جھیل جھیل ایک کھارے پانی کا ساحلی جھیل ہے، جو اوڈیشا کے اضلاع کے مشرقی ساحلی میدانوں پر دریائے دیا کے منہ پر خلیج بنگال میں بہتے ہوئے پوری، کھوردا اور گنجام اضلاع پر پھیلا ہوا ہے، جس کا رقبہ 1،100 مربع کیلومیٹر سے زیادہ ہے۔ یہ بھارت کی سب سے بڑی جھیل ہے۔[4] یہ جھیل؛ بھارت کی سب سے بڑی ساحلی جھیل ہے اور نیو کیلیڈونین بیریئر ریف کے بعد؛ دنیا کی سب سے بڑی کھارے پانی کی جھیل ہے۔[5][6][7] اسے عارضی یونیسکو عالمی موروثی مقام کے طور پر درج کیا گیا ہے۔[8]

چیلیکا
Migratory birds at Chilika lake
چلیکا جھیل پر ہجرت کرنے والے پرندے
مقاماوڈیشا
متناسقات19°43′N 85°19′E / 19.717°N 85.317°E / 19.717; 85.317متناسقات: 19°43′N 85°19′E / 19.717°N 85.317°E / 19.717; 85.317
جھیل کی قسمکھارا پانی
بنیادی داخلی بہاو52 نہریں بشمول بھارگوی، دایا، مکرا، ملاگونی اور لونا دریا[1]
بنیادی خارجی بہاوارخاکوڈا میں پرانا منہ اور ساتپاڈا، خلیج بنگال پر نیا منہ
طاس رقبہ3,560 کلومیٹر2 (1,370 مربع میل)
طاس ممالکبھارت
زیادہ سے زیادہ لمبائی64.3 کلومیٹر (40.0 میل)
سطحی رقبہmin.: 900 کلومیٹر2 (347 مربع میل)
max.: 1,165 کلومیٹر2 (450 مربع میل)
زیادہ سے زیادہ گہرائی4.2 میٹر (13.8 فٹ)
حجم آب4 کلومیٹر3 (3,200,000 acre·ft)
سطح بلندی0 – 2 میٹر (6.6 فٹ)
جزائر223 کلومیٹر2 (86 مربع میل):
براکوڈا، بریک فاسٹ، ہنی مون، کلیجائی ہل، برڈس آئس لینڈ، کنتھپانتھا، کرشن پرسادرا (پرانا پاری کوڈا)، نالابن، نواپاڑہ، سومولو اور سان کوڈا۔
آبادیاںبالوگاؤں، ساتپاڈا، پاریکود، رامبھا
حوالہ جات[1][2]
Invalid designation
نامزد:1 اکتوبر 1981ء
رقم حوالہ:229[3]

برصغیر پاک و ہند پر مہاجر پرندوں کے لیے یہ موسم سرما کا سب سے بڑا میدان ہے۔ جھیل پودوں اور جانوروں کی متعدد خطرے سے دوچار مخلوق کا گھر ہے۔[9][10]

جھیل ایک ماحولیاتی نظام ہے جس میں ماہی گیری کے بڑے وسائل ہیں۔ یہ ساحلوں اور جزیروں کے 132 دیہاتوں میں رہنے والے ڈیڑھ لاکھ سے زائد ماہی گیروں کو زندہ رکھتا ہے۔[11][12]

یہ ساحلی جھیل ہجرت کے عروج کے موسم میں پرندوں کی 160 سے زیادہ پرجاتیوں کی میزبانی کرتا ہے۔ بحیرہ قزوین، جھیل بیکال، بحیرہ ارال اور روس کے دیگر دور دراز حصوں، قازقستان کے کرغیز میدان، وسطی اور جنوب مشرقی ایشیا، لداخ اور سلسلہ کوہ ہمالیہ سے پرندے یہاں آتے ہیں۔ یہ پرندے بہت دور تک سفر کرتے ہیں۔ ان میں سے کچھ ممکنہ طور پر 12000 کلومیٹر کا سفر کرتے ہوئے چلیکا جھیل تک پہنچتے ہیں۔

1981ء میں چلیکا جھیل کو رامسر کنونشن کے تحت پہلی بھارتی بین الاقوامی اہمیت کی گیلی زمین نامزد کیا گیا تھا۔[13][14]

