے۔ بسوں اور گاڑیوں کی آمد ورفت دن را ت رہتی ہے۔ زائرین ریلوے اسٹیشن یا بس سٹا پ پر اتر کر جنو ب کی طر ف تقریبا ً ڈیڑھ کلو میٹر سڑک کا را ستہ طے کر کے جا تے ہیں۔ اسٹیشن اور چورہ شریف کے درمیا ن ایک بر ساتی نالہ بھی پڑتا ہے۔ خصوصاً بر سات کے دنوں طغیا نی کے دوران اس میں سے گزرنا خطر نا ک ہو تا ہے۔ نا لہ کے پا ر بالکل کنا رے پر ایک چھوٹی سی بستی دربا ر شریف کے نا م سے مو سوم ہے۔ چورہ شریف تین چھوٹی چھوٹی بستیوں پر مشتمل ہے۔ ایک ’’چو ُرہ‘‘ جہا ں پر صرف مقا می با شندے آبا د ہیں۔ دوسری ’’ بھورا ما ر‘‘ ہے۔ اور تیسری بستی کو ’’ دربار شریف ‘‘ کہتے ہیں۔ یہی دربار شریف با با جی خوا جہ شاہ نو ر محمد کا مسکن رہا ہے۔ اور یہی آپ کا مد فن اور آخری آرام گا ہ ہے

محل وقعترميم

یہ مقدس بستی جوراولپنڈی سے کوہاٹ کی طرف 100کلو میٹر کوہاٹ سے 70کلومیٹر اور اٹک سے 50 کلو میٹر ہے ریلوے اسٹیشن چورہ شریف سے ڈیڑھ کلو میٹر کے فا صلے پر ایک ندی کے کنا رے اور سنگلاخ چٹانوں پر وا قع ہے یہ اولیا ء کا یہ مسکن زائیرین کے لیے تسکین قلب و نظر کا سامان مہیاء کر رہا ہے۔ یہ تحصیل جنڈ ضلع اٹک کا مشہور و معروف قصبہ ہے

با نئ چورہ شریفترميم

سرزمین ِ چورہ شریف کو اپنے قدوم ِ میمنت سے فیضیاب فرما نے والے پہلے بزرگ قطب العالمین ،شمس العارفین، قدوۃالکاملین، غوثِ دوراں، خواجہء خواجگاں خواجہ حضرت نور محمد چوراہی المعروف باواجی ہیں۔ اپنے وطن اور علا قے سے ہجرت کر کے یہا ں قیام فرما ہونے کا حکم ملا تھا چنانچہ آپ نے اپنے ایک مخلص مرید میا ں فقیر محمد (جو اس مقام سے ایک میل کے فاصلے پر سکونت پزیر تھے) کو بذریعہ خواب ایک مخصو ص جگہ کی نشان دہی فرما ئی اور وہاں ایک مسجد کی بنیاد رکھنے کا حکم دیا اور اپنے روضہ اقدس اور اولاد امجاد کی قبروں کے لیے علیحدا علیحدا جگہ دکھا ئی۔ یہ پیشین گوئی آپ نے یہا ں تشریف لانے سے گیا رہ برس پیشتر فرمائی تھی جبکہ آپ تیز ئی شریف علا قہ تیراہ میں ہی قیام فرما تھے۔ چنانچہ آپ نے یہا ں اپنے وصال سے صرف ڈیڑھ سال پہلے تشریف لا کر اس مردم خیز مٹی کو بخارا اور سرہند کے محبت آمیز پانی سے گوندھ کر جلوہ ہائے فقرومستی کا معمورہ او رتابش ہائے حسن ِ ازلی کا چو ُرہ بنا دیا۔[1]

فیض رسانیترميم

شمالی پنجاب کی اس درگاہ مقدسہ نے نقشبندی فیض کو اس طرح تقسیم کیا کہ چورہ شریف اکنافِ عالم میں معروف ہو گیا۔ یہاں سے جلیل القدر اور ممتاز مشائخ طریقت نے تربیت حاصل کی اور نقشبندی فیض کو دنیا کے کونے کونے تک پہنچایا۔ ان فیض یافتہ مشائخ نے اپنے اپنے علاقوں میں نقشبندیت کے مراکز قائم کیے اور حضرت خواجہ سید دین محمد چوراہی اور باواجی سید فقیر محمد کے نقشِ قدم پر جل کر طریقت کی روشنی پھیلانے میں کسی قسم کا کوئی دقیقہ فرو گزاشت نہیں کیا۔ چورا شریف شمالی پنچاب کا ایک دور افتادہ چھوٹا سا گاوں ہے جو سنگلاخ چٹانوں اور بارانی علاقے میں واقع ہے مگر فضیلت اور برکاتِ الٰہیہ کا مرکز ہے۔ نقشبندیوں کے روحا نی مراکز تجلیات، منبع فیوضا ت سر ہند شریف امامِ ربانی مجدد الف ثانی قدس سرہ کے سرہند کے بعد چورا شریف نقشبندیت کا سب سے بڑا اورعظیم مرکزِ نور اور فقر ِ محمدی صلی اللہ علیہ وسلم کا گہوارہ ہے۔ اس بستی میں اولوالعزم اولیا اللہ آسودہ خا ک ہیں جنہوں نے اپنی دینی اور روحانی تبلیغ سے اکنافِ عالم کے لاکھوں بھٹکے ہوئے انسانوں کو صراطِ مستقیم پر گامزن کیا۔[2]

حوالہ جاتترميم

  1. http://www.churasharif.com
  2. "آرکائیو کاپی". 05 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 20 اکتوبر 2015.