یونی (انگریزی: Yoni) (ہندی: योनि‎) یا پنڈیکا (انگریزی: pindika) (ہندی: पिण्डिका‎) ہندو مت کی دیوی شکتی کی ایک تجریدی یا قدیمی نمائندگی ہے۔ [3][4] اسے عام طور پر لنگ کے ساتھ دکھایا جاتا ہے – (اس کا مردانہ ہم منصب) [3][5] ایک ساتھ، وہ مائکروکوسموس اور میکروکوسموس کے انضمام کی علامت ہیں، [5] تخلیق اور باز آفرینی کے الہی ابدی عمل، اور نسائی اور مردانہ اتحاد جو تمام وجود کو دوبارہ تخلیق کرتا ہے۔ [4][2] یونی کو تمام پیدائشوں کے لیے فطرت کے دروازے کے طور پر تصور کیا جاتا ہے، ہندو مت کے خاص طور پر باطنی کولا اور تنتر کے طریقوں کے ساتھ ساتھ شکتی مت اور شیو مت روایات میں۔ [6]

یونی اور شیولنگ شبیہیں گول اور مربع دونوں شکلوں میں پائی جاتی ہیں۔ یہ الہی نسائی تخلیقی توانائی کی علامت ہے۔[1][2]

یونی سنسکرت کا ایک لفظ ہے جس کی تشریح لفظی معنی میں "رحم"، [2][7] "ذریعہ"، [8] کی گئی ہے، اور یہ افزائش نسل کے مادہ اعضا ہیں۔ [9][10] یہ خواتین کے جنسی اعضا جیسے کہ "اندام نہانی[4] "فرج[11][12] اور "رحم[12] کا بھی حوالہ دیتا ہے، [13][14] یا متبادل طور پر دوسرے سیاق و سباق میں کسی بھی چیز کی "اصل، رہائش، یا ماخذ" کے لیے۔ [1][4] مثال کے طور پر، ویدانت کا متن برہما ستراس استعاراتی طور پر مابعد الطبیعاتی تصور برہمن کو "کائنات کی یونی" سے تعبیر کرتا ہے۔ [15]لنگ مجسمہ نگاری کے ساتھ یونی برصغیر کے شیو مندروں اور آثار قدیمہ کے مقامات اور جنوب مشرقی ایشیا [16][17][18] کے ساتھ ساتھ مجسموں میں بھی پایا جاتا ہے جیسے کہ لجا گوری۔ [19]

اشتقاقیات اور اہمیتترميم

یونی (سنسکرت: योनी)، رگ وید اور دیگر ویدی ادب میں نسائی زندگی پیدا کرنے والے تخلیق نو اور تولیدی اعضا کے ساتھ ساتھ "ذریعہ، اصل، چشمہ، مقام پیدائش۔ رحم، گھونسلا، ٹھکانہ، انکیوبیشن کا آگ کا گڑھا کے معنی میں ظاہر ہوتا ہے" [1][13][20] اصطلاح کے دیگر متعلقہ معنی میں "نسل، ذات، خاندان، زرخیزی کی علامت، اناج یا بیج" شامل ہیں۔ [1][20][21] یہ ایک روحانی استعارہ ہے اور ہندو مذہب میں وجود کی فطرت میں ماخذ اور نسائی تخلیقی قوتوں کی شبیہ ہے۔ [2][22] برہما ستراس استعاراتی طور پر استعاراتی تصور برہمن کو "کائنات کا یونی" کہتے ہیں، [15] جسے آدی شنکر آچاریہ نے اپنی تفسیروں میں کہا ہے کہ اس کا مطلب مادی وجہ اور "کائنات کا ماخذ" ہے۔ [23]