ایک سروے کے مطابق 45 فیصد پرندے زمینی نوعیت کے ہیں، 32 فیصد آبی اور 23 فیصد پرندے غوطہ خور ہیں۔ یہ جھیل 14 اقسام شکاری پرندوں کا گھر بھی ہے۔ تقریباً 152 نایاب اور خطرے سے دوچار اراوڈی ڈالفن کی بھی اطلاع ملی ہے۔ اس کے علاوہ جھیل رینگنے والے جانوروں اور جل تھلیوں کی تقریبا 37 اقسام کی حمایت کرتی ہے۔[15]

انتہائی پیداواری چلیکا جھیل ماحولیاتی نظام اپنے بھرپور ماہی گیری کے وسائل کے ساتھ بہت سے ماہی گیروں کی روزی روٹی کو برقرار رکھتا ہے جو کہ لگون میں اور اس کے قریب رہتے ہیں۔ پانی کے پھیلاؤ کا علاقہ بالترتیب مون سون اور گرمیوں کے دوران 1165 اور 906 کلومیٹر مربع کیلومیٹر کے درمیان رہتا ہے۔ ایک 32 کلومیٹر لمبا، تنگ، بیرونی راستہ موٹو گاؤں کے نزدیک لگون کو خلیج بنگال سے جوڑتا ہے۔ ابھی حال ہی میں سی ڈی اے کی طرف سے ایک نیا منہ کھولا گیا ہے، جس نے جھیل میں زندگی کی نئی لہر لائی ہے۔

مائیکرولائجی، سمندری سوار، سمندری گھاس، مچھلی اور کیکڑے بھی چلیکا جھیل کے کھارے پانی میں پنپتے ہیں۔ خاص طور پر حالیہ برسوں میں سمندری بستروں کی بازیابی ایک خوش آئند رجحان ہے، جو بالآخر خطرے سے دوچار ڈوگونگوں کی دوبارہ نوآبادیات کا باعث بن سکتا ہے۔[16]

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب Tripati، Sila؛ A. P. Patnaik (10 February 2008). "Stone anchors along the coast of Chilika Lake: New light on the maritime activities of Orissa, India" (PDF). Current Science. Bangalore: Indian Academy of Sciences. 94 (3): 386–390. 
  2. "Chilika Lake". Ramsar Sites Information Service. اخذ شدہ بتاریخ 25 اپریل 2018. 
  3. Swami، V.N. (2020). D.C.C. Bank Clerk Grade Examination (بزبان مراٹھی). لاتور , India: Vidyabharti Publication. صفحہ 171. Bibcode:1064 VA 1064 تأكد من صحة قيمة |bibcode= length (معاونت). 
  4. Forest and Environment Department. "Chilika". Wildlife Conservation in Orissa. Govt of Orissa. 01 جولا‎ئی 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 21 دسمبر 2008. 
  5. "Inventory of wetlands" (PDF). Govt. of India. صفحات 314–318. 03 مارچ 2016 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 دسمبر 2008. 
  6. "New Caledonia - at the heart of the world's biggest lagoon</02.11>". boat-duesseldorf.com. 17 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 31 جولا‎ئی 2016. 
  7. Centre، UNESCO World Heritage. "Chilika Lake". UNESCO World Heritage Centre (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 19 مارچ 2019. 
  8. "Chilika at a Glance". Chilika Development Authority. 08 مارچ 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 23 جنوری 2013. 
  9. WWF India (2008). "Chilika Lake". 18 اکتوبر 2007 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2008. 
  10. Chilika Development Authority (2008). "Fish Yield Status". 30 جون 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 11 دسمبر 2008. 
  11. Chilika Development Authority (2008). "Welcome to Chilika Lagoon". 01 اکتوبر 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2008. 
  12. The Ramsar Convention (26 November 2008). "The Montreux Record". 01 اگست 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 18 دسمبر 2008. 
  13. Chilika Development Authority (2008). "Ramsar Award". 07 دسمبر 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2008. 
  14. "Dolphin population rises to 152 in Chilika lake in Orissa". The Times of India. 22 January 2013. اخذ شدہ بتاریخ 23 جنوری 2013. 
  15. IANS. 2010. Will growing seagrass beds bring back rare sea cows to Chilika? آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ thaindian.com (Error: unknown archive URL). The Thaindian News. Retrieved 19 April 2017