مرکزی مینیو کھولیں
انگلینڈ میں پولیس کے اسٹینگ آپریشن میں دستیاب 30 ملین ملیتی ڈرگس کی تصویر

قانون کے نفاذ میں اسٹینگ آپریشن (انگریزی: Sting operation) ایک پُر فریب آپریشن ہوتا ہے جس کا مقصد کسی ایسے شخص کو پکڑنا ہوتا ہے جرم کا ارتکاب کرتا ہے۔ ایک روایتی اسٹینگ آپریشن میں قانون کا نفاذ کرنے والا عہدیدار، جاسوس یا عوام کا کوئی معاون شخص ہوتا ہے جو جرم میں ساجھے دار یا امکانی شکار بنتا ہے اور وہ مشتبہ شخص حرکتوں میں شانہ بہ شانہ چل کر اس شخص کے خلاف ثبوت اکٹھا کرتا ہے۔ ذرائع ابلاغ کے صحافی کبھی کبھار اسٹینگ آپریشن کرتے ہیں تاکہ مجرمانہ سرگرمیوں کی فلمبندی کی جا سکے اور انہیں منظر عام پر لاکر جرائم کی جالکاریوں کا افشا کیا جا سکے۔[1]

اسٹینگ آپریشن کئی ممالک میں جیسے کہ ریاستہائے متحدہ[2] اور بھارت میں عام ہیں۔ مگر کچھ ممالک میں، جیسے کہ سویڈن میں اس کی اجازت نہیں ہے۔[3][مکمل حوالہ درکار]

اسٹینگ آپریشنوں کی کچھ مثالیںترميم

  • 2016ء میں اتراکھنڈ کے وزیر اعلٰی ہریش راوت نے ان سے منسوب بد عنوانی کے اسٹینگ آپریشن کو بے بنیاد اور بلیک میل کی کوشش قرار دیا۔[4]
  • کولکاتا کی شاہی ٹیپو سلطان مسجد کے امام اور عالم نورالرحمن برکاتی نے ٹائمز ناؤ کے اسٹینگ اپریشن میں یہ واضح طو رکہتے نظر آ رہے ہیں کہ ’’ اگر بی جے پی مجھے پیسے دیتی ہے تو وہ نہ صرف مغربی بنگال بلکہ ملک بھر میں بی جے پی موافق ماحول پیدا کرسکتے ہیں‘‘۔[5]
  • حیدرآباد، دکن کے ایک نوجوان عبد اللہ باسط کے خلاف ایس آئی ٹی نے سال 2017ء میں بھی ایک مقدمہ اُس وقت درج کیا تھا جب ایک ٹی وی چیانل نے مبینہ اسٹینگ آپریشن کے دوران ان کے خفیہ بیانات ریکارڈ کرکے چیانل پر عام کر دیا تھا جس میں اس کے داعش سے روابط افشا ہوئے تھے۔ [6]

حوالہ جاتترميم

  1. Roy Greenslade (2 جون 2013)۔ "Journalism: to sting or not to sting?"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  2. "Watch: FBI Targets American Muslims in Abusive Counterterrorism "Sting Operations""۔ The Huffington Post۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  3. NJA 2007 s. 1037.
  4. "ہریش راوت نے ان سے منسوب اسٹینگ آپریشن کو بے بنیاد قرار دیا"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  5. "پانچ کروڑ لے کر میں BJPکو پانچ لاکھ ووٹ دلا سکتا ہوں، بنگال کے شاہی امام کا اسٹنگ آپریشن"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  6. "داعش سے روابط پر دو نوجوانوں کی گرفتاری'چندرائن گٹہ اور شاہین نگر میں سنسنی"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