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب پ ت Monier-Williams، Monier. "Yoni". Harvard University Archives. صفحہ 858. 3 مارچ 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  2. ^ ا ب پ ت Lochtefeld، James G. (2001). The Illustrated Encyclopedia of Hinduism, Volume 2. The Rosen Publishing Group. صفحہ 784. ISBN 978-0-8239-3180-4. 
  3. ^ ا ب Dasgupta، Rohit (26 ستمبر 2014). ویکی نویس: Kimmel، Michael؛ Christine Milrod؛ Amanda Kennedy. Cultural Encyclopedia of the Penis. Rowman & Littlefield. صفحہ 107. ISBN 978-0-7591-2314-4. 
  4. ^ ا ب پ ت Doniger، Wendy؛ Stefon، Matt (24 دسمبر 2014) [20 جولائی 1998]. "Yoni (Hinduism)". دائرۃ المعارف بریٹانیکا. ایڈنبرگ: Encyclopædia Britannica, Inc. اخذ شدہ بتاریخ 22 مئی 2021. 
  5. ^ ا ب Beltz، Johannes (2011-03-01). "The Dancing Shiva: South Indian Processional Bronze, Museum Artwork, and Universal Icon". Journal of Religion in Europe. Brill Academic Publishers. 4 (1): 204–222. doi:10.1163/187489210x553566. 
  6. Indradeva، Shrirama (1966). "Correspondence between Woman and Nature in Indian Thought". Philosophy East and West. 16 (3/4): 161–168. JSTOR 1397538. doi:10.2307/1397538. ، Quote: "Nature is my yoni (womb)، […]"
  7. Grimes 1996, p. 361.
  8. Adams، Douglas Q. (1986). "Studies in Tocharian Vocabulary IV: A Quartet of Words from a Tocharian B Magic Text". Journal of the American Oriental Society. JSTOR. 106 (2): 339–341. JSTOR 601599. doi:10.2307/601599. ، Quote: "Yoni- 'womb, vulva'، Yoni- "way, abode' is from a second PIE root […]";
    Indradeva، Shrirama (1966). "Correspondence between Woman and Nature in Indian Thought". Philosophy East and West. JSTOR. 16 (3/4): 161–168. JSTOR 1397538. doi:10.2307/1397538. 
  9. Abhinavagupta؛ Jaideva Singh (Translator) (1989). A Trident of Wisdom: Translation of Paratrisika-vivarana. State University of New York Press. صفحات 122, 175. ISBN 978-0-7914-0180-4. ، Quote: "yoni or womb […]" p. 122, "[…] in the female aspect, it is known as yoni or female organ of generation […]، p. 175"
  10. Cheris Kramarae؛ Dale Spender (2004). Routledge International Encyclopedia of Women: Global Women's Issues and Knowledge. Routledge. صفحہ 1840. ISBN 978-1-135-96315-6. ، Quote: "The sculpted image of the lingam usually stands erect in a shallow, circular basin that represents the yoni."
  11. ^ ا ب
  12. ^ ا ب Louis Renou (1939)، L'acception première du mot sanskrit yoni (chemin)، Bulletin de la Société de Linguistique de Paris, volume 40, number 2, pages 18-24
  13. Gerd Carling (2003). "New look at the Tocharian B medical manuscript IOL Toch 306 (Stein Ch.00316. a2) of the British Library – Oriental and India Office Collections". Historische Sprachforschung / Historical Linguistics. 116. Bd.، 1. H. (1): 75–95. JSTOR 40849180. ، Quote: "[…] diseases of the yoni (uterus and vagina) […]";
    Shivanandaiah، TM؛ Indudhar، TM (2010). "Lajjalu treatment of uterine prolapse". Journal of Ayurveda and Integrative Medicine. 1 (2): 125–128. PMC 3151380 . PMID 21836800. doi:10.4103/0975-9476.65090. ، Quote: "[…] vaginal-uterine disorders (Yoni Vyapat) […]";
    Frueh، Joanna (2003). "Vaginal Aesthetics". Hypatia. Wiley. 18 (4): 137–158. doi:10.1111/j.1527-2001.2003.tb01416.x. 
  14. ^ ا ب Klostermaier، Klaus K. (1998). A Concise Encyclopedia of Hinduism (بزبان انگریزی). Oneworld Publications. صفحات 214. ISBN 978-1-78074-672-2. 
  15. Lopez، Donald S. (1995). Religions of India in Practice. Princeton University Press. صفحات 304–307. ISBN 978-0-691-04324-1. 
  16. ^ ا ب Saunders، Ernest Dale (1985). Mudra: A Study of Symbolic Gestures in Japanese Buddhist Sculpture. Princeton University Press. صفحات 88–89, 229 note 28. ISBN 978-0-691-01866-9. 
  17. Davenport، Guy (1969). Tel quel. Éditions du Seuil. صفحات 52–54. 
  18. Amazzone، Laura (2012). Goddess Durga and Sacred Female Power. University Press of America. صفحات 27–30. ISBN 978-0-7618-5314-5. 
  19. Cornille، Catherine (1 اگست 2009). Criteria of Discernment in Interreligious Dialogue. Wipf and Stock. صفحہ 148. ISBN 978-1-63087-441-4.  ، Quote: "In his commentaries on BSBh 1.4.27, Sankara cites various passages where brahman is described as the yoni (source) of the universe: 'The word yoni is understood in the world as signifying the material cause as in 'the earth is the yoni (source) of the herbs and trees'۔ The female organ too (called yoni) is a material cause of the foetus by virtue of its constituents."